اَدائیں حشر جگائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

اَدائیں حشر جگائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے
خیال حرف نہ پائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

بہشتی غنچوں میں گوندھا گیا صراحی بدن
گلاب خوشبو چرائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

بدن بنانے کو کرنوں کا سانچہ خلق ہُوا
خمیر ، خُم سے اُٹھائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

قدم ، اِرم میں دَھرے ، خوش قدم تو حور و غلام
چراغ گھی کے جلائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

حلال ہوتی ہے ’’ پہلی نظر ‘‘ تو حشر تلک
حرام ہو جو ہٹائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

گُل عندلیب کو ٹھکرا دے ، بھنورے پھولوں کو
پتنگے شمع بجھائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

غُبارِ راہ ہُوا غازہ اَپسراؤں کا
نہا نہا کے لگائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

Sign Up