Page No. 1

Page No. 1

ہم خواب کو شرمندۂ تعبیر کریں گے
اور اِس کے لیے قلب کی تطہیر کریں گے
تم دیکھنا اِک دِن یہ فلک بوس عمارات
کردار کے بَل بوتے پہ تسخیر کریں گے
حق بات پہ کر دو گے جو پابندِ سَلاسِل
زَنجیر کی جھنکار سے تقریر کریں گے
ہم جیسے نہتے ہُوئے ایوانوں پہ قابض
تو عدل کی زَنجیر کو شمشیر کریں گے
دَستار کو ہاتھوں سے سنبھالیں گے یہ واعظ !
جب اِہلِ جُنوں ، عشق کی تفسیر کریں گے
ہر شخص پھر اِحرام کی جرأت نہ کرے گا
ہم شیش مَحَل ، کعبے میں تعمیر کریں گے
اِک چاند کو ہاتھوں پہ اُترتے ہوئے دیکھا
کیا آپ مرے خواب کی تعبیر کریں گے
حیرت زَدہ ہو جائیں گے دو عکس پرانے
تصویر کے جب سامنے تصویر کریں گے
اَن پڑھ بھی پکار اُٹھے گا ، مکتوب ہے سچا
ہم ایسے سُرخ رَنگ سے تحریر کریں گے
ناکامی کا اِمکان بھی ممکن نہ رہے گا
تقدیر سے مل کر کوئی تدبیر کریں گے
نفرت کی نُمائش ہے شہنشاہی وَطیرہ
ہم قیس کے دیوان کی تشہیر کریں گے
(Built By UrduKit UrduKit.com)
Not yet rated

No Comments

Add a comment:

Code
*Required fields