عرفان" از شہزادقیس"

****************************************
((Notice))
Updated On: 10/29/2018 12:48:28 PM
Release Date: 8/13/2017 2:40:04 PM
****************************************


****************************************

((Table Of Contents))

 

شہزادقیس کی جانب سے خوش آمدید

 

اِنتساب

 

سرحد: آگے بڑھے تو پر نہ رہیں گے جناب کے

 

ہر دِن میں ایک رات ہے محسوس تو کرو

 

ہر خوشی کو زَوال ہے بابا

 

شہ رَگ میں جب کسی کا شبستان بن گیا

 

سانس جب تک بحال ہے بابا

 

عشق جب عینِ ذات ہو جائے

 

کیا ہی اَچھا خیال ہے بابا

 

کون ہے جس پہ جاں وَبال نہیں

 

سایہ دَرویش پہ ہُما کا تھا

 

صنم کو دیکھ کے اَپنا یہ حال ہوتا ہے

 

صرف جذبات پر جوانی تھی

 

فقیہِ شہر کیوں اِس کو حرام کرتا ہے

 

دَعوتِ شاہ پر تھا آیا ہُوا

 

کوئی مر جائے تو کیوں کہتے ہو یوں ہے ، یوں ہے

 

تلاشِ عشق کا ہر راستہ مقدس ہے

 

بات گر کھُل کے کروں ، لوگ خفا ہوتے ہیں

 

دُور سے ہی سلام ہے صاحب

 

وَلی کے جو رُخ پر جلال آ گیا

 

چراغ لے کے ستارے تلاش کرتے ہیں

 

وَسوسے ، جان مری صرف ضرر دیتے ہیں

 

عشق جس کو ملنگ کرتا ہے

 

سُکُوتِ شب سے ، کسی شب ، کلام کر تو سہی

 

فارغِ العقل اِنقلابی ہُوں

 

دُوسرا ہر خیال خامی ہے

 

اِک فقط لا مکاں نہیں دیکھا

 

جو مجھ کو پہلے سجدہ کر چکا ہے

 

کاسۂ عقل ، عشق سے بھر دے

 

۔ اختتام ۔ مجموعہ کلام "عرفان" ۔



((Begin Text))
****************************************


****************************************

شہزادقیس کی جانب سے خوش آمدید


****************************************
شہزادقیس کی جانب سے خوش آمدید
مجموعہ کلام #عرفان میں شامل اشعار
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

اِنتساب


****************************************
اِنتساب
سلسبیلِ کُن کے نام
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

سرحد: آگے بڑھے تو پر نہ رہیں گے جناب کے


****************************************
سرحد: آگے بڑھے تو پر نہ رہیں گے جناب کے
سچے فرشتے نے کسی پروانے سے کہا

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

ہر دِن میں ایک رات ہے محسوس تو کرو


****************************************
ہر دِن میں ایک رات ہے محسوس تو کرو
کتنی بڑی یہ بات ہے محسوس تو کرو

اِس میں حسیں بُتوں کا تصور مقیم ہے
دِل چھوٹا سومنات ہے محسوس تو کرو

خود محوری سے دید کو فرصت ملے اَگر
ہر ذَرّہ کائنات ہے محسوس تو کرو

تنہائی کا خیال بھی باطل کی دین ہے
تنہا بس اُس کی ذات ہے محسوس تو کرو

گر شَش جِہِت وُجودِ خدا پر یقین ہے !
ہر چیز میں حیات ہے محسوس تو کرو

اِک جسم میں اِک آدمی ہوتا نہیں جناب
ہر شخص ، شخصیات ہے محسوس تو کرو

ہو گی نہ قیسؔ حُسن سے اِظہار میں پَہَل
یہ اُن کی نفسیات ہے محسوس تو کرو

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

ہر خوشی کو زَوال ہے بابا


****************************************
ہر خوشی کو زَوال ہے بابا
ایک غم کا سوال ہے بابا

جس کسی کو بھی گھِن نہیں آتی
اُس پہ دُنیا حلال ہے بابا

دانے دانے پہ نام کا مطلب
دانے دانے پہ جال ہے بابا

چیونٹیاں بھی ذَخیرہ کرتی ہیں
بانٹنے میں کمال ہے بابا

صرف اَچھے خیال سوچا کرو
یہ جہان اِک خيال ہے بابا

بولنے والے اِس لیے چُپ ہیں
کان والوں کا کال ہے بابا

قیسؔ نے جس کو دُکھ سے کاٹ دِیا
شعر وُہ بے مثال ہے بابا

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

شہ رَگ میں جب کسی کا شبستان بن گیا


****************************************
شہ رَگ میں جب کسی کا شبستان بن گیا
حمدِ مدام قلب کا ایمان بن گیا

دَھڑکن کے شور سے ہُوئی بیدار آرزُو
پتھر ’’ نفختُ رُوحی ‘‘ سے اِنسان بن گیا

تتلی ، گہر ، گلاب ہیں آیاتِ معنوی
لفظوں میں حُسن پھونکا تو قرآن بن گیا

بخشندگی کو عاصی بھی لازِم تھا کردگار
ہم نے خطائیں کی تو تُو رِحمان بن گیا

صد شکر دونوں کو ہی نکالا بہشت سے
بن باس ، چھیڑ چھاڑ میں آسان بن گیا

واعظ کے سجدے دیکھ کے دِل مانتا نہیں
کیسے فرشتہ لمحے میں شیطان بن گیا

ٹھکرا رہے تھے قیسؔ تو جنت تھا یہ جہان
جیسے ہی دِل لگایا تو زِندان بن گیا

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

سانس جب تک بحال ہے بابا


****************************************
سانس جب تک بحال ہے بابا
آرزُو کا وَبال ہے بابا

سینکڑوں نعمتوں کا مل جانا
غالباً نیک فال ہے بابا

یار کے دَر پہ ناچتی ہے زَمین
زَلزلہ بھی دَھمال ہے بابا

شیخ سمجھاتا ہے مثالوں سے
اور وُہ بے مثال ہے بابا

او حرم جا کے کانپنے والے
ہر جگہ ذُوالجلال ہے بابا

دُوسری سمت کوئی ہے ہی نہیں
صرف آنکھوں کی چال ہے بابا

لیلیٰ بننے کی سب کو خواہش ہے
قیسؔ بننے کا کال ہے بابا

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

عشق جب عینِ ذات ہو جائے


****************************************
عشق جب عینِ ذات ہو جائے
خالقِ معجزات ہو جائے

عُمر بھر چُپ رہو تو ممکن ہے
کُن کہو کائنات ہو جائے

سجدۂ عشق میں ’’ فرشتہ ‘‘ بھی
عقل برتے تو مات ہو جائے

عقل کا زَن مرید عشق بنے !
کس قَدَر واہیات ہو جائے

دِل کی پاتال سے اَگر پھُوٹے
اَشک آبِ حیات ہو جائے

ریت پر گر نہ لکھے مجنوں نام
قِلّتِ کاغذات ہو جائے

قیسؔ پر ہنسنے والوں رَب نہ کرے !
آپ کے ساتھ ہاتھ ہو جائے

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

کیا ہی اَچھا خیال ہے بابا


****************************************
کیا ہی اَچھا خیال ہے بابا
ہر جنون ایک حال ہے بابا

بخدا وَقت کا وُجود نہیں
صرف گھڑیوں کی چال ہے بابا

دُنیا میں آنا اِتنا واجب ہے
خون پینا حلال ہے بابا

یہ جہان اِک برہنہ ، کُبڑی ، چڑیل
اور تُو نونہال ہے بابا

صبر کرنا ہے اُتنا واجب تر
جس قَدَر یہ مُحال ہے بابا

اَوّلیں سنگِ میلِ عشق ، لَحَد
تُو اَبھی سے نڈھال ہے بابا

قیسؔ کو شاعری نہیں آتی
یہ جنوں کا جلال ہے بابا

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

کون ہے جس پہ جاں وَبال نہیں


****************************************
کون ہے جس پہ جاں وَبال نہیں
زیست آرام دِہ خیال نہیں

لاج سے سرخ گل کو کیا معلوم
بھنورے کا پیار لازَوال نہیں

آدمی رِزق کا وَسیلہ ہے
آدمی رَبِّ ذُوالجلال نہیں

لیلیٰ بھی ہر جگہ پہ آئے نظر
لیلیٰ کی بھی کوئی مثال نہیں

حُسنِ شعری عطائے رَبی ہے
شاعروں کا کوئی کمال نہیں

فکر نہ کر پہنچ ہی جاؤں گا
یہ مرا پہلا اِنتقال نہیں

موت آسان ہو گی اُس پہ قیسؔ
جس کے لب پر کوئی سوال نہیں

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

سایہ دَرویش پہ ہُما کا تھا


****************************************
سایہ دَرویش پہ ہُما کا تھا
آخری باب جب کتھا کا تھا

بھولنے والا لوٹ تو آیا
وَقت مغرب کا یا عشا کا تھا

رُک گیا میں سزا سے کچھ پہلے
اُس کو اِحساس خُود خطا کا تھا

سانس روکے کھڑا تھا مَلَکُ الموت
سامنا دیپ کو ہَوا کا تھا

بُت کدے میں مرا تو پھر کیا ہے ؟
ماننے والا تو خدا کا تھا

سَب خزانے منگا لیے رَب نے
فیصلہ عشق کی جزا کا تھا !

دوڑ میں قیسؔ اَوّل آتے بنی
راستہ بس یہی بقا کا تھا

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

صنم کو دیکھ کے اَپنا یہ حال ہوتا ہے


****************************************
صنم کو دیکھ کے اَپنا یہ حال ہوتا ہے
خدا سے گہرا تعلق بحال ہوتا ہے

خطیب مخرجِ زیر و زَبر میں اَٹکا ہُوا
بِلال عشق کے بل پر بِلال ہوتا ہے

فرشتے دِل نہیں رَکھتے ، یقین آتا ہے
کسی حسینہ کا جب اِنتقال ہوتا ہے

دُعا ہے عشق مرا ، تیری رُوح تک پہنچے
یہی نشاط فقط لازَوال ہوتا ہے

کسی شجر پہ پکے پھل نے مسکرا کے کہا
یہ عشق روزِ اَزل سے وَبال ہوتا ہے

وُفورِ آرزُو ، دَراَصل زِندگانی ہے
تمنا مرتی ہے تب اِنتقال ہوتا ہے

ہر ایک شخص میں خوبی تلاش کرنا قیسؔ
خدا تو جو بھی بنائے کمال ہوتا ہے

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

صرف جذبات پر جوانی تھی


****************************************
صرف جذبات پر جوانی تھی
وَرنہ ہر شے یہاں کی فانی تھی

موت نے جلدبازی کی ورنہ
نیند سُولی پہ آ ہی جانی تھی

چند قبروں کو شب ہلا کے کہا
یاد ہے ! تم میں زِندگانی تھی

موت کا پھول کھلنے سے پہلے
زِندگی ، بے سُری کہانی تھی

موت سے لڑ کے اُس طرف پہنچے
زِندگانی ہی زِندگانی تھی

مٹی میں رولو گے شہنشہ کو ؟
قبر تو سونے کی بنانی تھی

قبر پر اُس کی سوچتا ہُوں قیسؔ
آہ ! کیا واقعی یہ فانی تھی

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

فقیہِ شہر کیوں اِس کو حرام کرتا ہے


****************************************
فقیہِ شہر کیوں اِس کو حرام کرتا ہے
شرابِ عشق کا رَب اِنتظام کرتا ہے

یہ عشق ہی ہے جو اِنسان کے لبادے میں
رَہِ خدا میں مسلسل قیام کرتا ہے

جو دُوسروں کی خرابی پہ آنکھ رَکھتا ہے
’’ بڑے جہاد ‘‘ کی خود روک تھام کرتا ہے

یہ کس کے حکم پہ تم سوچنے سے روکتے ہو
خدا تو سوچ کی دعوت کو عام کرتا ہے

نشان سجدے کا دولت ہے تو حفاظت کر
غرورِ تقویٰ بڑا بے لگام کرتا ہے

جو اَپنے نفس کو شیروں کی آنکھ سے دیکھے
دِل ایسے متقی کا اِحترام کرتا ہے

قلم میں قیسؔ کے دَھڑکن ترے تصور سے
بہارِ جان تجھے دِل سلام کرتا ہے

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

دَعوتِ شاہ پر تھا آیا ہُوا


****************************************
دَعوتِ شاہ پر تھا آیا ہُوا
ایک پھل چکھتے ہی پرایا ہُوا

ذَرّے ذَرّے پہ آشکار ہُوں میں
راز ہُوں کان میں بتایا ہُوا

شرط باندھی ہے مجھ پہ خالق نے
آسمانوں پہ ہُوں میں چھایا ہُوا

بھائی! سجدے کا میں نے کب تھا کہا
مجھ سے تُو کیوں ہے خار کھایا ہُوا

بیج ، پھل ، پھول ، مالی میں ہی ہُوں
اَپنی کھیتی میں ہُوں اُگایا ہُوا

ہونٹ ہُوں بوسہ دینے والا ہُوں
پھول ہُوں جُوڑے میں سجایا ہُوا

اَپنی تخلیق میں شریک ہُوں قیسؔ
ایک حد تک ہُوں میں بنایا ہُوا

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

کوئی مر جائے تو کیوں کہتے ہو یوں ہے ، یوں ہے


****************************************
کوئی مر جائے تو کیوں کہتے ہو یوں ہے ، یوں ہے
دَرد کے آخری دَرجے پہ سُکوں ہے ، یوں ہے

جسم سینے کے جو ماہر ہیں اُنہیں کیا معلوم
زَخم کی نوک فقط دِل سے بروں ہے ، یوں ہے

آئینہ نقل کرے تیری ؟ کہاں ممکن ہے
ذائقہ ، خوشبو ، صدا ، لمس ، فُزُوں ہے ، یوں ہے

کُن کہا یا مرے معبود ہمیں سمجھایا ؟
کُن کہے عشق تو دُنیا فیکوں ہے ، یوں ہے

بعض شعروں سے تو ہم پھر سے جنم لیتے ہیں
شاعری ذِہن کی خلقت کا فُسُوں ہے ، یوں ہے

ہم نے یک طرفہ محبت میں جلا دی کشتی
یار کی سمت سے نہ ہاں ہے نہ ہُوں ہے ، یوں ہے

زَہر کے خالی پیالے نے یہ سمجھایا قیسؔ
عقل کے آخری دَرجے پہ جنوں ہے ، یوں ہے

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

تلاشِ عشق کا ہر راستہ مقدس ہے


****************************************
تلاشِ عشق کا ہر راستہ مقدس ہے
جہاں جہاں ہے خدا وُہ جگہ مقدس ہے

پجارِیوں سے تو دُگنے فرشتے بیٹھے ہیں
سو دو تہائی سہی ، بُت کدہ مقدس ہے

حرم ، کلیسا ، معابد پہ اِختلاف ہے پر
ہر اِہلِ دِل کے لیے آگرہ مقدس ہے

جو پانی گدلا ہو اُس کے نسب کو کیا کرنا
جو آج اَعلیٰ ہے وُہ سلسلہ مقدس ہے

پکے پکائے خیالات ، جھوٹ بانٹتا ہے
جو سوچ کاشت کرے وُہ شبہ مقدس ہے

جہان آئینہ ہے ، آئینہ خبیث نہیں
جو پاک دیکھے تو ہر آئینہ مقدس ہے

بدن میں شکر کا محشر بپا ہو جس سے قیسؔ
زَمانہ کچھ بھی کہے وُہ مزہ مقدس ہے

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

بات گر کھُل کے کروں ، لوگ خفا ہوتے ہیں


****************************************
بات گر کھُل کے کروں ، لوگ خفا ہوتے ہیں
اِہلِ عرفان کے دِن رات جدا ہوتے ہیں

مستی ء عشق میں بھی راہ دِکھا سکتے ہیں
غش کی حالت میں بھی یہ قبلہ نما ہوتے ہیں

شاہ بھی آئیں تو با اِذنِ قلندر آئیں
دَر پہ ’’ بے دَر ‘‘ کے شہنشاہ ، گدا ہوتے ہیں

اِس لیے دے نہیں پاتے کسی گالی کا جواب
وَقتِ دُشنام بھی یہ محوِ دُعا ہوتے ہیں

جام ہے جتنا ، سمندر بھی اُٹھا لو اُتنا
دِل بڑا ہو تو کرشمے بھی عطا ہوتے ہیں

پھول کی لاش سے بھی خوشبو ہی آتی ہے جناب
رَنگ تتلی کے کتابوں میں سدا ہوتے ہیں

شانِ دَرویش کے کیا کہنے ، یہ مر کر بھی قیسؔ
ایک دُنیا کے لیے راہِ بقا ہوتے ہیں

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

دُور سے ہی سلام ہے صاحب


****************************************
دُور سے ہی سلام ہے صاحب
حُسن ہم پر حرام ہے صاحب

ہم جنونی ، مسافرانِ دار
عشق اَپنا اِمام ہے صاحب

عشق تو جاں کنی میں سجدے کو
عمر بھر کا قیام ہے صاحب

دائروں میں کٹے گی سب کی حیات
آرزُو سب کی خام ہے صاحب

اِک ملاقات کا بکھیڑا ہے
زِندگی ایک شام ہے صاحب

جب تلک لکھنے والا زِندہ ہے
ہر غزل ناتمام ہے صاحب

آنکھ بند کر کے لیجیے وُہ کتاب
قیسؔ کا جس پہ نام ہے صاحب

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

وَلی کے جو رُخ پر جلال آ گیا


****************************************
وَلی کے جو رُخ پر جلال آ گیا
سمندر میں تہہ تک اُبال آ گیا

بنا پائے تعلیم دینے لگا
قلندر پہ ایسا کمال آ گیا

نگاہوں میں جب حُسن پیدا ہُوا
ہر اِک شے پہ حُسن و جمال آ گیا

فقیروں پہ توبہ ہے واجب وَہاں
خطا کا جہاں کچھ خیال آ گیا

فرشتوں نے صف باندھ لی عشق کی
اَذاں دینے صدقِ بِلال آ گیا

لکھا لیس کمثلہ ریت پر
جو دِلبر کی بابت سوال آ گیا

جو مُرشِد نے دی قیسؔ من میں اَذاں
اِمامت کو خود ذُوالجلال آ گیا

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

چراغ لے کے ستارے تلاش کرتے ہیں


****************************************
چراغ لے کے ستارے تلاش کرتے ہیں
خدا کے بعد سہارے تلاش کرتے ہیں !

کسی عزیزِ دِل و جاں کی ہے تلاش ہمیں
ہمیں عزیز ، ہمارے تلاش کرتے ہیں

گھٹا ، پرندے ، ہَوا ، تتلیاں ، دَھنک ، خوشبو
تمہیں یہ سارے کے سارے تلاش کرتے ہیں

ہر ایک چیز کے جوڑے ہیں تو ہمارے صنم
خدا نے ہوں گے اُتارے ، تلاش کرتے ہیں

ستارے رہنے دے ، گھر لوٹ آ مرے جگنو
تجھے اَندھیروں کے مارے تلاش کرتے ہیں

سُکونِ قلب کی خواہش ہے وُہ بھی دُنیا میں
بھنور کے ’’ دِل ‘‘ میں کنارے تلاش کرتے ہیں

زَمیں پہ ہر کوئی بے آسرا ہے ہم سا قیسؔ
زَمیں کے نیچے سہارے تلاش کرتے ہیں

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

وَسوسے ، جان مری صرف ضرر دیتے ہیں


****************************************
وَسوسے ، جان مری صرف ضرر دیتے ہیں
کام دَرویشوں سے جو کہہ دو وُہ کر دیتے ہیں

اَشک پلکوں پہ بھی تاثیر تو رَکھتے ہیں مگر
اَشک جو دِل پہ گریں ، دُگنا ثمر دیتے ہیں

وادیٔ حُسن کے نقاش ، شریر اِتنے ہیں
چشمِ گمراہ کو بھی راہ گزر دیتے ہیں

آپ کیا دیتے ہیں اِس حُسن کی رَعنائی کو
جس کے ’’ دیدار ‘‘ کو ہم خونِ جگر دیتے ہیں

محوِ حیرت ہوں کہ گلدستے پہ بیٹھے بھنورے
فتوے عشاق پہ بے خوف و خطر دیتے ہیں

ساقیء مستِ اَلست اَپنی پہ آ جائیں تو
اِک نظر دیکھ کے ’’ میخانے ‘‘ کو بھر دیتے ہیں

چشمِ مرشد ہی نہیں چشمۂ فیضانِ بشر
قیسؔ کچھ دَستِ حنائی بھی نظر دیتے ہیں

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

عشق جس کو ملنگ کرتا ہے


****************************************
عشق جس کو ملنگ کرتا ہے
دیوتاؤں سے جنگ کرتا ہے

بھنورا پیدائشی نہیں دِل پھینک
رَنگ غنچوں کا تنگ کرتا ہے

اُس فرشتے کے ہاتھ چوموں جو
آسمانوں کو رَنگ کرتا ہے

کام کرتی ہے ، آدمی کا زَبان
کام بچھو کا ، ڈَنگ کرتا ہے

ذِہن کرتا ہے شاعری میرا
یار کا اَنگ اَنگ کرتا ہے

ماسوا حُسن کے ہر آفت سے
ماں کا تعویذ جنگ کرتا ہے

شعر پر دَنگ سوچتے ہیں دوست
قیسؔ کو کون دَنگ کرتا ہے

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

سُکُوتِ شب سے ، کسی شب ، کلام کر تو سہی


****************************************
سُکُوتِ شب سے ، کسی شب ، کلام کر تو سہی
جواب دِل تجھے دے گا ، سلام کر تو سہی

حیاتِ ثانی کی خوشیاں ، کنیز ہوں گی تری
حیاتِ فانی کے غم اُس کے نام کر تو سہی

خدا کا ہاتھ ، تِرے سَر کو چھُو رَہا ہو گا
رَہِ خدا میں ذِرا اِہتمام کر تو سہی

ہر ایک ذرے کی تسبیح سن سکے گا دوست !
خیالِ غیر کو ، خود پر حرام کر تو سہی

تِری مَدد کو ، فرشتے بھی آئیں گے لیکن
جو تجھ سے ہو سکے ، وُہ اِنتظام کر تو سہی

اَو ! بادشاہوں کے آگے ، اَدَب کی اعلیٰ مثال !
حضورِ رَبیّ کا ، ’’ کچھ ‘‘ اِحترام کر تو سہی

پرندگانِ چمن ، سُر میں ’’ عشق ‘‘ کُوکیں گے
سُرُودِ قیسؔ کی ، تعلیم عام کر تو سہی

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

فارغِ العقل اِنقلابی ہُوں


****************************************
فارغِ العقل اِنقلابی ہُوں
میں فقیہ الزماں شرابی ہُوں

جدِ اَمجد ہُوں ہر بغاوَت کا
میں عزازیل کا صحابی ہُوں

جیتنے والوں کی شکستِ فاش
اِہلِ دوزخ کی کامیابی ہُوں

بے حجابوں کی پردگی ہُوں میں
اِہلِ مَحمل کی بے حجابی ہُوں

ہے گھڑوں کا پہاڑ میرے پاس
کشتیٔ نوح ! میں چنابی ہُوں

بات کرتا ہُوں صرف ایک ہی میں
لال ، پیلا ، ہرا ، گلابی ہُوں

دَشت سے ہُوں بلا مقابلہ قیسؔ
میں شہنشاہ ، اِنتخابی ہُوں

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

دُوسرا ہر خیال خامی ہے


****************************************
دُوسرا ہر خیال خامی ہے
عشق میں اِعتدال خامی ہے

صاف رَنگ و جمال خامی ہے
غالبا ہر کمال خامی ہے

آنکھ سے سوچتے ہیں اَکثر لوگ
گال اور اِتنا لال خامی ہے

حُسن کو چومنا گناہ نہیں
چومنے پر ملال خامی ہے

آپسی نوک جھونک کے دوران
دُوسروں کی مثال خامی ہے

صرف فردوس مانگنے والے
غالبا بھیڑ چال خامی ہے

موت پر قیسؔ جشن بنتا ہے
شادِیوں پر جنجال خامی ہے

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

اِک فقط لا مکاں نہیں دیکھا


****************************************
اِک فقط لا مکاں نہیں دیکھا
تُو وہیں تھا جہاں نہیں دیکھا

چاند میں ، مے میں ، شبنمِ گل میں
ہم نے تجھ کو کہاں نہیں دیکھا

سخت حیرت ہے گُل پرستوں نے
آج تک باغباں نہیں دیکھا

دو جہانوں کی خاک چھانی ہے
کوئی تجھ سا یہاں نہیں دیکھا

کھوجنے والوں نے عقیدت میں
حجرۂ عارِفاں نہیں دیکھا

وَجد میں جب بھی نصف آنکھ کھُلی
خود کو بھی دَرمیاں نہیں دیکھا

قیسؔ حق الیقین مفتی نے
عاصیوں کا گماں نہیں دیکھا

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

جو مجھ کو پہلے سجدہ کر چکا ہے


****************************************
جو مجھ کو پہلے سجدہ کر چکا ہے
وُہ میری نیکیاں کیوں لکھ رہا ہے

چلو نیکی کا لکھنا حُسن ٹھہرا
برائی چھوڑنے میں کیا برا ہے

خطائیں خود ہی جب لکھی تھیں میری
لَحَد میں پوچھنے کیوں آ گیا ہے

اَبھی تو مر کے پہنچا ہُوں فرشتو !
تمہیں کیا آج ہی سب پوچھنا ہے؟

خدا سے فاصلہ جن کی بقا ہو
بھلا کیا اُن پروں کا فائدہ ہے

غزل کو پڑھ کے سنجیدہ فرشتہ
خطائیں لکھتے لکھتے ہنس پڑا ہے

وُہ بولا قیسؔ کو آزاد کر کے
سمندر ہی سمندر کی سزا ہے

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

کاسۂ عقل ، عشق سے بھر دے


****************************************
کاسۂ عقل ، عشق سے بھر دے
حُسنِ اَوّل ! اُٹھا دے سب پردے

تُو بھی تو میرے دِل میں رہتا تھا
ساتویں عرش پر مجھے گھر دے

ضبط کر جاؤں تو وَلی ٹھہروں
زَخم برداشت سے فُزُوں تر دے

دیکھ کر جس کو تجھ پہ پیار آئے
پالنے والے ایسا دِلبر دے

حُسن پوجوں کہ شعر لکھوں میں
اے خدا ! آج شاعری کر دے

کعبۂ شوق ! میں صنم گر ہوں
بُت اُٹھا لے بس ایک پتھر دے

زِندگی جس طرح بھی گزرے قیسؔ
موت پروردِگار حق پر دے

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

۔ اختتام ۔ مجموعہ کلام "عرفان" ۔


****************************************
۔ اختتام ۔ مجموعہ کلام "عرفان" ۔
سدا خوش رہیے ۔ شہزادقیس
****************************************

Table of Contents


****************************************




****************************************
((End Text))
****************************************


*******************************
میری تمام کتب ڈاؤن لوڈ کیجیے
*******************************
تمام کتب ایک ذپ فائل کی صورت میں
http://sqais.com/QaisAll.zip

"لیلیٰ" از "شہزادقیس"
http://sqais.com/QaisLaila.pdf
http://sqais.com/QaisLaila.html
http://sqais.com/QaisLaila.txt

"دِسمبر کے بعد بھی" از "شہزادقیس"
http://sqais.com/QaisDecember.pdf
http://sqais.com/QaisDecember.html
http://sqais.com/QaisDecember.txt

"تتلیاں" از "شہزادقیس"
http://sqais.com/QaisTitliyan.pdf
http://sqais.com/QaisTitliyan.html
http://sqais.com/QaisTitliyan.txt

"عید" از "شہزادقیس"
http://sqais.com/QaisEid.pdf
http://sqais.com/QaisEid.html
http://sqais.com/QaisEid.txt

"غزل" از "شہزادقیس"
http://sqais.com/QaisGhazal.pdf
http://sqais.com/QaisGhazal.html
http://sqais.com/QaisGhazal.txt

"عرفان" از "شہزادقیس"
http://sqais.com/QaisIrfan.pdf
http://sqais.com/QaisIrfan.html
http://sqais.com/QaisIrfan.txt

"انقلاب" از "شہزادقیس"
http://sqais.com/QaisInqilab.pdf
http://sqais.com/QaisInqilab.html
http://sqais.com/QaisInqilab.txt

"وُہ اِتنا دِلکش ہے" از "شہزادقیس"
http://sqais.com/QaisDilkash.pdf
http://sqais.com/QaisDilkash.html
http://sqais.com/QaisDilkash.txt

"نمکیات" از "شہزادقیس"
http://sqais.com/QaisNamkiyaat.pdf
http://sqais.com/QaisNamkiyaat.html
http://sqais.com/QaisNamkiyaat.txt

"نقشِ ہفتم" از "شہزادقیس"
http://sqais.com/QaisNaqsh.pdf
http://sqais.com/QaisNaqsh.html
http://sqais.com/QaisNaqsh.txt

"اِلہام" از "شہزادقیس"
http://sqais.com/QaisIlhaam.pdf
http://sqais.com/QaisIlhaam.html
http://sqais.com/QaisIlhaam.txt

"شاعر" از "شہزادقیس"
http://sqais.com/QaisShayer.pdf
http://sqais.com/QaisShayer.html
http://sqais.com/QaisShayer.txt

"بیت بازی" از "شہزادقیس"
http://sqais.com/QaisBait.pdf
http://sqais.com/QaisBait.html
http://sqais.com/QaisBait.txt


**********************
آپ کو اس متن کی اشاعت کی اجازت ہے
**********************
آپ ان تخلیقات کو اپنے ویب سائٹ، بلاگ، فیس بک، ٹوئٹر، سوشل میڈیا اکاؤنٹس، اخبار، کتاب، ڈائجسٹ وغیرہ میں شائع کر سکتے ہیں بشرطیکہ
اس میں ترمیم نہ کریں، شہزادقیس کا نام بطور مصنف درج کریں اور اس تخلیق کی اشاعت غیر تجارتی مقاصد کے لیے ہو
یہ تخلیقات کریٹو کامنز لائسنس کے تحت شائع کی گئی ہیں جس میں اس تخلیق سے ماخوذ کام کی نشر و اشاعت کی اجازت نہیں ہے۔۔ مزید تفصیلات اس لنک پر ملاحظہ فرمائیے
https://creativecommons.org/licenses/by-nc-nd/4.0/legalcode

کسی اور طرح کی اشاعت کے لیے
Info@SQais.com
پر رابطہ فرمائیے۔

ShahzadQais

Sign Up