سریلا اِتنا ہے کہ ساز اَپنی آوازیں

سریلا اِتنا ہے کہ ساز اَپنی آوازیں
سُروں سے اُس کے ملائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

نشیلا اِتنا ہے کہ جام سوچ کر آنکھیں
مزے سے کانپ سے جائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

سجیلا اِتنا ہے کہ گرتی بوندیں جھرنے کی
بدن سے نظریں چرائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

رَسیلا اِتنا ہے کہ کلیاں رَس بھرائی کو
طرح طرح سے منائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

چھبیلا اِتنا ہے کہ پیراہن کی خوشبو پر
گلاب غزلیں سنائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

رَنگیلا اِتنا ہے کہ سات رَنگ اُس کے حُضور
سفید سے نظر آئیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

غصیلا اِتنا ہے کہ بادشاہ وَقتِ کلام
اَمان جان کی پائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے
#شہزادقیس
.

Sign Up