****************************************
((Notice))
Updated On: 9/14/2017 2:17:44 PM
Release Date: 8/13/2017 2:40:04 PM
****************************************


****************************************

((Table Of Contents))


#‏شہزادقیس کی جانب سے خوش آمدید


اِنتساب


مِس! ٹیک: تقدیر نے دِکھایا جو سرتاج یار کا


بات جو بے دَلیل کرتے ہیں


زِندہ دِلوں کی ہوتی ہے پہچان قہقہہ


سمندر میں اُترتا ہُوں تو ٹانگیں بھیگ جاتی ہیں


چائے میں بسکٹ گرا تو دِل کا دورہ پڑ گیا


ہز فرسٹ فلائٹ


غزل فرازؔ کی بالکل بدل کے دیکھتے ہیں


دیر آید بہت غلط آید


روٹی پہ آڑُو رَکھ کے پکانا پڑا مجھے


سائیڈ ایفیکٹ


یہ کیک پورا ہی کھا لُوں اَگر اِجازَت ہو


رِیاضیات میں سر ، دَھڑ کھپایا کرتا تھا


ممتاز جونیئر


چائے کے ساتھ رَضائی نہیں کھائی جاتی


شریر یہیں کے


جی بھر کے ہم کو حُسن کا پرشاد نہ ملا


کیکڑے کا رَقص ہے نہ اُونٹ کی تشہیر ہے


مدحتِ یار میں ایک خالص لاہوری کا کلام


۔ اختتام ۔ مجموعہ کلام "نمکیات" ۔



((Begin Text))
****************************************


****************************************

#‏شہزادقیس کی جانب سے خوش آمدید


****************************************
#‏شہزادقیس کی جانب سے خوش آمدید
مجموعہ کلام #‏نمکیات میں شامل اشعار
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

اِنتساب


****************************************
اِنتساب
موٹی سوئی کے نام
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

مِس! ٹیک: تقدیر نے دِکھایا جو سرتاج یار کا


****************************************
مِس! ٹیک: تقدیر نے دِکھایا جو سرتاج یار کا
میں روکتا ہی رہ گیا تاریخی قہقہہ

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

بات جو بے دَلیل کرتے ہیں


****************************************
بات جو بے دَلیل کرتے ہیں
سب اُنہی کو وَکیل کرتے ہیں

جانے کیوں لوگ تیرے عاشق کو
اَچھا خاصا ذَلیل کرتے ہیں

اِک سیہ فام کر رَہا تھا وُہی
جو حسین و جمیل کرتے ہیں

وُہ دِکھاتے ہیں غصے سے آنکھیں
اور ہم ’’ جھیل جھیل ‘‘ کرتے ہیں

زیست کی بوری بھاری ہو جائے
تب مدد عزرائیل کرتے ہیں

وُہ مرے ساتھ کرتے ہیں ویسا
جیسا تم سے کفیل کرتے ہیں

چُوڑیوں والے خوش نصیب ہیں قیسؔ
حُسن والوں سے ڈیل کرتے ہیں

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

زِندہ دِلوں کی ہوتی ہے پہچان قہقہہ


****************************************
زِندہ دِلوں کی ہوتی ہے پہچان قہقہہ
کھل کے لگاؤ آج مری جان قہقہہ

کچھ شاعر اَپنے آپ کو سنجیدہ لیتے ہیں
پر مارتے ہیں بیچ میں اَوزان قہقہہ

سنجیدہ چہرے والے تری نوز کی قسم
سنجیدگی سے ہے کہیں آسان قہقہہ

سب پیٹھ پیچھے ہنستے ہیں اِنٹل کچول کے
اِک شاعرہ کا پورا ہی دیوان قہقہہ

نکلے نہ جب نمک تو مجھے شک سا پڑتا ہے
مجھ پر لگا رہا ہے نمکدان قہقہہ

بکری کے چار فائدے جونہی پتہ چلے
تا دیر مارتا رہا اِنسان قہقہہ

کچھ دانت ایک مُکّے کی ہوتے ہیں مار قیسؔ
کچھ لوگوں کے گراتا ہے دَندان قہقہہ

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

سمندر میں اُترتا ہُوں تو ٹانگیں بھیگ جاتی ہیں


****************************************
سمندر میں اُترتا ہُوں تو ٹانگیں بھیگ جاتی ہیں
بڑا جھینگا پکڑتا ہُوں تو ٹانگیں بھیگ جاتی ہیں

میرے منہ بولے بھانجے کو کسی قصے کا غصہ ہے
اُسے گودی میں بھرتا ہُوں تو ٹانگیں بھیگ جاتی ہیں

حکومت بارِشوں سے مل گئی ہے اُن کے کوچے میں
وَہاں جونہی پہنچتا ہُوں تو ٹانگیں بھیگ جاتی ہیں

سویرے منہ پہ پانی پھینک کر بیگم اُٹھاتی ہے
اَگر چالاک بنتا ہُوں تو ٹانگیں بھیگ جاتی ہیں

جہاں پانی کا کُولر ہو ، وَہاں کَپ کیوں نہیں ہوتا
میں پہلا چُلّو بھرتا ہُوں تو ٹانگیں بھیگ جاتی ہیں

چلوں گا بحرِ ظلمات آج اِک دَریائی گھوڑے پر
کہ گھوڑے پر گزرتا ہُوں تو ٹانگیں بھیگ جاتی ہیں

کسی ڈوگی کے کاکے نے اِشاروں سے بتایا قیسؔ
میں جب بھی شیر بنتا ہُوں تو ٹانگیں بھیگ جاتی ہیں

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

چائے میں بسکٹ گرا تو دِل کا دورہ پڑ گیا


****************************************
چائے میں بسکٹ گرا تو دِل کا دورہ پڑ گیا
فوری چمچ نہ ملا تو دِل کا دورہ پڑ گیا

خون پتلا تو گوالا مفت میں کرتا میاں
ڈاکٹر کا بِل پڑھا تو دِل کا دورہ پڑ گیا

ناپ ، پیدل لے رہا تھا موٹو کا دَرزی غریب
ناپ اَبھی آدھا ہُوا تو دِل کا دورہ پڑ گیا

ہنستے ہنستے چال ہنس کی رات بھر کوا چلا
صبحِ دَم جونہی اُڑا تو دِل کا دورہ پڑ گیا

سُرخ طوطی تعزیت کرنے گئی کوے کے گھر
سُرخی کا طعنہ ملا تو دِل کا دورہ پڑ گیا

رات بھر دُولہا میاں گاتا رہا دُلہن کے گیت
صبحِ دَم جب منہ دُھلا تو دِل کا دورہ پڑ گیا

رُوحِ غالب قیسؔ کل اِک بزم میں موجود تھی
شاعرہ نے کچھ پڑھا تو دِل کا دورہ پڑ گیا

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

ہز فرسٹ فلائٹ


****************************************
ہز فرسٹ فلائٹ
مچھر سے پوچھا باپ نے پہلی اُڑان پر

تم نے بھی آج کھائی ہیں مخصوص گالیاں؟
بولا: نہیں تو! اُلٹا مجھے اُڑتا دیکھ کر

ہر آدمی خوشی سے بجاتا تھا تالیاں
#شہزادقیس

.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

غزل فرازؔ کی بالکل بدل کے دیکھتے ہیں


****************************************
غزل فرازؔ کی بالکل بدل کے دیکھتے ہیں
یہ نرم نرم ہے اِس پر اُچھل کے دیکھتے ہیں

نہ جانے کس طرح کیپسول کھائے جاتے ہیں
اُبل کے کڑوے بنے اِن کو تَل کے دیکھتے ہیں

سفید بال اَگر دُھوپ کی عنایت ہیں
تو ہم بھی چہرے پہ کچھ دُھوپ مَل کے دیکھتے ہیں

سنا ہے رات کو سڑکوں پہ رَش نہیں ہوتا
چل آدھی رات کو آفس کو چل کے دیکھتے ہیں

بہن جی مرد بنو کہنا پڑتا ہے اُن کو
جو لڑکے پھسلے ہُوئے آج کل کے دیکھتے ہیں

پکاتے وَقت وُہ اِتنے حسین لگتے ہیں
کہ دال ، سبزی ، چکن اُن کو جل کے دیکھتے ہیں

بڑے بڑے کئی شاعر سہم کے بیٹھ گئے
جو ہاتھوں قیسؔ کے حال اِس غزل کے دیکھتے ہیں

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

دیر آید بہت غلط آید


****************************************
دیر آید بہت غلط آید
*

سوچتے ہیں دَرِ جہنم پر
کھُل کے دُنیا میں جی لیا ہوتا

لو بڑھاپے میں وُہ بھی کہنے لگے
کاش تم کو ہی خوش کیا ہوتا

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

روٹی پہ آڑُو رَکھ کے پکانا پڑا مجھے


****************************************
روٹی پہ آڑُو رَکھ کے پکانا پڑا مجھے
کچھ یوں پکا کہ پِزّا منگانا پڑا مجھے

دو یار سُن رہے تھے کہ تین اور آ گئے
پانی غزل میں اور بڑھانا پڑا مجھے

دِل میں بٹھاتا یار کو پر دِل میں کوئی تھا
کچھ روز اُس کو منہ میں بٹھانا پڑا مجھے

جج نے کہا ، صفائی میں کچھ ہے تمہارے پاس
سونے کا اُس کو دانت دِکھانا پڑا مجھے

پانی کی آدھی بالٹی اور اِہلِ غسل چار
مجبوری میں چراغ بجھانا پڑا مجھے

کانوں میں چابی پھیرتے دیکھا جو بار بار
اِخلاقاً اُس کو دَھکا لگانا پڑا مجھے

باقاعدہ وُہ دیر سے آنے لگا تھا قیسؔ
دِلبر کو سرخ کارڈ دِکھانا پڑا مجھے

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

سائیڈ ایفیکٹ


****************************************
سائیڈ ایفیکٹ
*

صرف پہلو بدلتے رہتے ہیں
لوگ ٹیکے سے مر نہیں جاتے!!

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

یہ کیک پورا ہی کھا لُوں اَگر اِجازَت ہو


****************************************
یہ کیک پورا ہی کھا لُوں اَگر اِجازَت ہو
سموسہ یہ بھی چھپا لُوں اَگر اِجازَت ہو

اُسی طبیب سے پوچھا یہ سولہ سال کے بعد
حُضور ! اَب میں نہا لُوں اَگر اِجازَت ہو

ٹٹولتے ہُوئے سب جیبیں ڈیڑھ گھنٹے تک
گدا سے مفت دُعا لُوں اَگر اِجازَت ہو

دِیا دیئے سے جلاتے ہیں سو برائے کتاب
کسی کے شعر اُٹھا لُوں اَگر اِجازَت ہو

کسی دِماغ کے سرجن کو ڈاج دے کر آج
یہ سر فری میں منڈا لُوں اَگر اِجازَت ہو

کہا جو پیار تمہیں دِل میں کرتا ہُوں ، بولی
میں کھانا دِل میں پکا لُوں اَگر اِجازَت ہو

رِضا دی جونؔ نے ہنس کر ، کہا جو میں نے قیسؔ
دُکھی دِلوں کو ہنسا لُوں اَگر اِجازَت ہو

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

رِیاضیات میں سر ، دَھڑ کھپایا کرتا تھا


****************************************
رِیاضیات میں سر ، دَھڑ کھپایا کرتا تھا
میں کاپی لکھتے ہُوئے کپکپایا کرتا تھا

جو ہنس کے پوچھتا تھا کام چیک ہُوا تھا آج ؟
’’جواب میں کوئی آنسو بہایا کرتا تھا‘‘

پرندے بھی میں بناتا تھا ، پر اَکیلے میں
میں کاپیوں پہ بڑا کچھ بنایا کرتا تھا

گلی کے بیچ میں دو کمرے منہ چڑاتے ہیں
’’یہ راستہ تو کہیں اور جایا کرتا تھا‘‘

فقیر جلدی سے نوٹ اَپنے گننے لگتے تھے
میں جب خرید کے اَمرُود کھایا کرتا تھا

بہت ہی رات گئے تک نتیجے والے دِن
میں دادا اَبّو کی ٹانگیں دَبایا کرتا تھا

ہر ایک ہاتھ پہ چھَپ جاتا تھا کیو فار قیسؔ
میں چاند رات پہ منہدی لگایا کرتا تھا

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

ممتاز جونیئر


****************************************
ممتاز جونیئر
*

چودہ بچوں کے بعد مر جاؤ
پھر بنا دُوں گا تم کو تاج مَحَل

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

چائے کے ساتھ رَضائی نہیں کھائی جاتی


****************************************
چائے کے ساتھ رَضائی نہیں کھائی جاتی
ڈال کر چٹنی ، چٹائی نہیں کھائی جاتی

شادِیاں کرنے کی خواہش سے لبالب تھے کبھی
اَب تو شادی کی مٹھائی نہیں کھائی جاتی

دانت تو خیر نکلوانے تھے بس اِتنا کہا
تم نے جو روٹی بنائی نہیں کھائی جاتی

ڈھائی من بوٹیاں یہ قوم ہضم کر لے گی
اِس سے بس دال فرائی نہیں کھائی جاتی

پہلے دو نیم کیا کرتے تھے ٹھوکر سے پہاڑ
اَب تو طاقت کی دَوائی نہیں کھائی جاتی

اِس حقیقت پہ کئی چائے کے کپ شاہد ہیں
بعض لوگوں سے ملائی نہیں کھائی جاتی

دِل سے جو نکلے دُعا ایک خزانہ ہے میاں
قیسؔ لفظوں کی کمائی نہیں کھائی جاتی

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

شریر یہیں کے


****************************************
شریر یہیں کے
*

بہشت سے کہاں نکلے خدا نے تو یہ کہا
زَمیں پہ جاؤ اَگر ایسے کام کرنے ہیں

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

جی بھر کے ہم کو حُسن کا پرشاد نہ ملا


****************************************
جی بھر کے ہم کو حُسن کا پرشاد نہ ملا
بوسے کے ساتھ رائتہ ، سالاد نہ ملا

اُستاد کہلوانے لگا رَدّی چھاپ کر
جس شخص کو بھی وَقت پہ اُستاد نہ ملا

اَپنے کنوارے رہنے کا ہم کو نہیں ملال
پر ممکنہ سسر کو جو داماد نہ ملا

آزاد قبر میں ہُوئے سب رَنگ و نسل سے
روئے زَمین پر کوئی آزاد نہ ملا

منزل پہ چغل خور پہنچتے نہیں مگر
ہم کو تو راستے میں بھی نقاد نہ ملا

سب شاعر اِس کا ذِکر تو کرتے ہیں بار بار
ہم ڈُھونڈ ڈُھونڈ تھک گئے اِرشاد نہ ملا

کرنا تھا قیسؔ دُودھ کے معیار کا گلہ
کھودا پہاڑ بھی کہیں فرہاد نہ ملا

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

کیکڑے کا رَقص ہے نہ اُونٹ کی تشہیر ہے


****************************************
کیکڑے کا رَقص ہے نہ اُونٹ کی تشہیر ہے
یہ تو میرے ڈاکٹر کے ہاتھ کی تحریر ہے

کیچی میچی اِن کے ایلفا بیٹس کا آغاز ہے
کچھ پڑھا جائے تو یہ خوبی نہیں تقصیر ہے

ڈاکٹر صاحب حلف میں یہ بھی لکھا تھا کہیں ؟
صاف ستھرا لکھنے والا لائقِ تعزیر ہے

ڈاکٹر خوش خط لکھے تو اُس کی ڈِگری چیک کرو
دال میں کالا نہیں یہ دال میں کف گیر ہے

بچہ یوں لکھے تو ٹیکے سے کریں سیدھا اُسے
ڈاکٹر کا کیا کریں ٹیکوں کا تو یہ پیر ہے

ڈِگریوں کا ہے کوئی سر پیر نہ تحریر کا
گر شِفا مل جائے تو بندے تری تقدیر ہے

روشنی سے تیز تر لکھنے کی عادَت پڑ گئی
لفظ پیچھے رِہ گئے تو اِن کی کیا تقصیر ہے

نسخہ لکھا ہے کہ ملک الموت کو خط لکھ دِیا
آپ سمجھیں تو یہ طبّی پیشے کی تحقیر ہے

ہو نہ ہو اِہرام میں پٹّی شدہ فرعون کی
ڈاکٹر کی شان میں فُل زیرِ لب تحریر ہے

زِندگی بھر خامیوں سے اَپنی نا واقف رَہا
جس کسی کی آنکھ میں بھی علم کا شہتیر ہے

ٹاپ کرنے والوں کی تحریر کا یہ حشر قیسؔ
وائرسوں سے گھلتے ملتے رہنے کی تاثیر ہے

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

مدحتِ یار میں ایک خالص لاہوری کا کلام


****************************************
مدحتِ یار میں ایک خالص لاہوری کا کلام
*** *** *** *** *** *** *** *** *** ***

پہلی چائے کی چسکی جیسا ہے
کیا بتاؤں وُہ شوخ کیسا ہے

نان پائے کا اِک پیالہ ہے
ذائقہ یار کا نرالہ ہے

گرم حلوہ پوری ، اَچار ، چنے
یار کے ساتھ میری کیوں نہ بنے

جام ، مکھن لگی ڈَبل روٹی
یار چالاک ، عمر ہے چھوٹی

روغنی نان ہو حلیم کے ساتھ
یار یوں سلمٰی ہے سلیم کے ساتھ

جیسے اَنڈا ، پراٹھا ، دیسی گھی
یار کی شان ہی اَلگ ہے جی

دُودھ لَسّی میں برف کا ٹکڑا
چاند سے بڑھ کے یار کا مکھڑا

مست ماحول میں بھی اَللہ ہُو
یار پیازوں کے تڑکے کی خوشبو

یار کو کس طرح لگے مسکا
یار پھجے کے پائے کا چسکا

یار پہ جان صدقے واری ہے
یار تڑکہ لگی نہاری ہے

یار کی جان میں ہے میری جان
یار تندور سے نکلتا نان

ڈال دیتا ہے پاؤں میں زنجیر
یار چرغے کے بعد ربڑی کھیر

دیگ کا بہتریں پلاؤ ہے
یار اِک حُسن کا اَلاؤ ہے

دال میں جیسے ڈالی ہو اِملی
یار بیسن لگی تلی مچھلی

یار تشنہ نظر کی حیرانی
یار اَعلیٰ قسم کی بریانی

یار کا نام ہے ہمارا نام
یار کشمیری چائے میں بادام

تازگی قابلِ بھروسہ ہے
یار آلو بھرا سموسہ ہے

جتنا کھاؤں میں اُتنا تھوڑا ہے
یار کے ہاتھ کا پکوڑا ہے

چپس ، کیچپ کی جیسے گرم پلیٹ
یار اِتنا حسین ، اِتنا گریٹ

یار قیمہ توے پہ بھونا ہُوا
یار لیگ پیس بھاپ اُٹھتا ہُوا

یار قلفی کا آخری لقمہ
یار میلے میں ملتا قتلمہ

سُرخ ، ٹھنڈا ، رَسیلا شربتی جام
یار سگریٹ کے پہلے کَش کا نام

یار برفی سا پاک دامن ہے
یار چم چم ، گلاب جامن ہے

بھوک لگ جائے گی مزید نہ چھیڑ
یار تکہ ، کڑاہی ، بھونا بٹیر

یار نے بھوک ہی بڑھائی ہے
یار سالاد ، پھل ، مٹھائی ہے

قیسؔ کا یار قدرے ایسا ہے
آپ کا پیار کہیے کیسا ہے ؟

#شہزادقیس
.
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

۔ اختتام ۔ مجموعہ کلام "نمکیات" ۔


****************************************
۔ اختتام ۔ مجموعہ کلام "نمکیات" ۔
سدا خوش رہیے ۔ شہزادقیس
****************************************

Table of Contents


****************************************




****************************************
((End Text))
****************************************


*******************************
میری تمام کتب ڈاؤن لوڈ کیجیے
*******************************
تمام کتب ایک ذپ فائل کی صورت میں
http://sqais.com/QaisAll.zip

"لیلیٰ" از "شہزادقیس"
http://sqais.com/QaisLaila.pdf
http://sqais.com/QaisLaila.html
http://sqais.com/QaisLaila.txt

"دِسمبر کے بعد بھی" از "شہزادقیس"
http://sqais.com/QaisDecember.pdf
http://sqais.com/QaisDecember.html
http://sqais.com/QaisDecember.txt

"تتلیاں" از "شہزادقیس"
http://sqais.com/QaisTitliyan.pdf
http://sqais.com/QaisTitliyan.html
http://sqais.com/QaisTitliyan.txt

"عید" از "شہزادقیس"
http://sqais.com/QaisEid.pdf
http://sqais.com/QaisEid.html
http://sqais.com/QaisEid.txt

"غزل" از "شہزادقیس"
http://sqais.com/QaisGhazal.pdf
http://sqais.com/QaisGhazal.html
http://sqais.com/QaisGhazal.txt

"عرفان" از "شہزادقیس"
http://sqais.com/QaisIrfan.pdf
http://sqais.com/QaisIrfan.html
http://sqais.com/QaisIrfan.txt

"انقلاب" از "شہزادقیس"
http://sqais.com/QaisInqilab.pdf
http://sqais.com/QaisInqilab.html
http://sqais.com/QaisInqilab.txt

"وُہ اِتنا دِلکش ہے" از "شہزادقیس"
http://sqais.com/QaisDilkash.pdf
http://sqais.com/QaisDilkash.html
http://sqais.com/QaisDilkash.txt

"نمکیات" از "شہزادقیس"
http://sqais.com/QaisNamkiyaat.pdf
http://sqais.com/QaisNamkiyaat.html
http://sqais.com/QaisNamkiyaat.txt

"نقشِ ہفتم" از "شہزادقیس"
http://sqais.com/QaisNaqsh.pdf
http://sqais.com/QaisNaqsh.html
http://sqais.com/QaisNaqsh.txt

"اِلہام" از "شہزادقیس"
http://sqais.com/QaisIlhaam.pdf
http://sqais.com/QaisIlhaam.html
http://sqais.com/QaisIlhaam.txt

"شاعر" از "شہزادقیس"
http://sqais.com/QaisShayer.pdf
http://sqais.com/QaisShayer.html
http://sqais.com/QaisShayer.txt

"بیت بازی" از "شہزادقیس"
http://sqais.com/QaisBait.pdf
http://sqais.com/QaisBait.html
http://sqais.com/QaisBait.txt


**********************
آپ کو اس متن کی اشاعت کی اجازت ہے
**********************
آپ ان تخلیقات کو اپنے ویب سائٹ، بلاگ، فیس بک، ٹوئٹر، سوشل میڈیا اکاؤنٹس، اخبار، کتاب، ڈائجسٹ وغیرہ میں شائع کر سکتے ہیں بشرطیکہ
اس میں ترمیم نہ کریں، شہزادقیس کا نام بطور مصنف درج کریں اور اس تخلیق کی اشاعت غیر تجارتی مقاصد کے لیے ہو
یہ تخلیقات کریٹو کامنز لائسنس کے تحت شائع کی گئی ہیں جس میں اس تخلیق سے ماخوذ کام کی نشر و اشاعت کی اجازت نہیں ہے۔۔ مزید تفصیلات اس لنک پر ملاحظہ فرمائیے
https://creativecommons.org/licenses/by-nc-nd/4.0/legalcode

کسی اور طرح کی اشاعت کے لیے
Info@SQais.com
پر رابطہ فرمائیے۔