تتلیاں" از شہزادقیس"

شہزادقیس کی جانب سے خوش آمدید

 

اِنتساب

 

شروع ہے تو کام ابتدائی کریں

 

مجھ کو بھی بے وَفا سمجھتا ہے

 

آنکھوں میں کل کے خواب ہیں ، خوش خواب تتلیاں

 

اِس لیے سر جھکائے بیٹھے ہیں

 

خدا کے نام کا ہم اِحترام کرتے ہیں

 

شعر پر غور کر بھی سکتے ہو

 

تخلیقِ کردگار کا شہ کار تتلیاں

 

سرخ کلیوں کی جان ہے تتلی

 

نظر جب کسی کا جمال آ گیا

 

بہار ، شانِ چمن ہے ، وَقار ہے تتلی

 

ممکن ترین حُسن کا اِمکان تتلیاں

 

خوشبو کے کارواں کی ہیں سالار تتلیاں

 

باغ کی آن ، بان ہے تتلی

 

دُنیا میں تیرے ذوق پہ حیران ہو گیا

 

دِلکش ترین غنچوں کی مسکان تتلیاں

 

راز:: دنیا نے مجھ کو یونہی غزل گر سمجھ لیا

 

۔ اختتام ۔ مجموعہ کلام "تتلیاں" ۔



((Begin Text))
****************************************


****************************************

شہزادقیس کی جانب سے خوش آمدید


****************************************
شہزادقیس کی جانب سے خوش آمدید
مجموعہ کلام #تتلیاں میں شامل اشعار
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

اِنتساب


****************************************
اِنتساب
کتابوں میں چُنی ہُوئی اَنار کلیوں کے نام
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

شروع ہے تو کام ابتدائی کریں


****************************************
شروع ہے تو کام ابتدائی کریں
بیان اُس خدا کی بڑائی کریں

صنم ہیں تو کچھ دِل رُبائی کریں
ذِرا دیر چہرہ نمائی کریں

ستم کی توقع بھی رَکھا کریں
ستم گر سے جو آشنائی کریں

بجاتے ہیں گُل داد میں پتیاں
چمن میں وُہ نغمہ سرائی کریں

یہ دِل میں سے آوَت ہے کس کی صدا
اَجی ! کنجِ دِل سے رِہائی کریں

سنا ہے وُہ قائل وَفا کے ہوئے
چلو آج ہم بے وَفائی کریں

سَحَر کی اَذاں ہونے والی ہے قیسؔ
اِسی شعر کو اِنتہائی کریں

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

مجھ کو بھی بے وَفا سمجھتا ہے


****************************************
مجھ کو بھی بے وَفا سمجھتا ہے
جانے وُہ خود کو کیا سمجھتا ہے

میں تو منزل سمجھتا ہوں اُس کو
وُہ مجھے راستہ سمجھتا ہے

زَخم اَپنا دِکھا رَہا ہُوں اُسے
جو نمک کو دَوا سمجھتا ہے

میرا معیار جگ میں ہے ہی نہیں
جگ مجھے پارسا سمجھتا ہے

کیا خبر وُہ نماز ہی ہو قبول
شیخ جس کو قضا سمجھتا ہے

عقل مند آدمی ، محبت کو
عقل سے ماورا سمجھتا ہے

آج کے دور میں جفا کو قیسؔ
کوئی کوئی جفا سمجھتا ہے

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

آنکھوں میں کل کے خواب ہیں ، خوش خواب تتلیاں


****************************************
آنکھوں میں کل کے خواب ہیں ، خوش خواب تتلیاں
چندا سے پیار کرتی ہیں ، مہتاب تتلیاں

جب حُسن کے صحیفے میں لکھا تمہارا نام
پھول اُس پہ نقطے بن گئے ، اِعراب تتلیاں

رمزِ چمن سمجھنی ہو ، آنکھوں پہ آنکھ رکھ
پلکیں جھکا کے کرتی ہیں ، آداب تتلیاں

مٹھی میں نہ جکڑنا اِنہیں کھیل کھیل میں
ٹوٹے پروں کی لاتی نہیں تاب تتلیاں

سو منزلہ گھروں سے یہ نقصان بھی ہُوا
جگنو بھی خواب ہو گئے ، نایاب تتلیاں

سودا چمن کا جب ہُوا ، گُل ہی گنے گئے
خود کو سمجھتی تھیں یونہی سرخاب تتلیاں

لکھی ہے قیسؔ نے کسی معصوم پر کتاب
پڑھ پڑھ کے جھومنے لگیں ہر باب تتلیاں

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

اِس لیے سر جھکائے بیٹھے ہیں


****************************************
اِس لیے سر جھکائے بیٹھے ہیں
دِل میں دِل دار آئے بیٹھے ہیں

ہاتھ پر اُن کے تتلی بیٹھ گئی
گُل سبھی خار کھائے بیٹھے ہیں

رَنگ اُڑا لے گئے وُہ تتلی کا
گُل کی خوشبو چرائے بیٹھے ہیں

شائبہ تک نہیں شرارَت کا
کیسی صورَت بنائے بیٹھے ہیں

اِس لیے پاؤں میں دَباتا ہوں
وُہ مرا دِل دَبائے بیٹھے ہیں

ایک بت کا سوال ہے مولا !
من کا مندر سجائے بیٹھے ہیں

دوسرا موقع قیسؔ کیسے ملے ؟
ایک دِل تھا گنوائے بیٹھے ہیں

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

خدا کے نام کا ہم اِحترام کرتے ہیں


****************************************
خدا کے نام کا ہم اِحترام کرتے ہیں
مگر غزل یہ کسی بت کے نام کرتے ہیں

صراحی کا ہے مقدر ، نہ ساقیوں کا نصیب
جو کام ہونٹوں سے لگ کر یہ جام کرتے ہیں

کسی حسین کا لب کھولنا ضروری نہیں
گلاب خوشبو کے رَستے کلام کرتے ہیں

جو شعر میرے قلم تک رَسائی پا نہ سکیں
وُہ تتلیوں کے پروں پر قیام کرتے ہیں

سوانگ اَچھا رَچایا ہے حُسن والوں نے
کنیز بننے کا کہہ کر غلام کرتے ہیں

گلاب ، تتلی کی آمد پہ خَم ہوئے جیسے
غلام ، ملکہ کو جھک کر سلام کرتے ہیں

اُدھورا چھوڑنے سے یاد دوستوں کو رہے
غزل یہ قیسؔ یہیں پر تمام کرتے ہیں

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

شعر پر غور کر بھی سکتے ہو


****************************************
شعر پر غور کر بھی سکتے ہو
آدمی ہو تو مر بھی سکتے ہو

لاش بننا تو قدرے آساں ہے !
لاش پر سے گزر بھی سکتے ہو ؟

کیا کبھی تم نے ایسا سوچا تھا ؟
اَپنے چہرے سے ڈَر بھی سکتے ہو

غم کی آندھی سے جنگ چھیڑی ہے
زَرد پتو ! بکھر بھی سکتے ہو

چھیڑ چھاڑ اِتنی بھی ضروری نہیں
حُسن والو سدھر بھی سکتے ہو

عشق اَور جنگ میں ہے سب جائز
پیار کر کے مکر بھی سکتے ہو

قیسؔ اُس آدمی نے کیسے کہا
آدمی ہو تو مر بھی سکتے ہو

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

تخلیقِ کردگار کا شہ کار تتلیاں


****************************************
تخلیقِ کردگار کا شہ کار تتلیاں
یہ پھول اُڑ رہے ہیں کہ گلنار تتلیاں

دُنیا میں یوں رہو کہ جو دیکھے وُہ کھِل اُٹھے
سمجھا رہی ہیں جینے کے اَسرار تتلیاں

پھولوں پہ چھاؤں کرتی ہیں غنچوں پہ مہربان
غمگین قلب کے لیے غم خوار تتلیاں

جب اِن کو باغ چھوڑ کے جانا ہے ایک دِن
پھر باغباں سے کرتی ہیں کیوں پیار تتلیاں

وُہ باغ ، باغ لگتا نہیں اِہلِ دید کو
جس باغ میں نہ اُڑتی ہُوں دو چار تتلیاں

گُل میں اَگر مہک ہے تو اِن میں اُڑان ہے
پھر سونے پہ سہاگہ ہیں بے خار تتلیاں

شعروں کے دائیں ، بائیں بنا دیں گی چاند قیسؔ
مدہوش ہو کے پڑھتی ہیں اَشعار تتلیاں

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

سرخ کلیوں کی جان ہے تتلی


****************************************
سرخ کلیوں کی جان ہے تتلی
پنکھڑی کی اُڑان ہے تتلی

چلتی پھرتی ثنائے رَبی ہے
کہنے کو بے زَبان ہے تتلی

دوش پر گُل کے ’’گُل‘‘ ہی لگتی ہے
خوبصورت گمان ہے تتلی

قربِ گلشن میں کوئی رہتا ہے
اور گھر کا نشان ہے تتلی

حُسن پر صرف آنکھ رَکھنی ہے
صبر کا اِمتحان ہے تتلی

کاروانِ بہار رَنگ چلا
فخریہ ساربان ہے تتلی

حُسن پر کیا لکھیں گے شاعر قیسؔ !
حُسن کی ترجمان ہے تتلی

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

نظر جب کسی کا جمال آ گیا


****************************************
نظر جب کسی کا جمال آ گیا
بہت خوبصورَت خیال آ گیا

یہ تتلی ہے یا کہ ہَوا میں گُلاب
کلی کی جبیں پر جلال آ گیا

لَبِ نرم و نازُک پہ اُترا کمال
نئی پنکھڑی پر زَوال آ گیا

چراغ اُن کی خوشبو سے روشن ہُوئے
صُراحی میں دَم بے مثال آ گیا

بجا لایا جھک کے میں فرشی سلام
لبوں پر صنم کے ہِلال آ گیا

جوابا وُہ جھکتے ہُوئے رُک گئے
نجانے کیا دِل میں خیال آ گیا

مری باری آئی تو ساقی کو قیسؔ
خیالِ حرام و حلال آ گیا

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

بہار ، شانِ چمن ہے ، وَقار ہے تتلی


****************************************
بہار ، شانِ چمن ہے ، وَقار ہے تتلی
بہار کہتی ہے ’’ اُوں ہُوں بہار ہے تتلی ‘‘

گُلوں کی دید سے ہے خوشگوار رَنگِ چمن
نگاہِ گُل کے لیے خوشگوار ہے تتلی

یہ چومتی نہیں ، گُل اُنگلیوں پہ گنتی ہے
حسین پھولوں کی مردُم شمار ہے تتلی

چمن میں غیر مناسِب مَناظِر اَپنی جگہ
کمالِ ذوق کا اِک شاہکار ہے تتلی

ذِرا بھی کرتی نہیں اِنحراف فطرت سے
بہشتی پھول ہے ، پرہیز گار ہے تتلی

حنوط تتلی کی دُھندلی نظر کی چُپ سے لگا
خود اَپنے حُسن پہ کچھ سوگوار ہے تتلی

جو نوچ لیتے ہیں پر زِندہ تتلیوں کے قیسؔ
اے کاش سوچتے کہ جاندار ہے تتلی

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

ممکن ترین حُسن کا اِمکان تتلیاں


****************************************
ممکن ترین حُسن کا اِمکان تتلیاں
رَکھا جبھی کتاب کا عنوان تتلیاں

بالکل کھلی کتاب ہیں اور وُہ بھی دو وَرَق
پڑھنے میں اِنتہا کی ہیں آسان تتلیاں

اَکثر گلوں سے تتلیاں بڑھ کر حسین ہیں !
پھولوں کو چوم کر کریں اِحسان تتلیاں

دَربار حُسن والوں کی مرضی سے جب سجا
کرسی پہ گُل بٹھا دِئیے ، دَربان تتلیاں

جتنی بھی ہوں شریر نہ ڈانٹے گا باغبان
دو چار دِن کی ہوتی ہیں مہمان تتلیاں

اِک شوخ تتلی جاں مرے ہاتھوں پہ دے گئی !
تحریر کی ہیں تب سے مری جان تتلیاں

خوشبو بلا عقیدہ ملے جیسے سب کو قیسؔ
ویسے ہی سب کی خوشیوں کا سامان تتلیاں

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

خوشبو کے کارواں کی ہیں سالار تتلیاں


****************************************
خوشبو کے کارواں کی ہیں سالار تتلیاں
شبنم کے بعد پھول کا سنگھار تتلیاں

جگنو ہیں رَوشنی کی شرارَت کا آئینہ
رَنگوں کے مست رَقص کی جھنکار تتلیاں

’’ سُرخی ‘‘ بہار کی ، کہیں پھولوں کا عکس ہے
دُنیا کا سب سے دِلنشیں اَخبار تتلیاں

اَلفاظ کے بغیر کی فطرت نے شاعری
خوشبو کے اِضطراب کا اِظہار تتلیاں

پوچھا صنم نے تتلیاں اَچھی کہ ’’ شب چراغ ‘‘ ؟
میں نے کہا اَدَب سے کہ سرکار تتلیاں

کاش اِن کو حوض میں نظر آ جائیں اَپنے پر
پھولوں سے کر رہی ہیں عَبَث پیار تتلیاں

وُہ ’’ سُرخ رُو ‘‘ ہُوئے مرے شعروں کو پڑھ کے قیسؔ
رِہ رِہ کے چومنے لگیں رُخسار تتلیاں

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

باغ کی آن ، بان ہے تتلی


****************************************
باغ کی آن ، بان ہے تتلی
ذوق کا آسمان ہے تتلی

گُل نے اُوپر کو دیکھ کر یہ کہا
حُسن کا اِک جہان ہے تتلی

’’ جن ‘‘ کی ہوتی ہے جان طوطے میں
حُسن والوں کی جان ہے تتلی

اِس لیے غنچے اِس پہ کھلتے ہیں
بہتریں رازدان ہے تتلی

پھول جیسا مزاج پایا ہے
پھول کا خاندان ہے تتلی

چُوم لیتی ہے یار کا رُخسار
ہم سے تو پہلوان ہے تتلی

قیسؔ ہے ترجمان تتلی کا
قیسؔ کی ترجمان ہے تتلی

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

دُنیا میں تیرے ذوق پہ حیران ہو گیا


****************************************
دُنیا میں تیرے ذوق پہ حیران ہو گیا
پھولوں کے کاروبار میں نقصان ہو گیا !

مرجھا گئے گلاب ، دُکاں میں پڑے پڑے
کاغذ پرست ، شہر کا اِنسان ہو گیا

عطارِیوں کے گھر کو جو فاقوں نے آ لیا
عرقِ گلاب خود پہ پشیمان ہو گیا

بادَل چمن کو ڈُھونڈتے سر سے گزر گئے
تتلی نگر ، بہار میں ویران ہو گیا

قربان ہو گیا کوئی ، پھولوں کے باغ پر
پھولوں کے باغ پر ، کوئی قربان ہو گیا

اِنسان مردہ باد کا نعرہ لگا دِیا
پَت جھڑ میں ایک پھول کو ہَذیان ہو گیا

اُجڑی ہوئی دُکان گلابوں کی دیکھ قیسؔ
گھر آ کے اتنا رویا کہ ہلکان ہو گیا !

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

دِلکش ترین غنچوں کی مسکان تتلیاں


****************************************
دِلکش ترین غنچوں کی مسکان تتلیاں
پروردگارِ حُسن کی پہچان تتلیاں

ریحان تتلی ، لولو و مرجان تتلیاں
تخلیق کر رَہا ہے وُہ رِحمان تتلیاں

ممکن نہیں اُڑان ، مساوی پروں بغیر
خِلقت کا شاہکار ہیں میزان تتلیاں

کاغذ کے سبز باغ میں گُل تو بہت ملے
تا عمر ڈھونڈتا رَہا اِنسان تتلیاں

یہ نقش اِتفاق سے بنتے نہیں جناب
اِک نقش گر کا دیتی ہیں عرفان تتلیاں

وُہ بوسہء گلاب کو شاید جھکے تھے آج
بالکل قریب آ کے ہیں حیران تتلیاں !

بے ساختہ ثنائے خدا ، دِل سے اُٹھی قیسؔ
پل بھر میں تازہ کر گئیں ایمان تتلیاں

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

راز:: دنیا نے مجھ کو یونہی غزل گر سمجھ لیا


****************************************
راز:: دنیا نے مجھ کو یونہی غزل گر سمجھ لیا
میں تو کسی کے حسن کو کم کر کے لکھتا ہوں

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

۔ اختتام ۔ مجموعہ کلام "تتلیاں" ۔


****************************************
۔ اختتام ۔ مجموعہ کلام "تتلیاں" ۔
سدا خوش رھیے

ShahzadQais

Sign Up