کرائے فرض وُہ جو کچھ بھی فرض ہو جائے

کرائے فرض وُہ جو کچھ بھی فرض ہو جائے
فریضے بڑھتے ہی جائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

بدن کی حد پہ کسی ’’حادہ زاوِئیے‘‘ نے کہا
اِس علم کا تو بتائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

مثلثاتِ بدن سب ہیں چار ’’ضلعوں‘‘ کی
اُصول سر کو کھجائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

وُہ دائرے کو مثلث کہے یا خط کو عُمود
سر اَپنا سارے ہلائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

چلا کے ذِہن میں کچھ لڑکے حُسن کی ’’پرکار‘‘
’’مُماسِ‘‘ عشق بنائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

وُہ ’’مستطیل‘‘ بھی کھینچے تو طالب علموں کو
نظر ’’مربعے‘‘ ہی آئیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

کسی کے حُسن کے ’’تکمیلی زاوِئیے‘‘ توبہ
’’وَتَر‘‘ سروں کو ہلائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے
#شہزادقیس
.

Sign Up