چمن کو جائے تو دَس لاکھ نرگسی غنچے

چمن کو جائے تو دَس لاکھ نرگسی غنچے
زَمیں پہ پلکیں بچھائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

وُہ پنکھڑی پہ اَگر چلتے چلتے تھک جائے
تو پریاں پیر دَبائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

جو آنکھ کھلتی ہے غنچوں کی شوخ ہاتھوں پر
تو اَمی کہہ کے بُلائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

جہاں پہ ٹھہرے وُہ خوشبو کی جھیل بن جائے
گلاب ڈُوبتے جائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

ہَوا میں بوسہ اُچھالے تو پھول کھِل اُٹھیں
پرندے نغمے سنائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

وُہ عید ملنے جو غنچوں میں آئے ، پھول کہیں
نمازِ خوشبو پڑھائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

وُہ چومے غنچوں کو شفقت سے پر ’’ چھپے رُستم ‘‘
لبوں سے شہد چرائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے
#شہزادقیس
.

Sign Up