عید" از شہزادقیس"

****************************************
((Notice))
Updated On: 9/14/2017 2:13:47 PM
Release Date: 8/13/2017 2:40:04 PM
****************************************


****************************************

((Table Of Contents))

 

شہزادقیس کی جانب سے خوش آمدید

 

اِنتساب

 

رَمضان جا رَہا ہے اور عید آ رہی ہے

 

پوچھتے تھے رَقیب عید کے دِن

 

سایہ بھی رو رہا ہے اور عید آ رہی ہے

 

آپ گر ہوں قریب عید کے دِن

 

مہک وَفا کی کوئی پھول سے جدا نہ کرے

 

کھلی نگاہوں سے دیکھا یہ خواب عید کے دِن

 

بہت رُلائے گا رَنگین باب عید کے دِن

 

ہِلالِ عید نکلتا تھا جس کلی کے لیے

 

چھٹی پر تھے طبیب عید کے دِن

 

جو بوسہ ہاتھ کا بھی عید پر عطا نہ کرے

 

شرابِ وَصل کا مل جائے جام عید کے دِن

 

ہمارا ہی نہیں بدنام نام عید کے دِن

 

ہُوا جو دِل مرا نیلامِ عام عید کے دِن

 

چال اُس شوخ کی جو چلتی ہے

 

عید اِس بار جو پردیس میں آئی ہو گی

 

بہارِ عید بھی اَپنے لیے بہار نہیں

 

لبوں سے اُٹھتی ہُوئی چاندنی سے جلتے ہیں

 

عمر بھر یہ رہی اُمید خدا سے ہم کو

 

گُلوں کی سیج ، شِگُوفوں کے ہار دِکھلائے

 

مسرت ، شادمانی ، چاندنی ہے

 

جسے نہ یار کی ہو پائے دید عید کے دِن

 

یہ ہاتھ رُخ سے ہٹاؤ کہ عید آئی ہے

 

تو منہ تو میٹھا کراؤ کہ عید آئی ہے

 

بام پر دیکھ کے اُن کو جو ہنسا عید کا چاند

 

غم کے ریلے میں دُھلے دِل کی دُعا عید کا چاند

 

مجنوں بہت اُداس ہے اور چاند رات ہے

 

دِل ، رُوح تک اُداس ہے اور چاند رات ہے

 

(ع) عید آئی کہے سارا جہاں ، عید مبارَک

 

(ع) عنبر کہے خوشبو سے اَذاں ، عید مبارَک

 

بھر آئی آنکھوں میں برسات ، عید قاتل ہے

 

لچکتی کلیوں کی برسات ، عید قاتل ہے

 

زَخم اَپنانا کتنا مشکل ہے

 

عید اور چاند سے متعلق قطعات

 

رویتِ ہلال:: نگاہیں ہر گھڑی تسبیح میں مصروف رہتی ہیں

 

شاکر:: چھوٹے نوٹوں کی تازہ گڈی سے

 

حضرات !:: جانے کب عید کا بتائیں گے

 

رائج الوقت:: بطور عیدی سنایا جو شعر کہنے لگے

 

مقامِ شکر:: پھر سے گر ہو گئی ہیں دو عیدیں

 

عید اور چاند سے متعلق مفرد اشعار

 

عبد:: خدا کے بندوں کو جو فائدہ نہیں دیتا

 

یومِ آزادی:: شوّال کی یکم ہے مسلمانوں کے لیے

 

نگران رِند:: عید کے عید جو شراب پییں

 

بندگلی:: غریب کوئی بہت دیر تک اُداس رہا

 

شرط:: ستم گروں کی نئی شرط سن رہے ہو قیسؔ !

 

عدل:: سہیلیوں کی طرح ہم سے عید نہ ملیے

 

دُعا:: جو آج خوش ہیں اُنہیں ایسی لاکھوں عیدیں ملیں

 

شادی ء مرگ:: دیکھ کر عید پر طویل صفیں

 

لاکر:: چھپا کے عیدی میں اُن کو دِیا ملن کا پیام

 

ماموں:: سب چندا ماموں دیکھ کے ملنے لگے ہیں عید

 

بدھو:: عید کی رات تھک کے گھر لوٹا

 

فرمائش:: کسی نے پوچھا کہ کیا بھیجوں تو خوشی ہو گی ؟

 

حُسنِ فطرت:: لبوں کی قوس ہے چندا سی ، چاند سے اَبرُو

 

خسارہ:: نہیں یہ عیدی کی اَدنیٰ رَقم کی بات نہیں

 

حدِ اَدَب:: چیٹ دو گھنٹے اور بھی کر لو

 

گلے عید چھوٹی پہ ہم مل چکے

 

عید تو تین دن کی ہوتی ہے

 

کہا جو گود میں سر رکھ کے لیٹنا ہے مجھے

 

میری دیگر کتب سے انتخاب

 

چاند کو دیکھ کے ملنے کی دُعا نہ چھُوٹے

 

ہر ایک ہاتھ پہ چھَپ جاتا تھا کیو فار قیسؔ

 

وُہ چاند عید کا اُترے جو دِل کے آنگن میں

 

تمام رات فقط چاند دیکھتے رہنا

 

سنا ہے کروٹیں گنتا ہے چاند ، راتوں کو

 

سنا ہے عید کا چاند اُن کی راہ تکتا ہے

 

چاند کو ڈُھونڈنے ہم سارے نکلتے ہیں مگر

 

قیسؔ کل شب ملایا اُنہیں چاند سے

 

ایک ہی خواہش کا دورِ پُرسُکوں

 

چودہویں کا چاند ، نصفِ دِن کا آفتاب

 

چاند یاقوت لب کا آئے نظر

 

ذِرا سی قوس رُخ کی رِہ گئی پردے سے شب باہر

 

گیسوؤں والا چاند بھی ہو گا

 

کھلونے عید پہ جگنو کو لے کے دیتے ہیں

 

عید پر آنے والے کیا جانیں

 

تم آئے کہ خوشیوں پہ عید آ گئی

 

جگ منائے گا عید ، دیکھ کے چاند

 

وُہ آئیں بام پہ تو پانچ عیدیں پکی ہیں

 

۔ اختتام ۔ مجموعہ کلام "عید" ۔



((Begin Text))
****************************************


****************************************

شہزادقیس کی جانب سے خوش آمدید


****************************************
شہزادقیس کی جانب سے خوش آمدید
مجموعہ کلام #عید میں شامل اشعار
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

اِنتساب


****************************************
اِنتساب
دائمی دل گرہن کے نام
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

رَمضان جا رَہا ہے اور عید آ رہی ہے


****************************************
رَمضان جا رَہا ہے اور عید آ رہی ہے
یا رَب صنم جدا ہے اور عید آ رہی ہے

دِل دَھک سے رِہ گیا جو ، یک دَم خیال آیا
اِک سال ہو چلا ہے اور عید آ رہی ہے

حیرت سے دَم بخود ہوں ، اِس بار کیا ہُوا کہ
خط تک نہیں ملا ہے اور عید آ رہی ہے

آنکھوں کو ملتے گزریں ، جس کی تمام عیدیں
ہاتھوں کو مل رہا ہے ، اور عید آ رہی ہے

پنجرے کو زَخمی کر کے ، اُمید کا کبوتر
دَم سادھ کر کھڑا ہے اور عید آ رہی ہے

بانہوں میں عید ہو گی ، جس نے کیا تھا وعدہ
بانہوں میں جا چکا ہے اور عید آ رہی ہے

جانم ! اِس عید پر ہم ، چلتے ہیں قیسؔ کے گھر
دُشمن نے یہ کہا ہے اور عید آ رہی ہے

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

پوچھتے تھے رَقیب عید کے دِن


****************************************
پوچھتے تھے رَقیب عید کے دِن
اَب کہاں ہے حبیب عید کے دِن

ہنسنے کی کرتے ہیں اَداکاری
مستقل بدنصیب عید کے دِن

آئینوں سے کہاں تک عید ملیں
ہر گھڑی ہے مہیب عید کے دِن

آئینہ سال بھر رَہا ہمزاد
پر لگا کچھ عجیب عید کے دِن

چشمِ پُر نم کی تہہ میں ڈُوب گیا
چاند سا اِک حبیب عید کے دِن

چل رَہا ہے قلم ، رَواں ہیں اَشک
با اَدَب ، ’’ بے نصیب ‘‘ عید کے دِن

خود کشی سے جو روکا اُس کو قیسؔ
رو پڑا اِک غریب عید کے دِن

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

سایہ بھی رو رہا ہے اور عید آ رہی ہے


****************************************
سایہ بھی رو رہا ہے اور عید آ رہی ہے
پلکوں پہ خوں جما ہے اور عید آ رہی ہے

وَحشت نے یوں پڑھا ہے ، تنہائی کا صحیفہ
دِل سخت بھر گیا ہے اور عید آ رہی ہے

اَشکوں کی دَستکوں سے ، بے آس حوصلے کا
دَر ٹوٹنے لگا ہے اور عید آ رہی ہے

یہ ظلم ہے سراسر ، پہلے ہی دِل ہمارا
مر مر کے چپ ہُوا ہے اور عید آ رہی ہے

دِل غم کا ہو سمندر تو رونے کی بجائے
ہنسنا کڑی سزا ہے اور عید آ رہی ہے

میں قابلِ محبت ہُوں ہی نہیں سو مجھ سے
آئینہ بھی خفا ہے اور عید آ رہی ہے

دِل میں کوئی پرندہ ، قیسؔ آٹھ نو دِنوں سے
ہر سمت دوڑتا ہے اور عید آ رہی ہے

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

آپ گر ہوں قریب عید کے دِن


****************************************
آپ گر ہوں قریب عید کے دِن
عرش پر ہوں نصیب عید کے دِن

حُسن والے ، شراب یا کہ موت
کوئی تو ہو طبیب عید کے دِن

اُن سے ملنے کی صف نے سمجھایا
یار ہی ہیں رَقیب ، عید کے دِن

ہر کسی کو خدا نصیب کرے
آپ سا اِک حبیب عید کے دِن

قہقہے بانٹتا ہے لوگوں میں
خوبصورت خطیب عید کے دِن

دُنیا والو ! خدارا لے آؤ
دِل کو دِل کے قریب عید کے دن

شکل یہ بھی جنون کی ہے قیسؔ
بن گئے ہم اَدیب عید کے دِن

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

مہک وَفا کی کوئی پھول سے جدا نہ کرے


****************************************
مہک وَفا کی کوئی پھول سے جدا نہ کرے
کروں میں عید ترے بن کوئی خدا نہ کرے

جو چاند دیکھیں تو ہونٹوں کے چار چاند ملیں
سِوائے شکر کے پلکوں سے کچھ گرا نہ کرے

گلے ملیں تو کئی صدیوں تک سُکُوت رہے
رُکیں یوں گردِشیں دَھڑکن تلک چلا نہ کرے

وُہ بازُو کیا جو سمیٹیں نہ عمر بھر تجھ کو
وُہ سر ہی کیا ، ترے زانو پہ جو رَہا نہ کرے

تری جبیں پہ مرے لب قنوتِ عشق پڑھیں
کسی کی تیرے سِوا جسم اِقتدا نہ کرے

وِصال و ہجر تو مولا کی دین وُہ جانے
نماز پیار کی دَھڑکن کبھی قضا نہ کرے

جدائی ہو تو مری عمر تجھ کو لگ جائے
وُہ قیسؔ کیا جو حیات عشق میں فنا نہ کرے

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

کھلی نگاہوں سے دیکھا یہ خواب عید کے دِن


****************************************
کھلی نگاہوں سے دیکھا یہ خواب عید کے دِن
پڑھیں وُہ زانو پہ میرے کتاب عید کے دِن

خدایا ہجر گَزیدوں کا یہ سہارا بنے
میں لکھ رہا ہوں جدائی کا باب عید کے دِن

ہِلالِ عید کا منہ چوم لو کہ اِس کے طفیل
زَمیں پہ دیکھے کئی ماہتاب عید کے دِن

حسین ہاتھوں نے جادُو حنا کا اَوڑھ لیا
جمالِ یار پہ صدقے گلاب عید کے دِن

گلابی رَنگ کی ظالم سے کی جو فرمائش
گلابی رَنگ کا پہنا نقاب عید کے دِن

کتاب بھیجی اُنہیں ’’ عید ملنا واجب ہے ‘‘
وُہ سب سے عید ملے بے حجاب عید کے دِن

کتاب بھیج تو دُوں قیسؔ ، ’’ بوسہ واجب ہے ‘‘
نہ جانے کیا بنے اِس کا جواب عید کے دِن

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

بہت رُلائے گا رَنگین باب عید کے دِن


****************************************
بہت رُلائے گا رَنگین باب عید کے دِن
نہ کھول بیٹھنا دِل کی کتاب عید کے دِن

کمال یہ بھی ہے کہ وُہ کمال کی شے ہے
کمال تر ہے کہ اُترا حجاب عید کے دِن

ذِرا سا آپ بھی شرمانا چھوڑئیے صاحب
ذِرا سے ہوتے ہیں سب ہی خراب عید کے دِن

لغت میں عشق کی کنجوس اُس کو کہتے ہیں
جو بوسے بوسے کا رَکھے حساب عید کے دِن

نشے میں نام نہ ہرجائی کا بتا دینا
ستم زَدو ! ذِرا ہلکی شراب عید کے دِن

گداز پاؤں اَبھی پالکی سے نکلا تھا
حسین ہو گئے سب آب آب عید کے دِن

بچھا دیں غزلیں سبھی قیسؔ اُن کے رَستے میں
کہ پاؤں دَھر کے کریں اِنتخاب عید کے دِن

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

ہِلالِ عید نکلتا تھا جس کلی کے لیے


****************************************
ہِلالِ عید نکلتا تھا جس کلی کے لیے
کلی وُہ توڑ لی میں نے تیری گلی کے لیے

یہ کہہ رہا ہے زَمانہ کہ عید اَچھی ہے
کہو زَمانے سے لیکن نہ ہر کسی کے لیے

دَھنک ، گلاب ، گُہر ، تتلی ، اَبر ، عید کا چاند
پڑیں گے کم مرے دِلبر کی ’’ سادگی ‘‘ کے لیے

بروزِ عید نگاہیں جھکا کے چلنا دوست
یہ اِحتیاط ضروری ہے زِندگی کے لیے

غریب لوگوں کا تحفہ کچھ اور کیا ہو گا
یہ عید کارڈ ہی بھیجا ہے ہر کسی کے لیے

وُہ آئے گھر میں اور ایسے کہ میں نے جان لیا
سدا ضروری نہیں چاند ، چاندنی کے لیے

بروزِ عید جسے دیکھنا نصیب نہیں
لکھا ہے قیسؔ یہ شعر اَشکوں نے اُسی کے لیے

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

چھٹی پر تھے طبیب عید کے دِن


****************************************
چھٹی پر تھے طبیب عید کے دِن
مر گئے کچھ غریب عید کے دِن

نازُک اِحساس لوگ چڑھتے ہیں
زِندہ زِندہ صلیب عید کے دِن

بُت بھی صف باندھ لیں عقیدت سے
حُسن ہو گر خطیب عید کے دِن

گُلِ تر تم کو ، زَخم ہم کو ملیں
جس کے جیسے نصیب عید کے دِن

یار تو یار ، ایسی وَحشت تھی
یاد آئے رَقیب عید کے دِن

غمِ فرقت بڑھا جو حد سے تو
مر گئی عندلیب عید کے دِن

اِہلِ دِل باقی مر چکے ہیں قیسؔ
اور ہم عنقریب عید کے دِن

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

جو بوسہ ہاتھ کا بھی عید پر عطا نہ کرے


****************************************
جو بوسہ ہاتھ کا بھی عید پر عطا نہ کرے
کسی کا ایسا صنم ہو کبھی خدا نہ کرے

نجانے چاندنی میں کون کون دیکھے اُسے
اُسے کہو کہ نئے چاند کو تکا نہ کرے

شریر بھائی بھی ہو سکتا ہے سہیلی کا
سو اَپنا عکس سہیلی کو بھی دِیا نہ کرے

اُسے کہو کہ کئی مور غور کرتے ہیں
نقاب اَوڑھ کے بھی شہر میں چلا نہ کرے

یہ عورتیں نہ کریں ذِکر اَپنے مردوں سے
حجاب اُتار کے عید اُن سے بھی ملا نہ کرے

اُسے کہو اِنہی بچوں کو چومتے ہیں بڑے
سو بوسے عید پہ بچوں کے بھی لیا نہ کرے

کسی کے ہاتھ ہمیں قیسؔ کل پیام آیا
ہم اُس کے کچھ نہیں سو مشورے دِیا نہ کرے !

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

شرابِ وَصل کا مل جائے جام عید کے دِن


****************************************
شرابِ وَصل کا مل جائے جام عید کے دِن
تو رِند کھل کے کریں اِہتمام عید کے دِن

کچھ اِہلِ عشق ہیں روزے سے چاند دیکھ کے بھی
ذِرا سا آئیے بالائے بام عید کے دِن

بہارِ عید ہے مینائے حُسن کی مستی
دُھلے گلاب لگیں خاص و عام عید کے دِن

یہ ننھی پریاں پرستاں سے سج کے آئی ہیں ؟
یہ ننھے غنچے ہیں کس کے غلام عید کے دِن

نئے لباس پہن کر سب اِس لیے آئے
کہ وُہ کرائیں گے دیدارِ عام عید کے دِن

بس اَپنے چاند پہ نظریں جمائے رَکھنا ہے
کہاں ہے عاشقوں کو اور کام عید کے دِن

سجے ، سجائے حسیں رَب کا نام لیں تو لگے
کہ پڑھ رہا ہو کوئی رام رام عید کے دِن

خوشی ہے عید کی یا اَپنے حُسن پر مغرور
وُہ چل رہے ہیں بہت خوش خرام عید کے دِن

وُہ توبہ کر چکے روزوں میں یا اِلٰہی کیا ؟
کیا ہے پردے کا خوب اِنتظام عید کے دِن

مٹھائی دینے سے اُن کی مراد یہ نہ ہو
بغیر بوسہ بنو شیریں کام عید کے دِن

وُہ بھول جانے کی قربانی مانگ لیں نہ قیسؔ !
ذِرا زِیادہ ہی ہیں خوش کلام عید کے دِن

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

ہمارا ہی نہیں بدنام نام عید کے دِن


****************************************
ہمارا ہی نہیں بدنام نام عید کے دِن
ہر اِہلِ عشق کا اَنجام جام عید کے دِن

شراب سے ہوں شرابور جیسے چست گلاب
کھڑے ہیں مست بدن گام گام عید کے دِن

ہیں عید ملنے کی فہرست میں کئی گھپلے
کہ بالا بالا ہیں گمنام ، نام عید کے دِن

کمند عقابوں پہ ڈالیں حسین زُلفیں کئی
بنے ہیں پھول سے اَندام دام عید کے دِن

حجاب میں بھی کوئی بھینٹ لے کے چھوڑیں گے
پڑھیں نگاہوں سے جو رام رام عید کے دِن

کہیں وُہ عید پہ جو ہنس کے کون سا وَعدہ ؟
بڑھانے لگتے ہیں بادام دام عید کے دِن

کسی کی یاد دَبانے میں ، میں نہیں تنہا
کیا ہے سب نے یہ ناکام کام عید کے دِن

غریب پلکوں کا منہ موتیوں سے ہے لبریز
ملا یوں دید کا اِنعام ، عام عید کے دِن

وُہ جن کا گر گیا آنچل زَمیں پہ ہنستے ہُوئے
اُنہی کا جپتے ہیں اَصنام نام عید کے دِن

نجانے دیکھا ہے کیا کیا تراشتے زُلفیں
کہ چھوڑتے نہیں حجام جام عید کے دِن

کہا بھی قیسؔ دَروغہ کو وُہ رَہا دِل چور
کہاں پہ کرتے ہیں حکام کام عید کے دِن

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

ہُوا جو دِل مرا نیلامِ عام عید کے دِن


****************************************
ہُوا جو دِل مرا نیلامِ عام عید کے دِن
کسی کا ہو گیا بدنام نام عید کے دِن

طلب سے بڑھ کے رَسد حُسن کی ہُوئی لیکن
دِلوں کے پھر بھی لگے عام دام عید کے دِن

مے ء وِصال سے ہیں مست کون خوش قسمت
ہُوئے نہ ہم سے تو گلفام ، رام عید کے دِن

نمازِ عید میں مسجد میں پڑھ نہیں سکتا
کہ مجھ کو ہوتا ہے اِک کام شام عید کے دِن

شرابِ عید کی نیت یوں باندھیے صاحب
جمالِ یار تیرے نام جام عید کے دِن

لبوں کی خوشبو ملا کر حلال کر ساقی
نہ رِندِ خاص کو دے عام جامِ عید کے دِن

جہاں میں ’’دید مبارَک‘‘ کا شور مچنے لگا
وُہ آئے جونہی لبِ بام عام عید کے دِن

رَقیب قرب کا دَعویٰ کریں نہ گالی پر
کہ وُہ تو دیتے ہیں دُشنام عام عید کے دِن

بدن کے رَقصاں گلابوں میں ہو دِہکتی شراب
چمن میں چلتے ہیں یوں جام فام عید کے دِن

چھری بغل میں یقینی ہے کچھ حسینوں کی
بھلے پڑھیں نہ پڑھیں رام رام عید کے دِن

سب اُن کے گھر کی ہَوا کھا کے لوٹتے ہیں قیسؔ
کہ وُہ تو کرتے نہیں کام شام عید کے دِن

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

چال اُس شوخ کی جو چلتی ہے


****************************************
چال اُس شوخ کی جو چلتی ہے
عید کی زِندگی بدلتی ہے

بن سنور کے وُہ جب نکلتے ہیں
دیکھ کر عید آنکھیں ملتی ہے

عید لونڈی تمہارے گھر کی جان !
عید ٹکڑوں پہ تیرے پلتی ہے

یار تو یار اُس کی جوتی سے
ملکہ ء حُسن خوب جلتی ہے

نسخہ لکھ کر طبیب کہنے لگا
عاشقی جان لے کے ٹلتی ہے

عید پر مضطرب میں غربت میں
کروٹیں گھر میں وُہ بدلتی ہے

اِہلِ دل ہوش میں تب آتے ہیں
قیسؔ جب چاند رات ڈھلتی ہے

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

عید اِس بار جو پردیس میں آئی ہو گی


****************************************
عید اِس بار جو پردیس میں آئی ہو گی
یار نے ہچکیاں لے لے کے منائی ہو گی

چاند بھی بام پہ ماتم کناں آیا ہو گا
بزمِ غم قطبی ستارے نے سجائی ہو گی

قبر اِحساس کی دِل میں کوئی ٹُوٹی ہو گی
سُرخ ، اُداس آندھی خیالات پہ چھائی ہو گی

آخری روزہ بھی اَشکوں سے ہی کھولا ہو گا
چاند نے غم کی جھڑی دِل میں لگائی ہو گی

پہلے تو اُس نے گنے ہوں گے کئی سو تارے
پھر دَوا نیند کی اُٹھ کر کوئی کھائی ہو گی

عید کے روز پریشاں نے اَذاں سنتے ہی
مشرقی سمت نئی شمع جلائی ہو گی

خود کو بازُو کے سہارے سے سنبھالا ہو گا
ایک ’’ بے بس ‘‘ کی قسم یاد دِلائی ہو گی

گھر مری مرضی کے پردوں سے سجایا ہو گا
میری من چاہی کوئی شے بھی بنائی ہو گی

رَنگ بھی میرا پسندیدہ ہی پہنا ہو گا
اور خوشبو بھی مری بھیجی لگائی ہو گی

پہلے خود اَپنے سراپے کو سراہا ہو گا
آنکھ پھر عکس سے اَپنے ہی چرائی ہو گی

ہاتھ پہ قیس بہت ہلکی حنا سے لکھ کر
اُس پہ حسرت میں گندھی منہدی چڑھائی ہو گی

سابقہ عید کی شوخی پہ ہنسی آتے ہی
لب چباتے ہُوئے آنکھ اُس نے جھکائی ہو گی

جب غزل کھول کے ’’ تعویذ ‘‘ پڑھی ہو گی مری
چیخ مشکل سے کلیجے میں دَبائی ہو گی

چپکے سے پھر مجھے نیٹ پر کہیں ڈُھونڈا ہو گا
رُخ پہ حیرت یہ غزل پڑھتے ہی چھائی ہو گی

بے بسی اُس کی اُداس آنکھوں سے ٹپکی ہو گی
تیسری روٹی بھی جب اُس نے جلائی ہو گی

’’ کس کی یاد عید پہ رَکھتی ہے اُداس اِتنا تمہیں ‘‘ ؟
اَمی کا کہہ کے ذِرا بات بنائی ہو گی

اَپنے پلّو سے مری یاد کو پونچھا ہو گا
جھوٹے غازے کی ہنسی رُخ پہ سجائی ہو گی

سر بھی پھر ناز سے شوہر کا دَبایا ہو گا
آنکھ چبھتی ہُوئی خود پر سے ہٹائی ہو گی

پھر بڑی تیزی سے کچھ کام سمیٹے ہوں گے
ایک چادَر ہی کئی بار بچھائی ہو گی

غالبا غیر شعوری سے کسی جذبے سے
چائے شوہر کو بہت کالی پلائی ہو گی

عقل بولی کہ نہیں عید صنم کی ایسے
دِل بضد ہے کہ نہیں ایسے ہی آئی ہو گی

یا تو اِحساسِ ندامت نے رُلایا ہو گا
یا غزل قیسؔ کی شوہر نے سنائی ہو گی

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

بہارِ عید بھی اَپنے لیے بہار نہیں


****************************************
بہارِ عید بھی اَپنے لیے بہار نہیں
اِس عید پر تو کسی کا بھی اِنتظار نہیں

ہر عید کارڈ پہ لکھ دو یہ شعر سونے سے
جو عید ملنے نہ آئے وُہ یار ، یار نہیں

پری یا حور سے تشبیہ نہ دو اُن کی تو
کنیزوں میں بھی پری ، حور کا شمار نہیں

وُہ آج عید مبارَک کو ایک لحظہ رُکے
پھر اُس کے بعد کہا رَسم ہے یہ پیار نہیں

کہا جو حُسن ستاتا ہے آپ کا ہم کو
وُہ بولے پھول کا خوشبو پہ اِختیار نہیں

ثبوتِ عشق میں رَکھا جو پاؤں میں دیوان
تو ہنس کے کہتے ہیں شاعر کا اِعتبار نہیں

’’ صنم شناسی ‘‘ کسی قیسؔ کو نہیں آئی
کہ جس پہ مرتے ہیں یہ وُہ وَفا شعار نہیں

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

لبوں سے اُٹھتی ہُوئی چاندنی سے جلتے ہیں


****************************************
لبوں سے اُٹھتی ہُوئی چاندنی سے جلتے ہیں
ہمارے پنکھ کسی پنکھڑی سے جلتے ہیں

بھڑک وُہ اُٹھتے ہیں جب چاند رات آتی ہے
کچھ ایسے دِل جلے جو چاند ہی سے جلتے ہیں

حنا شریف جچی اِتنی شوخ ہاتھوں پر
کہ شوخ تتلی کے پر ، جل پری سے جلتے ہیں

بہت ہی پیار سے اِہلِ حسد سے یہ کہیے
جو ’’ آگ سے بنے ‘‘ ، وُہ آدمی سے جلتے ہیں

یہ کہہ کے صاف بری ہو گئے سب اِہلِ خرد
پتنگے پیار میں اَپنی خوشی سے جلتے ہیں

کنویں کی اَندھی گھٹن میں خیال کے جگنو
چمکنا چاہیں تو پر روشنی سے جلتے ہیں

فُضول رَسموں پہ اَب گفتگو ضروری ہے
بتانِ وِہم و گماں ، آگہی سے جلتے ہیں

بہت سکون سے شکوے کو سننا حکمت ہے
کہ رِشتے دِل میں دَبی آگ ہی سے جلتے ہیں

لطیف نکتہ ہے شاید بیان ہو پائے
خوشی کو ترسے ہُوئے ہی خوشی سے جلتے ہیں

بروزِ عید فقط میں نماز پڑھتا ہوں
اور اُس پہ لوگ میری بندگی سے جلتے ہیں

لہو سے شعر لکھے قیسؔ لوحِ دِل پہ جبھی
وَفا کے دیپ میری شاعری سے جلتے ہیں

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

عمر بھر یہ رہی اُمید خدا سے ہم کو


****************************************
عمر بھر یہ رہی اُمید خدا سے ہم کو
کاش مل جائے وُہ اِس عید دُعا سے ہم کو

حوصلہ رَکھیے ، دُعا کیجیے ، مایوس نہ ہوں
دیر تک دیتا رہا چاند دِلاسے ہم کو

ذات کے خول میں تنہا سہی محفوظ تو ہیں
اَجنبی ! کر نہ جدا جھوٹی اَنا سے ہم کو

چاند اِنسان سے ناراض نظر آیا ہمیں
پھول تتلی سے لگے قدرے خفا سے ہم کو

’’ ہاتھ سے روکتے ہیں ‘‘ سب کو وَفاداری سے
زَخم اِتنے لگے منحوس وَفا سے ہم کو

دِل بجھا ہو تو تمنا ہی کہاں رِہتی ہے
اَب کسی شے سے غرض ہے نہ خلا سے ہم کو

نہ خطا ہوتی نہ یہ گلشنِ ہستی کھلتا
شیخ کیوں روکتا رہتا ہے خطا سے ہم کو

جسم کی قوس یا سرخی میں کہاں ایسا سُرُور
جھرجھری آتی تھی بس اُن کی حیا سے ہم کو

قیسؔ عدت کو بھی مدت ہُوئی ہے ختم ہُوئے
پھر یہ دُنیا کیوں بلاتی ہے اَدا سے ہم کو

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

گُلوں کی سیج ، شِگُوفوں کے ہار دِکھلائے


****************************************
گُلوں کی سیج ، شِگُوفوں کے ہار دِکھلائے
صنم خدا تجھے عیدیں ہزار دِکھلائے

ہنسی ، قرار ، تمنا ، سکون ، عشق ، وَفا
قدم قدم پہ خوشی کی بہار دِکھلائے

تمام سال رہے عید جیسا میٹھا منہ
گلاب جامن و برفی سا پیار دِکھلائے

صبا ، مہکتے ہُوئے بوسے رَکھے گالوں پر
تھرکتی تتلی دَھنک خوشگوار دِکھلائے

ہماری عید نہیں دیدِ ماہ پر موقوف
ہمیں تو چہرہ وُہی شاہکار دِکھلائے

ہمیشہ ٹھہرا رہے وَقت شاد لمحوں میں
خوشی کی خاص گھڑی بار بار دِکھلائے

زَمانہ ’’ چاند نظر آ گیا ‘‘ پکارے گا
گلابی چہرہ جو زُہرہ نگار دِکھلائے

عَرُوسِ گُل ، چمن آرا ، پری ، شگوفہ جمال !
ہر عید مولا تجھے خوشگوار دِکھلائے

چمن میں یاد کروں ہائے اُس کو تو قسمت !
کلی سے تتلی کے بوس و کنار دِکھلائے

تمہیں دِکھائے خدا نورِ عید و ماہِ تمام
تمہاری دید مجھے کردِگار دِکھلائے

حسین لڑکیو ! تم تو کباب ہو جاؤ
ذِرا سی شان جو وُہ شاندار دِکھلائے

کوئی نہ قیسؔ جچا اَپنی سانولی کے بعد
جہاں نے چہرے ہمیں بے شمار دِکھلائے

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

مسرت ، شادمانی ، چاندنی ہے


****************************************
مسرت ، شادمانی ، چاندنی ہے
بروزِ عید بس تیری کمی ہے

تری زُلفیں میری شاداب راتیں
تیرا چہرہ بہارِ زِندگی ہے

جمالِ یار کو دیکھا تو جانا
عطا کرنے میں رَب کتنا سخی ہے

ترے چلنے سے دَھڑکن چل رہی ہے
تمہارا قہقہہ دِل کی خوشی ہے

چمکتے کپڑے لے کر کیا کروں گا
کہ عید اَپنی کمالِ سادگی ہے

خدا کے واسطے آنچل سنبھالو
ہماری اُنگلی دانتوں میں پھنسی ہے

فرشتوں نے میرے بند آنکھیں کر لیں
وُہ میرے سامنے کچھ یوں کھڑی ہے

بہت مغرور و خود سر شیرنی بھی
ذِرا تنہا ہُوئے تو ڈَر گئی ہے

ہر اِک مسلک سے مجھ کو ہے محبت
ہر اِک فرقے میں اِک لڑکی پری ہے

کئی دِن میں لکھی ہے میں نے صاحب
غزل جو سرسری تم نے پڑھی ہے

کوئی ترکیب ڈُھونڈیں وَصل کی قیسؔ
کہ اَب تو عید سر پہ آ گئی ہے

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

جسے نہ یار کی ہو پائے دید عید کے دِن


****************************************
جسے نہ یار کی ہو پائے دید عید کے دِن
اُسے تو لگنے ہیں سب ہی یزید عید کے دِن

اَگر وُہ عید ملیں گے تو کان میں اُن کے
کہیں گے چپکے سے ہل من مزید عید کے دِن

ذِرا سی دیر کو مرضی ضرور کرنی ہے
بھلے وُہ بعد میں کر دیں شہید عید کے دِن

نماز پڑھتے ہی کچھ ٹُوٹی قبروں پر جانا
یہ بات پائی ہے بے حد مفید عید کے دِن

خدا پہ اور صنم پر اِکٹھے پیار آیا
صنم کی چومی ہے حبل الورید عید کے دِن

کہا جو رو کے وُہ وعدہ؟ تو ہنس کے کہنے لگے
ہر ایک کرتا ہے وعدے وعید عید کے دِن

کسی کی سمت اِشارہ نہیں ہے قیسؔ مگر
بڑے بڑے بنیں گے زَن مرید عید کے دِن

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

یہ ہاتھ رُخ سے ہٹاؤ کہ عید آئی ہے


****************************************
یہ ہاتھ رُخ سے ہٹاؤ کہ عید آئی ہے
نظر نظر سے ملاؤ کہ عید آئی ہے

سہیلیوں کے ، خریداری کے ، عزیزوں کے
کسی بہانے سے آؤ کہ عید آئی ہے

کسی کو دیکھ کے بے اِختیار میں نے کہا
چراغ گھی کے جلاؤ کہ عید آئی ہے

دو لب ملیں گے ’’ محبت ‘‘ کا لفظ جو بھی کہے
سنو ! لبوں کو ملاؤ کہ عید آئی ہے

میں شرط باندھ چکا ہُوں ہِلالِ عید کے ساتھ
ذِرا نقاب ہٹاؤ کہ عید آئی ہے

تمہارے دِل میں اَگر سچ میں کوئی چور نہیں
تو پھر گلے سے لگاؤ کہ عید آئی ہے

پرانے سارے بہانے ہیں قیسؔ کو اَزبر
نئے بہانے بناؤ کہ عید آئی ہے

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

تو منہ تو میٹھا کراؤ کہ عید آئی ہے


****************************************
تو منہ تو میٹھا کراؤ کہ عید آئی ہے
ذِرا سا پاس تو آؤ کہ عید آئی ہے

سنی سنائی پہ میں اِعتبار کرتا نہیں
مجھے یقین دِلاؤ کہ عید آئی ہے

قریب بیٹھو کوئی بات چھیڑیں موسم کی
چلو حنا ہی دِکھاؤ کہ عید آئی ہے

مقامِ دِل پہ مرے تین اُنگلیاں رَکھ کر
مجھے وُجود میں لاؤ کہ عید آئی ہے

گلے نہ ملنے کی کوئی دَلیل تو ہو گی
وُہ کان میں ہی بتاؤ کہ عید آئی ہے

تمہیں بہانے بنانے اَبھی نہیں آتے
بہانے سیکھ کے جاؤ کہ عید آئی ہے

جو شعر لکھنے پہ ڈانٹا تھا قیسؔ کو تم سے
وُہ شعر گا کے سناؤ کہ عید آئی ہے

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

بام پر دیکھ کے اُن کو جو ہنسا عید کا چاند


****************************************
بام پر دیکھ کے اُن کو جو ہنسا عید کا چاند
پھول سے ہاتھوں کی چلمن میں چھپا ’’ عید کا چاند ‘‘

قَد میں یہ بَدر کے آگے کسی گنتی میں نہیں
قَدر میں بَدر سے ہے کتنا بڑا عید کا چاند

ہر ترقی سے بڑھے شان ، ضروری تو نہیں
قَدر گھٹتی ہی گئی جوں جوں بڑھا عید کا چاند

چشم بستہ تھا کہیں محوِ دُعا کوئی حسیں
مفت میں دیکھ گیا رَنگِ حنا عید کا چاند

میرے بس میں ہو تو اِعلان سراسر کر دُوں
آپ نہ دیکھیے حضرات مرا عید کا چاند

وُہ تو پھر سال میں دو بار نظر آتا ہے
آپ کو کیسے کہوں جانِ اَدا عید کا چاند

اَب تو ہنستا بھی نہیں ایسے کسی منظر پر
چپکے سے سنتا ہے پیمانِ وَفا عید کا چاند

دیکھنے ماہ لبِ بام وُہ کچھ یوں آئے
دیکھ کر اُن کو ہُوا محوِ دُعا عید کا چاند

عید کا چاند کہا پہلے تو سو بار اُسے
پھر جونہی موقع ملا ، چوم لیا عید کا چاند

کیا کسی کو یہ اِکٹھے بھی ہُوئے ہوں گے نصیب؟
تخلیہ ، عشق ، سَبُو ، باغ ، حنا ، عید کا چاند

آسماں پر تو گھڑی بھر کو نظر آیا قیسؔ
شوخ آنکھوں میں کئی روز رہا عید کا چاند

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

غم کے ریلے میں دُھلے دِل کی دُعا عید کا چاند


****************************************
غم کے ریلے میں دُھلے دِل کی دُعا عید کا چاند
چشمِ پُر نم کو ہے رِم جھِم کی سزا عید کا چاند

ایک معصوم کے اَرمانوں کا خوں مجھ سے ہُوا
عمر بھر لیتا رہا خون بہا عید کا چاند

اَوّل آویزاں رہا گوہرِ مِژگاں پہ ہِلال
صبر کی ڈور کٹی ، چھن سے گرا عید کا چاند

غش میں دیکھا سَرِ دِہلیز کوئی زَخمی جنوں
رینگ کر اَوٹ میں بادَل کی چھپا عید کا چاند

چند لمحوں میں ہی واپس بھی چلا جاتا ہے
کچھ تو ہے جس پہ ہے ہم سب سے خفا عید کا چاند

عید ہے طفل تسلی ، مرے خوش خوش بچو !
ہم کو بھی طفلی میں بھاتا تھا بڑا عید کا چاند

سسکیاں ہجر گَزیدوں کی سِوا ہوتی گئیں
جانے کس دَرد کی ہوتا ہے دَوا عید کا چاند

چاند کو دیکھ کے اِک چاند بہت یاد آیا
اَب کے آنکھوں میں نہیں دِل میں چبھا عید کا چاند

دَر کے اَندر کی طرف گریاں کناں بند خطوط
ایک ویران حویلی پہ رُکا عید کا چاند

دیکھ کر مجھ کو ہنسا ، میں نے کچھ ایسے دیکھا
سال بھر ساتھ مرے روتا رہا عید کا چاند

نیم بسمل ہیں اِسی شہر میں ایسے بھی قیسؔ
جن کے مر جانے کی کرتا ہے دُعا عید کا چاند

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

مجنوں بہت اُداس ہے اور چاند رات ہے


****************************************
مجنوں بہت اُداس ہے اور چاند رات ہے
لیلیٰ کسی کے پاس ہے اور چاند رات ہے

اِس بار عید ملنے کا وَعدہ تلک نہیں
ہر آس محوِ یاس ہے اور چاند رات ہے

’’ شب دیدہ جنگلات ‘‘ سے لاتے ہو جو حنا
اُس میں لہو کی باس ہے اور چاند رات ہے

سوچوں نے زَخم دَھر دِئیے دوزَخ کی ریت پر
چاہت کی بانجھ پیاس ہے اور چاند رات ہے

نیلے فلک کی آنکھوں کا رُومال سُرخ ہے
پورا اُفق اُداس ہے اور چاند رات ہے

بچے تو دوست بچے ہیں ، تُو خوش ہے کس لیے
ہر غم کی چاند اَساس ہے اور چاند رات ہے

کہتے ہیں چاند مجنوں بناتا ہے اور قیسؔ
پہلے سے بد حواس ہے اور چاند رات ہے

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

دِل ، رُوح تک اُداس ہے اور چاند رات ہے


****************************************
دِل ، رُوح تک اُداس ہے اور چاند رات ہے
اِک بدترین یاس ہے اور چاند رات ہے

وُہ آخری ٹرین میں بیٹھا ہُوا ہو گا
پر یہ تو بس قیاس ہے اور چاند رات ہے

دِل کا سکوں ، جگر کا سکوں ، ذِہن کا سکون
سب کچھ تو اُس کے پاس ہے اور چاند رات ہے

ٹھنڈی ہَوا کا پَہرا ہے یادوں کے شہر میں
ہر زَخم بے لباس ہے اور چاند رات ہے

لوح و قلم پہ دَرد اُتارے گی چاندنی
دِل فاتر الحواس ہے اور چاند رات ہے

اِک وعدہ اُس کی دید کا ، اِک پڑیا زہر کی
دونوں کی یکساں آس ہے اور چاند رات ہے

کچھ لیلیٰ کو جنون ہے تقسیمِ زَخم کا
کچھ قیسؔ غم شناس ہے اور چاند رات ہے

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

(ع) عید آئی کہے سارا جہاں ، عید مبارَک


****************************************
(ع) عید آئی کہے سارا جہاں ، عید مبارَک
ہم مانیں گے جب تم کہو جاں ، عید مبارَک

(ی) یاروں کو تو فرصت ہی نہیں جشنِ طرب سے
سنتے وُہ بھلا میری کہاں ، عید مبارَک

(د) دِل لے کے جنہیں بھول گئے آپ کبھی کا
کہتے ہیں وُہی سوختہ جاں ، عید مبارَک

(م) مصروفِ تبسم جو کہیں ہو گا اُسی کو
کہتا ہے یہ دِل گریہ کناں ، عید مبارَک

(ب) برسات نگاہوں کی اُتارے تیرا صدقہ
رِہ رِہ کے کہے گھر کی خزاں ، عید مبارَک

(ا) اُس موسمی مخلص کو جو دیکھو تو پرندو !
کہنا تمہیں کہتا تھا فلاں ، عید مبارَک

(ر) روتے نہیں تو دِل کا نشاں تک بھی نہ رہتا
سینے سے یوں اُٹھتا ہے دُھواں ، عید مبارَک

(ک) کہہ دیتے ہیں یار آج تو دُشمن کو بھی تبریک
کیوں تجھ پہ ہیں دو لفظ گراں ، عید مبارَک

(ہ) ہم تو تری آواز کو ترسے ہُوئے ہیں دوست
کہتا ہو بھلے سارا جہاں ، عید مبارَک

(و) ویرانی ء شب کے کسی کونے میں دَبی قیسؔ
ہچکی کا ہُوا وِردِ زَباں ، عید مبارَک

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

(ع) عنبر کہے خوشبو سے اَذاں ، عید مبارَک


****************************************
(ع) عنبر کہے خوشبو سے اَذاں ، عید مبارَک
عید آ گئی اے جانِ جہاں ، عید مبارَک

(ی) یاقوت لبوں پر ترے قربان شگوفے
چندا ہے ترا خنداں نشاں ، عید مبارَک

(د) دیدار جنہیں تیرا ملے اُن کو بھی تبریک
جو تجھ کو جہاں دیکھے ، وَہاں عید مبارَک

(م) ملنے کو تجھے عید کھڑے ہوں سرِ دَربار
دَرویش و شہنشاہِ زَماں ، عید مبارَک

(ب) بوسے ترے رُخسار کے ہُوں تتلی کی عیدی
ہر سمت ہو خوشیوں کا سماں ، عید مبارَک

(ا) اَللہ مری خوشیاں سبھی بھیج دے تجھ کو
غم بھیجے ترے سارے یہاں ، عید مبارَک

(ر) راتیں تری تاباں رہیں ، دِن نورِ دَرخشاں
خوشبو ہو تری اور جواں ، عید مبارَک

(ک) کاسے میں مرے ڈال دے اِک شہد سا بوسہ
اے شیریں دَہَن ، شیریں زَباں ، عید مبارَک

(ہ) ہر پل ترا عشرت کدے میں چین سے گزرے
غنچوں سا ہنسے ، غنچہ دَہاں ، عید مبارَک

(و) وُہ حرف کہاں جوڑیں گے ہر شعر کا پہلا !
کر دیتے ہیں قیسؔ اِس میں نہاں عید مبارَک

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

بھر آئی آنکھوں میں برسات ، عید قاتل ہے


****************************************
بھر آئی آنکھوں میں برسات ، عید قاتل ہے
نہ سو سکا کوئی کل رات ، عید قاتل ہے

بروزِ عید تو غم بھی اَکیلا آتا نہیں
غموں کی آتی ہے بارات ، عید قاتل ہے

جوان کلیاں تو زُلفوں کی ڈولی بیٹھ گئیں
اُجاڑ پھرتے ہیں باغات ، عید قاتل ہے

سریلے قہقہے دِل پر عجیب چٹکی بھریں
لبوں کی رَس بھری سوغات ، عید قاتل ہے

تَنِ گُلاب پہ آنچل سے بھی ظریف لباس
اُبھارے دِل میں خیالات ، عید قاتل ہے

گَلے ملیں گے جو اُن سے بنے گا اُن کا کیا
ہُوئی ہیں خوشبو سے اَموات ، عید قاتل ہے

کہا بڑوں نے جو تیرے ، تم عیدی کیا لو گے؟
میں مانگ بیٹھا تیرا ہاتھ ، عید قاتل ہے

تُو آج خوش ہے تو شعروں پہ میرے ہنس لے مگر
بدلتے رہتے ہیں حالات ، عید قاتل ہے

زَمیں کے نیچے کسی قبر میں یہ سوچتا ہوں
بزرگ کہتے تھے دِن رات ، عید قاتل ہے

ہے مرد ذات پہ عید اِس لیے گراں بھائی !
کہ عید بھی ہے مسمات ، عید قاتل ہے

اِشارہ کافی ہے قیسؔ آج کل کے لڑکوں کو !
ہزار باتوں کی اِک بات ، عید قاتل ہے

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

لچکتی کلیوں کی برسات ، عید قاتل ہے


****************************************
لچکتی کلیوں کی برسات ، عید قاتل ہے
پھر اُس پہ شوخ اِشارات ، عید قاتل ہے

عروسی غنچوں کی ملکہ نے جب کہا ’’ آداب ‘‘
تو میں تو مر گیا کل رات عید قاتل ہے

جوان شاعری گلیوں میں دَندنانے لگی
تھرکتی غزلوں کی بہتات عید قاتل ہے

کسر مہینے کی اِک دِن میں ہی کہیں شیطان
کرے نہ پوری ، ہیں خدشات ، عید قاتل ہے

بدن کی سیج ہے غنچوں کا چمچماتا چمن
لباس ، لمس کے باغات عید قاتل ہے

جو بے زَبان ہیں ، قربان اُنہی کو ہونا ہے
سو شہر ہوں کہ مضافات عید قاتل ہے

دَوپٹہ ، چُوڑِیاں ، جھمکے ، حنا ، ہنسی ، خوشبو
ہیں اَپنے قتل کے آلات ، عید قاتل ہے

کہیں کہیں ہو تو اِنسان بچ بھی جائے جناب
گلی گلی میں لگی گھات ، عید قاتل ہے

گزار دیتے ہیں وُہ عید ہوتوں سوتوں میں
ہمیں تو دیتے ہیں لمحات عید قاتل ہے

وُہ صرف عورتوں سے عید مل کے بیٹھ گئے
مسل کے رَکھ دی مساوات ، عید قاتل ہے

اُودھم مچاتے ہیں کیوں چاند دیکھ کر ہم قیسؔ
وُہ کہنے آتا ہے: ’’ حضرات ، عید قاتل ہے ‘‘

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

زَخم اَپنانا کتنا مشکل ہے


****************************************
زَخم اَپنانا کتنا مشکل ہے
ٹیس دَفنانا کتنا مشکل ہے

کتنی آساں ہے صبر کی تلقین
صبر آ جانا کتنا مشکل ہے

عید کے دِن مجھے ہُوا معلوم
خوش نظر آنا کتنا مشکل ہے

آپ نے بھی کبھی کیا محسوس ؟
بات پلٹانا کتنا مشکل ہے

کاش سمجھانے والے بھی سمجھیں
خود کو سمجھانا کتنا مشکل ہے

مجھ پہ بیتی ہے مجھ سے پوچھو جناب !
لاش گھر لانا کتنا مشکل ہے

قیس بننے کے بعد جانا قیس
قیسؔ بن جانا کتنا مشکل ہے

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

عید اور چاند سے متعلق قطعات


****************************************
عید اور چاند سے متعلق قطعات
*
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

رویتِ ہلال:: نگاہیں ہر گھڑی تسبیح میں مصروف رہتی ہیں


****************************************
رویتِ ہلال:: نگاہیں ہر گھڑی تسبیح میں مصروف رہتی ہیں
اِسی سندر گلی میں حُسن کا معبود رِہتا ہے

ستارو ! عید کا پیغام تم کو ہم نے دینا ہے
کہ اَصلی چاند اَپنے سامنے موجود رہتا ہے

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

شاکر:: چھوٹے نوٹوں کی تازہ گڈی سے


****************************************
شاکر:: چھوٹے نوٹوں کی تازہ گڈی سے
بانٹ کر عیدی یہ کیا محسوس

شکریہ ہنس کے جتنا مرضی کہیں
بچے اَندر سے خوش نہیں ہوتے

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

حضرات !:: جانے کب عید کا بتائیں گے


****************************************
حضرات !:: جانے کب عید کا بتائیں گے
ٹی وی کے آگے بیٹھ جاتے ہیں

ماہرِ فلکیات پیچھے ہٹ !
چاند تو مولوی چڑھاتے ہیں

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

رائج الوقت:: بطور عیدی سنایا جو شعر کہنے لگے


****************************************
رائج الوقت:: بطور عیدی سنایا جو شعر کہنے لگے
بجائے میٹھے کے مجھ سے نہ مار کھا لینا

کڑکتے نوٹوں کی عیدی نکالو قیسؔ میاں !
جو بھیک مانگے اُسے شعر یہ سنا دینا

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

مقامِ شکر:: پھر سے گر ہو گئی ہیں دو عیدیں


****************************************
مقامِ شکر:: پھر سے گر ہو گئی ہیں دو عیدیں
کس لیے آپ محوِ وَحشت ہیں

فرقے جس قوم کے بہتّر (72) ہوں
اُس میں دو عیدیں تو غنیمت ہیں

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

عید اور چاند سے متعلق مفرد اشعار


****************************************
عید اور چاند سے متعلق مفرد اشعار
*
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

عبد:: خدا کے بندوں کو جو فائدہ نہیں دیتا


****************************************
عبد:: خدا کے بندوں کو جو فائدہ نہیں دیتا
نمازِ عید بھی مسجد میں وُہ اَدا نہ کرے

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

یومِ آزادی:: شوّال کی یکم ہے مسلمانوں کے لیے


****************************************
یومِ آزادی:: شوّال کی یکم ہے مسلمانوں کے لیے
شیطان کے لیے تو یہ 14 اَگست ہے

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

نگران رِند:: عید کے عید جو شراب پییں


****************************************
نگران رِند:: عید کے عید جو شراب پییں
اُن کو مے خوار کہہ نہیں سکتے

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

بندگلی:: غریب کوئی بہت دیر تک اُداس رہا


****************************************
بندگلی:: غریب کوئی بہت دیر تک اُداس رہا
کرے تو کیا کرے اور نہ کرے تو کیا نہ کرے

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

شرط:: ستم گروں کی نئی شرط سن رہے ہو قیسؔ !


****************************************
شرط:: ستم گروں کی نئی شرط سن رہے ہو قیسؔ !
’’یہ چاند دیکھ کے ملنے کی بھی دُعا نہ کرے‘‘

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

عدل:: سہیلیوں کی طرح ہم سے عید نہ ملیے


****************************************
عدل:: سہیلیوں کی طرح ہم سے عید نہ ملیے
خیال کیجیے مَردوں کا حصہ دُگنا ہے

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

دُعا:: جو آج خوش ہیں اُنہیں ایسی لاکھوں عیدیں ملیں


****************************************
دُعا:: جو آج خوش ہیں اُنہیں ایسی لاکھوں عیدیں ملیں
جو آج اُداس ہیں اُن کی پھر ایسی عید نہ ہو

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

شادی ء مرگ:: دیکھ کر عید پر طویل صفیں


****************************************
شادی ء مرگ:: دیکھ کر عید پر طویل صفیں
مسجدیں ہنستے ، ہنستے رونے لگیں

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

لاکر:: چھپا کے عیدی میں اُن کو دِیا ملن کا پیام


****************************************
لاکر:: چھپا کے عیدی میں اُن کو دِیا ملن کا پیام
اُنہوں نے پرس میں اَمی کے عیدی رَکھوا دی

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

ماموں:: سب چندا ماموں دیکھ کے ملنے لگے ہیں عید


****************************************
ماموں:: سب چندا ماموں دیکھ کے ملنے لگے ہیں عید
ہم کو ہمارے چاند نے ’’ ماموں ‘‘ بنا دیا

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

بدھو:: عید کی رات تھک کے گھر لوٹا


****************************************
بدھو:: عید کی رات تھک کے گھر لوٹا
غم نے پاؤں دَبائے چپ کر کے

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

فرمائش:: کسی نے پوچھا کہ کیا بھیجوں تو خوشی ہو گی ؟


****************************************
فرمائش:: کسی نے پوچھا کہ کیا بھیجوں تو خوشی ہو گی ؟
بغیر سوچے کہا ’’ بے حسی ‘‘ بڑی بوتل !

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

حُسنِ فطرت:: لبوں کی قوس ہے چندا سی ، چاند سے اَبرُو


****************************************
حُسنِ فطرت:: لبوں کی قوس ہے چندا سی ، چاند سے اَبرُو
سو چار چاند تو اُن کو لگے لگائے ہیں

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

خسارہ:: نہیں یہ عیدی کی اَدنیٰ رَقم کی بات نہیں


****************************************
خسارہ:: نہیں یہ عیدی کی اَدنیٰ رَقم کی بات نہیں
بڑے کیا ہو گئے وُہ پیار بھی نہیں ملتا

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

حدِ اَدَب:: چیٹ دو گھنٹے اور بھی کر لو


****************************************
حدِ اَدَب:: چیٹ دو گھنٹے اور بھی کر لو
نیٹ پہ تم عید مل نہیں سکتے

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

گلے عید چھوٹی پہ ہم مل چکے


****************************************
گلے عید چھوٹی پہ ہم مل چکے
بڑی عید ہے آؤ آگے بڑھیں

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

عید تو تین دن کی ہوتی ہے


****************************************
عید تو تین دن کی ہوتی ہے
۔"غم مبارک ہو"۔ ساتھ رہتا ہے

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

کہا جو گود میں سر رکھ کے لیٹنا ہے مجھے


****************************************
کہا جو گود میں سر رکھ کے لیٹنا ہے مجھے
تو اُس نے بکرے کا سر لا کے دے دیا مجھ کو

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

میری دیگر کتب سے انتخاب


****************************************
میری دیگر کتب سے انتخاب
عید اور چاند سے متعلق اشعار
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

چاند کو دیکھ کے ملنے کی دُعا نہ چھُوٹے


****************************************
چاند کو دیکھ کے ملنے کی دُعا نہ چھُوٹے
ہاتھ گر نیچے کریں ’’ پلکیں‘‘ اُٹھا کر رَکھنا

*
(شہزاد قیس کی کتاب’’ دِسمبر کے بعد بھی‘‘ سے انتخاب)
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

ہر ایک ہاتھ پہ چھَپ جاتا تھا کیو فار قیسؔ


****************************************
ہر ایک ہاتھ پہ چھَپ جاتا تھا کیو فار قیسؔ
میں چاند رات پہ منہدی لگایا کرتا تھا

*
(شہزاد قیس کی کتاب’’ نمکیات‘‘ سے انتخاب )
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

وُہ چاند عید کا اُترے جو دِل کے آنگن میں


****************************************
وُہ چاند عید کا اُترے جو دِل کے آنگن میں
ہم عید روز منائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

*
(شہزاد قیس کی کتاب’’ لیلٰی‘‘ سے انتخاب)
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

تمام رات فقط چاند دیکھتے رہنا


****************************************
تمام رات فقط چاند دیکھتے رہنا
تمہارا کام کسی دِن تمام کر دے گا

*
(شہزاد قیس کی کتاب’’ لیلٰی‘‘ سے انتخاب)
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

سنا ہے کروٹیں گنتا ہے چاند ، راتوں کو


****************************************
سنا ہے کروٹیں گنتا ہے چاند ، راتوں کو
کئی ستارے تو چھت پر اُتر کے دیکھتے ہیں

*
(شہزاد قیس کی کتاب’’ لیلٰی‘‘ سے انتخاب)
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

سنا ہے عید کا چاند اُن کی راہ تکتا ہے


****************************************
سنا ہے عید کا چاند اُن کی راہ تکتا ہے
خوشی کے دیپ ، قدم خوش نظر کے دیکھتے ہیں

*
(شہزاد قیس کی کتاب’’ لیلٰی‘‘ سے انتخاب)
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

چاند کو ڈُھونڈنے ہم سارے نکلتے ہیں مگر


****************************************
چاند کو ڈُھونڈنے ہم سارے نکلتے ہیں مگر
ڈُھونڈنے کس کو نکلتا ہے یہ مہتاب جناب

*
(شہزاد قیس کی کتاب’’ لیلٰی‘‘ سے انتخاب)
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

قیسؔ کل شب ملایا اُنہیں چاند سے


****************************************
قیسؔ کل شب ملایا اُنہیں چاند سے
چاندنی اُن سے شہ مات کھانے لگی

*
(شہزاد قیس کی کتاب’’ لیلٰی‘‘ سے انتخاب)
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

ایک ہی خواہش کا دورِ پُرسُکوں


****************************************
ایک ہی خواہش کا دورِ پُرسُکوں
چاند راتوں کی دُعا ، یادَش بخیر

*
(شہزاد قیس کی کتاب’’ لیلٰی‘‘ سے انتخاب)
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

چودہویں کا چاند ، نصفِ دِن کا آفتاب


****************************************
چودہویں کا چاند ، نصفِ دِن کا آفتاب
چندے آفتاب ، چندے ماہتاب ہے

*
(شہزاد قیس کی کتاب’’ لیلٰی‘‘ سے انتخاب)
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

چاند یاقوت لب کا آئے نظر


****************************************
چاند یاقوت لب کا آئے نظر
عید میں حشر تک مناؤں گا

*
(شہزاد قیس کی کتاب’’ لیلٰی‘‘ سے انتخاب)
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

ذِرا سی قوس رُخ کی رِہ گئی پردے سے شب باہر


****************************************
ذِرا سی قوس رُخ کی رِہ گئی پردے سے شب باہر
ہلالِ عید بولا چاند کا دیدار ہے لیلیٰ

*
(شہزاد قیس کی کتاب’’ لیلٰی‘‘ سے انتخاب)
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

گیسوؤں والا چاند بھی ہو گا


****************************************
گیسوؤں والا چاند بھی ہو گا
چلتا پھرتا گلاب دیکھا ہے

*
(شہزاد قیس کی کتاب’’ لیلٰی‘‘ سے انتخاب)
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

کھلونے عید پہ جگنو کو لے کے دیتے ہیں


****************************************
کھلونے عید پہ جگنو کو لے کے دیتے ہیں
تو تتلیوں کو قبائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

*
(شہزاد قیس کی کتاب’’ لیلٰی‘‘ سے انتخاب)
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

عید پر آنے والے کیا جانیں


****************************************
عید پر آنے والے کیا جانیں
کس نے کیسے بسر یہ سال کیا

*
(شہزاد قیس کی کتاب’’ لیلٰی‘‘ سے انتخاب)
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

تم آئے کہ خوشیوں پہ عید آ گئی


****************************************
تم آئے کہ خوشیوں پہ عید آ گئی
تم آئے کہ خنداں ہلال آ گیا

*
(شہزاد قیس کی کتاب’’ لیلٰی‘‘ سے انتخاب)
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

جگ منائے گا عید ، دیکھ کے چاند


****************************************
جگ منائے گا عید ، دیکھ کے چاند
میں تجھے دیکھ کر مناؤں گا

*
(شہزاد قیس کی کتاب’’ لیلٰی‘‘ سے انتخاب)
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

وُہ آئیں بام پہ تو پانچ عیدیں پکی ہیں


****************************************
وُہ آئیں بام پہ تو پانچ عیدیں پکی ہیں
وُہ چار چاند لگائیں ، حسین اِتنے ہیں

*
(شہزاد قیس کی کتاب’’ لیلٰی‘‘ سے انتخاب)
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

۔ اختتام ۔ مجموعہ کلام "عید" ۔


****************************************
۔ اختتام ۔ مجموعہ کلام "عید" ۔
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس
****************************************

Table of Contents


****************************************




****************************************
((End Text))
****************************************


*******************************
میری تمام کتب ڈاؤن لوڈ کیجیے
*******************************
تمام کتب ایک ذپ فائل کی صورت میں
http://sqais.com/QaisAll.zip

"لیلیٰ" از "شہزادقیس"
http://sqais.com/QaisLaila.pdf
http://sqais.com/QaisLaila.html
http://sqais.com/QaisLaila.txt

"دِسمبر کے بعد بھی" از "شہزادقیس"
http://sqais.com/QaisDecember.pdf
http://sqais.com/QaisDecember.html
http://sqais.com/QaisDecember.txt

"تتلیاں" از "شہزادقیس"
http://sqais.com/QaisTitliyan.pdf
http://sqais.com/QaisTitliyan.html
http://sqais.com/QaisTitliyan.txt

"عید" از "شہزادقیس"
http://sqais.com/QaisEid.pdf
http://sqais.com/QaisEid.html
http://sqais.com/QaisEid.txt

"غزل" از "شہزادقیس"
http://sqais.com/QaisGhazal.pdf
http://sqais.com/QaisGhazal.html
http://sqais.com/QaisGhazal.txt

"عرفان" از "شہزادقیس"
http://sqais.com/QaisIrfan.pdf
http://sqais.com/QaisIrfan.html
http://sqais.com/QaisIrfan.txt

"انقلاب" از "شہزادقیس"
http://sqais.com/QaisInqilab.pdf
http://sqais.com/QaisInqilab.html
http://sqais.com/QaisInqilab.txt

"وُہ اِتنا دِلکش ہے" از "شہزادقیس"
http://sqais.com/QaisDilkash.pdf
http://sqais.com/QaisDilkash.html
http://sqais.com/QaisDilkash.txt

"نمکیات" از "شہزادقیس"
http://sqais.com/QaisNamkiyaat.pdf
http://sqais.com/QaisNamkiyaat.html
http://sqais.com/QaisNamkiyaat.txt

"نقشِ ہفتم" از "شہزادقیس"
http://sqais.com/QaisNaqsh.pdf
http://sqais.com/QaisNaqsh.html
http://sqais.com/QaisNaqsh.txt

"اِلہام" از "شہزادقیس"
http://sqais.com/QaisIlhaam.pdf
http://sqais.com/QaisIlhaam.html
http://sqais.com/QaisIlhaam.txt

"شاعر" از "شہزادقیس"
http://sqais.com/QaisShayer.pdf
http://sqais.com/QaisShayer.html
http://sqais.com/QaisShayer.txt

"بیت بازی" از "شہزادقیس"
http://sqais.com/QaisBait.pdf
http://sqais.com/QaisBait.html
http://sqais.com/QaisBait.txt


**********************
آپ کو اس متن کی اشاعت کی اجازت ہے
**********************
آپ ان تخلیقات کو اپنے ویب سائٹ، بلاگ، فیس بک، ٹوئٹر، سوشل میڈیا اکاؤنٹس، اخبار، کتاب، ڈائجسٹ وغیرہ میں شائع کر سکتے ہیں بشرطیکہ
اس میں ترمیم نہ کریں، شہزادقیس کا نام بطور مصنف درج کریں اور اس تخلیق کی اشاعت غیر تجارتی مقاصد کے لیے ہو
یہ تخلیقات کریٹو کامنز لائسنس کے تحت شائع کی گئی ہیں جس میں اس تخلیق سے ماخوذ کام کی نشر و اشاعت کی اجازت نہیں ہے۔۔ مزید تفصیلات اس لنک پر ملاحظہ فرمائیے
https://creativecommons.org/licenses/by-nc-nd/4.0/legalcode

کسی اور طرح کی اشاعت کے لیے
Info@SQais.com
پر رابطہ فرمائیے۔

ShahzadQais

Sign Up