عقیق ، لولو و مرجان ، ہیرے ، لعلِ یمن

عقیق ، لولو و مرجان ، ہیرے ، لعلِ یمن
اُسی میں سب نظر آئیں ، وُہ اتنا دلکش ہے

حریر ، اَطلس و کمخواب ، پنکھڑی ، ریشم
دَبا کے ہاتھ لگائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

جواہرات کی قسمت بدل دے شوخ بدن
’’ شریر ‘‘ چومتے جائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

ہم اُس کے سارے حسیں زیور اُتار دیتے ہیں
کہ یہ کیوں موج منائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

کنیزیں پیر دُھلائیں تو گرتے قطروں سے
گُہر وُجود میں آئیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

جو اُس کی ماسی کے ’’ کنگن ‘‘ پہ لکھ دے نظم کوئی
سب اُس کو سر پہ بٹھائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

دَہَن کی سیپ میں بتیس موتی یکجا ہیں
کہیں مثال نہ پائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے
#شہزادقیس
.

Sign Up