جمال ایسا جُنوں گر کہ پوج لیں تب بھی

جمال ایسا جُنوں گر کہ پوج لیں تب بھی
نہ لکھی جائیں خطائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

نِہال ایسا کہ خوش قامتی پہ سَروِ چمن
رُکوع سے سر نہ اُٹھائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

خیال ایسا کہ سوچوں پہ سکتہ طاری ہو
اَرسطو اُنگلی چبائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

مُحال ایسا کہ رُستم بھی کانپنے کے بعد
شکست مان کے جائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

کمال ایسا کہ جس کا زَوال باقی حسین
ذِرا حساب لگائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

جلال ایسا شہنشاہ ، قَدِ آدم عکس
سروں سے بالا سجائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

جمال ایسا کہ شہزادیاں تک اُترن سے
لباسِ عید بنائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے
#شہزادقیس
.

Sign Up