Page No. 1

Page No. 1

موت حیران کُن پَہیلی ہے
اور یہ زِندگی نے کھیلی ہے
پہلی شب ہی اَلگ سے گھر لے گی
موت دُلہن نئی نویلی ہے
ایک تنہائی ، دُوسری دَھڑکن
شاعری ، تیسری سہیلی ہے
صرف دِل داؤ پر لگایا تھا
آپ نے جان ساتھ لے لی ہے
سانس ہی اُن کی زعفرانی نہیں
زُلف بھی عنبریں چنبیلی ہے
مسکراؤں تو ’’ طعنے ‘‘ دیتا ہے
رَنج ، بچپن سے یار بیلی ہے
رِہ سکوں خود ، نہ بیچ سکتا ہوں
جسم ، اَجداد کی حویلی ہے
ایک پہیے کی گاڑی کیا چلتی !
قبر تک زِندگی دَھکیلی ہے
موت کا بہترین وَقت ہے یہ
سَر تلے لیلیٰ کی ہتھیلی ہے
راستہ چھوڑ پاسبانِ اِرَم !
’’ ہاوِیہ ‘‘ دَھڑکنوں کی جھیلی ہے
قیس میں اور زِندہ رِہ لیتا
آسمانوں پہ وُہ اَکیلی ہے !
(Built By UrduKit UrduKit.com)
Not yet rated

No Comments

Add a comment:

Code
*Required fields