غزل" از شہزادقیس"

****************************************
((Notice))
Updated On: 12/2/2018 1:37:15 PM
Release Date: 8/13/2017 2:40:04 PM
****************************************


****************************************

((Table Of Contents))

 

شہزادقیس کی جانب سے خوش آمدید

 

اِنتساب

 

لاحاصل

 

عہدِ مسجود میں قیام غزل

 

مُرشِدِ رُشد کا کلام غزل

 

سُر بھری فاختہ کا نام غزل

 

شاعری کے فلک پہ بام غزل

 

اَگرچہ شہر میں کُل سو ، پچاس ہوتے ہیں

 

پرانے گھر کو گرایا تو باپ رونے لگا

 

چھڑی سے چلنا سکھایا تو باپ رونے لگا

 

نیا زَمانہ جو آیا تو باپ رونے لگا

 

حکیم کو جو دِکھایا تو باپ رونے لگا

 

پھر آئی سالگرہ لے کے غم جدائی کا

 

چار دِن تو خوشی منانی تھی

 

دوستو ! بس یہی کہانی تھی

 

فُضول بیٹھ کے صفحات بھرتا رہتا ہُوں

 

یہ جو اِنسان عام ہے صاحب

 

کتابیں چاٹنے میں کب کمال ہوتا ہے

 

حُسن کی روشنی جھلملانے لگی

 

ٹکٹکی پر مری جھنجھلانے لگی

 

وُہ مجھ کو سوچ رہی ہو گی ڈَرتا رہتا ہُوں

 

اُصول عزیز ہمیں جان سے زِیادہ تھے

 

ایک دِلدار کی ضَرورَت ہے

 

کام غم سے کمال لیتے ہیں

 

منہ دِکھائی میں لعل لیتے ہیں

 

بدن کی ڈور ہِلاتا ہے کون ، کیا معلوم

 

محبت کی پہلی اَذاں بیٹیاں

 

گیسوؤں پر لکھی کتاب ہو تم

 

جس جگہ بھی حرام چلتا ہے

 

ستارے ہوتے تھے اور اُن پہ غور ہوتا تھا

 

رُوح میں ’’ جسم ‘‘ ڈال سکتے ہیں

 

پیار جس کو بگاڑ دیتا ہے

 

وَقت کا زَہر کھا لیا جائے

 

اور کیا اِنتظام ہے صاحب ؟

 

مہکتی خوشیوں کی تعبیر لائے سال نیا

 

چاند کے دِل پہ ڈَس رَہا ہو گا

 

غرق ہوتی ہُوئی شراب کا دُکھ

 

پنکھڑی دِل کو گدگداتی ہے

 

حُبّ و محبوب و محبت کا ہے گلدان غزل

 

دَشت پل بھر میں چھان دیتے ہیں

 

سخت حیران کر کے چھوڑ گیا

 

نئے خیال مصیبت میں ڈال دیتے ہیں

 

زِندگی ، آگہی سے مشکل ہے

 

ایک روبوٹ پر لگانے کو

 

حُسن مِٹی ہے ، اَشک پانی ہے

 

زِندگی نے جو کل سنانی ہے

 

اَپنی سوچوں کے تضادات پہ ہنس پڑتا ہُوں

 

غزل سکون سے سنیے بدن کو ڈھیلا کریں

 

عشق کرنے کے جو نقصان سمجھ لیتا ہے

 

۔ اختتام ۔ مجموعہ کلام "غزل" ۔



((Begin Text))
****************************************


****************************************

شہزادقیس کی جانب سے خوش آمدید


****************************************
شہزادقیس کی جانب سے خوش آمدید
مجموعہ کلام #غزل میں شامل اشعار
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

اِنتساب


****************************************
اِنتساب
ایک "آزاد" نظم کے نام
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

لاحاصل


****************************************
لاحاصل
گنوا کے لیلیٰ کو کچھ بہترین غزلیں قیسؔ

جو لکھ بھی لیں ہمیں نقصان تو ہُوا پھر بھی
#شہزادقیس

.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

عہدِ مسجود میں قیام غزل


****************************************
عہدِ مسجود میں قیام غزل
تجھ کو پہنچے مرا سلام غزل

لفظ کو مرتبے پہ رَکھنا ہے
بے مثال عدل کا نظام غزل

شاہ اَپنا قصیدہ آپ پڑھے
پڑھ رہے ہیں سبھی عوام غزل

لفظ متضاد مل کے رہتے ہیں
تین تلواروں کی نیام غزل

بادشاہت کو اِس سے خطرہ ہے
تم سمجھتے ہو جس کو عام غزل

واعظِ شہر گر سمجھ سکتا
دوڑ کر کہتا ، اَلحرام غزل

گنجِ مخفی ہے یہ رِہائی کا
عقل مندوں کی ہے اِمام غزل

سنگِ مرمر کا پھول ، تاج مَحَل
عشق کا حُسنِ اِہتمام غزل

دار منصور کو چڑھا دو گے !
حشر تک لے گی اِنتقام غزل

حسن کے آسمان ، حکم چلا
لکھ رہا ہے ترا غلام غزل

قیسؔ ! جو یہ غزل پسند کرے
لکھو اُس خوش نظر کے نام غزل !

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

مُرشِدِ رُشد کا کلام غزل


****************************************
مُرشِدِ رُشد کا کلام غزل
بحرِ عرفانِ جاں کا جام غزل

حُسن کے ’’ دِل ‘‘ میں حُسن مخفی ہے
غیب کا دیتی ہے پیام غزل

خالقِ حُسن کی نزاکت پر
سوچتے رِہنے کا مقام غزل

’’ کُن ‘‘ پہ ہی ’’ واہ واہ ‘‘ اِتنی ہوئی
روزِ محشر ہُوئی تمام غزل

معنویت کی ساقی ء برتر
کہنہ مشقی کا تازہ جام غزل

شعر دَر شعر بحرِ واحد سے
قصرِ توحید کی غلام غزل

آدمی تو شجر سے اَفضل ہے !
فکرِ منصور کو سلام غزل

روشنی ، دِل کے قلب سے پھوٹے
ساقی ء حق کا فیض عام غزل

گریۂ نیم شب کی پالنہار
بے رِیا عبد کا قیام غزل

پیرِ رُومی کی اِقتدا میں پڑھی
نیستانوں میں روز شام غزل

سجدے میں جا کے قیسؔ نے لکھی
جو رُکوع میں تھے اُن کے نام غزل

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

سُر بھری فاختہ کا نام غزل


****************************************
سُر بھری فاختہ کا نام غزل
پھول کا سرسری سلام غزل

گُل پہ مصراع اُتارا خوشبو کا
پنکھ پر تتلی کے تمام غزل

بادَلوں نے لکھی ہے رِم جھِم سے
غسل کرتی کلی کے نام غزل

کلمہ پڑھ کر اُترتی کرنوں نے
جھیل پر لکھی نور فام غزل

اَپنی محنت پہ مسکراتا ہے
باغباں کی سنہری شام غزل

مادَرِ عشق ، بنتِ حُسن و جمال
خواہرِ جاں ، دَھڑکتا جام غزل

ایک پنچھی شجر سے پیار کرے
یعنی محسن کا اِحترام غزل

رات ، جگنو ، گلاب ، اَبر ، بہار
دِل ترے ذوق کا غلام غزل

عاشقوں کی دُعائے خمسہ یہی
یار ، تنہائی ، جام ، شام ، غزل

ایک تتلی یوں ہولے ہولے اڑی
جیسے لے جاتی ہے سلام غزل

قیسؔ کو گُل نے مسکرا کے کہا
باغ میں رات دِن قیام غزل

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

شاعری کے فلک پہ بام غزل


****************************************
شاعری کے فلک پہ بام غزل
شعر کا آخری مقام غزل

اَوج ہے بندش و تخیل کی
قافیے کا ہے اِحترام غزل

اِک سمندر کو کوزہ بند کرو
نام تو طے ہے رَکھ دو نام غزل

صِنفِ نازُک ہے اَدبی صنفوں کی
نازُک اَندام ، خوش کلام غزل

آپ ، صاحب ، حُضُور ، قبلہ ، جناب
اُردُو تہذیب کو سلام غزل

قلتِ وَقت بڑھ رہی ہے اور
مختصر بات کی اِمام غزل

ہر غزل پر قصیدہ لکھو قیسؔ
اور قصیدے کا اِختتام غزل

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

اَگرچہ شہر میں کُل سو ، پچاس ہوتے ہیں


****************************************
اَگرچہ شہر میں کُل سو ، پچاس ہوتے ہیں
ذَہین لوگ ترقی کی آس ہوتے ہیں

لکیر کے ہیں فقیر اَوّل آنے والے سبھی
ذَہین بچے ذِرا بدحواس ہوتے ہیں

جو اِن کو کچھ کہے ، خود آشکار ہوتا ہے
ذَہین ، پانی کا آدھا گلاس ہوتے ہیں

’’کسی نے کیوں کیا ایسا‘‘ پہ خوب سوچتے ہیں
ذَہین ، پائے کے مردُم شناس ہوتے ہیں

خوشی کو جانتے ہیں غم کا ’’ حاصلِ ضمنی ‘‘
ذَہین لوگوں کو غم خوب راس ہوتے ہیں

ذَہین ، دُنیا کو ظاہر پرست مانتے ہیں
سو جب ضَروری لگے خوش لباس ہوتے ہیں

یہ سادہ لوح نظر آنے کے بھی ماہر ہیں
ذَہین چہرے بڑے بے قیاس ہوتے ہیں

ذَہین تخت نشینی کا سوچتے بھی نہیں
یہ تخت و تختے کے بس آس پاس ہوتے ہیں

جو اِن کو روندنے جاتا ہے ، ڈُوب جاتا ہے
ذَہین ، گہرے سمندر پہ گھاس ہوتے ہیں

یہ چونکہ طفل تسلی میں کم ہی آتے ہیں
ذَہین لوگ زِیادہ اُداس ہوتے ہیں

ذَہین ، مجنوں بھی بن سکتے ہیں یہ سوچ کے قیس
کہ ’’ کر گزرنے ‘‘ کی مجنوں اَساس ہوتے ہیں

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

پرانے گھر کو گرایا تو باپ رونے لگا


****************************************
پرانے گھر کو گرایا تو باپ رونے لگا
(باپ کا جذباتی بحران)

پرانے گھر کو گرایا تو باپ رونے لگا
خوشی نے دِل سا دُکھایا تو باپ رونے لگا

جو اَمی نہ رہیں تو کیا ہُوا کہ ہم سب ہیں
جواب بن نہیں پایا تو باپ رونے لگا

نہ جانے کب سے وُہ نمبر ملا رَہا تھا مرا
کہ جونہی فون اُٹھایا تو باپ رونے لگا

ہزار بار اُسے روکا تھا میں نے سگریٹ سے
جو آج چھین بجھایا تو باپ رونے لگا

کئی عزیزوں کے مرنے پہ باپ رویا نہیں
جو آج نہ رہا تایا تو باپ رونے لگا

اَکیلے پن کے شکنجے میں اِتنا بے بس تھا
گھڑی نے ایک بجایا تو باپ رونے لگا

نہ جانے قیسؔ نے کس جذبے سے یہ کیا لکھا
کہ جونہی پڑھ کے سنایا تو باپ رونے لگا

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

چھڑی سے چلنا سکھایا تو باپ رونے لگا


****************************************
چھڑی سے چلنا سکھایا تو باپ رونے لگا
(باپ کا جسمانی بحران: غزل)

چھڑی سے چلنا سکھایا تو باپ رونے لگا
سہارا دے کے بٹھایا تو باپ رونے لگا

یہ رات کھانستے رہتے ہیں کوفت ہوتی ہے
بہو نے سب میں جتایا تو باپ رونے لگا

جوان بیٹے کو دیکھا تو کھلکھلا اُٹھا
جب آئینہ نظر آیا تو باپ رونے لگا

اَذان بیٹے کے کانوں میں دے رہا تھا میں
اَذان دیتے جو پایا تو باپ رونے لگا

مریضِ قلب کو گاڑی میں ڈالنے کے لیے
جو رات گود اُٹھایا تو باپ رونے لگا

طبیب کہتا تھا پاگل کو کچھ بھی یاد نہیں
گلے سے میں نے لگایا تو باپ رونے لگا

یہ غالبا میرے اَشکوں کی ٹیس تھی کہ قیسؔ
لَحَد میں اُس کو لٹایا تو باپ رونے لگا

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

نیا زَمانہ جو آیا تو باپ رونے لگا


****************************************
نیا زَمانہ جو آیا تو باپ رونے لگا
(باپ کا زَمانی بحران: غزل)

نیا زَمانہ جو آیا تو باپ رونے لگا
پرانا کچھ بھی نہ پایا تو باپ رونے لگا

کل اُس کے دوست کو باہر سے ٹالنے کے بعد
اُسے فقیر بتایا تو باپ رونے لگا

سمجھ میں آئے نہ بوڑھے کے فون کے فیچرز
مذاق میں نے اُڑایا تو باپ رونے لگا

کباڑئیے کو بمشکل بہت سا کاٹھ کباڑ
جو آج بیچ کے آیا تو باپ رونے لگا

کل ایک شہر زَدہ کو میں گاؤں لے کے گیا
جو گاؤں ، گاؤں نہ پایا تو باپ رونے لگا

پرانی چیزوں کی بوسیدہ سی دُکان میں قیسؔ
جب آئینہ نظر آیا تو باپ رونے لگا

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

حکیم کو جو دِکھایا تو باپ رونے لگا


****************************************
حکیم کو جو دِکھایا تو باپ رونے لگا
(باپ کا مالی بحران: غزل)

حکیم کو جو دِکھایا تو باپ رونے لگا
علاج سستا کرایا تو باپ رونے لگا

ہمیں بنا دِیئے کمرے خود اُس کو ٹی وی پر
مدینہ جب نظر آیا تو باپ رونے لگا

بہن رَوانگی سے پہلے پیار لینے گئی
جو کچھ بھی دے نہیں پایا تو باپ رونے لگا

تمام کمرے تو بچوں میں ہو گئے تقسیم
گلی میں اُس کو سُلایا تو باپ رونے لگا

بٹھا کے رِکشے میں ، کل شب رَوانہ کرتے ہُوئے
دِیا جو میں نے کرایہ تو باپ رونے لگا

کیا ہی کیا ہے بھلا آج تک ہمارے لیے
سوال جونہی اُٹھایا تو باپ رونے لگا

دوائی لے کے وُہ آیا تھا اَب بھی یاد ہے قیسؔ
جو مانگا میں نے بقایا تو باپ رونے لگا

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

پھر آئی سالگرہ لے کے غم جدائی کا


****************************************
پھر آئی سالگرہ لے کے غم جدائی کا
ذِرا بھی بھر نہ سکا زَخم نارَسائی کا

کسی نے اِتنی مروت سے دی مبارِک باد
کہ کڑوا زَہر لگا ذائقہ مٹھائی کا

تمام سال غمِ جاں کی آبیاری کی
یہ دِن تو آنا تھا پھر فصل کی کٹائی کا

جو جشنِ ’’سال گرہ‘‘ میں مگن ہیں اُن سے کہو
اِک اور ’’سال گرا‘‘ عمر کی چُنائی کا

جب ایک ساتھ سبھی یکساں خوش نظر آئے
ہنسی کا موقع لگا مجھ کو جگ ہنسائی کا

قسم خدا کی مجھے اِتنا دَرد نہ ہوتا
گر اُس کو فائدہ ہو جاتا بے وَفائی کا

جو چند تالیاں سننے کو قیسؔ کاٹ دِیا
وُہ دِل کا کیک تھا اِک عمر کی کمائی کا

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

چار دِن تو خوشی منانی تھی


****************************************
چار دِن تو خوشی منانی تھی
زِندگی ختم ہو ہی جانی تھی

راجہ ، رانی تو کل کے بچے ہیں
داستاں وَقت سے پرانی تھی

رُوح کا ہم طواف کرتے رہے
جسم ، دَراَصل زِندگانی تھی !

جان کی گر اَمان مل جاتی
اِک غزل کان میں سنانی تھی

مجھ کو پاگل بنا رہے تھے لوگ
میں نے مجنوں کی بات مانی تھی

تُو نے مرہم لگا کے ظلم کیا !
میرے پاس اِک یہی نشانی تھی

قیسؔ گر میرؔ سی بھی کہتے غزل
لیلیٰ نے تھوڑی گنگنانی تھی !

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

دوستو ! بس یہی کہانی تھی


****************************************
دوستو ! بس یہی کہانی تھی
میں زَمینی ، وُہ آسمانی تھی

خواب کا بچہ کس گھڑی ٹُوٹا
جب مجھے پنکھڑی چبانی تھی

میں رَواں شعر خوب لکھتا تھا
اُس کی ہر بات میں روانی تھی

اِس لیے کر رہا تھا میرا طواف
اُس نے میری ’’ بَلی‘‘ چڑھانی تھی

نام بھی رَب کا لیتا تھا جلاد
اور آنکھوں میں مہربانی تھی

جس جگہ آج کل ہے قبرستان
ایک دیوی کی حکمرانی تھی

تب تمہیں قیسؔ کیوں نہ یاد آیا ؟
جب جوانی پہ نوجوانی تھی

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

فُضول بیٹھ کے صفحات بھرتا رہتا ہُوں


****************************************
فُضول بیٹھ کے صفحات بھرتا رہتا ہُوں
میں اَپنے آپ کو اِلہام کرتا رہتا ہُوں

اَگر ، مگر ، نہیں ، ہرگز کی کند قینچی سے
اَنوکھے خوابوں کے پَر ، شَر کترتا رہتا ہُوں

میں سانس نگری کا بے حد عجیب مالی ہُوں
لگائے پودوں کے بڑھنے سے ڈَرتا رہتا ہُوں

نجانے کس نے اُڑا دی کہ ’’ دِن معین ہے ‘‘
یقین مانیے میں روز مرتا رہتا ہُوں

بہت سے شعروں کے آگے لکھا ہے ’’ نامعلوم ‘‘
بہت سے شعر میں کہہ کر مکرتا رہتا ہُوں

مرے وُجود کو اَشکوں نے گوندھ رَکھا ہے
ذِرا بھی خشک رَہوں تو بکھرتا رہتا ہُوں

بہت سے کاموں میں خود کار ہو گیا ہُوں قیسؔ
میں خود کو کہہ کے ’’ سدھر جا ‘‘ ، سدھرتا رہتا ہُوں

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

یہ جو اِنسان عام ہے صاحب


****************************************
یہ جو اِنسان عام ہے صاحب
حُسن والوں کا کام ہے صاحب

اِن کے معصوم رُخ پہ نہ جانا
سادَگی ایک دام ہے صاحب

رُخ بدلنے کے فَن کا اِن کے ہاں
رُوپ سنگھار نام ہے صاحب

اُس پہ لکھتا ہُوں ، اُس نے ایسا کہا ؟
مینڈکی کو زُکام ہے صاحب

اِنتساب اُس کے نام لکھا مگر
وُہ تو بس اِنتقام ہے صاحب

اَپنی اَوقات سے بڑی شے کی
آرزُو بھی حرام ہے صاحب

حُسن والوں کو چھیڑتے رِہنا
قیسؔ کا تو یہ کام ہے صاحب

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

کتابیں چاٹنے میں کب کمال ہوتا ہے


****************************************
کتابیں چاٹنے میں کب کمال ہوتا ہے
جو عشق کرتا ہے وُہ خوش خیال ہوتا ہے

نقاب والیوں کے پیچھے نہ بھٹک لڑکے
کہ باحجاب حسیں ، خال خال ہوتا ہے

بدن شراب میں دُھویا ہُوا طلسمِ خیال
کہ جیسے نیند میں کم سن غزال ہوتا ہے

جو وَقتِ رُخصتِ محمل ، تھا حال مجنوں کا
کچھ ایسا حال مرا سارا سال ہوتا ہے

وُہ اَپنے عاشقوں کا ، ذِکر چھیڑ دیتے ہیں
مرے فرار کا جب اِحتمال ہوتا ہے

شکار ہونے کی لذت پہ مرتی ہیں شاید
وَگرنہ مچھلیوں کے پاس جال ہوتا ہے

میں اُن کو دیکھتے ہی قیسؔ ہوش کھو دُوں گا
کہ پاگلوں پہ سبھی کچھ حلال ہوتا ہے

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

حُسن کی روشنی جھلملانے لگی


****************************************
حُسن کی روشنی جھلملانے لگی
ایک لڑکی بہت یاد آنے لگی

واہ چھن چھن پہ کر بیٹھا واحسرتا
وُہ قدم چپکے چپکے اُٹھانے لگی

غور سے میری باتوں کو سننے سمیت
مجھ پہ حربے کئی آزمانے لگی

خوب لکھتے ہیں آپ ، اُس نے شب کہہ دِیا
عمر بھر کی کمائی ٹھکانے لگی

چور زُلفوں کے تنکے سے پکڑا گیا
دِل چرا کر وُہ نظریں چرانے لگی

ایک دُنیا کو گڑیا پہ رَشک آ گیا
لیلیٰ سج دَھج کے گڑیا سجانے لگی

وُہ کلی چومنے اِس اَدا سے جھُکی
قیسؔ کو حُسنِ مقطع سکھانے لگی

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

ٹکٹکی پر مری جھنجھلانے لگی


****************************************
ٹکٹکی پر مری جھنجھلانے لگی
پھر کلائی میں کنگن گھمانے لگی

رات چوما اُسے اور ایسی جگہ
وُہ غزل با وَزَن گنگنانے لگی

موت کے بعد تو حشر تک نیند تھی
آپ کی یاد کیونکر ستانے لگی

من کے مندر میں بھگوان ہنسنے لگے
سندری عشق گیتا سنانے لگی

مورتی بن کے میں اُس کی سنتا رہا
خوب اَندر کی باتیں بتانے لگی

رائیگاں تھا سفر دائروں کا مگر
زِندگی تم سے مل کر ٹھکانے لگی

بھول جانے کا اُس کے وَظیفہ کیا
قیسؔ وُہ دوگنا یاد آنے لگی

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

وُہ مجھ کو سوچ رہی ہو گی ڈَرتا رہتا ہُوں


****************************************
وُہ مجھ کو سوچ رہی ہو گی ڈَرتا رہتا ہُوں
سو آدھی رات کو اُٹھ کر سنورتا رہتا ہُوں

کسی کے حُسن کا ہے رُعب اِس قَدَر مجھ پر
میں خواب میں بھی گلی سے گزرتا رہتا ہُوں

دُعا کو ہاتھ اُٹھاتا تو اُس پہ حرف آتا
اَبھی تو سستی پہ اِلزام دَھرتا رہتا ہُوں

اُدھورے قصے کئی کاندھا مانگتے ہیں مرا
میں کھنڈرات میں اَکثر ٹھہرتا رہتا ہُوں

عجیب بات ہے عبرانی سیکھنے کے لیے
یہودی لڑکیوں سے عشق کرتا رہتا ہُوں

تمام لوگ مرا آئینہ ہیں ، اُن کے طفیل
میں اَپنی ذات کے اَندر اُترتا رہتا ہُوں

بکھرنا موتیوں کی مالا کا دُرست ہے قیسؔ
میں ایک دانہ ہُوں ، پھر کیوں بکھرتا رہتا ہُوں

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

اُصول عزیز ہمیں جان سے زِیادہ تھے


****************************************
اُصول عزیز ہمیں جان سے زِیادہ تھے
کسی زَمانے میں یارو ہم اِتنے سادہ تھے

لباس جو بھی ملا ہے خدا کا شکر کرو
کہ تم تو آئے ہی دُنیا میں بے لبادہ تھے

برا نہ مانیں تو کہیے اِرادہ کیا تھا پھر
اَگر جناب کے سب ظلم بے اِرادہ تھے

پرانے دور کی تاریخ پڑھ کے چونک گیا
کہ اُس زَمانے میں سارے خدا ہی مادہ تھے

ہم اَپنے فقر کا رونا وَہاں پہ کیا روتے
جہاں وَزیر ، شہنشاہ پا پیادہ تھے

اُسے معاف نہ کرتے تو اور کیا کرتے
بقایا عمر سے شکوے کہیں زِیادہ تھے

شکست کھا کے یہ نکتہ سمجھ میں آیا قیسؔ
کہ دِل ، دَماغ کی حد سے کہیں کشادہ تھے

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

ایک دِلدار کی ضَرورَت ہے


****************************************
ایک دِلدار کی ضَرورَت ہے
ہاں مجھے پیار کی ضَرورَت ہے

ڈُھونڈتی پھر رہی ہے خوشبو بدن
پھول ، مہکار کی ضَرورَت ہے

میں ہَوس پیشہ تو نہیں جاناں
عشق ، فنکار کی ضَرورَت ہے

پیار بُوٹے کی آبیاری کو
روز اِظہار کی ضَرورَت ہے

وَصل سے دُھلتے ہیں گناہ جبھی
شیخ کو چار کی ضَرورَت ہے

آپ گِن گِن کے بوسے دیتے ہیں
ہم کو بھرمار کی ضَرورَت ہے

سر ہلا کر کہا یہ لیلیٰ نے
قیسؔ کو مار کی ضَرورَت ہے

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

کام غم سے کمال لیتے ہیں


****************************************
کام غم سے کمال لیتے ہیں
رَنج غزلوں میں ڈھال لیتے ہیں

نام کا بھی نہیں کوئی ہمدرد
اور ہم دَرد پال لیتے ہیں

روز اِک سانحے کی برسی پر
دِل ، لہو میں اُبال لیتے ہیں

کچھ نمک خوار جب دِکھائی دیں
زَخم ، چاقو نکال لیتے ہیں

شاعری یعنی خوش فہم مل کر
خواب میں حصہ ڈال لیتے ہیں

بعض جملوں کے گھاؤ بھرنے میں
تیس ، چالیس سال لیتے ہیں

قیسؔ ہم کیوں کسی کے طعنوں کو
ڈائری میں سنبھال لیتے ہیں

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

منہ دِکھائی میں لعل لیتے ہیں


****************************************
منہ دِکھائی میں لعل لیتے ہیں
وَرنہ گھونگھٹ نکال لیتے ہیں

دیکھ کر اُن کو اِنکشاف ہُوا
پھول بھی سر پہ شال لیتے ہیں

وُہ وَہاں سے بدن اُٹھا لائے
ہم جہاں سے خیال لیتے ہیں

یاد بازار میں وُہ جب آئیں
سیب ہم خوب لال لیتے ہیں

اُن سے آنچل بھی کم سنبھلتا ہے
لوگ خود کو سنبھال لیتے ہیں

ایک چومی کلی چرا کے ہم
بوسہ قدرے حلال لیتے ہیں

پڑھنے والے ہیں قیسؔ اِتنے شریر
اَپنا مطلب نکال لیتے ہیں

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

بدن کی ڈور ہِلاتا ہے کون ، کیا معلوم


****************************************
بدن کی ڈور ہِلاتا ہے کون ، کیا معلوم
ہمارے جسم میں بیٹھا ہے کون ، کیا معلوم

ہمیں تو جا بجا شبنم دِکھائی دیتی ہے
فلک پہ شب ڈَھلے روتا ہے کون ، کیا معلوم

سنہری تتلیاں منڈلا رِہی ہیں سر پہ مرے
مرے خیال میں آیا ہے کون ، کیا معلوم

اُداس رات ہے پیدائشی پسند ہمیں
ہماری ذات میں رُوٹھا ہے کون ، کیا معلوم

جو جنگ نہ ہو تو سب فوجی ایک جیسے ہیں
جوان کون ہے ، بونا ہے کون ، کیا معلوم

زَمین چکّی ہے ، محور کے گرد گھومتی ہے
اَب اِس کے پاٹ میں پستا ہے کون ، کیا معلوم

جہاں کے سامنے پڑھتے ہیں شعر ہم ہی قیسؔ
ہمارے کان میں پڑھتا ہے کون ، کیا معلوم

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

محبت کی پہلی اَذاں بیٹیاں


****************************************
محبت کی پہلی اَذاں بیٹیاں
عنایاتِ رَب کی ہے جاں بیٹیاں

نبیؐ کو سمجھتے ہو گر خوش نصیب !!
سعادَت کا پھر ہیں نشاں بیٹیاں

وَہاں رَب کی رَحمت گزرتی نہیں
جہاں پر بھریں سسکیاں بیٹیاں

محمدؐ کا پیرو نہ خود کو کہے
ذِرا بھی ہیں جس پہ گراں بیٹیاں

مِرے بیٹے یہ کوئی شکوہ نہیں
ملاتی ہیں پر ہاں میں ہاں بیٹیاں

ہر اِک آنکھ میں اَشک بھرنے لگیں
جنازے پہ نوحہ کناں بیٹیاں

خدا پیار کرتا ہے ماں جیسا قیسؔ
خدا ہی بناتا ہے ماں بیٹیاں

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

گیسوؤں پر لکھی کتاب ہو تم


****************************************
گیسوؤں پر لکھی کتاب ہو تم
خالقِ شب کا اِنتساب ہو تم

سجدہ کرنے سے جو گریزاں تھا
اُس کو دنداں شکن جواب ہو تم

رَقص کرتی ہُوئی کنواری کلی
سَر ہِلاتا ہُوا گلاب ہو تم

جام اَنگڑائی دیکھ کر ٹُوٹا
مے کدے میں اُگا شباب ہو تم

لب پہ تازہ لہو ہے ، سُرخی نہیں
سب کے دِل چوزے ہیں ، عقاب ہو تم

جو تمہیں پا لے اُس پہ رَحمت ہو
باقی سب کے لیے عذاب ہو تم

قیسؔ ہے اِنتخاب لاکھوں کا
قیسؔ کا واحد اِنتخاب ہو تم

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

جس جگہ بھی حرام چلتا ہے


****************************************
جس جگہ بھی حرام چلتا ہے
شیخ و واعظ کا کام چلتا ہے

جَب تلک عام لوگ مرتے رہیں
تَب تلک قتلِ عام چلتا ہے

جان چھُوٹی نہ جان جانے سے
جِسم سے اِنتقام چلتا ہے

مَردِ دَرویش گر ٹھہر جائے !
اُس کی جانب مَقام چلتا ہے

جوڑا ، بے جوڑ ہو تو پھر صاحب !
عُمر بھر اِختتام چلتا ہے

حُسن کی مے کشی سے کیا نسبت
بوسہ اُڑتا ہے ، جام چلتا ہے

چابی ، تالہ عجیب شے ہے قیسؔ
کس طرح یہ نظام چلتا ہے

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

ستارے ہوتے تھے اور اُن پہ غور ہوتا تھا


****************************************
ستارے ہوتے تھے اور اُن پہ غور ہوتا تھا
ہماری آنکھ میں خوابوں کا شور ہوتا تھا

اے دھان پان سی لڑکی ، ہمارے وَقتوں میں
حسین بازُوؤں میں خاصا زور ہوتا تھا

شریر لڑکو ! ہم اِتنے شریف ہوتے تھے
کسی کو سوچتے تو دِل میں چور ہوتا تھا

دَھنک قبا کوئی گزرا تو دِل کو یاد آیا
کبھی ہمارے گھروں میں بھی مور ہوتا تھا

وُہ مر تو جاتے تھے ، محمل سفید رکھتے تھے
سلیقہ عشق پرستوں کا اور ہوتا تھا

ہمارے چشمے محبت کی حمد پڑھتے تھے
ہمارے خطّے میں عجمی تلور ہوتا تھا

ہم اَگلی نسل کو کیسے بتا سکیں گے قیسؔ
ہمارا دور کتابوں کا دور ہوتا تھا

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

رُوح میں ’’ جسم ‘‘ ڈال سکتے ہیں


****************************************
رُوح میں ’’ جسم ‘‘ ڈال سکتے ہیں
قبر سے دِل نکال سکتے ہیں

اِک دَرِندہ یہ دیر سے سمجھا
ہم دَرندے بھی پال سکتے ہیں

مرغیوں پر کیوں رَحم کرنے لگے
جب یہ اَنڈا اُبال سکتے ہیں

ہم عداوَت میں بے اُصول نہیں
آپ پگڑی اُچھال سکتے ہیں

غم اَگر دیتا ہے کریم و خبیر
ہم یقینا سنبھال سکتے ہیں

آپ اَگر کھُل کے حُسن دِکھلائیں
ہم غزل میں بھی ڈھال سکتے ہیں

قیسؔ کچھ لوگ اِتنے سُندر ہیں
موت کو ہنس کے ٹال سکتے ہیں

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

پیار جس کو بگاڑ دیتا ہے


****************************************
پیار جس کو بگاڑ دیتا ہے
دِل وُہی توڑ تاڑ دیتا ہے

عشق بن اَن گنت سجود و قیام
ایک سجدہ اُجاڑ دیتا ہے

سُرخ آنچل میں لپٹا ایک خیال
دِل میں مضمون گاڑ دیتا ہے

حُسن تو دامنِ پیمبر بھی
پہلی فرصت میں پھاڑ دیتا ہے

سنگ اَسدؔ پہ کوئی اُٹھائے اَگر
اُس کا سر مجنوں پھاڑ دیتا ہے

آئینہ ہے شریف زادہ مگر
حُسن والے بگاڑ دیتا ہے

قیسؔ کے کوچے میں سگِ لیلیٰ
شیر کو بھی لتاڑ دیتا ہے

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

وَقت کا زَہر کھا لیا جائے


****************************************
وَقت کا زَہر کھا لیا جائے
خواب قدرے بڑھا لیا جائے

عاشقی واجبِ کِفائی ہے
دار پہ سر سجا لیا جائے

دین کو کفر کی ضرورَت ہے
آخری بت بچا لیا جائے

میں نے سب خواہشوں کو مار دِیا
مجھ کو زِندہ اُٹھا لیا جائے

عدل تو دیکھ بھی نہیں سکتا
رَنج دِل میں دَبا لیا جائے

یاد اُس کی نبھانا جانتی ہے
یاد سے دِل لگا لیا جائے

اِس غزل سے تھا قیسؔ کا مقصد
آپ کو کچھ ستا لیا جائے

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

اور کیا اِنتظام ہے صاحب ؟


****************************************
اور کیا اِنتظام ہے صاحب ؟
صرف مے تو حرام ہے صاحب

چند دِلچسپ نعمتوں کے بغیر
جام بھی کوئی جام ہے صاحب

ڈھانپ کر لاش ، سنتری بولا:
’’ حُسن والوں کا کام ہے صاحب ‘‘

ہاں وُہی جس نے سوچا تاج مَحَل
وُہ بھی اَپنا غلام ہے صاحب

راستوں کو کوئی عزیز نہیں
عادِلانہ نظام ہے صاحب

خود کشی کے کئی طریقے ہیں
عشق ہی سب سے عام ہے صاحب

آپ کو جو پسند آیا وُہی
قیسؔ کا کُل کلام ہے صاحب

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

مہکتی خوشیوں کی تعبیر لائے سال نیا


****************************************
مہکتی خوشیوں کی تعبیر لائے سال نیا
قدم قدم پہ محبت دِکھائے سال نیا

سنہرے نُور کی خوشبو سے صبحیں روشن ہوں
شریر شاموں کے ہمراہ آئے سال نیا

تُو جس کو دیکھ لے وُہ دِل سے تیرا ہو جائے
وِصالِ یار کو ممکن بنائے سال نیا

بہاریں چومیں قدم ، تتلیاں طواف کریں
وَفا کے چاروں طرف گُل کھِلائے سال نیا

اے میرے محرمِ جاں ، صیغۂ طلب کے اَمیر
مجھے غلامی میں تیری جھکائے سال نیا

نگاہِ فقر ملے ، دِل ترا ہو قلبِ سلیم
چراغِ نُورِ ہدایت جلائے سال نیا

دُعائے قیسؔ ہے تُو جس کو یہ غزل بھیجے
اُسے بھی اِتنا ہی عمدہ بنائے سال نیا

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

چاند کے دِل پہ ڈَس رَہا ہو گا


****************************************
چاند کے دِل پہ ڈَس رَہا ہو گا
سانپ سیڑھی پہ چڑھ چکا ہو گا

مہرے آزاد ہو گئے ہوں گے
چھ ، چھٹی بار آ گیا ہو گا

ہو رہی ہو گی دُہری سُرخ بساط
پنکھا مڑ مڑ کے دیکھتا ہو گا

آ گئی ہو گی باری دُشمن کی
یار تو چال چل چکا ہو گا

چہرے پہ بارہ بج گئے ہوں گے
سخت مشکل میں دَبدبہ ہو گا

چاند سے اَبر ہٹ گئے ہوں گے
جھیل میں عکس ہِل رَہا ہو گا

چڑیا یہ کہہ کے اُڑ گئی شب قیسؔ
تم تو کہتے تھے معجزہ ہو گا

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

غرق ہوتی ہُوئی شراب کا دُکھ


****************************************
غرق ہوتی ہُوئی شراب کا دُکھ
شاخ پر سوکھتے گلاب کا دُکھ

دُکھ ہے رَدّی کتاب کو بھی مگر
آہ ! اِک اَن چھَپی کتاب کا دُکھ

وَقت کے زَرد غازے میں ملبوس
ایک ناکام اِنقلاب کا دُکھ

دِن چڑھے اُٹھنے والے کیا جانیں
رات بھر بھیگتے گلاب کا دُکھ

اِک پرانا لباس جانتا ہے
شہر کے سب سے کامیاب کا دُکھ

کاش سب خواب ہوتے ناممکن
آہ ! ممکن ترین خواب کا دُکھ

کچھ سوال اَپنے بھی ہیں رَب سے قیسؔ
دیکھیے کس کو ہو حساب کا دُکھ

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

پنکھڑی دِل کو گدگداتی ہے


****************************************
پنکھڑی دِل کو گدگداتی ہے
یاد اُس شوخ کی جب آتی ہے

میں رِیاضی پڑھاتا ہُوں اُس کو
وُہ مجھے شاعری پڑھاتی ہے

ناگ اِنسان بننے لگتے ہیں
رات جب بانسری بجاتی ہے

جگنو کونپل پہ نیم خوابیدہ
تنگ راہوں پہ دُھند چھاتی ہے

چاند اِک آنکھ میچ لیتا ہے
جھیل میں داستاں نہاتی ہے

ایک شاعر کے کلمہ پڑھنے سے
بت پرستی فروغ پاتی ہے

غزلیں پڑھتا ہُوں نیچے بیٹھ کے قیسؔ
منہ چھپا کر وُہ مسکراتی ہے

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

حُبّ و محبوب و محبت کا ہے گلدان غزل


****************************************
حُبّ و محبوب و محبت کا ہے گلدان غزل
دیگر اَصناف ہیں دَرباری تو سلطان غزل

بے وَفا لوگوں کو اَشعار سے چڑ ہوتی ہے
بے وَفا لوگوں کی کرواتی ہے پہچان غزل

کتنی باتیں جو ہم آپس میں نہیں کر سکتے
کہنے سننے کا بنا دیتی ہے اِمکان غزل

نام بھی اِس کا تو باقی ہے غزل کے صدقے
اور واعظ پہ جتاتی نہیں اِحسان غزل

جب کہا آپ نے شیطانی کہاں سے سیکھی
بولے لکھواتا ہے تم کو بھی تو شیطان غزل

سجدہ کر سکتے نہیں یہ بھی بشر ، وُہ بھی بشر
اِس لیے لکھتے ہیں اِنسان پہ اِنسان غزل

قیسؔ نے عالمِ حیرانی میں لکھی شاید
پڑھ کے ہو جاتا ہے ہر شخص ہی حیران غزل

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

دَشت پل بھر میں چھان دیتے ہیں


****************************************
دَشت پل بھر میں چھان دیتے ہیں
سب سیاسی بیان دیتے ہیں

جب نیا بت تراشتے ہیں لوگ
کان میں ہم اَذان دیتے ہیں

بھوکے ، ننگے ہی اَپنے لیڈر کو
روٹی ، کپڑا ، مکان دیتے ہیں

حکمرانی کا ہے یہ پہلا اُصول
تیر لے کر کمان دیتے ہیں

اَچھی لڑکی ! گلابی اُردُو نہ بول
ہم تلفظ پہ جان دیتے ہیں

ہم پہ مرتی ہے ایک اُستانی
ہم سبق پر دھیان دیتے ہیں

قیسؔ ہم شاعری نہیں کرتے
دَھڑکنوں کو زَبان دیتے ہیں

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

سخت حیران کر کے چھوڑ گیا


****************************************
سخت حیران کر کے چھوڑ گیا
پورا کرتے ہی چھَن سے توڑ گیا

کرچیاں جوڑیں تو بنا کچھ اور
وُہ مجھے اِتنا توڑ پھوڑ گیا

یار ! کل شہر میں کچھ ایسا ہُوا
لاش اِحساس کی بھنبھوڑ گیا

ایک ہی موڑ میں مُڑا تھا غلط
اور پھر قبر تک وُہ موڑ گیا

خواب میں سلطنت بنائی تھی
کوئی مجھ کو جگا کے دوڑ گیا

میں تھا تابوت میں پڑا فرعون
زَرد مکڑا کمر جھنجھوڑ گیا

دوڑ تھی قیسؔ آگے بڑھنے کی
وَقت ہم سب کو پیچھے چھوڑ گیا

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

نئے خیال مصیبت میں ڈال دیتے ہیں


****************************************
نئے خیال مصیبت میں ڈال دیتے ہیں
مثال مانگو تو میری مثال دیتے ہیں

کسی کسی سے وُہ کرتے ہیں معذرت دِل سے
ہمارے جیسوں کو تو ہنس کے ٹال دیتے ہیں

سفید مہرہ ہے بہتر سیاہ مہرے سے
ہمیں یہ سوچنے کو پانچ سال دیتے ہیں

جواب ڈُھونڈنے میں ذِہن کھلتا جاتا ہے
عظیم شعر فقط کچھ سوال دیتے ہیں

اَگر کوئی یہ پکارے کہ اَب کہاں شاعر
مرے رَقیب بھی میری مثال دیتے ہیں

یہاں فقیر بھی کاسے بغیر آتا ہے
یہ لوگ کاسے پہ بھی ہاتھ ڈال دیتے ہیں

تم ایک شعر کی چوری پہ چیخ اُٹھے قیسؔ
یہ بچہ چھین کے ماں کو نکال دیتے ہیں

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

زِندگی ، آگہی سے مشکل ہے


****************************************
زِندگی ، آگہی سے مشکل ہے
بندگی ، زِندگی سے مشکل ہے

رَب کا ذاتی مفاد چونکہ نہیں
نوکری ، بندگی سے مشکل ہے

دِل میں رَکھنا ہے دِل کے مالک کو
عاشقی ، نوکری سے مشکل ہے

عشق میں دِل ، دِماغ یکسو ہیں
دِل لگی ، عاشقی سے مشکل ہے

لاکھ بے چینیاں پرونی ہیں
شاعری ، دِل لگی سے مشکل ہے

سخت مشکل ہے موزوں رَکھنا اِسے
دوستی ، شاعری سے مشکل ہے

اَپنے وِجدان کو ہرانا ہے
دُشمنی ، دوستی سے مشکل ہے

اَجنبی بن کے پاس رہنا ہے
بے رُخی ، دُشمنی سے مشکل ہے

دُوسروں کا نوالہ بننا ہے
سادگی ، بے رُخی سے مشکل ہے

علمِ اِسما نے قیسؔ سمجھایا
آگہی ، سادگی سے مشکل ہے

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

ایک روبوٹ پر لگانے کو


****************************************
ایک روبوٹ پر لگانے کو
پھول بھیجے ہیں کارخانے کو

مستقل ہنستی گڑیا لایا ہُوں
زِندگی کی ہنسی اُڑانے کو

یار اِحسان مند رہتے ہیں
مل گیا ایک اَنار کھانے کو

اُف کسی طور روٹھتی ہی نہیں
میں ترس ہی گیا منانے کو

ہے تو آخر مشین ہی بھیا
کیا کروں اِس کے جھینپ جانے کو

اور سب کچھ ملا لیا ہم نے
رِہ گیا دِل سے دِل ملانے کو

سب طلب اور رَسد کا کھیل ہے قیسؔ
کیا کریں تھا یہی بنانے کو

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

حُسن مِٹی ہے ، اَشک پانی ہے


****************************************
حُسن مِٹی ہے ، اَشک پانی ہے
عشق ، جذبات کی کہانی ہے

دُور کے ڈھول کا کھلا ہے پول
چاند کی جب سے خاک چھانی ہے

پھول بھی باسی اَب نہیں ہوتے
یارو یہ کیسی زِندگانی ہے

ذائقے پھل کے کیمیائی ہیں
دُودھ میں چینی ، رَنگ ، پانی ہے

زُلفِ بنگال اُتار دیتے ہیں
چونکہ کل بھی پہن کے جانی ہے

اَب مشینیں ہیں صاحبِ دیوان
یہ بُرے وَقت کی نشانی ہے

دِل میں بھی آلے لگ گئے ہیں قیسؔ
خاک ہم نے غزل سنانی ہے

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

زِندگی نے جو کل سنانی ہے


****************************************
زِندگی نے جو کل سنانی ہے
میرے ہاتھوں میں وُہ کہانی ہے

اِک گھڑی کیسے بیٹھ جاؤں میں
دو گھڑی کی تو زِندگانی ہے

زَخمِ دِل کی بھی خوب پوچھی حضور
آپ ہی کی تو مہربانی ہے

رَکھ رَکھاؤ ، سلیقہ ، آؤ بھگت
بے وَفا ہونے کی نشانی ہے

میری غزلوں کا کیا رہیں نہ رہیں
آپ کا حُسن غیر فانی ہے

تب وُہ ایرانی حور کہنے لگی
آپ کا لہجہ اِصفہانی ہے

قیسؔ نے آگے بڑھتے بڑھتے کہا
مجنوں نے کب کسی کی مانی ہے

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

اَپنی سوچوں کے تضادات پہ ہنس پڑتا ہُوں


****************************************
اَپنی سوچوں کے تضادات پہ ہنس پڑتا ہُوں
یار ! میں خونی فسادات پہ ہنس پڑتا ہُوں

کوئی تعویذ ، کوئی وِرد ، کوئی چھلّہ دیں
پیر صاحب ! میں خرافات پہ ہنس پڑتا ہُوں

اِس لیے قابو سے باہر نہیں حالات مرے
نیند میں غرق بھی حالات پہ ہنس پڑتا ہُوں

بعض اَوقات میں میّت پہ بھی رو پڑتا ہُوں
بعض اَوقات میں بارات پہ ہنس پڑتا ہُوں

اِس لیے اَب مجھے مسجد نہیں جانے دیتے
شیخ و واعظ کی میں ہر بات پہ ہنس پڑتا ہُوں

قبر میں جسم سے جب شعلے لپکتے ہیں مرے
دوڑتے بھاگتے حشرات پہ ہنس پڑتا ہُوں

اَن گنت لوگوں کا یہ وَقت کریں گے برباد
قیسؔ دیوان کے صفحات پہ ہنس پڑتا ہُوں

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

غزل سکون سے سنیے بدن کو ڈھیلا کریں


****************************************
غزل سکون سے سنیے بدن کو ڈھیلا کریں
ذرا سا سانس لیں گہرا ، حواس تازہ کریں

ہتھیلی آنکھ پہ رَکھ کے دَبائیں ہولے سے
مَسل کے کنپٹی سر کو سکوں مہیا کریں

اَب اُنگلیوں سے دَبائیں ذِرا سا گردن کو
تناؤ کاندھوں کا یونہی دَبا کے چلتا کریں

گھڑی کی سمت و مخالف گھمائیں گردن کو
کمر کو رَکھتے ہُوئے ڈھیلا قدرے سیدھا کریں

مزید گہرا کریں سانس پیٹ پھیلائیں
ہَوا کو ناک سے خوشبو سمجھ کے کھینچا کریں

خدا کو سونپ دیں اَپنی ہر اِک پریشانی
جو نعمتیں ملی ہیں اُن کا ذِکر دُگنا کریں

پھر اُس کے بعد لیں اَنگڑائی مسکراتے ہُوئے
بنا کے قیسؔ کو تصویر اَب رَوانہ کریں

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

عشق کرنے کے جو نقصان سمجھ لیتا ہے


****************************************
عشق کرنے کے جو نقصان سمجھ لیتا ہے
موت کو عشق سے آسان سمجھ لیتا ہے

سر جھکانا ہی جب ایمان سمجھ لیتا ہے
آدمی پیڑ کو بھگوان سمجھ لیتا ہے

دُشمنِ جان کو جو جان سمجھ لیتا ہے
زَخم کو یار کا اِحسان سمجھ لیتا ہے

پھر وُہ ہر حربہ ء شیطان سمجھ لیتا ہے
حُسن والوں کی جو مسکان سمجھ لیتا ہے

شیخ و زاہد کے جو اَذہان سمجھ لیتا ہے
کیوں ہُوا ہے فُلاں اِعلان سمجھ لیتا ہے

بھاگنے ، ڈَٹنے کا اِمکان سمجھ لیتا ہے
سانپ اِنسان کا رُجحان سمجھ لیتا ہے

اِس لیے جگ اِسے نادان سمجھ لیتا ہے
قیسؔ ہر شخص کو اِنسان سمجھ لیتا ہے

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

۔ اختتام ۔ مجموعہ کلام "غزل" ۔


****************************************
۔ اختتام ۔ مجموعہ کلام "غزل" ۔
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

ShahzadQais

Sign Up