صنم کدے میں جو پہنچے تو چند پہنچے صنم

صنم کدے میں جو پہنچے تو چند پہنچے صنم
دُعا کو ہاتھ اُٹھائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

صنم تراش فقط اُس کی باتیں سن سن کر
صنم تراشتے جائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

بتوں کو اُس کی کچھ آشیر باد ہو گی ضَرور
جبھی تو سجدے کرائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

جو مڑ کے دیکھے تو ہو جائیں دیوتا پتھر
’’ نہیں ‘‘ بھی کہنے نہ پائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

کُنواری دِیویاں شمعیں جلا کے ہاتھوں پر
حیا کا رَقص دِکھائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

وُہ گیت گاتا ہے کہ سُر کی راجدھانی میں
کِرِشن بنسی بجائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

بَلی چڑھانے کو شہزادِیاں بھی لائیں اَگر
زِیادہ موزوں نہ پائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے
#شہزادقیس
.

Sign Up