Page No. 1

Page No. 1

عہدِ مسجود میں قیام غزل
تجھ کو پہنچے مرا سلام غزل
لفظ کو مرتبے پہ رَکھنا ہے
بے مثال عدل کا نظام غزل
شاہ اَپنا قصیدہ آپ پڑھے
پڑھ رہے ہیں سبھی عوام غزل
لفظ متضاد مل کے رہتے ہیں
چار تلواروں کی نیام غزل
بادشاہت کو اِس سے خطرہ ہے
تم سمجھتے ہو جس کو عام غزل
واعظِ شہر گر سمجھ سکتا
دوڑ کر کہتا ، اَلحرام غزل
گنجِ مخفی ہے یہ رِہائی کا
عقل مندوں کی ہے اِمام غزل
سنگِ مرمر کا پھول ، تاج مَحَل
عشق کا حُسنِ اِہتمام غزل
دار منصور کو چڑھا دو گے !
حشر تک لے گی اِنتقام غزل
حسن کے آسمان ، حکم چلا
لکھ رہا ہے ترا غلام غزل
قیس ! جو یہ غزل پسند کرے
لکھو اُس خوش نظر کے نام غزل !
(Built By UrduKit UrduKit.com)
Not yet rated

No Comments

Add a comment:

Code
*Required fields