نہا کے جھیل سے نکلے تو رِند پانی میں

نہا کے جھیل سے نکلے تو رِند پانی میں
مہک شراب سی پائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

خدا پہ اُس کے تو ایمان بت بھی لے آئیں
یقین اَدائیں دِلائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

دَوا پلائے جسے ٹھیک کب وُہ ہوتا ہے
کہ بار بار پلائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

قبا پہ اُس کی محبت کی حکمرانی ہے
صدا پہ صدقے صدائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

حنا کی شرح میں لکھی گئیں تمام کتب
اِحاطہ کر نہیں پائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

حیا پہ اُس کی تقدس غُرور کرتا ہے
اُجالے دیپ جلائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

جفا پہ اُس کی فدا کر دُوں سوچے سمجھے بغیر
ہزاروں ، لاکھوں وَفائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے
#شہزادقیس
.

Sign Up