رُکے تو وَقت ٹھہر جائے ، نبض روکے سانس

رُکے تو وَقت ٹھہر جائے ، نبض روکے سانس
پرندے پر نہ ہلائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

گنے تو تتلیوں میں خود کو بھول کر نہ گنے
گلاب یاد دِلائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

چنے گلاب تو لگتا ہے پھول مل جل کر
مہکتی فوج بنائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

ڈَرے تو اَپنی شرارت پہ ہنستے بادَل کو
ہَوائیں ڈانٹ پلائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

سجے تو سجدے میں خوشبو ، دَھنک کے ساتھ گرے
خیال سر کو کھجائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

ہنسے تو زَرد رُتوں میں گلاب کھِل جائیں
بہاریں لوٹ کے آئیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

جھکے تو پھول نگاہوں پہ پنکھڑی رَکھ لیں
گھٹائیں ، دُھوپ گھٹائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے
#شہزادقیس
.

Sign Up