سو گنا گر حیات ہو جائے

سو گنا گر حیات ہو جائے
کھُل کے اِک تِل پہ بات ہو جائے

دِل کسی کھیل میں نہیں لگتا
جب محبت میں مات ہو جائے

ایک دیوی کی آنکھ ایسے لگی
جیسے مندر میں رات ہو جائے

کتنے بیمارِ عشق بچ جائیں !
حُسن پر گَر زَکات ہو جائے

بُت شِکن کیا بگاڑ سکتا ہے ؟
دِل اَگر سومنات ہو جائے

آپ دِل چور ہو ، ہم اِہلِ دِل
وَقت دو ، واردات ہو جائے

گُل میں خوشبو نہ ہو وَفا کی قیسؔ
پنکھڑی بے ثبات ہو جائے
شہزاد قیس

زَر پرستی حیات ہو جائے

زَر پرستی حیات ہو جائے
اِس سے بہتر وَفات ہو جائے

پھر میں دُنیا میں گھوم سکتا ہوں
جسم سے گر نجات ہو جائے

محورِ عشق سے ذِرا سا ہٹے
مُنتَشِر کائنات ہو جائے

جھیل آنکھوں میں ڈُوبنے نکلوں
نیم رَستے میں رات ہو جائے

عشق جو شرط کے بغیر کرے
ساقی ء شَش جِہات ہو جائے

آنکھ پڑھنا جسے بھی آ جائے
ماہرِ نفسیات ہو جائے

عکسِ لیلیٰ سے قیسؔ بات تو کر !
عین ممکن ہے ، بات ہو جائے
شہزاد قیس

شوخ رُخ پر حیا جھلملانے لگی

شوخ رُخ پر حیا جھلملانے لگی
زِندگی گیت خوشیوں کے گانے لگی

کورے کاغذ پہ لکھا جو نام آپ کا
کاغذی پھول سے خوشبو آنے لگی

عرش والوں نے چھوڑی کوئی پھلجھڑی
یا وُہ غنچہ دَہَن مسکرانے لگی

زُلف کا پھول اُس نے مجھے دے دِیا
عمر بھر کی اُداسی ٹھکانے لگی

میں تو ہم شہر ہونے پہ بے چین تھا
کل سے وُہ گھر میں بھی آنے جانے لگی

پھول توڑے بنا اُس پہ لب رَکھ دِئیے
چاہنے کا قرینہ سکھانے لگی

چاند کے منہ پہ اُن کو کرایا جو قیسؔ
چاندنی اُن سے ’’ شہ مات ‘‘ کھانے لگی
شہزاد قیس

اِذنِ رَبی سے جام چلتا ہے

اِذنِ رَبی سے جام چلتا ہے
حَشر تک اِہتمام چلتا ہے


جام سے پہلے جام چکھتے ہیں
جام کے بعد جام چلتا ہے


ساتھ اُن کے کنیز آئے گی
ساتھ میرے غلام چلتا ہے


ہرنیاں اُس پہ ناز کرتی ہیں
آہ ! کیا خوش خرام چلتا ہے


دُنیا میں اور کچھ چلے نہ چلے
حُسن کا اِحترام چلتا ہے


حُسن دَھڑکن ہے رازِ ہستی کی
یہ چلے تو نظام چلتا ہے

چاند پر اِک مے کدہ آباد ہونا چاہیے

چاند پر اِک مے کدہ آباد ہونا چاہیے
یا محبت کو یہیں آزاد ہونا چاہیے

خوبصورَت تتلیوں نے کھول کر رَکھ دی کتاب
غنچوں کی جانب سے کچھ اِرشاد ہونا چاہیے

خواہشِ جنت میں کرتے ہیں جو زاہد نیکیاں
نام اُن کا ’’ متقی شدّاد ‘‘ ہونا چاہیے

عشق کی گیتا کے ’’ پچھلے ‘‘ نسخوں میں یہ دَرج تھا
طالبانِ حُسن کو فولاد ہونا چاہیے

وَصلِ شیریں تو خدا کی مرضی پر ہے منحصر
عاشقوں کو محنتی فرہاد ہونا چاہیے

اِتنا خوش رَنگ کہ خوابوں کا نگر لگتا ہے

اِتنا خوش رَنگ کہ خوابوں کا نگر لگتا ہے
گنبدِ سبز سے یہ شہر گہر لگتا ہے

معذرَت اِہلِ مدینہ یہ جسارَت ہے مگر
ایک ہستی کے طفیل اَپنا ہی گھر لگتا ہے

پاؤں آقا نے اِنہی گلیوں میں رَکھے ہوں گے !
پاؤں رَکھتے ہُوئے ایمان سے ڈَر لگتا ہے

نمکیات" از شہزادقیس"

****************************************
#‏شہزادقیس کی جانب سے خوش آمدید
مجموعہ کلام #‏نمکیات میں شامل اشعار
****************************************

Table of Contents


****************************************


****************************************

اِنتساب


****************************************
اِنتساب
موٹی سوئی کے نام
****************************************