چلے جو مست ہِرن ، شہ جہان ، تاج مَحَل

چلے جو مست ہِرن ، شہ جہان ، تاج مَحَل
قدم قدم پہ بنائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

سکندر اَصل میں اُس کی تلاش کرتے تھے
کہ خالی ہاتھ نہ جائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

چرا کے عکس ، حنا رَنگ ہاتھ کا قارُون
خزانے ڈُھونڈنے جائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

پکارا رو کے یہ دیدارِ عام پر حاتم
حضور ایسی عطائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

جھلک دِکھانے کی رَکھیں جو شرط جوئے شیر
ہزاروں کوہ کن آئیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

تناسب ایسا کہ نوشیروان رو کے کہے
حُضور عدل سکھائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

ذَہین لوگ سرِ کوچہ ’’یافتم‘‘ کہہ کر
دَھمال ڈالتے جائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے
#شہزادقیس
.

Sign Up