لگائی سرخی کہ سرخی لبوں کی پھیکی لگے

لگائی سرخی کہ سرخی لبوں کی پھیکی لگے
تو تتلیاں نہ ستائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

لگایا اِس لیے غازہ کہ اِس کی سات تہیں
حقیقی حُسن چھپائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

لگائی خوشبو کہ شاید مہکتی لَپٹیں ، ذِرا
بدن کی خوشبو گھٹائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

لگایا اِس لیے چشمہ کہ آنکھ لڑنے سے
یہ مفت مارے نہ جائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

سیاہ ٹیکا ہیں یہ زیورات کہ ہم تم
اُسے نظر نہ لگائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

یہ ہیرا ناک میں پہنا کہ سادہ لوح مُرید
نظر نہ لب پہ ٹکائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

اَنگوٹھی منگنی کی منگنی بغیر پہنے ہے
کہ لوگ سر نہ کھپائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے
#شہزادقیس
.

Sign Up