Welcome to Shahzad Qais Home

****************************************
((Notice))
Updated On: 24-Sep-16 3:30:15 PM
Release Date: 17-Feb-16 8:19:39 PM
****************************************

****************************************
((Begin Text))
****************************************

****************************************
شہزادقیس کی جانب سے خوش آمدید
****************************************
شہزادقیس کی جانب سے خوش آمدید
مجموعہ کلام #لیلیٰ میں شامل اشعار
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisLaila.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
اِنتساب
****************************************
اِنتساب
پھر بھی لیلیٰ کے نام
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
ویلنٹائن ڈے: اِک روز محبت کے لیے کر کے مقرر
****************************************
ویلنٹائن ڈے: اِک روز محبت کے لیے کر کے مقرر
دِل والوں پہ دُنیا نے بڑا ظلم کیا ہے
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisLaila.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
قلم کو بابِ تمنا پہ دَھر کے دیکھتے ہیں
****************************************
قلم کو بابِ تمنا پہ دَھر کے دیکھتے ہیں
خُمِ فراز سے اِک جام بھر کے دیکھتے ہیں

سفر کے تاروں نے کیا کُوچ کا بتانا تھا
کہ وُہ تو پیروں کو رَشکِ قمر کے دیکھتے ہیں

ہنر ملا ہے جنہیں شاعری کا ، اُن کا نصیب
کہ ہم تو معجزے خونِ جگر کے دیکھتے ہیں

ہر ایک ذات میں اُس کی کوئی نشانی ہے
کرشمے حُسن میں رَب کے ہُنر کے دیکھتے ہیں

سنا ہے اُس نے یوں اَنگڑائی لی کہ حسرت سے
پری جمال ، کمال اِک بشر کے دیکھتے ہیں

سنا ہے جب وُہ کبھی نچلا لب چباتے ہیں
تو پھول پنکھڑی کو دُہرا کر کے دیکھتے ہیں

سنا ہے کروٹیں گنتا ہے چاند ، راتوں کو
کئی ستارے تو چھت پر اُتر کے دیکھتے ہیں

سنا ہے چال پہ ہے آنکھ ، راج ہنسوں کی
غزال کُوچۂ جاں سے گزر کے دیکھتے ہیں

سنا ہے بوند جو پانی کی لب کو چھُو کے گری
شراب خانے اُسے آہ بھر کے دیکھتے ہیں

سنا ہے رُوپ کا دَرپن ہے رَقص کرتا کنول
حسین غنچے اُسے بن سنور کے دیکھتے ہیں

سنا ہے عید کا چاند اُن کی راہ تکتا ہے
خوشی کے دیپ ، قدم خوش نظر کے دیکھتے ہیں

سنا ہے بادَلوں پہ جب وُہ پاؤں دَھرتے ہیں
تو اَبر کو تو سمندر بپھر کے دیکھتے ہیں

سنا ہے بس سے ہو باہر اَگر مسیحا کے
تو خاک قدموں کی تجویز کر کے دیکھتے ہیں

سنا ہے زینہ اُترتا ہے یوں وُہ مست غزال
کہ حرف چٹکلے زِیر و زَبر کے دیکھتے ہیں

سنا ہے ایک تو چوری کی اِملی کھاتے ہیں
زَباں پہ لیموں کی پھر بوند دَھر کے دیکھتے ہیں

سنا ہے آئینے سے خاصے بے تَکلُفّ ہیں
سو ہم بھی دُوسری جانب اُتر کے دیکھتے ہیں

سنا ہے فاختہ کے با اَدب ترانے پر
شجر رُکوع میں بھی دَم خم کمر کے دیکھتے ہیں

سنا ہے جگنو کوئی زُلف میں رہا شب بھر
ستارے نخرے اَب اُس مفت بر کے دیکھتے ہیں

سنا ہے مورنی شاگردِ خاص ہے اُن کی
سو مور رَقص اُسی مست گر کے دیکھتے ہیں

سنا ہے جان کنی مشغلہ ہے ملکہ کا
اِسی بہانے ملاقات کر کے دیکھتے ہیں

سنا ہے دُھوپ میں بارِش ہے زُلف چہرے پر
خوشی سے اَبر اُسے ہر نگر کے دیکھتے ہیں

سنا ہے جل پری ، جلتی ہے اُن کے پیروں سے
گڑھے کو گالوں کے چکر بھنور کے دیکھتے ہیں

سنا ہے جب کبھی آزادۂ قبا ہو نگار
نظر جھکا کے قبا ، دیپ گھر کے دیکھتے ہیں

سنا ہے نُور کا ہالہ ہے بانکی نار پہ یوں
کہ دید خواہ تو بس اُس کو مر کے دیکھتے ہیں

سنا ہے چُوڑیوں سے دِل کے تار بجتے ہیں
سنا ہے گھنگھرو کو نغمے ٹھہر کے دیکھتے ہیں

حیا کی برق دَرخشاں ہے شوخ آنکھوں میں
جواہرات کرشمے گہر کے دیکھتے ہیں

سنا ہے مندروں میں اِس لیے نہیں جاتے
کہ بُت بھی سجدے ، مہا بُت کو کر کے دیکھتے ہیں

سنا ہے دِیویاں اُس کی کنیزِ اَدنیٰ ہیں
خزینے پاؤں تلے خشک و تر کے دیکھتے ہیں

بتوں کا واسطہ دے کر پجاری پہنچے ہُوئے
غبارِ راہ سے دامن کو بھر کے دیکھتے ہیں

سنا ہے شوخ ، خوشی سے جو کھلکھلا اُٹھے
طلائی جھرنے ہنسی کو ٹھہر کے دیکھتے ہیں

کلی پہ بیٹھی کسی تتلی پر جھکا ہے کوئی
اُجالے جلوے کسی بے خبر کے دیکھتے ہیں

پکار اُٹھتے ہیں یہ نقل ہے حنا کی مری
جو نقش غور سے تتلی کے پر کے دیکھتے ہیں

بدن کی چاندنی کو دُھوپ جب لگاتے ہیں
قمر مریخ کے ، ہالے کمر کے دیکھتے ہیں

سنا ہے خوشبو کے تالاب میں نہا دھو کر
نسیمِ صبح کو تن زیب کر کے دیکھتے ہیں

سنا ہے خواب اُنہیں اِس لئے نہیں آتے
کہ خواب سب ہی کسی اَعلیٰ تر کے دیکھتے ہیں

جو خواب دیکھتے بھی ہیں تو صرف شیش مَحَل
سو خود بھی جلوے رُخِ فتنہ گر کے دیکھتے ہیں

سنا ہے خوشبو کی بارِش ہے گُل بدن کا وُجود
گلاب راستے خوشبو کے گھر کے دیکھتے ہیں

لب اِتنے میٹھے کہ اَنگور اُن کو کھٹا کہیں
وُہ جب شراب کا اِک گھونٹ بھر کے دیکھتے ہیں

سنا ہے شہد کی بوندوں کے چند پروانے
گلاس پر لگی سرخی پہ مر کے دیکھتے ہیں

سنا ہے چاندنی سے وُہ حنا لگاتے ہیں
کلی چٹکنے کو پازیب کر کے دیکھتے ہیں

جو اُس کی ظاہری معصومیت پہ واریں دِل
تمام عمر ، ضرر ، بے ضرر کے دیکھتے ہیں

سنا ہے غنچے کو بوسہ دِیا ہے خوش لب نے
تو ہم بھی وعدے سے اَپنے مکر کے دیکھتے ہیں

سنا ہے بوسے سے یہ کہہ کے جاں چھڑاتے ہیں
نہیں نہیں اَبھی سب پھول گھر کے دیکھتے ہیں

سنا ہے سامری بعد اَز ہزار جل تو جلال
طلائی بچھڑے کا دِل دان کر کے دیکھتے ہیں

سنا ہے ہاتھ پہ جب تتلی وُہ بٹھاتے ہیں
عُقاب اَپنی قبائیں کُتر کے دیکھتے ہیں

حجاب زادی پہ خوشبو کا نُور اُترتا ہے
حریمِ حُسن ستارے سَحَر کے دیکھتے ہیں

وُہ جس پہ مرتا ہے آخر وُہ چیز کیا ہو گا
ہم اُس کے دِل میں کسی دِن اُتر کے دیکھتے ہیں

وُہ خواب ہے کہ فُسوں ، جن ، پری کہ جانِ جُنوں
سب اُس کے حُسن کو تھوڑا سا ڈَر کے دیکھتے ہیں

جلالِ حُسن پہ حیرت سے دَنگ اِہلِ سُخن
قلم زَمین پہ اِہلِ نظر کے دیکھتے ہیں

ہمیشہ زُعم سے اُس پر غزل شروع کی قیس !
ہمیشہ بے بسی پہ ختم کر کے دیکھتے ہیں
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisLaila.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
سودائی: اِس دَرجہ بے خودی میں مجھے مل گیا کمال
****************************************
سودائی: اِس دَرجہ بے خودی میں مجھے مل گیا کمال
میں سال پوچھنے لگا تاریخ کی جگہ
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
اِذنِ رَبی سے جام چلتا ہے
****************************************
اِذنِ رَبی سے جام چلتا ہے
حَشر تک اِہتمام چلتا ہے

جام سے پہلے جام چکھتے ہیں
جام کے بعد جام چلتا ہے

جَب تلک عام لوگ مرتے رہیں
تَب تلک قتلِ عام چلتا ہے

جان چھُوٹی نہ جان جانے سے
جِسم سے اِنتقام چلتا ہے

مَردِ دَرویش گر ٹھہر جائے!
اُس کی جانب مَقام چلتا ہے

ہرنیاں اُس پہ ناز کرتی ہیں
آہ! کیا خوش خرام چلتا ہے

ساتھ اُن کے کنیز آئے گی
ساتھ میرے غلام چلتا ہے

دُنیا میں اور کچھ چلے نہ چلے
حُسن کا اِحترام چلتا ہے

حُسن دَھڑکن ہے رازِ ہستی کی
یہ چلے تو نظام چلتا ہے

اِک حسینہ نے شعر لکھے ہیں!
قیس کا صرف نام چلتا ہے
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisLaila.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
کہا دَھڑکن ، جگر ، سانسوں کو تُم سے پیار ہے لیلیٰ
****************************************
کہا دَھڑکن ، جگر ، سانسوں کو تُم سے پیار ہے لیلیٰ
کہا اِن ’’ اَدبی دَعوؤں ‘‘ سے بہت بیزار ہے لیلیٰ

کہا سُنیے ! ہمارا دِل یہیں پر آج رَکھا تھا
کہا لو کیا تمہارے دِل کی ’’ ٹھیکے دار ‘‘ ہے لیلیٰ

کہا مجنوں کی چاہت نے تمہیں لیلیٰ بنا ڈالا
کہا مجنوں جُنونی کی تو خود معمار ہے لیلیٰ

کہا مجنوں نگاہیں پھیر لے تو کیا کریں گی جی ؟
کہا مجنوں نہ کر پائے تو پھر بے کار ہے لیلیٰ

کہا تکیہ ، صراحی ، پھول ، دِل میں مشترک ہے کیا
کہا نیت تمہاری جس کی واقف کار ہے لیلیٰ

کہا پر ملکۂ حُسنِ جہاں تو اور کوئی ہے
کہا پردہ نشیں ہیں ، وَرنہ تو سردار ہے لیلیٰ

کہا یہ ہجر کی راتیں مجھے کیوں بخش دیں صاحب
کہا ’’ شاعر بنانے کو ‘‘ ، بہت فنکار ہے لیلیٰ

کہا اِن زاہدوں کو ’’ کچھ ‘‘ رِعایَت عشق میں دیجے
کہا حوروں کا نہ سوچیں تو ’’ کچھ ‘‘ تیار ہے لیلیٰ

کہا تنہا ملو ناں ، ’’ صرف ‘‘ کچھ غزلیں سنانی ہیں
کہا ہم سب سمجھتے ہیں ، بہت ہشیار ہے لیلیٰ

کہا کوہِ ہَمالہ میں رَواں کر دُوں جو جُوئے شیر !
کہا وُہ شرطِ شیریں تھی ، کہیں دُشوار ہے لیلیٰ

کہا شمع ، پتنگے ، قیسؔ ، لیلیٰ میں ستم گر کون ؟
کہا شمع بھی نوری ، نور کا مینار ہے لیلیٰ
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisLaila.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
شوخ رُخ پر حیا جھلملانے لگی
****************************************
شوخ رُخ پر حیا جھلملانے لگی
زِندگی گیت خوشیوں کے گانے لگی

کورے کاغذ پہ لکھا جو نام آپ کا
کاغذی پھول سے خوشبو آنے لگی

عرش والوں نے چھوڑی کوئی پھلجھڑی
یا وُہ غنچہ دَہَن مسکرانے لگی

میں تو ہم شہر ہونے پہ بے چین تھا
کل سے وُہ گھر میں بھی آنے جانے لگی

ایک دُنیا کو گڑیا پہ رَشک آ گیا
لیلیٰ سج دَھج کے گڑیا سجانے لگی

واہ چھن چھن پہ کر بیٹھا واحسرتا
وُہ قدم چپکے چپکے اُٹھانے لگی

چور زُلفوں کے تنکے سے پکڑا گیا
دِل چرا کر وُہ نظریں چرانے لگی

غور سے میری باتوں کو سننے سمیت
مجھ پہ حربے کئی آزمانے لگی

زُلف کا پھول اُس نے مجھے دے دِیا
عمر بھر کی اُداسی ٹھکانے لگی

پھول توڑے بنا اُس پہ لب رَکھ دِئیے
چاہنے کا قرینہ سکھانے لگی

قیسؔ کل شب ملایا اُنہیں چاند سے
چاندنی اُن سے شہ مات کھانے لگی
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisLaila.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
زَر پرستی حیات ہو جائے
****************************************
زَر پرستی حیات ہو جائے
اِس سے بہتر وَفات ہو جائے

پھر میں دُنیا میں گھوم سکتا ہوں
جسم سے گر نجات ہو جائے

ایک دیوی کی آنکھ ایسے لگی
جیسے مندر میں رات ہو جائے

دِل کسی کھیل میں نہیں لگتا
جب محبت میں مات ہو جائے

بُت شِکن کیا بگاڑ سکتا ہے؟
دِل اَگر سومنات ہو جائے

کتنے بیمارِ عشق بچ جائیں!
حُسن پر گَر زَکات ہو جائے

آپ دِل چور ہو ، ہم اِہلِ دِل
وَقت دو ، واردات ہو جائے

محورِ عشق سے ذِرا سا ہٹے
مُنتَشِر کائنات ہو جائے

آنکھ پڑھنا جسے بھی آ جائے
ماہرِ نفسیات ہو جائے

عکسِ لیلیٰ سے قیس بات تو کر!
عین ممکن ہے ، بات ہو جائے
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisLaila.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
اِنتخاب: وُہ عام لوگوں پہ نظرِ کرم نہیں کرتے
****************************************
اِنتخاب: وُہ عام لوگوں پہ نظرِ کرم نہیں کرتے
کہ جس کو دیکھ لیں وُہ عام کب رہا صاحب
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
جس شب وُہ شوخ گُل مرا مہمان بن گیا
****************************************
جس شب وُہ شوخ گُل مرا مہمان بن گیا
میں خود غریب خانے کا دَربان بن گیا

سنجیدگی کی چہرے پہ چادَر تو تان لی
پر دِل ہی دِل میں آخری شیطان بن گیا

میری شریر نظروں کی پرواز تھی بلند
دیکھا جو اُس نے گھور کے اِنسان بن گیا

چومی ہُوئی کلی جو اُسے چومنے کو دی
شرم و حیا کا رُخ پہ گلستان بن گیا

شوخی سے بولے ، لکھو غزل ہاتھ چوم کر
پر لکھتے لکھتے حُسن کا دیوان بن گیا

سجدہ کرا کے مجھ سے پڑھی خود نمازِ شکر
کافِر بنا کے مجھ کو مسلمان بن گیا

اِک مہ جبیں کے ’’ پاؤں ‘‘ پہ بیعت کا ہے اَثر
ہر شوخ حُسن میرا قَدَر دان بن گیا

صد شکر دونوں کو ہی نکالا بہشت سے
بن باس ، چھیڑ چھاڑ میں آسان بن گیا

پازیب دِن میں ڈُھونڈ کے لوٹانے جب گیا
وُہ خوب چونکتے ہُوئے اَنجان بن گیا

پڑھ پڑھ کے ہنس رہے ہیں وُہ اَپنی شرارتیں
میرا کلام حُسن کی مسکان بن گیا

اُس اَپسرا نے جونہی خریدی مری کتاب
شہزاد قیسؔ ذوق کی پہچان بن گیا
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisLaila.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
بے نقاب اُس نے جب جمال کیا
****************************************
بے نقاب اُس نے جب جمال کیا
سب کی آنکھوں کو یرغمال کیا

صرف اِک جان ہی تو مانگی تھی
ہم نے دے دی تو کیا کمال کیا

آئینے نے مزاج پوچھ لیا
آپ کے ہجر نے وُہ حال کیا

میں نے پل بھر میں راستہ بدلا
اور پھر عمر بھر ملال کیا

عید پر آنے والے کیا جانیں
کس نے کیسے بسر یہ سال کیا

ہجر کا تیر جان لیوا ہے
آپ نے کون سا خیال کیا

دُشمنوں نے تو صرف زَخم دئیے
دوستوں نے نمک حلال کیا

اُس کی آنکھیں زَمیں میں گڑ سی گئیں
میری آنکھوں نے جب سوال کیا

اَب کوئی دَرد ، دَرد لگتا نہیں
ایک بے دَرد نے کمال کیا

قیس دیوان کامیاب رَہا
رابطہ اُس نے کچھ بحال کیا
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisLaila.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
محبت اِک سمندر ہے ، ذِرا سے دِل کے اَندر ہے
****************************************
محبت اِک سمندر ہے ، ذِرا سے دِل کے اَندر ہے
ذِرا سے دِل کے اَندر ہے مگر پورا سمندر ہے

محبت رات کی رانی کا ، ہلکا سرد جھونکا ہے
محبت تتلیوں کا ، گُل کو چھُو لینے کا منظر ہے

محبت باغباں کے ہاتھ کی مِٹّی کو کہتے ہیں
رُخِ گُل کے مطابق خاک یہ سونے سے بہتر ہے

جہانِ نو ، جسے محبوب کی آنکھوں کا حاصل ہو
فقیہہِ عشق کے فتوے کی رُو سے وُہ سکندر ہے

نہیں ترتیبِ آب و خاک و باد و آگ سے جیون
ظَہُورِ زِندگانی کو ، محبت اَصل عُنصر ہے

کوئی دُنیا میں نہ بھی ہو ، پہنچ میں ہے محبت کی
بدن سے ماوَرائی ہے ، محبت رُوح پرور ہے

محبت ہے رَمی شک پر ، محبت طوفِ محبوبی
صفا ، مروہ نے سمجھایا ، محبت حجِ اَکبر ہے

محبت جوئے شیرِ کُن ، محبت سلسبیلِ حق
محبت اَبرِ رَحمت ہے ، محبت حوضِ کوثر ہے

اَگر تم لوٹنا چاہو ، سفینہ اِس کو کر لینا
اَگر تم ڈُوبنا چاہو ، محبت اِک سمندر ہے

سنو شہزاد قیس آخر ، سبھی کچھ مٹنے والا ہے
مگر اِک ذات جو مشکِ محبت سے معطر ہے
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisLaila.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
کن خیالوں میں آپ رہتے ہیں؟
****************************************
کن خیالوں میں آپ رہتے ہیں؟
اَب ’’سمندر‘‘ بھی اُلٹے بہتے ہیں

آپ کے بعد بھی رہے زِندہ
غالباً اِس کو جبر کہتے ہیں

دَھڑکنوں کی جگہ پہ اَب دِل میں
غم خوشی سے اُچھلتے رہتے ہیں

خون رونے کی لاکھ کی کوشش
آنکھ سے صرف اَشک بہتے ہیں

ٹھنڈا پانی پئیں گھڑے کا جناب!
حُسن کو بے وَفا جو کہتے ہیں

زِندگی اِک ٹرین ہے بھائی!
لوگ چڑھتے ، اُترتے رہتے ہیں

فائدہ کیا ہے نوکروں کا بھلا
غم تو سب اَپنا اَپنا سہتے ہیں

پہلے رونے سے دائمی چُپ تک
اِس بدن میں زَمانے رہتے ہیں

پیار کی پیاس ، اَصل پیاس ہے دوست
چشمے پانی کے ، لاکھوں بہتے ہیں

لیلیٰ لیلیٰ ہو لب پہ موت تلک!
کوّے تب قیس قیس کہتے ہیں
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisLaila.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
سخاوت: میں نے ڈَر ڈَر کے اِک سوال کیا
****************************************
سخاوت: میں نے ڈَر ڈَر کے اِک سوال کیا
اُس نے بانہوں کو ہنس کے کھول دِیا
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
حشر میں ڈُھونڈ کے اُن کو کہا آداب جناب
****************************************
حشر میں ڈُھونڈ کے اُن کو کہا آداب جناب
خوب آنچل کو نہ پا کر ہُوئے آب آب جناب

آپ کے منہ سے تو جھڑنے لگے گُل گالی کے
ہم کسی اور کو بتلائیں گے یہ خواب جناب

حشر سے بھی ہے فُزوں ، کُوچۂ لیلیٰ کا جُنوں
قتل ہوتے ہیں کہاں حشر میں اِحباب جناب

گُل مہکنے سے ہے شاداب چمن ہستی کا
کس کی خوشبو نے کیے گُل سبھی شاداب جناب

چاند کو ڈُھونڈنے ہم سارے نکلتے ہیں مگر
ڈُھونڈنے کس کو نکلتا ہے یہ مہتاب جناب

آپ پہ لکھ دُوں میں دیوان مگر دیکھوں تو
منہ زَبانی تو میں لکھتا نہیں اِک باب جناب

زِندہ رہنے کا اُسے کوئی اَدِھیکار نہیں
مجنوں گر لیلیٰ کی خاطر نہ ہو بے تاب جناب

حُسن والوں سے کوئی جنگ کہاں جیتا ہے
حُسن کے پاؤں پڑے رُستم و سہراب جناب

آج اِک بوسہ طلب کرنے کا سوچا جائے
آج معمول سے کچھ بڑھ کے ہیں شاداب جناب

آپ ’’ تم جیسے ‘‘ ہمیں شوق سے کہیے لیکن
ہو نہ جائیں کہیں ہم جیسے بھی نایاب جناب

قیسؔ نے چاہا تمہیں ، جُرم کیا ، مان لیا
جُرم کے کس نے مہیا کیے اَسباب جناب !
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisLaila.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
شرارت کے صحیفے کا ، غَضب کردار ہے لیلیٰ
****************************************
شرارت کے صحیفے کا ، غَضب کردار ہے لیلیٰ
’’نرے‘‘ شمشیر زَن! ، معصومیت کا وار ہے لیلیٰ

یہ جب لہرا کے چلتی ہے تو کلیاں رَقص کرتی ہیں
غُرورِ حُسن کے جبروت کا اِظہار ہے لیلیٰ

گھٹا ، گیسو ، دَھنک ، اَبرُو ، گُہر ، آنسو ، کلی ، خوشبو
حیا کی پاک جمنا ، رُوح کا سنسار ہے لیلیٰ

ہنسے رِم جھِم ، چلے چھم چھم ، کہے ہر دَم ، سنے کم کم
سُروں کی راجدھانی ، جھرنوں کی جھنکار ہے لیلیٰ

کوئی ’’بھنورا‘‘ گیا خوشبو چُرانے ، ہوش کھو بیٹھا
کہے ، میں گُل سمجھتا تھا مگر گُل زار ہے لیلیٰ

چھری خربوزے پہ گرنے کی ضربُ المثل دے بیٹھا
چھری خود کو سمجھ کر لڑنے کو تیار ہے لیلیٰ

حلف شمع اُٹھاتی ہے ، طوافِ لیلوی کر کے
پتنگوں کے فنا ہونے میں حصے دار ہے لیلیٰ

جھلک پوری دِکھا دے ، تو سبھی دیوانے مر جائیں
خُدا خوفی کے جذبے سے ، بہت سرشار ہے لیلیٰ

خبر ہے اِس کو دیوانہ ، خرد کو کھو بھی سکتا ہے
سَرِ بازار ملتی ہے ، بہت ہُشیار ہے لیلیٰ

صبا کُوئے وَفا سے ، قیس کا پیغام نہ لائی
یہ تتلی ’’سب‘‘ سمجھتی ہے ، کہ کیوں بیمار ہے لیلیٰ
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisLaila.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
رُکو تو تم کو بتائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں
****************************************
رُکو تو تم کو بتائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں
کلی اَکیلے اُٹھائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

کہا طبیب نے ، گر رَنگ گورا رَکھنا ہے
تو چاندنی سے بچائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

وُہ نیند کے لیے شبنم کی قرص بھی صاحب
کلی سے پوچھ کے کھائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

بدن کو دیکھ لیں بادَل تو غسل ہو جائے
دَھنک سے خشک کرائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

ہَوائی بوسہ دِیا پھول نے ، بنا ڈِمپل
اُجالے ، جسم دَبائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

جلا کے ’’شمع‘‘ وُہ جب ’’غُسلِ آفتاب‘‘ کریں
کریم رُخ پہ لگائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

وُہ دو قدم چلیں پانی پہ ، دیکھ کر چھالے
گھٹائیں گود اُٹھائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

وُہ بادَلوں پہ کمر ’’سیدھی‘‘ رَکھنے کو سوئیں
کرن کا تکیہ بنائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

جو ایک دانے پہ چاوَل کے لکھتے ہیں ناوَل
سنگھار اُن سے کرائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

سیاہی شب کی ہے چشمِ غزال کو سُرمہ
حیا کا غازہ لگائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

لگائیں خوشبو تو ہو جاتا ہے وَزَن دُگنا
قدم گھسیٹ نہ پائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

سنا ہے پنکھڑی سے رات کان میں پوچھا
یہ جلد کیسے بچائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

گلے میں شبنمی مالا ، کلائی پر تتلی
ہنسی لبوں پہ لگائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

جو اُن کے سائے کے پاؤں پہ پاؤں آ جائے
تو ڈاکٹر کو دِکھائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

متاعِ ناز کے ناخن تراشنے ہوں اَگر
کلوروفام سنگھائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

جو پوچھا دُنیا کی نازُک ترین شے کیا ہے
تو ہنس کے سر کو جھکائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

لباس پنکھڑی کی اِک پَرَت سے بن جائے
کلی سے جوتے بنائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

شمیض کی جگہ عرقِ گلاب پہنا ہے
پھر اُس پہ دُھند لگائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

قمیض کے لیے شبنم میں پنکھڑی دُھو کر
بدن پہ رَکھ کے دَبائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

لباس اُتاریں جو کلیوں کا وُہ بنے فیشن
گلاب دام چکائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

پراندہ ، چُوڑیاں ، جھمکے ، اَنگوٹھی ، ہار ، گھڑی
اِنہیں تو بھول ہی جائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

وُہ زیورات کی تصویر ساتھ رَکھتے ہیں
یا گھر بلا کے دِکھائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

کلی سا جسم وُہ تنہا سنبھالتے ہیں مگر
کنیزیں زُلفیں اُٹھائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

وُہ خوشبو اَوڑھ کے نکلے ہیں اور ضد یہ ہے
لباس سب کو دِکھائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

حجاب نظروں کا ہوتا ہے سو وُہ ساحل پر
سیاہ چشمہ چڑھائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

جو جھوٹ بولنے میں اَوّل آیا اُس نے کہا
وُہ تین روٹیاں کھائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

وُہ تین شبنمی بوندیں ، گُلاب میں دَھر کر
کرن پہ کھانا پکائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

وُہ گول گپا بھی کچھ فاصلے سے دیکھتے ہیں
کہ اِس میں گر ہی نہ جائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

اُتار دیتے ہیں بالائی ، سادہ پانی کی
پھر اُس میں پانی ملائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

گلاس پانی کا پورا اُنہیں پلانا ہو
نمی ہَوا میں بڑھائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

کنیز توڑ کے بادام لائی تو بولے
گِری بھی پیس کے لائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

وُہ آم چوسنا بھنورے سے گھر پہ سیکھتے ہیں
گُل اُن کو رَقص پڑھائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

جو غنچہ سونگھ لیں خوشبو سے پیٹ اِتنا بھرے
کہ کھانا سونگھ نہ پائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

وُہ اَپنی روٹی گلابوں میں بانٹ دیتے ہیں
کلی کو دُودھ پلائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

شراب پینا کجا ، نام جام کا سن لیں
تو جھوم جھوم سے جائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

کباب پنکھڑی کے اُن کی من پسند غذا
ملائی چھیل کے کھائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

جو نبضِ ناز کی جنبش کو کر گیا محسوس
طبیب اُس کو بنائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

جو ’’نیم ٹھوس‘‘ غذا کھانے کو حکیم کہے
ہَوا بہار کی کھائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

زُکام ہو گیا دیکھی جو برف کی تصویر
اَب اُن کو یخنی دِکھائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

دَوا پلا کے قریب اُن کے بھیجے دو مچھر
کہ اُن کو ٹیکہ لگائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

بہت تلاش کی مچھر نے سُوئی گھونپنے کی
رَہا یا دائیں یا بائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

شفا کو اُن کی قریب اُن کے لیٹ کر ٹیکہ
طبیب خود کو لگائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

’’خیالی کھچڑی‘‘ کو نسخے میں لکھ کے بولا طبیب
اَنار خواب میں کھائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

دَوا کو کھانا نہیں تین بار سوچنا ہے
طبیب پھر سے بتائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

اَبھی تو ٹیک لگائے بغیر بیٹھے تھے
وَزیر قسمیں اُٹھائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

وُہ سانس لیتے ہیں تو اُس سے سانس چڑھتا ہے
سو رَقص کیسے دِکھائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

نزاکت ایسی کہ جگنو سے ہاتھ جل جائے
جلے پہ اَبر لگائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

وُہ تین روٹیوں کا آٹا گوندھ لیں جس دِن
تو گھر میں جشن منائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

وُہ دَھڑکنوں کی دَھمک سے لرزنے لگتے ہیں
گلے سے کیسے لگائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

وُہ بول لیتے ہیں یہ بھی خدا کی قدرت ہے
حُروف جشن منائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

وُہ گنگنائیں تو ہونٹوں پہ نیل پڑ جائیں
سُخن پہ پہرے بٹھائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

جو ننھا جملہ کوئی تھک کے چھوڑ دینے لگیں
دِلاسہ گونگے دِلائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

گلے میں لفظ اَٹک جائیں اُردُو بولیں تو
غرارے ’’چپ‘‘ کے کرائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

جو گاڑھی اُردُو سے نازُک مزاج ہو ناساز
فِر اُن کو ہندی سنائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

جو اُن کا نام کوئی پوچھے تو اِشارے سے
ہَوا میں ’’ل‘‘ بنائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

جو پہلی بار ملے اُلٹا اُس سے کہتے ہیں
ہمارا نام بتائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

کلی جو چٹکے تو نازُک ترین ہاتھوں سے
وُہ دونوں کان چھپائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

سریلی فاختہ کُوکے جو تین مُلک پرے
شِکایت اُس کی لگائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

غلام چٹکی نہ سننے پہ مرتے مرتے کہیں
خدارا تالی بجائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

پسینہ آئے تو دو تتلیاں قریب آ کر
پروں کو سُر میں ہِلائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

وُہ سُرخ پھول اَنگیٹھی میں بھر کے بیٹھ گئے
چلیں جو سرد ہَوائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

کھلونے عید پہ جگنو کو لے کے دیتے ہیں
تو تتلیوں کو قبائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

جو تتلی تھک کے کوئی پاس آ کے لیٹے ہے
کمر پہ چڑھ کے دَبائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

گواہی دینے وُہ جاتے تو ہیں پر اُن کی جگہ
قسم بھی لوگ اُٹھائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

کبوتروں سے کراتے تھے بادشاہ جو کام
وُہ تتلیوں سے کرائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

وُہ پانچ خط لکھیں تو ’’شکریہ‘‘ کا لفظ بنے
ذِرا حساب لگائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

چیونٹیوں کی لڑائی میں بول پڑتے ہیں
جلی کٹی بھی سنائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

بس اِس دَلیل پہ کرتے نہیں وُہ سالگرہ
کہ شمع کیسے بجھائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

کسی کی سالگرہ پر بھی جا نہیں سکتے
کہ تالی کیسے بجائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

غبارہ پھُولتا ہے خود سکڑنے لگتے ہیں
غبارہ کیسے پھلائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

چھری سے کیک کو قربان ہوتا دیکھیں اَگر
مہینوں اَشک بہائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

گماں کی دیگ میں خوشبو کی قاش کا حلوہ
بنا کے ختم دِلائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

خیال میں بھی جو دعوت کریں عزیزوں کی
تو سال چھٹی منائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

وُہ گھُپ اَندھیرے میں خیرہ نگاہ بیٹھے ہیں
اَب اور ہم کیا بجھائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

گھروندے ریت سے ساحل پہ سب بناتے ہیں
وُہ بادَلوں پہ بنائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

شکار کرنے کو جانا ہے ، کہتے جاتے ہیں
پکڑنے تتلی جو جائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

شکارِیوں میں اُنہیں بھی جو دیکھیں زَخمی شیر
تو مر تو شرم سے جائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

اُٹھا کے لاتے جو تتلی تو موچ آ جاتی
گھسیٹتے ہُوئے لائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

نکاح خوان کو بس ’’ایک‘‘ بار وَقتِ قَبول
جھکا کے پلکیں دِکھائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

ہر ایک کام کو ’’مختارِ خاص‘‘ رَکھتے ہیں
سو عشق خود نہ لڑائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

حنا لگائیں تو ہاتھ اُن کے بھاری ہو جائیں
سو پاؤں پر نہ لگائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

غزل یہ اُن کو پڑھائی ہے نو مہینوں میں
کتاب کیسے پڑھائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

چبھے جو پنکھڑی گلشن کی سیر کرتے ہُوئے
دَھنک کی پالکی لائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

کتاب میں پھنسے اُنگلی وَرَق پلٹتے ہُوئے
تو جلد ساز بُلائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

جو جاں پہ کھیلنا مقصود ہو تو جگنو کو
وُہ سُرخ کپڑا دِکھائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

اُٹھائیں تتلیاں تخت اُن کا کچھ بلندی تک
پھر اُس کے بعد گھٹائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

نزاکت ایسی کہ آئینے اُن کو دیکھنے کو
نظر کا عدسہ لگائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

وُہ خود کو آئینے میں جلد ڈُھونڈ لیتے ہیں
پھر اُس پہ تالی بجائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

جو دِل بھی توڑنا ہو تو کِرائے کے قاتل
سے ایسا کام کرائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

چلے جو آندھی تو دو پھول تھام لیتے ہیں
کہ آپ اُڑ ہی نہ جائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

کلاس ساری تو اَلجبرا پڑھتی ہے اُن کو
اَلاختیار پڑھائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

زِیادہ پڑھ نہ سکے اور مسئلہ یہ تھا
کہ ڈِگری کیسے اُٹھائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

جو کالی چیونٹی کبھی رَستہ کاٹ دے اُن کا
پلٹ کے گھر چلے جائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

بلب جلانے سے اِک دَھکا روشنی کا لگے
سو ایک دَم نہ جلائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

کھلونے آپ سے جی بھر کے کھیلنے کے بعد
پلنگ پہ ساتھ سلائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

غضب ہے چھٹی کے دِن گڑیا ، گڈا مل جل کر
اُنہی کی شادی کرائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

وُہ پہلوانوں کو گڑیا کی بانہوں کی مچھلی
اُکھاڑے جا کے دِکھائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

جو گرمی لگتی ہے تو پھول پھونک ماریں اُنہیں
مہک سی جائیں ، فضائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

جو آئینے میں وُہ خود سے لڑائیں آنکھیں کبھی
تو ایک پل میں جھکائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

کلی اُکھاڑنے کو پاؤں رَکھ کے ٹہنی پر
شدید زور لگائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

وُہ صرف باتیں نہیں کرتے کارٹونوں سے
ڈِنر پہ گھر بھی بلائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

وُہ ہنس راجوں کے ہمراہ جھیل کے اُس پار
کنول پہ بیٹھ کے جائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

سیاہ شیشہ جو آنکھوں پہ رَکھ کے دیکھیں ہِلال
تو بَدر کیسے دِکھائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

قدم اُٹھاتے ہُوئے دیر تک وُہ سوچتے ہیں
قدم یہ کیسے اُٹھائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

کلی ، گلاب ، بہن بھائی اُن کے لگتے ہیں
جو اُن میں عکس بنائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

چیونٹیوں سے وُہ لے لیتے ہیں قُلی کا کام
پھر اُن کو چینی کھِلائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

وُہ تتلیوں کی طرح قَدرے اُڑنے لگتے ہیں
جو آنچل اَپنا ہِلائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

جو دُھند چھائے تو وُہ اُس میں غوطے کھاتے ہیں
گھر اَپنے تیر کے جائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

بدن پہ روشنی سے بھی دَباؤ بڑھتا ہے
کھلونا دیپ جلائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

فریج میں آرزُو رَکھتے ہیں تا کہ تازہ رہے
قسم بھی دُھو کے ہی کھائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

سنا ہے وَہم کو اُن کے وُجود پر شک ہے
گمان قسمیں اُٹھائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

جو کھیل کھیل میں اُلجھیں خیال سے اَپنے
تو زَخم دونوں کو آئیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

بنا لیں ایک بڑی سوچ ، چھوٹی سوچوں سے
پھر اُس پہ کپڑا چڑھائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

کلی کو گلستاں کہتے ہیں ، پھول کو باغات
چمن کو دُنیا بتائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

وُہ سیر ، صبح کی کرتے ہیں خواب میں چل کر
وَزَن کو سو کے گھٹائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

وَزَن گھٹانے کا نسخہ بتائیں کانٹوں کو
پھر اُن کو چل کے دِکھائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

وُہ تِل کے بوجھ سے بے ہوش ہو گئے اِک دِن
سہارا دے کے چلائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

کل اَپنے سائے سے وُہ اِلتماس کرتے تھے
یہاں پہ رَش نہ لگائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

وُہ تھک کے چُور سے ہو جاتے ہیں خدارا اُنہیں
خیال میں بھی نہ لائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

پری نے ہاتھ سے اَنگڑائی روک دی اُن کی
کہ آپ ٹوٹ نہ جائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

غزل وُہ پڑھتے ہی یہ کہہ کے قیس رُوٹھ گئے
کہ نازُکی تو بتائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisLaila.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
تشخیص: یہ طبیبوں کے بس کی بات نہیں
****************************************
تشخیص: یہ طبیبوں کے بس کی بات نہیں
آپ کا مسئلہ محبت ہے
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
اَللہ اَللہ جمال اُن کا ہے
****************************************
اَللہ اَللہ جمال اُن کا ہے
حُسن ، کومل کمال اُن کا ہے

شَہد ، بادَل ، صراحی ، جھیل ، کنول
جو بھی اَچھا ہے مال اُن کا ہے

دِل میں گو کہ خیال لاکھوں ہیں
سب سے اُونچا خیال اُن کا ہے

اُن کا اِک بال بھی گو میرا نہیں
پر مرا بال بال اُن کا ہے

آخری سال میرا یہ ہو گا
سولہواں چونکہ سال اُن کا ہے

دِل ، جگر ، جاں ہے میری اُن کے پاس
میرے پاس اِک رُومال اُن کا ہے

آگ بھڑکاتا ہے تجسس کی
پردہ ’’ دَرپردہ ‘‘ جال اُن کا ہے

آنکھ میں غم کی سرمگیں مالا
اور لب پر سوال اُن کا ہے

دوستو ! بن مُبالغے کے سنو
آفتاب ایک خال اُن کا ہے

وُہ اَداؤں کے پیر و مرشِد ہیں
منتظِر ہر غزال اُن کا ہے

حُسنِ بندش کی اَوج سیکھو قیسؔ
شَہر بھر یرغمال اُن کا ہے
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisLaila.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
جب دو دِلوں کے بیچ میں دیوارِ چین ہو
****************************************
جب دو دِلوں کے بیچ میں دیوارِ چین ہو
اِک دُوسرے کی بات کا کیسے یقین ہو

کچھ اِعتماد کر تو کروں گفتگو شروع
بنیاد رَکھنے کے لیے کچھ تو زَمین ہو

دِل کا حرم ، کِرائے کا کمرہ نہیں جناب !
اِس گھر کے آپ اَوّل و آخر مکین ہو

چہرہ دَھنک کے رَنگ کو شرما رَہا ہے تم
رِفعت کے آسمان کی زُہرہ جبین ہو

سانسوں میں تیرے نام کی خوشبو تک آ بسی
رُوحِ گلاب تجھ پہ ہزار آفرین ہو

تتلی نے اُس کو روک کے بے ساختہ کہا
میں چھوڑ آؤں ؟ آپ بہت نازنین ہو

آمد سے ایک حُور کی ایسے بدل گیا
جیسے یہ گھر زَمین پہ خلدِ برین ہو

دو پاؤں چومنے کی اِجازت فقط ملی !
پھر کیا ہُوا یہ سوچ لو ، تم تو ذَہین ہو

کس سے کریں شکایتیں ہم اِہلِ حُسن کی
جب ’’ حُسنِ بے مثال ‘‘ ہی مسند نشین ہو

چہرے کی خیر ، اِس پہ نشیب آ بھی سکتا ہے
دِل دیجیے اُسی کو جو دِل کا حسین ہو

جب قیسؔ آئینہ بھی اُنہیں ڈانٹنے لگا
بانہوں میں تھام کر کہا : ’’ دِلکش ترین ہو ! ‘‘
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisLaila.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
اِسی سہارے پہ دِن ہجر کا گزارا ہے
****************************************
اِسی سہارے پہ دِن ہجر کا گزارا ہے
خیالِ یار ، ہمیں یار سے بھی پیارا ہے

صبا کا ، اَبر کا ، شبنم کا ہاتھ اَپنی جگہ
کلی کو پھول نے جھک جھک کے ہی نکھارا ہے

کسی کے ہاتھ پہ منہدی سے دِل بنا دیکھا
میں یہ بھی کہہ نہ سکا یہ تو دِل ہمارا ہے

نقاب پالکی میں بھول آئے کیوں حضرت
تمام شہر نے کیا آپ کا بگاڑا ہے

تم آسماں پہ نہ ڈُھونڈو سیاہ بدلی کو
کسی نے ہاتھ سے گیسو ذِرا سنوارا ہے

چلو بہارِ چمن لے کے گھر کو لوٹ چلیں
دَھنک کی لے میں کسی شوخ نے پکارا ہے

یہ ہاتھ چھوڑنے سے پیشتر خیال رہے
خدا کے بعد فقط آپ کا سہارا ہے

جو عمر بیت چکی وُہ حسابِ ہجر میں لکھ
جو سانس باقی ہے دُنیا میں وُہ تمہارا ہے

گھٹا ، صراحی ، دَھنک ، جھیل ، پنکھڑی ، شبنم
بدن ہے یا کسی شاعر کا اِستعارہ ہے

یقیں تھا اُس کو کہ ہم شعر اِن پہ کہہ لیں گے
خدا نے حُسن ، قلم دیکھ کر اُتارا ہے

صنم کو دیکھ کے ، کچی کلی نے ’’کھُل‘‘ کے کہا:
’’بہت ہی اُونچی جگہ قیسؔ ہاتھ مارا ہے‘‘
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisLaila.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
ہئیر ڈَریسر: سُخن وَری سے تھا بہتر ، تراشتے گیسو
****************************************
ہئیر ڈَریسر: سُخن وَری سے تھا بہتر ، تراشتے گیسو
وُہ چل کے آتے بھی خود ، سر جھکا کے بیٹھتے بھی
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
حُسن کے ناز ، شب اُٹھائے بہت
****************************************
حُسن کے ناز ، شب اُٹھائے بہت
کھٹا ، میٹھا وُہ مسکرائے بہت

ساری دُنیا سے مشورہ نہ لو
عقل والو ! ہے دِل کی رائے بہت

اُس گھڑی خوب لاجواب ہُوئے
بعد میں تو جواب آئے بہت

ٹس سے مس نہ ہُوئی اُداس فَضا
تازہ پھولوں کو گھر میں لائے بہت

چُلّو بھر اَشکوں کی ضَرورَت تھی
آبِ زَم زَم سے تو نہائے بہت

صرف چِنگاریاں ہی پیدا ہُوئیں
گیت ، پتھر نے گنگنائے بہت

کانٹوں کی دوستی بھی گھاٹا ہے
پھول نے خود بھی ، زَخم کھائے بہت

سائے کا کام پیچھے چلنا ہے
آدمی کوئی کوئی ، سائے بہت

چڑھتے سورج کے کچھ پجاری دوست
آج کرتے ہیں ہائے ہائے بہت

عشق نہ ہونا تھا اُسے ، نہ ہُوا
شعر ، ہر رَنگ کے سنائے بہت

بے وَفا کا اُدھار نہ رَکھا
قیسؔ ! ہم نے حسیں رُلائے بہت
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisLaila.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
اُجالا پنکھڑی کا ، دیپ کی مہکار ہے لیلیٰ
****************************************
اُجالا پنکھڑی کا ، دیپ کی مہکار ہے لیلیٰ
کرشماتی چمن آرائی کا گلزار ہے لیلیٰ

کلی میں گھس کے سوتی ہے ، محبت کی مہارانی
اُٹھے تو پھول کھلتے ہیں ، غضب گلنار ہے لیلیٰ

صبا ، زُلفوں میں اُنگلی پھیر کر ، کہتی ہے ’’اُٹھیں بھی‘‘
رُخِ دِلکش دُھلے شبنم سے تو تیار ہے لیلیٰ

اُسے بیدار ہوتا دیکھ کر جھرنے نے دُھن بدلی
سریلی فاختہ کُوکی ، تمہی سے پیار ہے لیلیٰ

اُٹھا کر خوش نما تتلی ، سجا لی زُلفِ عنبر میں
کلی ہونٹوں پہ پھیری ، واہ کیا سنگھار ہے لیلیٰ!

گلابی گال یوں خوشبو نے چومے ہیں محبت سے
حیا کی لال لالی سے دَھنک رُخسار ہے لیلیٰ

پتنگے گر خبر لاتے تو اُن کے پر نہ جل جاتے!
مجھے تتلی نے بتلایا کہ خوشبودار ہے لیلیٰ

یہ جگنو نغمہ گر ہیں کان میں یا گوشوارے ہیں
یہ دِل کا نُور ہے یا چاندنی کا ہار ہے لیلیٰ

کنیزیں تتلیاں اِس کی ، نگہبانی کو غنچے ہیں
رُکوع میں جھک گئے ہیں گُل ، سَرِ دَربار ہے لیلیٰ

غزل کے پیراہن میں قیس نے چٹکی بھری دِل پر
غرور و آہ پرور مستی سے سرشار ہے لیلیٰ
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisLaila.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
حُسن والے وُہ کام کرتے ہیں
****************************************
حُسن والے وُہ کام کرتے ہیں
لفظ جھک کر سلام کرتے ہیں

عُمر بھر یہ غلام نہ سمجھا !
آپ کیسے غلام کرتے ہیں ؟

خوش نصیبی گُلوں پہ ختم ہُوئی
اُن کی زُلفوں میں شام کرتے ہیں

قصۂ عشق آگے بڑھ نہ سکا
وُہ میرا ’’ اِحترام ‘‘ کرتے ہیں

’’ با اَدَب ، با ملاحظہ ‘‘ گھر میں
اَب ! کبوتر قیام کرتے ہیں

فتویٰ تعبیر پر ہے لاگو حضور !
خواب کو کیوں حرام کرتے ہیں ؟

جام تو توڑ بیٹھے منبر پر
اَب سَبُو کو اِمام کرتے ہیں

’’ چار خانے ‘‘ بنائے بیٹھا ہے ؟
دِل ! ترا اِنتظام کرتے ہیں !

ہو نہ ہو اُن کے دِل میں ہے کوئی
جو مری غزلیں عام کرتے ہیں

سب شروع کرتے ہیں بنامِ خدا
ہم خدا پر تمام کرتے ہیں

بن ملے جن سے قیسؔ عشق ہُوا !
یہ غزل اُن کے نام کرتے ہیں
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisLaila.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
کرم: تُو اَپنی بارگاہ میں مُجھ کو بُلند رَکھ
****************************************
کرم: تُو اَپنی بارگاہ میں مُجھ کو بُلند رَکھ
دُنیا گرائے نظروں سے یا آسمان سے
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
مایوس ہونا لگتا ہے معیوب بھی مجھے
****************************************
مایوس ہونا لگتا ہے معیوب بھی مجھے
دِل دے دِیا تو دے گا وُہ محبوب بھی مجھے

سترہ کتابیں اور تمہارا وُہ ایک خط
اے جانِ جاں سکھاؤ یہ اُسلوب بھی مجھے

لکھا تو جیسے دِل پہ قلم رَکھ کے لکھ دِیا
حیرت میں غرق کر گیا مکتوب بھی مجھے

کر دیں جو رُونمائی تو کیا بات ہے جناب
ویسے تو یہ تڑپنا ہے مرغوب بھی مجھے

آنچل کے سائبان میں آنے کی راہ دو
پردہ نشیں ہو تو کرو محجوب بھی مجھے

مرشِد نے ایک آنکھ سے دیکھا تھا ایک بار
مرشِد سمجھنے لگ گئے مجذوب بھی مجھے

نظریں جھکائیں یوں کہ میں جھکتا چلا گیا
غالب بنا کے کر لیا مغلوب بھی مجھے

لیموں کی جان نکلی یوں نازک سے ہاتھ میں
دیسی شراب بن گیا مشروب بھی مجھے

شبنم سے ہر گلاب پہ لکھ دُوں صنم کا نام
پر اُن کو مخفی رَکھنا ہے مطلوب بھی مجھے

اُس حُسن کے بغیر ہی کٹنی ہے گر حیات
مولا عطا ہو طاقتِ اَیوب بھی مجھے

مُنکِر ہے گرچہ پیار کا وُہ صاف صاف قیسؔ
بینَ السُطُور رَکھتا ہے مصلوب بھی مجھے
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisLaila.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
چاند پر اِک مے کدہ آباد ہونا چاہیے
****************************************
چاند پر اِک مے کدہ آباد ہونا چاہیے
یا محبت کو یہیں آزاد ہونا چاہیے

قاضیء مِحشَر! تری مرضی ، ہماری سوچ ہے
ظالموں کو دُنیا میں برباد ہونا چاہیے

رُوح کے بے رَنگ اُفق پر ، رات بھر گونجی ندا
دِل پرندہ ، فکر سے آزاد ہونا چاہیے

خواہشِ جنت میں کرتے ہیں جو زاہد نیکیاں
نام اُن کا ’’متقی شدّاد‘‘ ہونا چاہیے

خوبصورَت تتلیوں نے کھول کر رَکھ دی کتاب
غنچوں کی جانب سے کچھ اِرشاد ہونا چاہیے

دُوسروں کے عیب گنوانا اَدَب سے دُور ہے
سب کو اَپنے کام کا نقاد ہونا چاہیے

عشق کی گیتا کے ’’پچھلے‘‘ نسخوں میں یہ دَرج تھا
طالبانِ حُسن کو فولاد ہونا چاہیے

وَصلِ شیریں تو خدا کی مرضی پر ہے منحصر
عاشقوں کو محنتی فرہاد ہونا چاہیے

نامور عُشاق کی ناکامی سے ثابت ہُوا
عشق کے مضمون کا اُستاد ہونا چاہیے

خون سے خط لکھ تو لُوں پر پیار کے اِظہار کا
راستہ آسان تر ایجاد ہونا چاہیے

علم کا اَنبار راہِ عشق میں بے کار ہے
قیس کو بس لیلیٰ کا گھر یاد ہونا چاہیے
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisLaila.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
حیات بیچ کے خوش لَب قضا خریدیں گے
****************************************
حیات بیچ کے خوش لَب قضا خریدیں گے
کرم ہُوا تو صنم کی رِضا خریدیں گے

چرا کے دِل کسی پرہیز گار گڑیا کا
وُفورِ عشق میں ڈُوبی دُعا خریدیں گے

جو سر میں اُنگلیاں پھیرے وُہ عکس لائیں گے
جو شعر پڑھتا ہو وُہ آئینہ خریدیں گے

کسی کے سامنے بھنبھوڑ کے لبوں سے گُلاب
گلابی گالوں پہ اُتری حیا خریدیں گے

مری کتاب ہے اور اُس حسین کی تصویر!
مجھے پتہ تو چلے ، آپ کیا خریدیں گے

طبیبِ عشق ! دَوا ’’حسبِ ذائقہ‘‘ کہہ دے
تو نرم ، میٹھی ، ملائم دَوا خریدیں گے

دَبی دَبی سی ہنسی قید کر کے بانہوں میں
لَبوں سے چہرے کی اِک اِک اَدا خریدیں گے

شراب خانہ مکمل پلا کے ساقی کو
بھری جوانی میں بہکی قضا خریدیں گے

ہم اَپنے شَہر کی ، ملکۂ حُسن کی خاطر
تمہارے شَہر سے ، اِک آئینہ خریدیں گے

ہر ایک چیز ، برائے فروخت رَکھ دیں گے
تمہارے پیار کی ، ہم اِنتہا خریدیں گے !

شراب بیچنے والوں پہ قیس حیراں ہُوں
شراب بیچ کے ، آخر یہ کیا خریدیں گے !
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisLaila.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
خود پرستوں کا بھی کچھ نقصان ہونا چاہیے
****************************************
خود پرستوں کا بھی کچھ نقصان ہونا چاہیے
دیوتاؤں کو بھی اَب قربان ہونا چاہیے

ذات ، مذہب ، رَنگ ، ملک و قوم چاہے کچھ بھی ہو
آدمی کو کم سے کم اِنسان ہونا چاہیے

گُل مسل کر باغباں سے عشق کا دعویٰ نہ کر
آدمی سے عشق تو ایمان ہونا چاہیے

ظلم پر حیرت نہ ہونا اِنتہائے ظلم ہے
دوستو ہر ظلم پر حیران ہونا چاہیے

پالنے والا ہمارا اِمتحاں مقصود ہے
تو خطاؤں کا بھی کچھ سامان ہونا چاہیے

موت بہتر نہ لگے جس سے کسی بھی حال میں
زِندگی کو اِتنا تو آسان ہونا چاہیے

حُسن والوں کی اَدا سے حادثے ہوتے تو ہیں
لڑکیوں کا چلنے پہ چالان ہونا چاہیے

آسمانوں پر اَگر بنتے ہیں جوڑے تو جناب
مسجدوں سے عشق کا اِعلان ہونا چاہیے

پھول مارا آپ نے ، دُشمن خوشی سے کھل اُٹھا
آپ کے ہاتھوں میں اَب گلدان ہونا چاہیے

’’پاک‘‘ یعنی صاف اور ’’اِستان‘‘ کا معنی جگہ
ہر گلی کوچے کو ’’پاک اِستان‘‘ ہونا چاہیے

قیسؔ جیسے منتخب ہوں بھاری رائے سے جہاں
عاشقوں کا بھی کوئی ایوان ہونا چاہیے
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisLaila.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
بخت جس دِن ہمیں ملا دے گا
****************************************
بخت جس دِن ہمیں ملا دے گا
سچ بتا پہلے مجھ کو کیا دے گا

چہرے سے زُلف ہی ہٹا لے اَگر
شب ڈَھلے تُو تو دِن چڑھا دے گا

اِک نظر عشق کے گدا پر بھی
تُو مجھے دے ، تجھے خدا دے گا

اَوڑھ لوں گر میں دُوسرا آنچل
غالبا یار مسکرا دے گا

گر تجھے سُرخ پھول پیش کروں
سُرخ لب والے مجھ کو کیا دے گا

ایک بوسے سے کیا بگڑتا ہے
دِل تجھے عمر بھر دُعا دے گا

ہنس کے فرما رہا ہے شوخ طبیب
دَرد تھم جائے تو دَوا دے گا

آپ کی یاد کا حسین آنچل
راستوں میں دِئیے جلا دے گا

عشق دُنیا سے سیکھ کر جاؤ
جنتی میوہ تب مزا دے گا

گھاؤ یہ کہہ کے وُہ لگاتے ہیں
پھول خوشبو نہ دے تو کیا دے گا

اُن کی ٹھوڑی کے تل کا نہ پوچھو
قیس پوری غزل سنا دے گا !
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisLaila.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
ہم سفر ہو تو ایک کام کرو
****************************************
ہم سفر ہو تو ایک کام کرو
گفتگو کے بنا کلام کرو

پلکیں کب تک رُکوع میں رَکھو گے
حُسن کا واسطہ ، قیام کرو

ایک پل آنکھیں چار کر کے مجھے
عمر بھر کے لیے غلام کرو

لیلیٰ بننے سے نہ کرو اِنکار
پیار چاہے ، برائے نام کرو

چُن دو دیوار میں دَھڑکتا دِل
عشق کی پوری روک تھام کرو

عُمر بھر جِسم ، بازگشت سُنے
اُنگلیوں سے کبھی کلام کرو

دِل کے اَندر سے کوئی کہتا ہے
حُسن والوں کا اِحترام کرو

اِس کا سورج غُروب ہوتا نہیں
حُسن کی مملکت میں شام کرو

بات ایسے کرو کہ پھول کھلیں
پیار سے سنگ دِل کو رام کرو

پیار ہر دین کا خلاصہ ہے
جس قَدَر ہو سکے یہ عام کرو

جانے کس کا جواب سن لے خدا
قیس ہر شخص کو سلام کرو
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisLaila.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
غُرورِ حُسن میں شاہی جلال ہوتا ہے
****************************************
غُرورِ حُسن میں شاہی جلال ہوتا ہے
پری رُخوں کا سبھی کچھ کمال ہوتا ہے

تراش ایسی کہ رُکتی ہے سانس دَھڑکن کی
پھر اُس پہ چلنا قیامت کی چال ہوتا ہے

قسم خدا کی اے لفظوں سے ماورا لڑکی
بدن اور ایسا بدن ، خال خال ہوتا ہے

پناہ بادَلوں میں ڈُھونڈتا ہے ماہِ تمام
جو بے حجاب وُہ زُہرہ جمال ہوتا ہے

کسی شجر پہ پکے پھل نے مسکرا کے کہا
یہ عشق روزِ اَزل سے وَبال ہوتا ہے

وُہ اَپنے عاشقوں کا ، ذِکر چھیڑ دیتے ہیں
مرے فرار کا جب اِحتمال ہوتا ہے

خدا ہی جانے اُسے چوم لیں تو پھر کیا ہو
جو گال نام سے بوسے کے لال ہوتا ہے

اَگر وُہ لب نظر آئیں تو زُلف بھی دیکھو
ہر ایک دانے پہ موجود جال ہوتا ہے

وُفورِ آرزُو ، دَراَصل زِندگانی ہے
تمنا مرتی ہے تب اِنتقال ہوتا ہے

جو وَقتِ رُخصتِ محمل ، تھا حال مجنوں کا
کچھ ایسا حال مرا سارا سال ہوتا ہے

نگاہِ قیس سے دیکھو ، ہمیشہ لیلیٰ کو
صنم کسی کا بھی ہو ، بے مثال ہوتا ہے
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisLaila.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
وُہ آئے تو لب پر سوال آ گیا
****************************************
وُہ آئے تو لب پر سوال آ گیا
اَجی آج کیسے خیال آ گیا

تم آئے کہ خوشیوں پہ عید آ گئی
تم آئے کہ خنداں ہلال آ گیا

رُکوع دَر رُکوع پھول جھُکنے لگے
خِراماں خِراماں غزال آ گیا

تعجب سے رُکنے لگیں تتلیاں
رُخِ یار پر وُہ جمال آ گیا

بہار اُن پہ جونہی چڑھی سولہویں!
نُجومی پکارا وُہ سال آ گیا

پڑھا دیکھ کر اُن کو لاحول کیوں
اَرے زاہدو! کیا خیال آ گیا؟

حیا سرخ گالوں پہ اِتنی سجی
کہ قوسِ قُزَح پر زَوال آ گیا

جو ڈالی فقط طائرانہ نظر
حسینہ کے رُخ پر جلال آ گیا

وُہ غصے میں اَب قتل کرتے نہیں
طبیعت میں کچھ اِعتدال آ گیا

دَرِ حُسن پر سر جھکاتے ہی قیس
ہمارے قلم پر کمال آ گیا
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisLaila.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
محور: عشق نے آسان کر دی کُل حیات
****************************************
محور: عشق نے آسان کر دی کُل حیات
اَب فقط خوش رَکھنا ہے اِک شخص کو
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
خوشبوؤں کے کنول جلاؤں گا
****************************************
خوشبوؤں کے کنول جلاؤں گا
سیج تو چاند پر سجاؤں گا

تُو شریکِ حیات بن جائے
پیار کی مملکت بناؤں گا

تھام لے ہاتھ میرا وعدہ ہے
تیری پازیب تک دَباؤں گا

تُو کرم ماں کے بھول جائے گی
میں ترے اِتنے ناز اُٹھاؤں گا

تیرے گُل رُخ کی تازگی کے لیے
شبنمی گیت گنگناؤں گا

خانقاہوں کے بعد تیرے لیے
مندروں میں دِئیے جلاؤں گا

مانگ تیری دَرخشاں رَکھنے کو
کہکشائیں بھی توڑ لاؤں گا

دِل کی رانی ہے ، نوکرانی نہیں
اَپنے گھر والوں کو بتاؤں گا

تیرے گھر والے روز آئیں گے
اُن سے یوں رابطہ بڑھاؤں گا

گھر سے میں سیدھا جاؤں گا دَفتر
اور دَفتر سے گھر ہی آؤں گا

یاروں کے طعنے بے اَثر ہوں گے
میں ترے ساتھ کھانا کھاؤں گا

چاندنی شب میں من پسند غذا
لقمہ لقمہ تجھے کھِلاؤں گا

کاسۂ آب پہلے دُوں گا تجھے
پیاس میں بعد میں بجھاؤں گا

بھول جائے گی گھر کی اُکتاہٹ
شب تجھے اِس قَدَر گھماؤں گا

ویسے بھر آئے دِل تو رو لینا
سوچ بھی نہ کہ میں ستاؤں گا

گر خطا تجھ سے کوئی ہو بھی گئی
دیکھ کر صرف مسکراؤں گا

چند لمحے خفا ہُوئے بھی اَگر
وعدہ ہے پہلے میں مناؤں گا

رات بارہ بجے تُو سوئے اَگر
دِن کے بارہ بجے جگاؤں گا

جل گئی ہنڈیا گر کبھی تجھ سے
اَگلے دِن کھانا میں بناؤں گا

بیٹیاں ہوں یا بیٹے رَب کی عطا
دونوں کو پلکوں پر بٹھاؤں گا

کان پہ تکیہ رَکھ کے سو جانا
میرے بچے ہیں ، میں سلاؤں گا

شکوہ تجھ سے کروں گا خلوت میں
سامنے سب کے گُن میں گاؤں گا

فیصلے ہم کریں گے مل جل کر
حکمِ حاکم نہیں چلاؤں گا

زَن مریدی کا طعنہ جوتی پر
مرد بن کر وَفا نبھاؤں گا

ایک دِن تیرا ایک دِن میرا
ٹی وی پر قبضہ نہ جماؤں گا

تیرا کیا واسطہ سیاست سے
بور خبریں نہیں سناؤں گا

مجھ کو حیرت ہے تُو نے سوچا کیوں
شادی کا دِن میں! بھول جاؤں گا؟

جگ منائے گا عید ، دیکھ کے چاند
میں تجھے دیکھ کر مناؤں گا

بن کہے تیری بات سمجھوں گا
بن کہے دَرد جان جاؤں گا

علم ، طاقت ، کمائی ، عقل ، جمال
ایک بھی رُعب نہ جماؤں گا

جب کوئی کھیل کھیلیں گے ہم تم
سوچ کر کچھ میں ہار جاؤں گا

اَپنی ہر کامیابی کا سہرا
میں ترے سر پہ ہی سجاؤں گا

گر کبھی ایک کو بچانا ہُوا
ڈُوب کر بھی تجھے بچاؤں گا

میں فقط تجھ پہ آنکھ رَکھوں گا
میں فقط تجھ سے دِل لگاؤں گا

زَخم اور تلخی کے سوا جاناں
تجھ سے میں کچھ نہیں چھپاؤں گا

حُسن کے ڈَھلنے کی تُو فکر نہ کر
آخری سانس تک نبھاؤں گا

ہجر تقدیر نے اَگر لکھا
صرف ہلکا سا یاد آؤں گا

میری حوریں کنیز ہوں گی تری
بن ترے میں اِرم نہ جاؤں گا

تُو فقط پڑھ کے اِتنی خوش نہ ہو
میں تجھے کر کے یہ دِکھاؤں گا

اور کیا چاہیے ثبوتِ خلوص
قیس کی ہر غزل سناؤں گا
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisLaila.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
غزل ہے صرف کوشش اور اِک شہکار ہے لیلیٰ
****************************************
غزل ہے صرف کوشش اور اِک شہکار ہے لیلیٰ
کمالِ حُسنِ تخلیقات کا سنسار ہے لیلیٰ

چراغِ مُصحفِ رُخ ، معجزہ ہے حُسنِ حیرت کا
اَلف لیلیٰ ہو کوئی ، مرکزی کردار ہے لیلیٰ

ہزاروں تتلیاں لیلیٰ پکڑنے پیچھے چل نکلیں
ذِرا سا دُور سے ، چلتا ہُوا گلزار ہے لیلیٰ

جو مل بیٹھے یہ غنچوں میں تو اُن کا حُسن بڑھ جائے
شِگُوفے جاں چھڑکتے ہیں ، چمن کا پیار ہے لیلیٰ

ذِرا سی قوس رُخ کی رِہ گئی پردے سے شب باہر
ہلالِ عید بولا چاند کا دیدار ہے لیلیٰ

سنا ہے غنچے کو بوسے سے اِک دِن روک نہ پائی
سنا ہے اُس گھڑی سے ، محوِ اَستغفار ہے لیلیٰ

چلے تو نرم جھٹکا ہر کلی کے دِل کو لگتا ہے
رُکے تو جل پری کو حُسن کا مینار ہے لیلیٰ

چرا لی پھول نے خوشبو ، حنا کا حُسن تتلی نے
چمن کی دِلنشیں دَھڑکن کی پالن ہار ہے لیلیٰ

قصیدہ عمر بھر لکھوں ترا تو کچھ بھی نہ لکھا
کہ تو لاکھوں جنم تعریف کی حق دار ہے لیلیٰ

غُرورِ حُسن ہے اِس شعر پڑھنے والی کو جو قیس
تو شاید زُعم ہو کہ میری تو سردار ہے لیلیٰ
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisLaila.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
حُور دُنیا میں ملی تھی ، پر مری مانے گا کون
****************************************
حُور دُنیا میں ملی تھی ، پر مری مانے گا کون
جنت اَپنے گھر میں ہی تھی ، پر مری مانے گا کون

پھول اُڑتے پھر رہے تھے روشنی میں اَبر کی
چاندنی خوشبو بھری تھی ، پر مری مانے گا کون

خوشنما ، قوسِ قُزح تھی ، جگنوؤں کے جسم پر
تتلیوں میں روشنی تھی ، پر مری مانے گا کون

فاختہ مہکا رہی تھی خوشبو دَر خوشبو چمن
ہر کلی کچھ کُوکتی تھی ، پر مری مانے گا کون

آنکھوں دیکھا واقعہ ہے ، ایک ضِدّی دِل رُبا
اِس غزل پر مر مٹی تھی ، پر مری مانے گا کون

اُس نے پاؤں کیا دَھرے ، گھر میں اُجالا بھر گیا
شَہر بھر میں رات ہی تھی ، پر مری مانے گا کون

ریت کی برکھا میں دُھل کے ، کھِل اُٹھے دِل کے گُلاب
بارِشوں میں تشنگی تھی ، پر مری مانے گا کون

شَہرِ خاموشاں میں نِصفِ شَب کی سُوئیاں ملتے ہی
زِندگی ہی زِندگی تھی ، پر مری مانے گا کون

آئینے سے جب ذِرا سا ، دُور ہٹ کے رو پڑے
عکس نے آواز دی تھی ، پر مری مانے گا کون

شاخ سے بچھڑی کلی پہ ، شبنمی قطرے نہ تھے
وُہ تو تتلی رو رہی تھی ، پر مری مانے گا کون

شک پرست اِحباب کو میں ، قیسؔ گو یہ کہہ تو دُوں!
یہ غزل ’’کچھ‘‘ عام سی تھی ، پر مری مانے گا کون
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisLaila.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
یار سے ہاتھ جب ملاؤں گا
****************************************
یار سے ہاتھ جب ملاؤں گا
آہ! شاید میں مر ہی جاؤں گا

چاند یاقوت لب کا آئے نظر
عید میں حشر تک مناؤں گا

آئینے سے صنم تراشا ہے!
تم کبھی آؤ تو دِکھاؤں گا

جانے وُہ کس گلی میں اُتریں گے
شَہر کی ہر گلی سجاؤں گا

کتنا پاگل ہُوں یہ تو سوچا نہیں
آپ کو کس جگہ بٹھاؤں گا

جلد مانوس ہوں گے یوں مجھ سے
اُن کو ملتے ہی منہ چِڑاؤں گا

مٹھی میں جگنو بھر کے زُلفوں میں
چاہتوں کے دِئیے جلاؤں گا

عشق دَریا سے تو بڑا ہے مرا
اَپنا رَستہ میں خود بناؤں گا

کتنا خوش ہوں گے ٹوک کر وُہ مجھے
خود غلط شعر گنگناؤں گا

قیس اِس مقطع میں ہے جادُو سا!
لوگ ہنس دیں گے جب سناؤں گا
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisLaila.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
ساقی: غم زدے ، ہاتھ چومتے ہیں مرا
****************************************
ساقی: غم زدے ، ہاتھ چومتے ہیں مرا
بھولنے کا ہنر سکھاتا ہوں
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
حسیں خیال جو پاؤں کو گدگدانے لگے
****************************************
حسیں خیال جو پاؤں کو گدگدانے لگے
وُہ نیند میں بھی مرے شعر گنگنانے لگے

میں اَپنی غزلوں کی رَعنائیوں سے جلنے لگا
مری کتاب وُہ آغوش میں سلانے لگے

جو خط میں لکھا کہ اَب نیند تک نہیں آتی
وُہ تکیہ بھینچ کے بانہوں میں مسکرانے لگے

کبھی نقاب میں چھُپ کر ، کبھی بنا آنچل
وُہ میرے پیار کو ہر رُخ سے آزمانے لگے

وُہ لب پہ سوچ میں گم اُنگلی پھیرتے ہیں یا
ہمیں سلیقے سے میٹھی چھری دِکھانے لگے

کہا جو اُن کو کہ کچھ لوگ جادُو کرتے ہیں
وُہ اُنگلی گھول کے مشروب میں پلانے لگے

’’ نہیں ‘‘ پہ حُسن کی رِہ رِہ کے پیار آیا مجھے
وُہ بازُؤوں میں مرے ’’ نیم ‘‘ کسمسانے لگے

لبوں سے بال برابر ، لبوں کو روک لیا
حیا سے جنگ میں دو ہونٹ کپکپانے لگے

خیال خوانی میں یکجائی کا یہ عالم ہے
اُنہیں ہمارے ، ہمیں اُن کے خواب آنے لگے

وُہ اِس مُراقبے سے تھی مری دُعا میں مگن
کہ لوگ قدموں میں اُس کے دِئیے جلانے لگے

زَمانے بھر میں لُٹا کر بھی ہم غنی ہیں قیسؔ
ہمارے ہاتھ محبت کے وُہ خزانے لگے
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisLaila.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
آپ کو بھی ہے گر دَغا دینا
****************************************
آپ کو بھی ہے گر دَغا دینا
تو مجھے پہلے سے بتا دینا

دِل لگانا تو صِدقِ دِل کے ساتھ
ہاتھ تھامو تو آسرا دینا

عشق کا پہلا گام اُف اَللہ
دُشمنِ جان کو دُعا دینا

باغ میں تیسرے شجر پر دِل
جب بھی موقع ملے بنا دینا

خوف آئے اَگر فصیلوں سے
دیپ دیوار پر جلا دینا

عشق کے اَشک بھی مقدس ہیں
غمِ دُنیا میں نہ ملا دینا

اِک ہتھیلی بنی ہے دَستِ طلب
دُوسرا ہاتھ تم بڑھا دینا

اَپنے ’’ ناطے ‘‘ کا کوئی نام نہیں
دیکھ کر ہاتھ نہ ہلا دینا

پیار کی اِک بڑی نشانی ہے
وَقت بے وَقت مُسکرا دینا

عُمر بھر مُنتَظِر رَہوں گا مگر !
آنے میں عُمر نہ لگا دینا

کل کسی نے مشاعرے میں کہا !
قیسؔ جب آئے تب جگا دینا
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisLaila.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
خوبصورتی کی حد ہے نہ حساب ہے
****************************************
خوبصورتی کی حد ہے نہ حساب ہے
تُو گلاب ، تُو گلاب ، تُو گلاب ہے

چودہویں کا چاند ، نصفِ دِن کا آفتاب
چندے آفتاب ، چندے ماہتاب ہے

چار سو کروڑ تتلیوں میں تُو مرا
اِنتخاب ، اِنتخاب ، اِنتخاب ہے

جسم کی مہک نے جگنو مست کر دِئیے
کہہ رہے ہیں یہ گلاب ، لاجواب ہے

دُھوپ میں جو مینہ بَرَس پڑے تو جانئے
اَبر زُلفِ یار دیکھ آب آب ہے

خواب میں بھی اُن کے آگے ایک نہ چلی
بولے جاگ جاؤ یہ ہمارا خواب ہے

ایک پل کو دیکھ لے ہمیں بھی پیار سے
یہ ثواب دَر ثواب دَر ثواب ہے

حُسن کی نگاہ میں حیا کے سُرخ پھول
آج کل کے دور میں یہ اِنقلاب ہے

عشق نے جہاں پہ لکھ دِیا تمام شد
حُسن کی کتاب کا وُہ پہلا باب ہے

قیس اُن نگاہوں میں چمک سی پیار کی
اِک نئی کتاب کا یہ اِنتساب ہے
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisLaila.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
پھول چنتی دِل رُبا ، یادَش بخیر
****************************************
پھول چنتی دِل رُبا ، یادَش بخیر
گاؤں کی ٹھنڈی ہَوا ، یادَش بخیر

حُسنِ تسلیمات ، کھِلتے حُسن کا
عشق کی کچی وَفا ، یادَش بخیر

شعر کا مطلب سمجھ کر چونکنا
سرخ گالوں پر حیا ، یادَش بخیر

حرف پہلا نام کا لکھا ہُوا
پھول ہاتھوں کی حنا ، یادَش بخیر

ایک ہی خواہش کا دورِ پُرسُکوں
چاند راتوں کی دُعا ، یادَش بخیر

یاد کے صحرا میں ، پتھر کی لکیر
یار کی ہر ہر اَدا ، یادَش بخیر

پہلی بارِش کی ، جواں بوندوں کے بیچ
خاص طرح کانپنا ، یادَش بخیر

خود سے مجھ کو عشق کرواتا گیا
اُس کا چھپ چھپ دیکھنا ، یادَش بخیر

اِک بھلا سا نام تھا ، اُس شوخ کا
ساتھ رہنا تھا سدا ، یادَش بخیر

قیس لے لوں ، سال دے کر گر ملے
ایک پل اُس پیار کا یادَش بخیر
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisLaila.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
حرف دَر حرف خواب اُن کا ہے
****************************************
حرف دَر حرف خواب اُن کا ہے
کیا لکھوں کیا شباب اُن کا ہے

زُلف ، پھر اُس میں پھول ، اُف اَللہ !
رُخ ، رُخِ ماہتاب اُن کا ہے

ہونٹ ، برگِ گلاب بھیگا ہُوا !
جسم ، جامِ شراب اُن کا ہے

ہاتھ سے کھول دی ہے کچی کلی
کتنا رَوشن جواب اُن کا ہے

ایک ہی وار ، وُہ بھی دِل پہ کرو
سیدھا سادہ حساب اُن کا ہے

رُخ پہ معصومیت کا پَہرا ہے
کام یہ کامیاب اُن کا ہے

عقل تو میری اِک بھی سنتی نہیں
دِل بھی خانہ خراب اُن کا ہے

اِبنِ جِن کی جبیں پہ ہے محراب
آتشیں تر شباب اُن کا ہے

عنکبوتوں نے ’’ واہ واہ ‘‘ کہا
اِتنا نازُک نقاب اُن کا ہے

وُہ جو پھولوں میں چھُپ کے بیٹھے ہیں
کتنا اَچھا حجاب اُن کا ہے

قیس سب سے حسین شاعر ہے !
چونکہ وُہ ’’ اِنتخاب ‘‘ اُن کا ہے
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisLaila.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
کسی خونی قبیلے کی سپہ سالار ہے لیلیٰ
****************************************
کسی خونی قبیلے کی سپہ سالار ہے لیلیٰ
کبھی دَشنہ ، کبھی خنجر ، کبھی تلوار ہے لیلیٰ

بدن پہ وُہ غضب ڈھاتا ہے ، یہ جذبات کی قاتل
ستم کے بادشہ کی ، حاشیہ بردار ہے لیلیٰ

یہ کشتِ زَعفرانی ہے ، فقط آغازِ اُلفت میں
جو دِل دے دو تو پھر دِن رات کشتِ زار ہے لیلیٰ

کبھی اِس نے وَفا کی ہو تو پھر اِنسان سوچے بھی
رُخِ معصوم نہ دیکھ ، آخری عیار ہے لیلیٰ

ترا کردار ہی ، گفتار کا ، حامی نہیں ظلمی!
تُو لاکھ اِقرارِ اُلفت کر ، ہمیں اِنکار ہے لیلیٰ

تری آنکھوں کا نیلا پن ، یہ تیرا ماتمی جُوبَن
جو تجھ پہ مر مٹے ، مجنوں ، یہ کیا کردار ہے لیلیٰ؟

کوئی ہَدیہ بہ مسجد تو کوئی مے خانے کو بخشا
شکایت پر کہے قاضی سے ، خود مختار ہے لیلیٰ

ہُوئی کھیتی جواں دِل کی ، گرانے آ گئی بجلی
چمک پہ نہ مرو صاحب! ، چمکتی دھار ہے لیلیٰ

ستم کی ملکہ ، ظلمت گر ، کِرائے کی کوئی قاتل
بزورِ حُسن قبضہ گر ، بہت فنکار ہے لیلیٰ

اَگر تم نہ ملیں تو اِس غزل کو ’’ٹھیک‘‘ سے پڑھ لو!
اَگر ہو قیس کی تو ، توبہ اَستغفار ہے لیلیٰ
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisLaila.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
وَجہ: عاجزی میری خاص شہرت تھی
****************************************
وَجہ: عاجزی میری خاص شہرت تھی
پیار نے اُس کے کر دِیا مغرور
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
رَبط کا سلسلہ بڑھا کہ نہیں
****************************************
رَبط کا سلسلہ بڑھا کہ نہیں
گُل ترا ، زُلف تک گیا کہ نہیں

منزلِ وَصل کی تُو فکر نہ کر
فاصلہ ، روز کچھ گھٹا کہ نہیں

تیز بارِش میں سب ہی رُکتے ہیں
اِلتجا پر تری رُکا کہ نہیں

ایک دِن ساتھ مل کے روئے گا
اَب ترے حال پر ہنسا کہ نہیں

میں ترے اِستعاروں پر قربان!
بات وُہ کچھ سمجھ سکا کہ نہیں

کتنے مغرور ہو جنابِ مَن
آپ کا ہے کوئی خدا کہ نہیں

غیب کے رازدان! ، ہجر کے دِن
لیلیٰ کے دِل کو کچھ ہُوا کہ نہیں

مجنوں نے تو ’’کتاب‘‘ لکھ ڈالی!
لیلیٰ نے شکریہ لکھا کہ نہیں

نیم جاں کہہ کے ہنسنے والی ہَوا
یہ دِیا رات بھر جلا کہ نہیں

ذِکرِ مجنوں کو زِندہ دیکھ کے قیس !
حوصلہ تجھ کو کچھ ملا کہ نہیں
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisLaila.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
رَدیف ، قافیہ ، بندِش ، خیال ، لفظ گری
****************************************
رَدیف ، قافیہ ، بندِش ، خیال ، لفظ گری
وُہ حُور ، زینہ اُترتے ہُوئے سکھانے لگی

کتاب ، باب ، غزل ، شعر ، بیت ، لفظ ، حُروف
خفیف رَقص سے دِل پر اُبھارے مست پری

کلام ، عَرُوض ، تغزل ، خیال ، ذوق ، جمال
بدن کے جام نے اَلفاظ کی صراحی بھری

سلیس ، شستہ ، مُرصع ، نفیس ، نرم ، رَواں
دَبا کے دانتوں میں آنچل ، غزل اُٹھائی گئی

قصیدہ ، شعر ، مسدس ، رُباعی ، نظم ، غزل
مہکتے ہونٹوں کی تفسیر ہے بھلی سے بھلی

مجاز ، قید ، معمہ ، شبیہ ، اِستقبال
کسی سے آنکھ ملانے میں اَدبیات پڑھی

قرینہ ، سَرقہ ، اِشارہ ، کِنایہ ، رَمز ، سوال
حیا سے جھکتی نگاہوں میں جھانکتے تھے سبھی

بیان ، علمِ معانی ، فصاحت ، علمِ بلاغ
بیان کر نہیں سکتے کسی کی ایک ہنسی

قیاس ، قید ، تناسب ، شبیہ ، سَجع ، نظیر
کلی کو چوما تو جیسے کلی ، کلی سے ملی

ترنم ، عرض ، مکرر ، سنائیے ، اِرشاد
کسی نے ’’سنیے‘‘ کہا ، بزم جھوم جھوم گئی

حُضُور ، قبلہ ، جناب ، آپ ، دیکھیے ، صاحب
کسی کی شان میں گویا لغت بنائی گئی

حریر ، اَطلس و کمخواب ، پنکھڑی ، ریشم
کسی کے پھول سے تلووں سے شاہ مات سبھی

گلاب ، عنبر و ریحان ، موتیا ، لوبان
کسی کی زُلفِ معطر میں سب کی خوشبو ملی

٭٭٭
٭٭٭

کسی کے مرمریں آئینے میں نمایاں ہیں
گھٹا ، بہار ، دَھنک ، چاند ، پھول ، دیپ ، کلی

کسی کا غمزہ شرابوں سے چُور قوسِ قُزح
اَدا ، غُرُور ، جوانی ، سُرُور ، عِشوَہ گری

کسی کے شیریں لبوں سے اُدھار لیتے ہیں
مٹھاس ، شَہد ، رُطَب ، چینی ، قند ، مصری ڈَلی

کسی کے نور کو چندھیا کے دیکھیں حیرت سے
چراغ ، جگنو ، شرر ، آفتاب ، ’’پھول جھڑی‘‘

کسی کو چلتا ہُوا دیکھ لیں تو چلتے بنیں
غزال ، مورنی ، موجیں ، نُجُوم ، اَبر ، گھڑی

کسی کی مدھ بھری آنکھوں کے آگے کچھ بھی نہیں
تھکن ، شراب ، دَوا ، غم ، خُمارِ نیم شبی

کسی کے ساتھ نہاتے ہیں تیز بارِش میں
لباس ، گجرے ، اُفق ، آنکھ ، زُلف ، ہونٹ ، ہنسی

کسی کا بھیگا بدن ، گُل کھلاتا ہے اَکثر
گلاب ، رانی ، کنول ، یاسمین ، چمپا کلی

بشرطِ ’’فال‘‘ کسی خال پر میں واروں گا
چمن ، پہاڑ ، دَمن ، دَشت ، جھیل ، خشکی ، تری

یہ جام چھلکا کہ آنچل بہار کا ڈَھلکا
شریر ، شوشہ ، شرارہ ، شباب ، شر ، شوخی

کسی کی تُرش رُوئی کا سبب یہی تو نہیں؟
اَچار ، لیموں ، اَنار ، آم ، ٹاٹری ، اِملی

کسی کے حُسن کو بن مانگے باج دیتے ہیں
وَزیر ، میر ، سپاہی ، فقیہہ ، ذوقِ شہی

نگاہیں چار ہُوئیں ، وَقت ہوش کھو بیٹھا
صدی ، دَہائی ، برس ، ماہ ، روز ، آج ، اَبھی

وُہ غنچہ یکجا ہے چونکہ وَرائے فکر و خیال!
پلک نہ جھپکیں تو دِکھلاؤں پتّی پتّی اَبھی؟

٭٭٭
٭٭٭

سیاہ زُلف: گھٹا ، جال ، جادُو ، جنگ ، جلال
فُسُوں ، شباب ، شکارَن ، شراب ، رات گھنی

جبیں: چراغ ، مقدر ، کشادہ ، دُھوپ ، سَحَر
غُرُور ، قہر ، تعجب ، کمال ، نُور بھری

ظریف اَبرُو: غضب ، غمزہ ، غصہ ، غور ، غزل
گھمنڈ ، قوس ، قضا ، عشق ، طنز ، نیم سخی

پَلک: فسانہ ، شرارت ، حجاب ، تیر ، دُعا
تمنا ، نیند ، اِشارہ ، خمار ، سخت تھکی

نظر: غزال ، محبت ، نقاب ، جھیل ، اَجل
سُرُور ، عشق ، تقدس ، فریبِ اَمر و نہی

نفیس ناک: نزاکت ، صراط ، عدل ، بہار
جمیل ، سُتواں ، معطر ، لطیف ، خوشبو رَچی

گلابی گال: شَفَق ، سیب ، سرخی ، غازہ ، کنول
طلسم ، چاہ ، بھنور ، ناز ، شرم ، نرم گِری

دو لب: عقیق ، گُہر ، پنکھڑی ، شرابِ کُہن
لذیذ ، نرم ، ملائم ، شریر ، بھیگی کلی

نشیلی ٹھوڑی: تبسم ، ترازُو ، چاہِ ذَقن
خمیدہ ، خنداں ، خجستہ ، خمار ، پتلی گلی

گلا: صراحی ، نوا ، گیت ، سوز ، آہ ، اَثر
ترنگ ، چیخ ، ترنم ، ترانہ ، سُر کی لڑی

ہتھیلی: ریشمی ، نازُک ، مَلائی ، نرم ، لطیف
حسین ، مرمریں ، صندل ، سفید ، دُودھ دُھلی

کمر: خیال ، مٹکتی کلی ، لچکتا شباب
کمان ، ٹوٹتی اَنگڑائی ، حشر ، جان کنی

پری کے پاؤں: گلابی ، گداز ، رَقص پرست
تڑپتی مچھلیاں ، محرابِ لب ، تھرکتی کلی

٭٭٭
٭٭٭

جناب! دیکھا سراپا گلابِ مرمر کا!
اَبھی یہ شعر تھے ، شعروں میں چاند اُترا کبھی؟

غزل حُضُور بس اَپنے تلک ہی رَکھیے گا
وُہ رُوٹھ جائے گا مجھ سے جو اُس کی دُھوم مچی

جھکا کے نظریں کوئی بولا اِلتماسِ دُعا
اُٹھا کے ہاتھ وُہ خیراتِ حُسن دینے لگی

کشش سے حُسن کی چندا میں اُٹھے مد و جزر
کسی کو سانس چڑھا سب کی سانس پھول گئی

جو اُس پہ بوند گری ، اَبر کپکپا اُٹھا
اُس ایک لمحے میں کافی گھروں پہ بجلی گری

قیامت آ گئی خوشبو کی ، کلیاں چیخ پڑیں
گلاب بولا نہیں ، غالبا وُہ زُلف کھلی

طواف کرتی ہے معصومیت یوں کم سِن کا
کہ قتل کر دے عدالت میں بھی ، تو صاف بری!

بدن پہ حاشیہ لکھنا ، نگاہ پر تفسیر
مقلدین ہیں شوخی کے اَپنی شیخ کئی

تمام شہر میں سینہ بہ سینہ پھیل گئی
کسی کے بھیگے لبوں سے وَبائے تشنہ لبی

گلاب اور ایسا کہ تنہا بہار لے آئے
بہشت میں بھی ہے گنجان شوخ گُل کی گلی

کمالِ لیلیٰ تو دیکھو کہ ’’صرف‘‘ نام لیا
’’پھر اُس کے بعد چراغوں میں روشنی نہ رہی‘‘

گلابی آنکھوں میں ایسے بھنور تھے مستی کے
شراب ڈُوب کے اُن میں بہت حلال لگی

جسارَت ’’عکس‘‘ پہ لب رَکھنے کی نہیں کرتے
بہت ہُوا بھی تو پلکوں سے گدگدی کر دی

نجانے پہلی نظر کیوں حلال ہوتی ہے
کسی کے حُسن پہ پہلی نظر ہی مہنگی پڑی

چمن میں ’’پھول نہ توڑیں‘‘ لکھا تھا سو ہم نے
گلاب زادی کو پہنا دی تتلیوں کی لڑی

کسی کا زُلف کو لہرا کے چلنا ، اُف توبہ!
شرابِ نابِ اَزل کے نشے میں مست پری

وُہ بولتا ہے تو کانوں میں شَہد گھولتا ہے
مریضِ قند پہ قدغن ہے اُس کو سننے کی

کلی کو چھوڑ کے نقشِ قدم پہ بیٹھ گئی
قلم ہلائے بنا تتلی نے غزل کہہ دی

صنم اور ایسا کہ بت اُس کے آگے جھک جائیں
دُعا دی اُس نے تو دو دیویوں کی گود بھری

عطائے حُسن تھی ، قیس اِک جھلک میں شوخ غزل
کتاب لکھتا میں اُس پر مگر وُہ پھر نہ ملی
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisLaila.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
جرأت: جرأت سے اَپنی ذات کا اِظہار کر کے دیکھ
****************************************
جرأت: جرأت سے اَپنی ذات کا اِظہار کر کے دیکھ
آ میرے مشورے پہ کبھی پیار کر کے دیکھ
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
گفتگو سے اِجتناب اَچھا لگا
****************************************
گفتگو سے اِجتناب اَچھا لگا
آنکھوں ، آنکھوں میں جواب اَچھا لگا

دَھڑکنوں کو روک کر سننے لگے
اِس قَدَر اُن کا خطاب اَچھا لگا

حُور ایسی آج دیکھی راہ میں
نیکیوں کا ’’ اِرتکاب ‘‘ اَچھا لگا

اُف ! سجانے والا تو ’’ خود ‘‘ سج گیا
زُلف میں تازہ گلاب اَچھا لگا

پہلے بے باکی سے اُن کی عشق تھا
آج اُن کا اِضطراب اَچھا لگا

اَپنے کرنے کا بھی کوئی کام ہو
جب ’’ یہ ‘‘ سوچا تو حجاب اَچھا لگا

نیند میں دَریا پہ ہم چلتے رہے
رات بھر اِک آفتاب اَچھا لگا

اِس قَدَر ڈُھونڈا تجھے ، رَب مل گیا
ہجر میں گزرا شباب اَچھا لگا

ایک آنسو کُل خطائیں دُھو گیا
قاضی ء کُل کا حساب اَچھا لگا

شعر دُنیا کو پسند آئے ، ہمیں
آپ کے نام اِنتساب اَچھا لگا

ڈُھونڈتی پھرتی ہے لیلیٰ ، قیسؔ کو
آسماں ! یہ اِنقلاب اَچھا لگا
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisLaila.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
یار پھر تم سا یار ، اُف توبہ
****************************************
یار پھر تم سا یار ، اُف توبہ
پیار پھر پہلا پیار ، اُف توبہ

زَخم سب کو دِکھا تو سکتے ہیں
آپ کا اِنتظار ، اُف توبہ

کوہساروں سے اُتری دوشیزہ
اِک شتر بے مہار ، اُف توبہ

دیکھ کر دُنیا توبہ توبہ کرے
حُسن کا شاہکار اُف توبہ

ہنستے ہنستے حسین ملکہ نے
کر دِیا دِل پہ وار ، اُف توبہ

جھیل میں کوئی نصف ہی اُبھرا
چیخ اُٹھے کوہسار اُف توبہ

شرم سے گُل نے خود کشی کر لی
سُرخ لب پر بہار ، اُف توبہ

ہم تو حیرت زَدہ تھے کلیوں پر
تتلیوں کا سنگھار ، اُف توبہ

عشق منسوخ کرنے پہنچا ، پڑی
نرم ہاتھوں سے مار ، اُف توبہ

شرم سے دِل پہ ہاتھ رَکھ کے کہا
دیکھ یوں نہ پکار ، اُف توبہ

کھلکھلا کر کہا یہ لیلیٰ نے
قیسؔ ! اور شرمسار ، اُف توبہ
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisLaila.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
اَگر کسی کو ستانا حرام ہوتا ہے
****************************************
اَگر کسی کو ستانا حرام ہوتا ہے
تو پھر تو کچھ بھی چھپانا حرام ہوتا ہے

بِنا بتائے مرے دِل میں آنے والے سُن !
کسی کے گھر میں یوں آنا حرام ہوتا ہے

یہ آنکھیں رَکھتے ہی کیوں ہو نقاب سے باہر
اَگر نظر کو ملانا حرام ہوتا ہے

یقین مانیے اِخلاقِ اَعلیٰ کی رُو سے
کسی کو جوتی دِکھانا حرام ہوتا ہے

کوئی بھی چیز چُرانا حرامِ مطلَق ہے
چنانچہ آنکھ چُرانا حرام ہوتا ہے

کچھ اِس طرح سے اُتارا ہے حُسن لفظوں میں
کہ بولے عکس بنانا حرام ہوتا ہے

وُہ آ گئے ہیں تو سورَج کا جانا بنتا ہے
چراغ دِن میں جلانا حرام ہوتا ہے

اے کاش مفتی کوئی اُس حسیں کو یہ کہہ دے
نفی میں سر کو ہلانا حرام ہوتا ہے

یہ کہہ کے لیلیٰ نے چھینا قلم غزل لکھتے
کسی کے راز بتانا حرام ہوتا ہے

نماز چھوڑنا واعظ ! فقط حرام نہیں
کسی کا دِل بھی دُکھانا حرام ہوتا ہے

قسم اُٹھا کے اُسے چھوڑ دیتا قیس مگر !
قسم بھی جھوٹی اُٹھانا حرام ہوتا ہے
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisLaila.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
دُھوپ میں وُہ شباب دیکھا ہے
****************************************
دُھوپ میں وُہ شباب دیکھا ہے
وَجد میں آفتاب دیکھا ہے

گیسوؤں والا چاند بھی ہو گا
چلتا پھرتا گلاب دیکھا ہے

تین منصوبے دِل بناتا ہے
جب سے اُس کا شباب دیکھا ہے

خواب پورا بتا نہیں سکتا
آپ کو بے حجاب دیکھا ہے

منہ سے وُہ ایک حرف نہ بولے
چہرے پر اِضطراب دیکھا ہے

حُسن اور عشق کی لڑائی میں
حُسن کو کامیاب دیکھا ہے

سخت حیرت سے مرنے والے نے
محتسب کا حساب دیکھا ہے

کشتی کے آخری مسافر نے
ناخدا ، آب آب دیکھا ہے

اُس کو ’’اُس جیسا‘‘ مل گیا شاید
آج اُسے لاجواب دیکھا ہے

کر لئے ہاتھ زَخمی ، جس نے بھی
قیس کا ’’اِنتخاب‘‘ دیکھا ہے
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisLaila.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
خدا کا شکر ہے کہ دِلبر و دِلدار ہے لیلیٰ
****************************************
خدا کا شکر ہے کہ دِلبر و دِلدار ہے لیلیٰ
تمہارا شکر ہے کہ تم کو مجھ سے پیار ہے لیلیٰ

مرا جینا ، مرا مرنا تری زُلفوں کے سائے میں
مری ہم دَم ، مری مرشِد ، مری سالار ہے لیلیٰ

تری چاہت نے دَھڑکن دِل کو بخشی ، جانِ محبوبی
جہاں پر ہُوں ، میں جو کچھ ہُوں ، فقط معمار ہے لیلیٰ

بھنور کے قلب میں ساحل ، وَفا کی کِشت کا حاصل!
زَمینِ شوق تپتا دَشت ، لالہ زار ہے لیلیٰ

بچھڑ جا شوق سے لیکن قسم جینے کی تو نہ دے
ترے بن ایک دَھڑکن ، حشر سے دُشوار ہے لیلیٰ

زَمینی برق ، برقِ حُسن ، حُسنِ شوق ، شوقِ غم
غمِ خوش رَنگ ، رَنگِ گُل ، گُلِ گُلنار ہے لیلیٰ

کوئی دیوانے کے ہاتھوں میں اَپنا ہاتھ کیسے دے!
وُہ خود غدار ہیں ، کہتے ہیں جو غدار ہے لیلیٰ

خدا نے بخش دی ہیں تجھ کو اِتنی معنوی نظریں
زَمانہ حشر تک ’’اِجمال‘‘ کو دَرکار ہے لیلیٰ

فِرُومایہ مرے اَلفاظ ، تیرا حُسن سرمایہ
مری سوچیں بمشکل پھول ، تُو گلزار ہے لیلیٰ

اے جانِ قیس یہ شہرت ترے پاؤں کا صدقہ ہے
مجھے شاعر بنانے میں ترا کردار ہے لیلیٰ
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisLaila.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
اَدائیں حشر جگائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے
****************************************
اَدائیں حشر جگائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے
خیال حرف نہ پائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

بہشتی غنچوں میں گوندھا گیا صراحی بدن
گلاب خوشبو چرائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

قدم ، اِرم میں دَھرے ، خوش قدم تو حور و غلام
چراغ گھی کے جلائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

دِہکتا جسم ہے آتش پرستی کی دعوت
بدن سے شمع جلائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

غزال قسمیں ستاروں کی دے کے عرض کریں
حُضور! چل کے دِکھائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

چمن کو جائے تو دَس لاکھ نرگسی غنچے
زَمیں پہ پلکیں بچھائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

کڑکتی بجلیاں جب جسم بن کے رَقص کریں
تو مور سر کو ہلائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

حسین پریاں چلیں ساتھ کر کے ’’سترہ‘‘ سنگھار
اُسے نظر سے بچائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

یہ شوخ تتلیاں ، بارِش میں اُس کو دیکھیں تو
اُکھاڑ پھینکیں قبائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

وُہ پنکھڑی پہ اَگر چلتے چلتے تھک جائے
تو پریاں پیر دَبائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

وُہ چاند عید کا اُترے جو دِل کے آنگن میں
ہم عید روز منائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

زَمیں پہ خِرمنِ جاں رَکھ کے ہوشمند کہیں
بس آپ بجلی گرائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

جنہوں نے سائے کا سایہ بھی خواب میں دیکھا
وُہ گھر کبھی نہ بسائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

اُداس غنچوں نے جاں کی اَمان پا کے کہا
یہ لب سے تتلی اُڑائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

کمر کو کس کے دوپٹے سے جب چڑھائے پینگ
دِلوں میں زَلزلے آئیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

وُہ آبشار میں بندِ قبا کو کھولے اَگر
تو جھرنے پیاس بجھائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

شریر مچھلیاں کافِر کی نقل میں دِن بھر
مچل مچل کے نہائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

حلال ہوتی ہے ’’پہلی نظر‘‘ تو حشر تلک
حرام ہو جو ہٹائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

جو کام سوچ رہے ہیں جناب دِل میں اَبھی
وُہ کام بھول ہی جائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

نہا کے جھیل سے نکلے تو رِند پانی میں
مہک شراب سی پائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

چرا کے عکس ، حنا رَنگ ہاتھ کا قارُون
خزانے ڈُھونڈنے جائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

کُنواری دِیویاں شمعیں جلا کے ہاتھوں پر
حیا کا رَقص دِکھائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

چنے گلاب تو لگتا ہے پھول مل جل کر
مہکتی فوج بنائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

غزال نقشِ قدم چوم چوم کر پوچھیں
کہاں سے سیکھی اَدائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

سرہانے میر کے ٹُک فاتحہ کو گر وُہ جھکے
تو میر جاگ ہی جائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

حسین تتلیاں پھولوں کو طعنے دینے لگیں
کہا تھا ایسی قبائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

اَگر لفافے پہ لکھ دیں ، ’’ملے یہ ملکہ کو‘‘
تو خط اُسی کو تھمائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

عقیق ، لولو و مرجان ، ہیرے ، لعلِ یمن
اُسی میں سب نظر آئیں ، وُہ اتنا دلکش ہے

گلاب ، موتیا ، چنبیلی ، یاسمین ، کنول
اُسے اَدا سے لُبھائیں ، وُہ اتنا دلکش ہے

مگن تھے مینہ کی دُعا میں سبھی کہ وُہ گزرا
بدل دیں سب کی دُعائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

شراب اور ایسی کہ جو ’’دیکھے‘‘ حشر تک مدہوش
نگاہ رِند جھکائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

نُجومی دیر تلک بے بسی سے دیکھیں ہاتھ
پھر اُس کو ہاتھ دِکھائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

بدل کے ننھے فرشتے کا بھیس جن بولا
مجھے بھی گود اُٹھائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

ہمیں تو اُس کی جھلک مست مور کرتی ہے
شراب اُسی کو پلائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

بہانے جھاڑُو کے پلکوں سے چار سو پریاں
قدم کی خاک چرائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

وُہ چُومے خشک لبوں سے جو شبنمِ گُل کو
تو پھول پیاس بجھائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

کبھی کبھی ہمیں لگتا ہے بھیگے لب اُس کے
ہَوا میں شہد ملائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

مکین چاند کے بیعت کو جب بلاتے ہیں
دَھنک کی پالکی لائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

جفا پہ اُس کی فدا کر دُوں سوچے سمجھے بغیر
ہزاروں ، لاکھوں وَفائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

سفید جسم جو لرزے ذِرا سا بارِش میں
تو اَبر کانپ سے جائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

جو اُس کو چومنا چاہیں ، اَگر وُہ چومنے دے
تو چوم پھر بھی نہ پائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

ستارے توڑ کے لانے کی کیا ضرورت ہے
ستارے دوڑ کے آئیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

چمن میں اُس نے جہاں دونوں بازُو کھولے تھے
وَہاں کلیسا بنائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

ہم اُس کے چہرے سے نظریں ہٹا نہیں سکتے
گلے سے کیسے لگائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

وُہ جتنا جسم تھا ، اُتنا غزل میں ڈھال لیا
طلسم کیسے دِکھائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

غلام بھیجتا ، سر آنکھوں پر بٹھا لیتے
اُسے کہاں پہ بٹھائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

تمام آئینے حیرت میں غرق سوچتے ہیں
اُسے یہ کیسے بتائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

زَبان وَصف سے عاجز ، حُروف مفلس تر
قلم گھسیٹ نہ پائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

طلسمِ حُسن ہے موجود لفظوں سے اَفضل
لغت جدید بنائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

قسم ہے قیس تجھے توڑ دے یہیں پہ قلم
رَفیق مر ہی نہ جائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisLaila.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
زاوِئیے: حُسن کے زاوِئیے خدا کی پناہ
****************************************
زاوِئیے: حُسن کے زاوِئیے خدا کی پناہ
آہ! وُہ شعر جو چھُپانے پڑے
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
پیام بھیجا ’’ وَہیں ! آج شام ‘‘ زِندہ باد
****************************************
پیام بھیجا ’’ وَہیں ! آج شام ‘‘ زِندہ باد
تری کنیز کی جے ہو ، غلام زِندہ باد

وُہ آئے گھر مرے اُردُو اَدَب سمجھنے کو
پڑا ہے حُسن کو شاعر سے کام زِندہ باد

خدا بھلا کرے غالب کے خشک شعروں کا
حسین کرتے ہیں مجھ کو سلام زِندہ باد

معاوِضے میں جو اِک بال ڈَٹ کے مانگ لیا
وُہ ہنس کے بولے ، بس اِتنے سے دام ؟ زِندہ باد

جو ’’ پڑھ رہی ہے ‘‘ اُسے نصف آنکھ ماری ہے
اَگر وُہ ہنس پڑے تو یہ کلام زِندہ باد

نظر جھکا کے ہمیں سادہ پانی پیش کیا
ذِہین ساقی ترا اِنتظام زِندہ باد

تمام لذتوں کے دام ہو گئے دُگنے
فقیہِ شہر تری روک تھام زِندہ باد

ہمیشہ چنتے ہیں پہلے سے کچھ برا حاکم
ترقی کرنے پہ اَپنی عوام زِندہ باد

بچا لو ڈُوبتے کافر کو دِل کے فتوے پر
حرام بھی ہُوا تو یہ حرام زِندہ باد

زَمانے بھر کے غمو ! آؤ مجھ پہ ٹُوٹ پڑو
شرابِ عشق ترا ایک جام زِندہ باد

ہُوئی ہے حشر تلک لیلیٰ ، قیسؔ سے منسوب
جنونی شخص ترا اِنتقام زِندہ باد
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisLaila.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
حُسن کے دِل پہ وار کرتے ہیں
****************************************
حُسن کے دِل پہ وار کرتے ہیں
شعر سے ہم شکار کرتے ہیں

عکس ، لب خندِ یار کا لے کر
کام اِک بار بار کرتے ہیں

آئینہ دیکھتے نہیں لڑکے
مہ جبینوں سے پیار کرتے ہیں

رَقصِ بسمل ہو کھیل جن کے لیے
تیر کب آر پار کرتے ہیں

جو کتب پر نشاں لگاتے نہیں
شاعری ، زَہر مار کرتے ہیں

حشر پر اُن کو اِعتبار نہیں
حشر تک جو اُدھار کرتے ہیں

عقل والوں کو دِل کے حملے سے
مَن چلے ہوشیار کرتے ہیں

گن کے دو گے تو حوریں رہنے دو
پیار ہم بے شمار کرتے ہیں

جو فرشتوں کا اِنتظار کریں
عمر بھر اِنتظار کرتے ہیں

عقل ہے گر اِسی چلن کا نام
ہم جُنوں اِختیار کرتے ہیں

بے بَصر پر نوشتۂ دیوار
قیسؔ ہم آشکار کرتے ہیں
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisLaila.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
یہ شعر پڑھ کے کئی لوگ مسکرانے لگے
****************************************
یہ شعر پڑھ کے کئی لوگ مسکرانے لگے
وُہ عکس چومتے ہی اُس کو منہ چڑانے لگے

ہَوا نے اُنگلی سی پھیری ، حسین ہونٹوں پر
ذِرا سا کانپ کے وُہ نچلا لب چبانے لگے

جنابِ شیخ کی نقشہ گری کے کیا کہنے
بغیر دیکھے ہمیں جنتیں دِکھانے لگے

جب اُس حسین نے تختہ سیاہ صاف کیا
تو لڑکے کاپیوں سے بھی سبق مٹانے لگے

کسی کی چال پہ اِک بار غور کرنے سے
بڑے کمال کے ہم زائچے بنانے لگے

’’ بہت ہی حبس ہے ‘‘ کہہ کر نقاب اُتار دِیا
شب اَپنے ہونے کا کھُل کر یقیں دِلانے لگے

جنابِ من اِنہیں روکو یہ بات ٹھیک نہیں
تمہارے خواب تو اَب دِن میں بھی ستانے لگے

یہ کہہ کے ’’ کہتے جو غالبؔ تو مان جاتے ہم ‘‘
ہمیں ہمارے ہی اُستاد سے جلانے لگے

خدا ہی جانے حقیقت میں ہے شکاری کون
گلے لگے ہوُئے دِل دِل میں مسکرانے لگے

جو دِل کی شکل کا کیک اُن کو کاٹنے کو ملا
چھری وُہ میری طرف دیکھ کر چلانے لگے

وُہ شرمسار ہُوئے کتنے قیسؔ کچھ نہ پوچھ
غزل جو میرؔ کی کہہ کر ، مری سنانے لگے
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisLaila.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
نقاب اُٹھائے تو دُشمن سلام کر دے گا
****************************************
نقاب اُٹھائے تو دُشمن سلام کر دے گا
جمالِ یار محبت کو عام کر دے گا

یہ دُھوپ ، چھاؤں کے موسم ہیں اُس کی مٹھی میں
اَگر ضَروری لگا ، دِن میں شام کر دے گا

صنم کدہ وُہ دُعاؤں کے بعد کھولے گا
نماز پڑھ لے تو ’’مرنا‘‘ حرام کر دے گا

ہے کوہ قاف پہ اُس شوخ گُل کا ذِکر حرام
کہ ننھی پریوں کو یہ بے لگام کر دے گا

خدا کے واسطے ، اُمید کی حفاظت کر
خدا نے چاہا تو دُشمن بھی کام کر دے گا

طلسمِ مصر ہے اُس کے حسین ہاتھوں میں
جو وُہ بنائے تو چائے کو جام کر دے گا

نہ چھوڑ اِس قَدَر آزاد اَپنی آنکھوں کو
یہ کام تجھ کو کسی کا غلام کر دے گا

تمام رات فقط چاند دیکھتے رہنا
تمہارا کام کسی دِن تمام کر دے گا

غزل ، صنم پہ بڑے لکھتے ہیں مگر مجنوں!
کتاب لکھے گا ، لیلیٰ کے نام کر دے گا

اُداس ہو تو غزل اور بھی سناؤں حُضور؟
جو مسکراؤ تو قیس اِختتام کر دے گا
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#لیلیٰ از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisLaila.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
۔ اختتام ۔ مجموعہ کلام "لیلیٰ" ۔
****************************************
۔ اختتام ۔ مجموعہ کلام "لیلیٰ" ۔
سدا خوش رہیے ۔ شہزادقیس
۔ #شہزادقیس کی کتاب #لیلیٰ سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس


****************************************
((End Text))
****************************************
****************************************
((Notice))
Updated On: 24-Sep-16 3:41:02 PM
Release Date: 09-Mar-16 2:48:42 AM
****************************************

****************************************
((Begin Text))
****************************************

****************************************
شہزادقیس کی جانب سے خوش آمدید
****************************************
شہزادقیس کی جانب سے خوش آمدید
مجموعہ کلام "#دسمبر کے بعد بھی" میں شامل اشعار
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#دسمبر_کے_بعد_بھی" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#دسمبر_کے_بعد_بھی از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#دسمبر_کے_بعد_بھی از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisDecember.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#دسمبر_کے_بعد_بھی" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
اِنتساب
****************************************
اِنتساب
منجمد پلکوں کے نام
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#دسمبر_کے_بعد_بھی" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
چاہتوں کا عجب صلہ دے گا
****************************************
چاہتوں کا عجب صلہ دے گا
خون سے لکھے خط جلا دے گا

میرے نغمات قتل کر کے اُنہیں
یاد کے صَحن میں دَبا دے گا

خون سے خط اَگر نہ لکھتا رَہوں
وُہ مجھے شام تک بھُلا دے گا

پھر سے ملنے کا وعدہ کر کے مجھے
آس کی دار پر چڑھا دے گا

صبر کی بے کراں چٹانوں کو
وَصل کا سانحہ رُلا دے گا

دُوسرا کوئی کیا مٹائے گا
عشق ، عشاق کو مٹا دے گا

تُو مرا کچھ بھی اَب نہیں لگتا
اَب مجھے اور کیا سزا دے گا

غم رَقیبوں کا کھائے جاتا ہے
آہ ! تُو اُن کو بھی دَغا دے گا

بولنے والے طوطے یہ تو بتا
تُو مجھے بولنا سکھا دے گا ؟

دِل تو بچپن میں یہ بھی کہتا تھا
رَب ہمیں ایک دِن ملا دے گا

قیس یہ شعر دِل میں واپس رَکھ
پگلے یہ سب کا دِل دُکھا دے گا
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#دسمبر_کے_بعد_بھی" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#دسمبر_کے_بعد_بھی از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#دسمبر_کے_بعد_بھی از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisDecember.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#دسمبر_کے_بعد_بھی" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
میں کہ مل جاتا ہُوں اَبھی تنہا
****************************************
میں کہ مل جاتا ہُوں اَبھی تنہا
کاٹتا نہ تھا اِک گھڑی تنہا

یاد سے یاد کا تعلق ہے
دَرد اُٹھتا نہیں کبھی تنہا

اُنگلیوں سے زِیادہ یار نہ رَکھ
بھیڑ میں ہوتے ہیں سبھی تنہا

کاش ! دیواریں بول بھی سکتیں
خود کلامی ہے جاں کنی تنہا

شمع بھی پھڑپھڑا کے رُوٹھ گئی
آنسوؤں کی لگی جھڑی تنہا

محفلوں میں اُداس تر ہو گا
رات جس شخص کی کٹی تنہا

موت تنہا ترین محرم ہے
پائیں گے سب ہی آگہی تنہا

تُو تو ’’ آتے ہی ‘‘ رو پڑا بچے !
کاٹنی ہے اَبھی صدی تنہا

حوصلے پر خدا کے پیار آیا
کاٹ لی جب یہ زِندگی تنہا

تجھ سا تو مولا کوئی تھا ہی نہیں !
عمر کیوں مجھ کو بخش دی تنہا

ڈائری کے وَرَق تمام ہُوئے!
قیس گزرا یہ سال بھی تنہا
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#دسمبر_کے_بعد_بھی" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#دسمبر_کے_بعد_بھی از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#دسمبر_کے_بعد_بھی از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisDecember.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#دسمبر_کے_بعد_بھی" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
موت حیران کُن پَہیلی ہے
****************************************
موت حیران کُن پَہیلی ہے
اور یہ زِندگی نے کھیلی ہے

پہلی شب ہی اَلگ سے گھر لے گی
موت دُلہن نئی نویلی ہے

ایک تنہائی ، دُوسری دَھڑکن
شاعری ، تیسری سہیلی ہے

صرف دِل داؤ پر لگایا تھا
آپ نے جان ساتھ لے لی ہے

سانس ہی اُن کی زعفرانی نہیں
زُلف بھی عنبریں چنبیلی ہے

مسکراؤں تو ’’ طعنے ‘‘ دیتا ہے
رَنج ، بچپن سے یار بیلی ہے

رِہ سکوں خود ، نہ بیچ سکتا ہوں
جسم ، اَجداد کی حویلی ہے

ایک پہیے کی گاڑی کیا چلتی !
قبر تک زِندگی دَھکیلی ہے

موت کا بہترین وَقت ہے یہ
سَر تلے لیلیٰ کی ہتھیلی ہے

راستہ چھوڑ پاسبانِ اِرَم !
’’ ہاوِیہ ‘‘ دَھڑکنوں کی جھیلی ہے

قیس میں اور زِندہ رِہ لیتا
آسمانوں پہ وُہ اَکیلی ہے !
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#دسمبر_کے_بعد_بھی" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#دسمبر_کے_بعد_بھی از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#دسمبر_کے_بعد_بھی از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisDecember.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#دسمبر_کے_بعد_بھی" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
ہر سِتم ایک دَم دِسمبر میں
****************************************
ہر سِتم ایک دَم دِسمبر میں
جَم سے جاتے ہیں غم دِسمبر میں

سال بھر اِس لیے میں رویا ہُوں
دِل بھرے کم سے کم دِسمبر میں

یادیں چھٹی منانے آئیں تھیں
گھر سے نکلے نہ ہم دِسمبر میں

ہر شجر پر خَزاں نے گاڑ دِیا
ایک اُجڑا عَلَم دِسمبر میں

برف کی کرچیاں ہیں پلکوں پر
آہ! یہ چشمِ نم دِسمبر میں

دیکھ کر مارا مارا چڑیا کو
شاخ تھی قدرے خم دِسمبر میں

لمبی راتوں کا فیض ہے شاید
ضم ہُوئے غم میں غم دِسمبر میں

جوہرِ اَشک سے بغیر اَلفاظ
ڈائری کی رَقم دِسمبر میں

برف نے رَفتہ رَفتہ ڈھانپ دِئیے
تین سو دَس قدم دِسمبر میں

ریڑھ کی ہڈی تک اُتر آئے
سرد مہری ، اَلم دِسمبر میں

لیلیٰ سے بڑھ کے موت اَچھی لگی
قیس رَب کی قسم دِسمبر میں
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#دسمبر_کے_بعد_بھی" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#دسمبر_کے_بعد_بھی از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#دسمبر_کے_بعد_بھی از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisDecember.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#دسمبر_کے_بعد_بھی" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
حوصلہ مجھ میں بھی بَلا کا تھا
****************************************
حوصلہ مجھ میں بھی بَلا کا تھا
راستہ غالبا وَفا کا تھا

جل بجھیں تتلیاں محبت کی !۔
دَشت بپھرا ہُوا اَنا کا تھا

میں دَلائل پہ تکیہ کر بیٹھا
آہ ! وُہ وَقت اِلتجا کا تھا

کل جسے عُمر بھر کو چھوڑ دِیا
پیار بھی اُس سے اِنتہا کا تھا

ہر دُعا دی جدائی پر اُس نے
لیکن اَنداز بد دُعا کا تھا

سانس روکے کھڑا تھا مَلَکُ الموت
سامنا دیپ کو ہَوا کا تھا

بھولنے والا لوٹ تو آیا
وَقت مغرب کا یا عشا کا تھا

رُک گیا میں سزا سے کچھ پہلے
اُس کو اِحساس خُود خطا کا تھا

بُت کدے میں مرا تو پھر کیا ہے ؟۔
ماننے والا تو خدا کا تھا

سَب خزانے منگا لیے رَب نے
فیصلہ عشق کی جزا کا تھا !۔

قیسؔ تھا لاجواب ، لیلیٰ بھی
جب سوال ایک کی بقا کا تھا !۔
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#دسمبر_کے_بعد_بھی" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#دسمبر_کے_بعد_بھی از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#دسمبر_کے_بعد_بھی از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisDecember.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#دسمبر_کے_بعد_بھی" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
شعر پڑھتے ہو جو اَبھی تنہا
****************************************
شعر پڑھتے ہو جو اَبھی تنہا
شعر لکھو گے تم کبھی تنہا

منزلیں ہجر خلق کرتی ہیں
ہو گئے ہم سفر سبھی تنہا

ایک شمع بجھی اور ایسے بجھی
بزم کی بزم ہو گئی تنہا

سائے برداشت سے بُلند ہُوئے
زَرد پرچھائیں رو پڑی تنہا

دُشمنوں 2کو بھی رَب دِسمبر میں
نہ کرے ایک پل کو بھی تنہا

ذات کے ’’ ہاوِیہ ‘‘ میں گرم رہے
برف ، اِحساس پر جمی تنہا

اے فرشتو فلک سے ہو آؤ
مجھ کو رہنے دو ، دو گھڑی تنہا

دونوں مل جل کے کیوں نہیں رہتے ؟
موت تنہا ہے ، زِندگی تنہا

آپ کے شَہر میں کوئی نہ کوئی !
کرنے والا ہے خُود کُشی تنہا

داد رِہ رِہ کے اَشک دیتے رہے
رات جب یہ غزل پڑھی تنہا

ساتھ دُنیا کے چل سکے نہ قیس !
کر گئی ہم کو سادَگی تنہا
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#دسمبر_کے_بعد_بھی" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#دسمبر_کے_بعد_بھی از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#دسمبر_کے_بعد_بھی از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisDecember.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#دسمبر_کے_بعد_بھی" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
آخری خط نہ پڑھ سکا میں بھی
****************************************
آخری خط نہ پڑھ سکا میں بھی
آس کیا دیتا رو دِیا میں بھی

صرف سننے کی تاب تھی شاید
وُہ بھی خاموش ، چپ رہا میں بھی

ہجر کی سخت سرد راتوں میں
وُہ بھی جلتا رہا ، جلا میں بھی

آج وُہ ’’آپ‘‘ پر ہی ٹھہرا رہا
فاصلہ رَکھ کے ہی ملا میں بھی

اَوڑھ لی اُس نے چہرے پر رَونق
سامنے سب کے خوش رہا میں بھی

غلطی سے آنکھیں چار ہوتے ہی
سخت محتاط تر ہُوا میں بھی

وُہ بھی اُلٹی کتاب پڑھنے لگا
کل کے اَخبار میں چھُپا میں بھی

گڑیا ، گڈے کا کھیل تھا شاید!
مطمئن ہو کے سو گیا میں بھی

عمر بھر اُس کو عشق ہو نہ سکا
اور اِک روز جل بجھا میں بھی

ہر طرف لیلیٰ لیلیٰ ہوتے دیکھ
بن گیا قیس بے وَفا میں بھی!
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#دسمبر_کے_بعد_بھی" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#دسمبر_کے_بعد_بھی از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#دسمبر_کے_بعد_بھی از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisDecember.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#دسمبر_کے_بعد_بھی" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
بہت پرانی کتھا ہے ، بہت حسین پری
****************************************
بہت پرانی کتھا ہے ، بہت حسین پری
سیاہ قَلعے کے شیطان جن کی قید میں تھی

بدلتے ماہ سے پہلے چھڑا کے لانا تھا
میں شاہ زاد تھا اور کوہِ قاف جانا تھا

کہیں پہ ٹوپی سُلیمانی جاں بچاتی رہی
کہیں بزرگ کی شمشیر کام آتی رہی

کہیں پہ اَژدَہے کے ٹکڑے ٹھیک چار کئے
کہیں پہ آتشی پنچھی کے دِل پہ وار کئے

مَحَل کے مرکزی حصے میں پہنچا ہمت سے
پری کو دیکھ کے دِل بھر گیا محبت سے

وُہ کھلکھلا کے ہنسی ، شاد باغ ہونے لگی
مگر میں جونہی ہنسا ، ہچکیوں سے رونے لگی

جو پوچھا حُسن پری ، ہنسنے کا سبب کیا ہے
وُہ بولی آدمی کو آج جا کے دیکھا ہے

کہا یوں پھُوٹ کے رونا سمجھ سے باہر ہے
وُہ بولی جان سے جاؤ گے صاف ظاہر ہے

کہا کہ کیسے کوئی جن کو مار سکتا ہے
وُہ بولی طوطے کو مارو تو ہار سکتا ہے

سیاہ چیخوں کے آئینہ خانوں سے گزرا
طلسمِ ذات کے مخفی خزانوں سے گزرا

چڑیل زاد کا منہ آئینے سے نوچ لیا
سفید طوطے کو اُڑتے سمے دَبوچ لیا

طلسمی طوطے کی جب زِندگی ٹھکانے لگی
دَھمک چٹانوں کے چلنے کی دِل ہلانے لگی

وُہ خوفناک صدا میں چنگھاڑا آدم بُو
زَباں پہ جاری کیا میں نے وِردِ اَللہ ہُو

ہَوا نے روک لیے سانس ، حبس بڑھنے لگا
میں اُونچے ٹیلے پہ ہتھیار لے کے چڑھنے لگا

نشانہ آنکھ کا اُس کی ، وَظیفہ پڑھ کے لیا
لگا جو عین نشانے پہ رَب کا شکر کیا

گرا تو ہاتھیوں کا غُول گر گیا جیسے
مجھے ہے آج بھی حیرت وُہ مر گیا کیسے

طلسم ہوش رُبا کا اَثر اُترنے لگا
چٹان جیسا مَحَل پھُونک سے بکھرنے لگا

اُڑَن کھٹولے پہ بیٹھے وَطن میں آئے ہم
عظیم جشن کی خوشیاں خرید لائے ہم

وِصال ہوتے ہی جھرنے وَفا کے بہنے لگے
خوشی کے تاج مَحَل میں پریمی رہنے لگے

ہنسی ، نصیب کی ریکھا سے پھر جدا نہ ہُوئی
حیات نام سے بھی غم کے آشنا نہ ہُوئی

مگر حسین پری یہ تو تھی اَلف لیلیٰ
حیات کے ہیں سوالات مختلف لیلیٰ

یقینِ عشق میں کچھ کچھ گمان رَکھتا ہُوں
چھپا کے تجھ سے بھی تیر و کمان رَکھتا ہُوں

پھر اَپنے دِل پہ بھی تو پختہ اِعتماد نہیں
نجانے کب یہ کہے ، کیسا وعدہ ، یاد نہیں

پھر اُس کے بعد عمل کے طلسم خانے ہیں
اَبھی تو بازُو بھی دونوں نے آزمانے ہیں

قَدم قَدم پہ ہے اِک کوہِ قاف رَسموں کا
جو ہاتھ ہی نہ رہیں ، اِعتبار قسموں کا؟

فِشارِ زیست پہ حیرت سے آنکھیں ملتے ہیں
رَواج زِندوں کے تو موت پر بھی چلتے ہیں

چلو یہ فرض کیا ایک دُوسرے کے ہُوئے
ملن کی بعد کی اَب رَہنمائی کس سے ملے؟

ملن تو جان مری صرف ایک منزل ہے
رَہِ حیات تو ساحل کے بعد ساحل ہے

بھرم وَفا کا کبھی ٹُوٹ بھی تو سکتا ہے
یہ ہاتھ َرب نہ کرے چھُوٹ بھی تو سکتا ہے

کہانی جان کے گر زِندگی میں آؤ گے
تو قیس رو کے یہ کہتا ہے ، ہار جاؤ گے!!
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#دسمبر_کے_بعد_بھی" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#دسمبر_کے_بعد_بھی از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#دسمبر_کے_بعد_بھی از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisDecember.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#دسمبر_کے_بعد_بھی" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
میں ترے خط ’’اَگر‘‘ جلاؤں گا
****************************************
میں ترے خط ’’اَگر‘‘ جلاؤں گا
راکھ کو گنگا میں بہاؤں گا

فکر نہ کر میں غم نہیں کرتا
تُو گیا تو میں مر نہ جاؤں گا

ہجر ، ساوَن میں بخشنے والے
اَبر بن کر تجھے رُلاؤں گا

تُو تو منہدی پہ منہدی رَنگ لے گی
میں تجھے کس طرح بھلاؤں گا

سیج کانٹوں کی ہو گا زَخمی بدن
عشق کی برسی جب مناؤں گا

اِسمِ جاناں کلائی پر لکھ کر
اُس پہ سگریٹ کئی بجھاؤں گا

تجھ کو بدنام کر نہیں سکتا
دُوسری وَجہ کیا بتاؤں گا

تم میں ملنے کا حوصلہ ہو گا
میں تو آنسو نہ روک پاؤں گا

اَگلی بار اِس جہاں میں آیا تو!
ریت میں سر نہیں دَباؤں گا

فیصلہ کن گھڑی سے پہلے قیس
اُس کو دِل کھول کر ہنساؤں گا
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#دسمبر_کے_بعد_بھی" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#دسمبر_کے_بعد_بھی از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#دسمبر_کے_بعد_بھی از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisDecember.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#دسمبر_کے_بعد_بھی" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
غم سے بھر جاتا ہے ، یوں دیدہء تر ، شام کے بعد
****************************************
غم سے بھر جاتا ہے ، یوں دیدہء تر ، شام کے بعد
کچھ بھی آتا نہیں ، نظروں کو نظر ، شام کے بعد

یادِ جاناں کے چراغ ، اَشکوں سے لبریز ہوئے
دِل میں آباد ہُوا دیپ نگر ، شام کے بعد

سُرخ اُفق سے نہیں وَحشت زَدہ تنہا شب زاد
دِل میں ہے شام کے بھی ، شام کا ڈَر ، شام کے بعد

نیم جاں ہو کے ، یوں کونے میں پڑے ہیں ، جیسے
دُھوپ میں رَکھا ہُوا ، موم کا گھر ، شام کے بعد

گل کے رُخسار پہ ، تتلی رِہی ، دِن بھر رَقصاں
گُل کے پہلو میں گرا ، تتلی کا پر ، شام کے بعد

غم کے جنگل کے گھنے پن سے تو یوں لگتا ہے
آسمانوں سے اُتر آئے شجر ، شام کے بعد

دِل ہے آسیب زَدہ یاد کی بے آس لَحَد
دِل کی ویران گلی سے نہ گزر ، شام کے بعد

گفتگو کرتی ہے ، ’’دیوار‘‘ جو دیوانے سے
دیکھنے لگتا ہے ، دیوار کو ’’دَر‘‘ ، شام کے بعد

زیست اِس طرح سے ، کاندھوں پہ لئے پھرتے ہیں
جیسے بیمار مسافر کا سفر ، شام کے بعد

قیس! یہ فکرِ سخن نہ ہو تو شب کیسے کٹے!
دِل تو کہتا ہے کہ توُ کچھ بھی نہ کر ، شام کے بعد
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#دسمبر_کے_بعد_بھی" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#دسمبر_کے_بعد_بھی از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#دسمبر_کے_بعد_بھی از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisDecember.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#دسمبر_کے_بعد_بھی" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
دَرد کا شَہر بساتے ہُوئے رو پڑتا ہُوں
****************************************
دَرد کا شَہر بساتے ہُوئے رو پڑتا ہُوں
روز گھر لوٹ کے آتے ہُوئے رو پڑتا ہُوں

جانے کیا سوچ کے لے لیتا ہُوں تازہ گجرے
اور پھر پھینکنے جاتے ہُوئے رو پڑتا ہُوں

جسم پر چاقو سے ہنستے ہُوئے جو لکھا تھا
اَب تو وُہ نام دِکھاتے ہُوئے رو پڑتا ہُوں

لوگ جب روگ کی تفصیل طلب کرتے ہیں
سخت اِک بات چھپاتے ہُوئے رو پڑتا ہُوں

لوگ جب کہتے ہیں کہ اُس کو خدا پوچھے گا
میں اُنہیں خوب سناتے ہُوئے رو پڑتا ہُوں

دو پرندوں کو اِکٹھے کہیں بیٹھا دیکھوں
دوڑ کر اُن کو اُڑاتے ہُوئے رو پڑتا ہُوں

گھنٹوں سمجھاتا ہُوں ماں کو کہ میں سب بھول گیا
اور پھر آنکھ ملاتے ہُوئے رو پڑتا ہُوں

دُور جاتا ہو کوئی ، یار سبھی کہتے ہیں
صرف میں ہاتھ ہلاتے ہُوئے رو پڑتا ہُوں

راہ تکتے ہُوئے دیکھوں جو کسی تنہا کو
جانے کیوں آس دِلاتے ہُوئے رو پڑتا ہُوں

روز دِل کرتا ہے منہ موڑ لوں میں دُنیا سے
روز میں دِل کو مناتے ہُوئے رو پڑتا ہُوں

چند چپ چاپ سی یادوں کا ہے سایہ مجھ پر
قیس بارِش میں نہاتے ہُوئے رو پڑتا ہُوں
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#دسمبر_کے_بعد_بھی" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#دسمبر_کے_بعد_بھی از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#دسمبر_کے_بعد_بھی از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisDecember.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#دسمبر_کے_بعد_بھی" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
جو پھول گر گیا اُس کو اُٹھانا ٹھیک نہیں
****************************************
جو پھول گر گیا اُس کو اُٹھانا ٹھیک نہیں
یہ ہاتھ چھوڑ دے ، میرا چھڑانا ٹھیک نہیں

میں لڑکی ہوتی تو اِس وَقت پھُوٹ کر روتی
میں مرد ہُوں مرا آنسو بہانا ٹھیک نہیں

میں بے وَفائی کا اِلزام خود پہ لے لوں گا
وُہ بے وَفا ہے اُسے یہ بتانا ٹھیک نہیں

صلیبِ قبر پہ یارو لہو سے لکھ دینا
کہ آزمودہ کو پھر آزمانا ٹھیک نہیں

غزل کو وُہ بھی پڑھیں گے ، ’’وُہ‘‘ شعر رہنے دُوں
کہ اَب تو شکوہ بھی اُن کو سنانا ٹھیک نہیں

ہر اِک سفینے کو دیمک لگی ہے سانسوں کی
کسی کی موت پہ خوشیاں منانا ٹھیک نہیں

اَندھیری رات مرے ساتھ چاہے کچھ بھی کرے
سَحَر سے پہلے کسی کو جگانا ٹھیک نہیں

شکستہ خواب کو بھی حق ہے سانس لینے کا
اُدھورے پیار کو پورا بھلانا ٹھیک نہیں

مرے مسیحا کو اے کاش کوئی سمجھا دے
جو جاں وَبال ہو اُس کو بچانا ٹھیک نہیں

میں مانتا ہوں سفینہ جلانا جبر ہے پر
چراغ قیس ہمیشہ بجھانا ٹھیک نہیں
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#دسمبر_کے_بعد_بھی" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#دسمبر_کے_بعد_بھی از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#دسمبر_کے_بعد_بھی از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisDecember.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#دسمبر_کے_بعد_بھی" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
سیاہ شب میں جو پلکوں پہ غم نہانے لگے
****************************************
سیاہ شب میں جو پلکوں پہ غم نہانے لگے
مٹے وُجود مرا کاندھا تھپتھپانے لگے

خوشی خوشی ہوں جدا ، یہ بھی اُس کی خواہش تھی
صدا کا گھونٹا گلا ، ہونٹ تھرتھرانے لگے

بغیر اُس کے مجھے بھی قرار آ جائے
جو مچھلی ریت پہ ساحل کی مسکرانے لگے

وَفا کا غیر کو محکم یقیں دِلانا تھا
وُہ میری خون سے لکھی غزل سنانے لگے

وَرَق میں لپٹا ہُوا تھا بہت ہی خشک گلاب
کسی کی یاد کے جگنو سے ٹمٹانے لگے

یقیں تو آیا مگر دِل کو کچھ ہُوا میرے
قسم وُہ سر کی مرے بار بار اُٹھانے لگے

وَفا کے نام پہ اِس شہر میں وُہ ظلم ہُوئے
وَفا کے ذِکر سے عِفریت خوف کھانے لگے

کمالِ ذوق نے ہمدم بغیر رَکھا ہے
تمام یار تو مدت ہُوئی ٹھکانے لگے

بدن کا کیا ہے یہ مر کر سُکون پا لے گا
مگر جو رُوح پہ تا عمر تازِیانے لگے

خطا بڑی ہی کوئی رُوح سے ہُوئی ہے قیس
صلیبِ جسم پہ جو موت تک چڑھانے لگے
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#دسمبر_کے_بعد_بھی" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#دسمبر_کے_بعد_بھی از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#دسمبر_کے_بعد_بھی از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisDecember.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#دسمبر_کے_بعد_بھی" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
ضَروری کام اِک بھُولا ہُوا ہے
****************************************
ضَروری کام اِک بھُولا ہُوا ہے
نجانے کب سے یہ سوچا ہُوا ہے

مرا کمرہ یہ کہنا چاہتا ہے
ترا جیون بہت بکھرا ہُوا ہے

وُہ شب کا کھانا لے کر آ گئے ہیں
اَبھی تو ناشتہ رَکھا ہُوا ہے

دِسمبر کا مہینہ ہو گا چونکہ
پرندہ دُھوپ میں بیٹھا ہُوا ہے

اَچانک آئینہ حیرت سے بولا
تمہیں پہلے کہیں دیکھا ہُوا ہے

کبھی لگتا ہے پاگل بن کے ہم نے
کسی طوفان کو روکا ہُوا ہے

کسی کو گھر بلاتا تو نہیں ہُوں
یقینا زَلزلہ آیا ہُوا ہے

کئی بار اُنگلیوں کو گن کے جانا
قلم تو ہاتھ میں پکڑا ہُوا ہے

مجھے تتلی نے اَگلے دِن بتایا
قلم گلدان میں رَکھا ہُوا ہے

حسد کرتے ہیں سارے لوگ مجھ سے
مجھے ہر سانحہ بھُولا ہُوا ہے

خیال اَپنا نہ رَکھوں قیس لیکن
کسی نے کام یہ سونپا ہُوا ہے
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#دسمبر_کے_بعد_بھی" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#دسمبر_کے_بعد_بھی از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#دسمبر_کے_بعد_بھی از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisDecember.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#دسمبر_کے_بعد_بھی" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
جو نہ آیا اُسی پیغام پہ رونا آیا
****************************************
جو نہ آیا اُسی پیغام پہ رونا آیا
دَرد کی شدّتِ اِلہام پہ رونا آیا

بُت جو ٹُوٹا مجھے دیوار نے بڑھ کر تھاما
جانے کب تک کسی بدنام پہ رونا آیا

اَشک اِتنے گرے ، اُمید کا گھر ڈُوب گیا
جام کو مجھ پہ ، مجھے جام پہ رونا آیا

ہجر ، بے چارگی ، اَفسوس ، ندامت ، غصہ
آج غم کی سبھی اَقسام پہ رونا آیا

آس تھی وَصل کے طولانی سفر میں ہمراہ
ہجر کو مڑتے ہی ہر گام پہ رونا آیا

رات بھیگی تو کھُلی آنکھ میں شبنم اُتری
ٹُوٹ کر گردِشِ اِیام پہ رونا آیا

باندھ کر لے گئے دِل سونے کی ہتھکڑیوں میں
منصفانہ سہی ، نیلام پہ رونا آیا

ضبط کا کالا کفن ، دَرد کا رُومال بنا
سر کٹی آس کو جب شام پہ رونا آیا

سب مجھے جانتے ہیں اور مرا کوئی نہیں
پھُوٹ کر شہرتِ گمنام پہ رونا آیا

دِل لگانے کی خطا بھول نہیں پاتا قیس
ماں ترے صبح کے بادام پہ رونا آیا
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#دسمبر_کے_بعد_بھی" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#دسمبر_کے_بعد_بھی از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#دسمبر_کے_بعد_بھی از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisDecember.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#دسمبر_کے_بعد_بھی" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
دِل بھر گیا وَفا سے ، کسی بے وَفا کے بعد
****************************************
دِل بھر گیا وَفا سے ، کسی بے وَفا کے بعد
کھل کر بتوں کو پُوجا ہے ، ہم نے خُدا کے بعد

بتلا رہے تھے زَرد لِفافے ، ہَوا کا رُخ
پتوں کے خط ملے مجھے ، ٹھنڈی ہَوا کے بعد

اَشکوں کی آبشار تھی ، ہچکی بھرا جواب
تعزیر عشق پر لگی ، ’’حُسنِ اَدا‘‘ کے بعد

قربانی مانگنے لگا ، ہر کام کے لیے
آئینہ پُوجنے لگے سب دیوتا کے بعد

شب بھر بتوں کو رَکھا رُکوع و سُجود میں
پتھر خدا خدا کریں اِک پارسا کے بعد

ہم دائرہ پرستوں کے ، چُنگل میں قید ہیں
منزل ملے گی قوم کو ، ہر رَہنما کے بعد

اَچھا ہُوا کہ کوئی بھی محرم نہ مل سکا
دِل میں جگہ بھی تھی کہاں ، اَپنی اَنا کے بعد

شاید مری طلب میں ، کمی تھی خُلوص کی
تسکین وَرنہ ہوتی ہے ، سچی دُعا کے بعد

دُنیا سے جانے والوں کے چہروں پہ ہے رَقم
زِندان گھر ہی لگتا ہے ، لمبی سزا کے بعد

قیس آج لوگ ٹُوٹ کے ، چاہیں ہمیں تو کیا
اَب ہم نرے بدن ہیں ، کسی ’’آتما‘‘ کے بعد
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#دسمبر_کے_بعد_بھی" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#دسمبر_کے_بعد_بھی از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#دسمبر_کے_بعد_بھی از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisDecember.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#دسمبر_کے_بعد_بھی" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
بہت سلیقے سے چیخ و پکار کرتے رہے
****************************************
بہت سلیقے سے چیخ و پکار کرتے رہے
ہم اَپنے دَرد کے مرکز پہ وار کرتے رہے

زِیادہ عمر تو گاڑی گھسیٹنے میں کٹی
جہاں پہ ہو سکا ، قسطوں میں پیار کرتے رہے

سوادِ عقل میں مجنوں کی آبرو کے لیے
ہم ایک ہاتھ سے دامن کو تار کرتے رہے

کہیں کہیں پہ ہماری پسند پوچھی گئی
زِیادہ کام تو بے اِختیار کرتے رہے

تھی نیند مفت مگر یہ بھی خود کو دے نہ سکے
غذا کے نام پہ بس زَہر مار کرتے رہے

ٹرین چھُوٹی تو کتنے ہی عشق چھُوٹ گئے
تمام عمر نشستیں شمار کرتے رہے

اُداس رُت میں جو یادوں کا اُجڑا گھر کھولا
یقینی وعدے بہت سوگوار کرتے رہے

کبھی کبھی تو فقط چائے کی پیالی سے
خَزاں کی بوڑھی تھکن کو بہار کرتے رہے

ہزاروں خواہشوں کو دِل میں زِندہ گاڑ دِیا
پُلِ صراط کئی روز پار کرتے رہے

بوقتِ زَخم شماری یہ راز فاش ہُوا
ہم اَپنی جیب سے کچھ بڑھ کے پیار کرتے رہے

بہت سے لوگوں پہ قیسؔ اَچھا وَقت آیا بھی
ہمارے جیسے تو بس اِنتظار کرتے رہے
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#دسمبر_کے_بعد_بھی" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#دسمبر_کے_بعد_بھی از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#دسمبر_کے_بعد_بھی از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisDecember.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#دسمبر_کے_بعد_بھی" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
ضبط کی کوششِ ناکام پہ رونا آیا
****************************************
ضبط کی کوششِ ناکام پہ رونا آیا
آنکھ کو دَرد کے اِلہام پہ رونا آیا

آئینہ دیکھا تو یک دَم لگا میں ہار گیا
یاس میں غرق شدہ شام پہ رونا آیا

ایک منحوس نُجُومی پہ بہت پیار آیا
اور پھر پیار کے اَنجام پہ رونا آیا

یوں تو دُنیا میں کوئی شخص بھی اَنمول نہیں
تم بِکے جتنے میں اُس دام پہ رونا آیا

شب اُترتے ہی ہُوئی دَرد کی بوندا باندی
چاند کو برف زَدہ بام پہ رونا آیا

جب کوئی اَچھا لگا آنکھ وَہیں بھیگ گئی
بھولنے بیٹھے تو ہر نام پہ رونا آیا

جُنبَشِ مِژگاں بنی سینہ زَنی پلکوں کی
دِل کو ہچکی لگی ، کہرام پہ رونا آیا

آس کی چیخ سے کہسار کا دِل ٹُوٹ گیا
زَرد پتّے! تیرے پیغام پہ رونا آیا

کوہ جو لاوا اُگلتا ہے ، کسی نے شاید
مر کے جو پایا اُس آرام پہ رونا آیا

ایک دو وعدے بھُلا دینا تو آساں تھا قیس
اَن گِنت وعدوں کے اَنجام پہ رونا آیا
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#دسمبر_کے_بعد_بھی" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#دسمبر_کے_بعد_بھی از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#دسمبر_کے_بعد_بھی از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisDecember.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#دسمبر_کے_بعد_بھی" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
ہجر کے دَرد کو پلکوں پہ بٹھا کر رَکھنا
****************************************
ہجر کے دَرد کو پلکوں پہ بٹھا کر رَکھنا
دیپ اَشکوں کا سَرِ شام جلا کر رَکھنا

چند لوگ آنکھوں کو پڑھنے میں بڑے ماہر ہیں
مجھ کو سوچو تو نگاہوں کو جھُکا کر رَکھنا

اَب تو لوگوں کو یہ تنکہ بھی کھٹکتا ہے بہت
آخری خط کو کلیجے سے لگا کر رَکھنا

کھُل کے رونے کی اَگر تم کو اِجازَت نہ ملے
رات ، دِن کمرے میں اِک ’’ شمع ‘‘ جلا کر رَکھنا

چاند کو دیکھ کے ملنے کی دُعا نہ چھُوٹے
ہاتھ مجبور ہوں تو ’’ پلکیں ‘‘ اُٹھا کر رَکھنا

کانچ کی گڑیا ! تجھے دَرد کے ریلے کی قسم
خون روتے ہُوئے فانوس بجھا کر رَکھنا

جانے ہو جائے دُعا ، کون سی ساعت میں قَبول
آس کا تاج مَحَل روز بنا کر رَکھنا

لفظ لازِم نہیں ، تم وَقتِ دُعا یوں کرنا
اُس کی تصویر کو ہاتھوں پہ اُٹھا کر رَکھنا

غم بلا کا ہو تو تنہا نہیں رویا کرتے
دائرہ وار کئی شمعیں جلا کر رَکھنا

ہاتھ خوشبو کے ، میں بھیجوں گا محبت کا سلام
زُلف میں تازہ کلی روز سجا کر رَکھنا

سارے زَخموں کو نہ شعروں میں اُڑا دینا قیسؔ !
دِل کی دَھڑکن کو بھی کچھ زَخم بچا کر رَکھنا
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#دسمبر_کے_بعد_بھی" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#دسمبر_کے_بعد_بھی از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#دسمبر_کے_بعد_بھی از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisDecember.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#دسمبر_کے_بعد_بھی" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
سو کر اٹھے پرندوں کو حیران کر دیا
****************************************
سو کر اٹھے پرندوں کو حیران کر دیا
شب بھر میں شہر برف نے ویران کر دیا

اک ننھا پنچھی ، ’’پتوں‘‘ کے وعدے پہ رک گیا!
ٹھنڈی ہوا نے پیڑ ہی سنسان کر دیا

محشر سی سرد رات میں ، گھر کی تلاش نے
نازک ترین تتلی کو ہلکان کر دیا

خدمت میں اس کی عمر گزاری ، نصیب نے
برفانی شخص کا مجھے مہمان کر دیا

دل کا شجر بہار کی ’’قم‘‘ کا تھا منتظر
اس نے مری بہار کو بے جان کر دیا

شاخوں کی چیخ ، سرد ہوا نے نہ جب سنی
اس نے تب اک درخت کو انسان کر دیا

اس کو دلیل مل گئی سجدے کی بات کی
میں نے کسی فرشتے پہ احسان کر دیا!

ننھے جزیروں سے ملے ، خط اشک شوئی کے
مجھ کو مرے عروج نے حیران کر دیا

احسان زندگی کا اٹھاؤں کہ چھوڑ دوں!
زخمِ جگر نے فیصلہ آسان کر دیا

طوفانِ درد ، دل میں سلا ہی چکے تھے قیس
موسم نے پھر سے رونے کا سامان کر دیا!
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#دسمبر_کے_بعد_بھی" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#دسمبر_کے_بعد_بھی از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#دسمبر_کے_بعد_بھی از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisDecember.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#دسمبر_کے_بعد_بھی" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
ہجر پابندِ ماہ و سال نہیں
****************************************
ہجر پابندِ ماہ و سال نہیں
ہجر کے اَوج کو زَوال نہیں

اور لوگوں سے کیا کروں شکوہ
آپ کو جب مرا خیال نہیں

دُوسروں کے گناہ پر ہے نظر !
ناصحوں کا بھی کوئی حال نہیں

مشورہ دیں تجھے بھلانے کا ؟
دُنیا والوں کی یہ مجال نہیں

لیلیٰ بھی ہر جگہ پہ آئے نظر
لیلیٰ کی بھی کوئی مثال نہیں

شرم سے سُرخ گل کو کیا معلوم
عشق بھنورے کا ، لازَوال نہیں

آدمی رِزق کا وَسیلہ ہے
آدمی رَبِّ ذُوالجلال نہیں

فکر نہ کر پہنچ ہی جاؤں گا
یہ مرا پہلا اِنتقال نہیں

سر پہ گر قلب حکمرانی کرے
کوئی بھی راستہ مُحال نہیں

بت بھی جھک جاتے تیرے آگے صنم
تجھ کو سجدہ مرا کمال نہیں

قیسؔ کی عاجزی پسند آئی
شاعروں کا وَگرنہ کال نہیں
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#دسمبر_کے_بعد_بھی" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#دسمبر_کے_بعد_بھی از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#دسمبر_کے_بعد_بھی از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisDecember.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#دسمبر_کے_بعد_بھی" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
سَوا نیزے پہ چاند آیا ہُوا ہے
****************************************
سَوا نیزے پہ چاند آیا ہُوا ہے
دَرَختوں پر کوئی بیٹھا ہُوا ہے

تر و تازہ ہے کیوں جن زاد آخر
پری کا رَنگ کیوں اُترا ہُوا ہے

جماہی لے کے پرچھائیں نے سوچا
یہ بندہ آج بھی جاگا ہُوا ہے

اِشارے سے کسی مخفی نے پوچھا
یہاں کچھ دیر پہلے کیا ہُوا ہے؟

میں کالے علم کا ماہر نہیں ہُوں
کسی گوری سے کچھ سیکھا ہُوا ہے

بَلا نے دانت چمکا کر بتایا
ذِرا سا دائرہ ٹُوٹا ہُوا ہے

فقط مجھ کو نظر آتا ہے لیکن
چھلاوہ راہ میں بیٹھا ہُوا ہے

میں اُس کے بس میں ہُوں ، ہمزاد اُس کا
مرے ہمزاد کو چمٹا ہُوا ہے

چڑیلیں رَقص کرتی پھر رہی ہیں
کسی مردے کے گھر بچہ ہُوا ہے

سمندر پر ذِرا بھی شک نہ کرنا
سمندر میں نے خود دُھویا ہُوا ہے

کسی کو کیا خبر بد رُوح میں بھی
کوئی اِنسان ہی رُوٹھا ہُوا ہے

کسی آواز نے گھبرا کے سوچا
یہ شاعر ہے تو پھر پہنچا ہُوا ہے

یقینا گرمیوں کی چھٹیاں ہیں
چھلاوہ شہر میں آیا ہُوا ہے

’’عمل‘‘ کے بیچ میں کیوں یاد آئے
مجھے ہمزاد نے جکڑا ہُوا ہے

تمہارے پاؤں سیدھے ہو گئے ہیں
مگر دانتوں پہ کچھ چپکا ہُوا ہے

بہت دِن بعد شاید لاش آئی
کئی قبروں نے منہ کھولا ہُوا ہے

سبھی گھڑیوں میں یکساں نَقص کیسے
یقینا وَقت ہی ٹھہرا ہُوا ہے

نجانے کیا عقیدہ ہو بَلا کا
نشاں ہر دین کا رَکھا ہُوا ہے

جہانِ شعر ہے آسیب نگری
مجھے بھی شعر اِک چمٹا ہُوا ہے

غزل یہ قیس کب لکھی ہے میں نے
مرا سر اِس لیے گھوما ہُوا ہے
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#دسمبر_کے_بعد_بھی" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#دسمبر_کے_بعد_بھی از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#دسمبر_کے_بعد_بھی از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisDecember.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#دسمبر_کے_بعد_بھی" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
اُداسی پاس مرے رات رہنے آتی ہے
****************************************
اُداسی پاس مرے رات رہنے آتی ہے
خوشی کی بات ہے ، شمع ! تُو کاہے روتی ہے

بڑوں کے رِحم و کرم پر جو چھوڑ دے خود کو
وُہ بخشی جائے گی چونکہ وُہ اَچھی بیٹی ہے

بزورِ بازُو ، تمنا ہمارے گلشن کی
کسی شریف ترین آدمی نے لے لی ہے

کسی کی پلکوں پہ ، آنسو رُکے ہُوئے ہیں یا
اُجاڑ پیڑ پہ ، اِک فاختہ سی بیٹھی ہے

سمندروں سے پرے گھر بسا کے بیٹھ گئی
وُہ جس کی یاد مرے ساتھ ساتھ رہتی ہے

کسی کو دِل میں بٹھا کر ، کسی کا ہو جانا
ترے لئے تو ہے ممکن توُ ایک لڑکی ہے

کسی اَنار پہ دو نام مٹنے والے ہیں
بس آج کل میں ہی پہلی اَذان ہونی ہے

نجانے قبر کے اَندر معاملہ کیا ہے
لَحَد کی گھاس بھی شبنم سے بھیگی رہتی ہے

اَبھی کلیجے میں اَنگارے جل رہے ہیں مگر
سنا ہے عشق کی تاثیر ٹھنڈی ہوتی ہے

میں وُہ چٹان ہُوں جس کو جھکا سکا نہ کوئی
یہ بات کہنے میں کتنی حسین لگتی ہے

کسی شعور نے میرے قلم کے ذَریعے قیس
مجھے بتائے بنا گہری بات کہہ دی ہے
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#دسمبر_کے_بعد_بھی" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#دسمبر_کے_بعد_بھی از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#دسمبر_کے_بعد_بھی از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisDecember.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#دسمبر_کے_بعد_بھی" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
یار آتے ہیں کم دِسمبر میں
****************************************
یار آتے ہیں کم دِسمبر میں
ساتھ دیتے ہیں غم دِسمبر میں

آس کے لڑکھڑاتے ، زَخمی چراغ
توڑ دیتے ہیں دَم دِسمبر میں

دَرد کی چمنیوں کا سرد دُھواں
منجمد ہیں اَلم دِسمبر میں

آئینہ بن گیا ہے جیون کا
دُھند کا جامِ جم دِسمبر میں

چند شعروں نے سُن کیا وَرنہ
توڑ دیتے قلم دِسمبر میں

برف کے بُت کی آنکھ بھر آئی
دِل پکارا صنم دِسمبر میں

مصلحت نے بہت اُداس کیا
کھا گئی اِک قسم دِسمبر میں

اَشک چپ چاپ کرتے رہتے ہیں
حالتِ دِل ، رَقم دِسمبر میں

چند بیچارے رو کے دینے لگے
غم کو غم کی قسم دِسمبر میں

سرد موسم کا ہے اَثر شاید
سبز رہتے ہیں غم دِسمبر میں

خشک پھول آخری کتاب کے قیس
کر دِئیے ہم نے نم دِسمبر میں
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#دسمبر_کے_بعد_بھی" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
پلکوں نے اتنی ایڑیاں رگڑیں شبِ فراق
****************************************
پلکوں نے اتنی ایڑیاں رگڑیں شبِ فراق
زم زم تمہاری یاد کا جاری ھے آج بھی
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#دسمبر_کے_بعد_بھی" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
آنکھوں میں اُس کی آس تھی ، دِل میں مرا یقیں
****************************************
آنکھوں میں اُس کی آس تھی ، دِل میں مرا یقیں
میں کہہ نہ پایا اُس کو کبھی لوٹوں گا نہیں
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#دسمبر_کے_بعد_بھی" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#دسمبر_کے_بعد_بھی از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#دسمبر_کے_بعد_بھی از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisDecember.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#دسمبر_کے_بعد_بھی" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
۔ اختتام ۔ مجموعہ کلام "دسمبر کے بعد بھی" ۔
****************************************
۔ اختتام ۔ مجموعہ کلام "دسمبر کے بعد بھی" ۔
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#دسمبر_کے_بعد_بھی" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس


****************************************
((End Text))
****************************************
****************************************
((Notice))
Updated On: 24-Sep-16 3:41:09 PM
Release Date: 27-May-15 10:36:07 AM
****************************************

****************************************
((Begin Text))
****************************************

****************************************
شہزادقیس کی جانب سے خوش آمدید
****************************************
شہزادقیس کی جانب سے خوش آمدید
مجموعہ کلام #تتلیاں میں شامل اشعار
۔ #شہزادقیس کی کتاب #تتلیاں سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#تتلیاں از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#تتلیاں از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisTitliyan.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #تتلیاں سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
اِنتساب
****************************************
اِنتساب
ہر دھڑکتی تتلی کے نام
۔ #شہزادقیس کی کتاب #تتلیاں سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
دُعا: جو آج خوش ہیں اُنہیں ایسی لاکھوں عیدیں ملیں
****************************************
دُعا: جو آج خوش ہیں اُنہیں ایسی لاکھوں عیدیں ملیں
جو آج اُداس ہیں اُن کی پھر ایسی عید نہ ہو
۔ #شہزادقیس کی کتاب #تتلیاں سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
شروع ہے تو کام ابتدائی کریں
****************************************
شروع ہے تو کام ابتدائی کریں
بیان اُس خدا کی بڑائی کریں

صنم ہیں تو کچھ دِل رُبائی کریں
ذِرا دیر چہرہ نمائی کریں

ستم کی توقع بھی رَکھا کریں
ستم گر سے جو آشنائی کریں

بجاتے ہیں گُل داد میں پتیاں
چمن میں وُہ نغمہ سرائی کریں

غلاموں نے سر پہ چڑھایا جنہیں
غلاموں کے سر پہ خدائی کریں

یہ دِل میں سے آوَت ہے کس کی صدا
اَجی ! کنجِ دِل سے رِہائی کریں

سنا ہے وُہ قائل وَفا کے ہوئے
چلو آج ہم بے وَفائی کریں

اِکٹھے پڑھیں ’’ پاس ‘‘ ہو جائیں گے
چلو آج مل کر پڑھائی کریں

توجہ دو جس شے کو بڑھ جائے گی
برائی کی پھر کیوں برائی کریں

رَسائی میں اَب کچھ رَہا جو نہیں
چلو دَعوی ء پارسائی کریں

سَحَر کی اَذاں ہونے والی ہے قیس
اِسی شعر کو اِنتہائی کریں
۔ #شہزادقیس کی کتاب #تتلیاں سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#تتلیاں از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#تتلیاں از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisTitliyan.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #تتلیاں سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
مجھ کو بھی بے وَفا سمجھتا ہے
****************************************
مجھ کو بھی بے وَفا سمجھتا ہے
جانے وُہ خود کو کیا سمجھتا ہے

میں تو منزل سمجھتا ہوں اُس کو
وُہ مجھے راستہ سمجھتا ہے

زَخم اَپنا دِکھا رَہا ہُوں اُسے
جو نمک کو دَوا سمجھتا ہے

اور حد ہے کہ بھینٹ چڑھ کے بھی
دِل اُسے دیوتا سمجھتا ہے

میرا معیار جگ میں ہے ہی نہیں
جگ مجھے پارسا سمجھتا ہے

عمر بھر کروٹیں بدلتا ہے
موت کو جو فنا سمجھتا ہے

لاش پر کٹتی ہے ٹکٹ اُس کی !
جو بھی خود کو خدا سمجھتا ہے

کیا خبر وُہ نماز ہی ہو قبول
شیخ جس کو قضا سمجھتا ہے

جس کو خوشبوئے لب میسر ہو
مہ کدے کو وہ کیا سمجھتا ہے

عقل مند آدمی ، محبت کو
عقل سے ماورا سمجھتا ہے

آج کے دور میں جفا کو قیس
کوئی کوئی جفا سمجھتا ہے
۔ #شہزادقیس کی کتاب #تتلیاں سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#تتلیاں از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#تتلیاں از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisTitliyan.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #تتلیاں سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
آنکھوں میں کل کے خواب ہیں ، خوش خواب تتلیاں
****************************************
آنکھوں میں کل کے خواب ہیں ، خوش خواب تتلیاں
چندا سے پیار کرتی ہیں ، مہتاب تتلیاں

جب حُسن کے صحیفے میں لکھا تمہارا نام
پھول اُس پہ نقطے بن گئے ، اِعراب تتلیاں

رَمزِ چمن سمجھنی ہو آنکھوں پہ غور کر
پلکیں جھکا کے کرتی ہیں ، آداب تتلیاں

کچھ تتلیوں کی آنکھ میں شبنم نہیں رہی
غنچہ بہ غنچہ اُڑتی ہیں بے خواب تتلیاں

بھنوروں کی پیاس بجھتی ہے کلیوں کے خون سے
اِہلِ نظر کو کرتی ہیں سیراب تتلیاں

مٹھی میں نہ جکڑنا اِنہیں کھیل کھیل میں
ٹوٹے پروں کی لاتی نہیں تاب تتلیاں

سو منزلہ گھروں سے یہ نقصان بھی ہُوا
جگنو بھی خواب ہو گئے ، نایاب تتلیاں

گلشن نیا بسانا ہے گرچہ خوشی کی بات
مالی کو دیکھ رو پڑیں شاداب تتلیاں

سودا چمن کا جب ہُوا ، گُل ہی گنے گئے
خود کو سمجھتی تھیں یونہی سرخاب تتلیاں

تتلی کے رَنگ دیکھتے ہیں ہم تو خواب میں
رَب جانے کس کے دیکھتی ہیں خواب تتلیاں

لکھی ہے قیس نے کسی معصوم پر کتاب
پڑھ پڑھ کے جھومنے لگیں ہر باب تتلیاں
۔ #شہزادقیس کی کتاب #تتلیاں سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#تتلیاں از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#تتلیاں از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisTitliyan.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #تتلیاں سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
اِس لیے سر جھکائے بیٹھے ہیں
****************************************
اِس لیے سر جھکائے بیٹھے ہیں
دِل میں دِل دار آئے بیٹھے ہیں

ہاتھ پر اُن کے تتلی بیٹھ گئی
گُل سبھی خار کھائے بیٹھے ہیں

دَستِ نازُک پہ سوچا تتلی نے
گُل ، حنا کیوں لگائے بیٹھے ہیں

رَنگ اُڑا لے گئے وُہ تتلی کا
گُل کی خوشبو چرائے بیٹھے ہیں

شائبہ تک نہیں شرارَت کا
کیسی صورَت بنائے بیٹھے ہیں

اِس سے بڑھ کر بھی کوئی ہے نازک؟
روشنی سے نہائے بیٹھے ہیں

ہم ہیں شمع کی لڑکھڑاتی لَو
اور وُہ منہ پھلائے بیٹھے ہیں

اِس لیے پاؤں میں دَباتا ہوں
وُہ مرا دِل دَبائے بیٹھے ہیں

ایک بت کا سوال ہے مولا !
من کا مندر سجائے بیٹھے ہیں

اِس لیے مطمئن ہیں کوہِ گراں
ہم اَمانت اُٹھائے بیٹھے ہیں

دوسرا موقع قیس کیسے ملے ؟
ایک دِل تھا گنوائے بیٹھے ہیں
۔ #شہزادقیس کی کتاب #تتلیاں سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#تتلیاں از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#تتلیاں از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisTitliyan.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #تتلیاں سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
خدا کے نام کا ہم اِحترام کرتے ہیں
****************************************
خدا کے نام کا ہم اِحترام کرتے ہیں
مگر غزل یہ کسی بت کے نام کرتے ہیں

صراحی کا ہے مقدر ، نہ ساقیوں کا نصیب
جو کام ہونٹوں سے لگ کر یہ جام کرتے ہیں

کسی حسین کا لب کھولنا ضروری نہیں
گلاب خوشبو کے رَستے کلام کرتے ہیں

اُلجھ رہے ہیں یہی کہہ کے ہم سے اِہلِ وَطن
کہ یہ وَطن میں محبت کو عام کرتے ہیں

جو شعر میرے قلم تک رَسائی پا نہ سکیں
وُہ تتلیوں کے پروں پر قیام کرتے ہیں

سوانگ اَچھا رَچایا ہے حُسن والوں نے
کنیز بننے کا کہہ کر غلام کرتے ہیں

گلاب ، تتلی کی آمد پہ خَم ہوئے جیسے
غلام ، ملکہ کو جھک کر سلام کرتے ہیں

جنابِ والا! مؤکِل مرے کا کہنا ہے
ستم عوام پہ اَکثر عوام کرتے ہیں

سبھی گناہوں کے اَنجام تک سے ہیں واقف
جبھی فقیہِ شہر کو اِمام کرتے ہیں

اُدھورا چھوڑنے سے یاد دوستوں کو رہے
غزل یہ قیس یہیں پر تمام کرتے ہیں
۔ #شہزادقیس کی کتاب #تتلیاں سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#تتلیاں از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#تتلیاں از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisTitliyan.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #تتلیاں سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
شعر پر غور کر بھی سکتے ہو
****************************************
شعر پر غور کر بھی سکتے ہو
آدمی ہو تو مر بھی سکتے ہو

منزلوں پر اُتر بھی سکتے ہو
منزلوں سے گزر بھی سکتے ہو

ہار جانا کوئی ضروری نہیں
تا دَمِ مرگ لڑ بھی سکتے ہو

رَہزنو کچھ ترقی کا سوچو
بن تو تم راہبر بھی سکتے ہو

لاش بننا تو قدرے آساں ہے !
لاش پر سے گزر بھی سکتے ہو ؟

کیا کبھی تم نے ایسا سوچا تھا ؟
اَپنے چہرے سے ڈَر بھی سکتے ہو

غم کی آندھی سے جنگ چھیڑی ہے
زَرد پتو ! بکھر بھی سکتے ہو

چھیڑ چھاڑ اِتنی بھی ضروری نہیں
حُسن والو سدھر بھی سکتے ہو

جب تلک ساقی گر نہیں جاتا
جام پہ جام بھر بھی سکتے ہو

عشق اَور جنگ میں ہے سب جائز
پیار کر کے مکر بھی سکتے ہو

قیس اُس آدمی نے کیسے کہا
آدمی ہو تو مر بھی سکتے ہو
۔ #شہزادقیس کی کتاب #تتلیاں سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#تتلیاں از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#تتلیاں از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisTitliyan.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #تتلیاں سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
سرخ کلیوں کی جان ہے تتلی
****************************************
سرخ کلیوں کی جان ہے تتلی
پنکھڑی کی اُڑان ہے تتلی

چلتی پھرتی ثنائے رَبی ہے
کہنے کو بے زَبان ہے تتلی

دوش پر گُل کے گُل ہی لگتی ہے
خوبصورت گمان ہے تتلی

قربِ گلشن میں کوئی رہتا ہے
اور گھر کا نشان ہے تتلی

حُسن پر صرف آنکھ رَکھنی ہے
صبر کا اِمتحان ہے تتلی

رَنگ اُترتا ہے ہاتھ لگنے سے
آہ ! کتنی جوان ہے تتلی

نامۂ گُل دِیا کلی کے ہاتھ
پیار کی رازدان ہے تتلی

کاروانِ بہار رَنگ چلا
فخریہ ساربان ہے تتلی

تازہ تازہ کھِلی کلی کے لیے
پہلی پہلی اَذان ہے تتلی

تخت اِس کا ہَوا کے دوش پہ ہے
باغ پر حکمران ہے تتلی

حُسن پر کیا لکھیں گے شاعر قیس !
حُسن کی ترجمان ہے تتلی
۔ #شہزادقیس کی کتاب #تتلیاں سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#تتلیاں از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#تتلیاں از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisTitliyan.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #تتلیاں سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
نظر جب کسی کا جمال آ گیا
****************************************
نظر جب کسی کا جمال آ گیا
بہت خوبصورَت خیال آ گیا

یہ تتلی ہے یا کہ ہَوا میں گُلاب
کلی کی جبیں پر جلال آ گیا

بدن ، رُوح ، دِل ، جاں مہکنے لگے
سَرِ بام رَقصاں ہِلال آ گیا

تمنا کے صحرا میں گُل کھل گئے
بہت خوش بدن ، خوش خِصال آ گیا

بجانے لگیں تتلیاں تالیاں
رُخِ یار پر وُہ جمال آ گیا

سنہری گلابوں نے سجدہ کیا
شباب اِک فقیدُ المثال آ گیا

لَبِ نرم و نازُک پہ اُترا کمال
نئی پنکھڑی پر زَوال آ گیا

چراغ اُن کی خوشبو سے روشن ہُوئے
صُراحی میں دَم بے مثال آ گیا

بجا لایا جھک کے میں فرشی سلام
لبوں پر صنم کے ہِلال آ گیا

جوابا وُہ جھکتے ہُوئے رُک گئے
نجانے کیا دِل میں خیال آ گیا

مری باری آئی تو ساقی کو قیس
خیالِ حرام و حلال آ گیا
۔ #شہزادقیس کی کتاب #تتلیاں سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#تتلیاں از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#تتلیاں از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisTitliyan.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #تتلیاں سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
بہار ، شانِ چمن ہے ، وَقار ہے تتلی
****************************************
بہار ، شانِ چمن ہے ، وَقار ہے تتلی
بہار کہتی ہے ’’اُوں ہُوں بہار ہے تتلی‘‘

گُلوں کی دید سے ہے خوشگوار رَنگِ چمن
نگاہِ گُل کے لیے خوشگوار ہے تتلی

یہ چومتی نہیں ، گُل اُنگلیوں پہ گنتی ہے
حسین پھولوں کی مردُم شمار ہے تتلی

چمن میں غیر مناسِب مَناظِر اَپنی جگہ
کمالِ ذوق کا اِک شاہکار ہے تتلی

عُدو کو پھول کے بھٹکا کے دُور لے جائے
حسین غنچوں کا دِلکش حِصار ہے تتلی

ذِرا بھی کرتی نہیں اِنحراف فطرت سے
بہشتی پھول ہے ، پرہیز گار ہے تتلی

پروں پہ تتلی کے شہباز واہ واہ کرے
سفید مورنی کا اِفتخار ہے تتلی

جو اِس کو دیکھ لیں دِل باغ کو مچلتا ہے
چمن کا اُڑتا ہُوا اِشتہار ہے تتلی

گُلوں سے گوریاں ، گورے بدن میں رَنگ بھریں
گُلوں کے رُوپ کو سولہ سنگھار ہے تتلی

یہ حُسنِ زَن تو بہت بعد آنکھ کو بھایا
حُضور یاد کریں پہلا پیار ہے تتلی

جو نوچ لیتے ہیں پر زِندہ تتلیوں کے قیس
اے کاش سوچتے کہ جاندار ہے تتلی
۔ #شہزادقیس کی کتاب #تتلیاں سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#تتلیاں از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#تتلیاں از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisTitliyan.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #تتلیاں سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
خوشبو کے کارواں کی ہیں سالار تتلیاں
****************************************
خوشبو کے کارواں کی ہیں سالار تتلیاں
شبنم کے بعد پھول کا سنگھار تتلیاں

جگنو ہیں رَوشنی کی شرارَت کا آئینہ
رَنگوں کے مست رَقص کی جھنکار تتلیاں

’’ سُرخی ‘‘ بہار کی ، کہیں پھولوں کا عکس ہے
دُنیا کا سب سے دِلنشیں اَخبار تتلیاں

گُل کو بچانے کے لیے گُل جیسی بن گئیں
اِنسان کو سکھاتی ہیں اِیثار تتلیاں

اَلفاظ کے بغیر کی فطرت نے شاعری
خوشبو کے اِضطراب کا اِظہار تتلیاں

تقسیم ِ باغ اُڑتے پروں کو نہیں قَبول
دَروازے مانتی ہیں نہ دیوار تتلیاں

پوچھا صنم نے تتلیاں اَچھی کہ شب چراغ ؟
میں نے کہا اَدَب سے کہ سرکار تتلیاں

جگنو بھی ہیں چہیتے مگر وَقتِ اِنتخاب
دِل میرا جیت لیتی ہیں ہر بار تتلیاں

گُل میں اور اُن کے گال میں اِک فرق یہ بھی ہے
کرتی ہیں تِل کا مفت میں دیدار تتلیاں

کاش اِن کو حوض میں نظر آ جائیں اَپنے پر
پھولوں سے کر رہی ہیں عَبَث پیار تتلیاں

وُہ سُرخ رُو ہُوئے مرے شعروں کو پڑھ کے قیس
رِہ رِہ کے چومنے لگیں رُخسار تتلیاں
۔ #شہزادقیس کی کتاب #تتلیاں سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#تتلیاں از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#تتلیاں از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisTitliyan.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #تتلیاں سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
باغ کی آن ، بان ہے تتلی
****************************************
باغ کی آن ، بان ہے تتلی
ذوق کا آسمان ہے تتلی

گُل نے اُوپر کو دیکھ کر یہ کہا
حُسن کا اِک جہان ہے تتلی

جن کی ہوتی ہے جان طوطے میں
حُسن والوں کی جان ہے تتلی

اِس لیے غنچے اِس پہ کھلتے ہیں
بہتریں رازدان ہے تتلی

پھول جیسا مزاج پایا ہے
پھول کا خاندان ہے تتلی

بانٹتی ہے گُلوں میں زَر دانہ
قدرتی باغبان ہے تتلی

لڑکیاں بھی سمجھ سے بالا ہیں
اور اِک چیستان ہے تتلی

پنکھ جیسے ڈَھلی ڈَھلائی غزل
شاعری کی اُڑان ہے تتلی

نرم ہاتھوں پہ بیٹھ جاتی ہے
حُسن پر مہربان ہے تتلی

چُوم لیتی ہے یار کا رُخسار
ہم سے تو پہلوان ہے تتلی

قیس ہے ترجمان تتلی کا
قیس کی ترجمان ہے تتلی
۔ #شہزادقیس کی کتاب #تتلیاں سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#تتلیاں از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#تتلیاں از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisTitliyan.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #تتلیاں سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
دُنیا میں تیرے ذوق پہ حیران ہو گیا
****************************************
دُنیا میں تیرے ذوق پہ حیران ہو گیا
پھولوں کے کاروبار میں نقصان ہو گیا !

مرجھا گئے گلاب ، دُکاں میں پڑے پڑے
کاغذ پرست ، شہر کا اِنسان ہو گیا

نازُک ترین شے کو خریدار نہ ملا
سینے میں دَفن ، حُسن کا وِجدان ہو گیا

عطارِیوں کے گھر کو جو فاقوں نے آ لیا
عرقِ گلاب خود پہ پشیمان ہو گیا

مہمل مثال بن گئی ہونٹوں کی پنکھڑی
اِنسان یوں گلاب سے اَنجان ہو گیا

رَدّی میں بک گئے سبھی دیوانِ خوش خصال
سُچے ترین حرفوں کا اَپمان ہو گیا

بادَل چمن کو ڈُھونڈتے سر سے گزر گئے
تتلی نگر ، بہار میں ویران ہو گیا

قربان ہو گیا کوئی ، پھولوں کے باغ پر
پھولوں کے باغ پر ، کوئی قربان ہو گیا

شہروں میں آ کے بس گئے گلشن کے دیوتا
باغوں کا سبز راستہ سُنسان ہو گیا

اِنسان مردہ باد کا نعرہ لگا دِیا
پَت جھڑ میں ایک پھول کو ہَذیان ہو گیا

اُجڑی ہوئی دُکان گلابوں کی دیکھ قیس
گھر آ کے اتنا رویا کہ ہلکان ہو گیا !
۔ #شہزادقیس کی کتاب #تتلیاں سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#تتلیاں از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#تتلیاں از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisTitliyan.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #تتلیاں سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
دِلکش ترین غنچوں کی مسکان تتلیاں
****************************************
دِلکش ترین غنچوں کی مسکان تتلیاں
پروردگارِ حُسن کی پہچان تتلیاں

ریحان تتلی ، لولو و مرجان تتلیاں
تخلیق کر رَہا ہے وُہ رِحمان تتلیاں

ممکن نہیں اُڑان ، مساوی پروں بغیر
خِلقت کا شاہکار ہیں میزان تتلیاں

ممکن نہیں یہ نقش فقط اِتفاق سے
اِک نقش گر کا دیتی ہیں عرفان تتلیاں

اَکثر گلوں سے تتلیاں بڑھ کر حسین ہیں !
پھولوں کو چوم کر کریں اِحسان تتلیاں

وُہ بوسہء گلاب کو شاید جھکے تھے آج
بالکل قریب آ کے ہیں حیران تتلیاں !

کاغذ کے سبز باغ میں گُل تو بہت ملے
تا عمر ڈھونڈتا رَہا اِنسان تتلیاں

قوسِ قزح کے رَقص نے دِل شاد کر دِیا !
گہری ترین اُداسی کا دَرمان تتلیاں

شبنم ، مٹھاس ، غنچوں کے راز اور پنکھڑی
خوشبو نگر سے لائی ہیں سامان تتلیاں

اِک شوخ تتلی جاں مرے ہاتھوں پہ دے گئی !
تحریر کی ہیں تب سے مری جان تتلیاں

بے ساختہ ثنائے خدا ، دِل سے اُٹھی قیس
پل بھر میں تازہ کر گئیں ایمان تتلیاں
۔ #شہزادقیس کی کتاب #تتلیاں سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#تتلیاں از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#تتلیاں از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisTitliyan.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #تتلیاں سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
۔ اختتام ۔ مجموعہ کلام "تتلیاں" ۔
****************************************
۔ اختتام ۔ مجموعہ کلام "تتلیاں" ۔
سدا خوش رھیے
۔ #شہزادقیس کی کتاب #تتلیاں سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس


****************************************
((End Text))
****************************************
****************************************
((Notice))
Updated On: 24-Sep-16 3:41:16 PM
Release Date: 27-Jul-14 5:06:15 PM
****************************************

****************************************
((Begin Text))
****************************************

****************************************
شہزادقیس کی جانب سے خوش آمدید
****************************************
شہزادقیس کی جانب سے خوش آمدید
مجموعہ کلام #عید میں شامل اشعار
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
اِنتساب
****************************************
اِنتساب
دائمی دل گرہن کے نام
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
دُعا: جو آج خوش ہیں اُنہیں ایسی لاکھوں عیدیں ملیں
****************************************
دُعا: جو آج خوش ہیں اُنہیں ایسی لاکھوں عیدیں ملیں
جو آج اُداس ہیں اُن کی پھر ایسی عید نہ ہو
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
رَمضان جا رَہا ہے اور عید آ رہی ہے
****************************************
رَمضان جا رَہا ہے اور عید آ رہی ہے
یا رَب صنم جدا ہے اور عید آ رہی ہے

غربت کا مارا کوئی ، پٹری پہ عید والی
سر رَکھ کے رو رَہا ہے اور عید آ رہی ہے

کیسا چراغاں صاحب ، اَب کی تو بارِشوں سے
گھر ٹوٹنے لگا ہے اور عید آ رہی ہے

دِل دَھک سے رِہ گیا جو ، یک دَم خیال آیا
اِک سال ہو چلا ہے اور عید آ رہی ہے

یہ ظلم ہے سراسر ، پہلے ہی دِل ہمارا
مر مر کے چپ ہُوا ہے اور عید آ رہی ہے

دِل غم کا آبلہ ہو تو رونے کی بجائے
ہنسنا کڑی سزا ہے اور عید آ رہی ہے

حیرت سے دَم بخود ہوں ، اِس بار کیا ہُوا کہ
خط تک نہیں ملا ہے اور عید آ رہی ہے

وَحشت نے یوں پڑھا ہے ، تنہائی کا صحیفہ
دِل سخت بھر گیا ہے اور عید آ رہی ہے

پنجرے کو زَخمی کر کے ، اُمید کا کبوتر
دَم سادھ کر کھڑا ہے اور عید آ رہی ہے

بانہوں میں عید ہو گی ، جس نے کیا تھا وعدہ
بانہوں میں جا چکا ہے اور عید آ رہی ہے

جانم ! اِس عید پر ہم ، چلتے ہیں قیسؔ کے گھر
دُشمن نے یہ کہا ہے اور عید آ رہی ہے
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
شادی ء مرگ: دیکھ کر عید پر طویل صفیں
****************************************
شادی ء مرگ: دیکھ کر عید پر طویل صفیں
مسجدیں ہنستے ، ہنستے رونے لگیں
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
آپ گر ہوں قریب عید کے دِن
****************************************
آپ گر ہوں قریب عید کے دِن
عرش پر ہوں نصیب عید کے دِن

حُسن والے ، شراب یا کہ موت
کوئی تو ہو طبیب عید کے دِن

دَم بخود رِہ گیا میں دیکھتے ہی
پھول سی عندلیب کے دِن

عشق مصلوب ہونے میں لاچار
حُسن بے بس صلیب عید کے دِن

اُن سے ملنے کی صف نے سمجھایا
یار ہی ہیں رَقیب ، عید کے دِن

ہر کسی کو خدا نصیب کرے
آپ سا اِک حبیب عید کے دِن

آئینہ سال بھر رَہا ہمزاد
پر لگا کچھ عجیب عید کے دِن

ایک دوجے کی نقل کرتے رہے
بے نمازی غریب عید کے دِن

قہقہے بانٹتا ہے لوگوں میں
خوبصورت خطیب عید کے دِن

دُنیا والو ! خدارا لے آؤ
دِل کو دِل کے قریب عید کے دن

شکل یہ بھی جنون کی ہے قیسؔ
بن گئے ہم اَدیب عید کے دِن
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
لاکر: چھپا کے عیدی میں اُن کو دِیا ملن کا پیام
****************************************
لاکر: چھپا کے عیدی میں اُن کو دِیا ملن کا پیام
اُنہوں نے پرس میں اَمی کے عیدی رَکھوا دی
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
مہک وَفا کی کوئی پھول سے جدا نہ کرے
****************************************
مہک وَفا کی کوئی پھول سے جدا نہ کرے
کروں میں عید ترے بن کوئی خدا نہ کرے

جو چاند دیکھیں تو ہونٹوں کے چار چاند ملیں
سِوائے شکر کے پلکوں سے کچھ گرا نہ کرے

دُعا کا کاسہ بھی دونوں بنائیں مل جل کر
کوئی بھی اَپنے دَو ہاتھوں سے اَب دُعا نہ کرے

گلے ملیں تو کئی صدیوں تک سُکُوت رہے
رُکیں یوں گردِشیں دَھڑکن تلک چلا نہ کرے

نگاہیں بات نگاہوں کی یوں سمجھتی ہوں
لبوں سے کہہ کے کوئی عرضِ مدعا نہ کرے

خدا کرے کہ جفا عمر بھر میں کر نہ سکوں
اَگر کروں تو میری زِندگی وَفا نہ کرے

لبوں سے یوں چنوں پلکوں سے تیری غم ریزے
نصیب نام سے بھی غم کے آشنا نہ کرے

وُہ بازُو کیا جو سمیٹیں نہ عمر بھر تجھ کو
وُہ سر ہی کیا ، ترے زانو پہ جو رَہا نہ کرے

تری جبیں پہ مرے لب قنوتِ عشق پڑھیں
کسی کی تیرے سِوا جسم اِقتدا نہ کرے

وِصال و ہجر تو مولا کی دین وُہ جانے
نماز پیار کی دَھڑکن کبھی قضا نہ کرے

جدائی ہو تو مری عمر تجھ کو لگ جائے
وُہ قیسؔ کیا جو حیات عشق میں فنا نہ کرے
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
کھلی نگاہوں سے دیکھا یہ خواب عید کے دِن
****************************************
کھلی نگاہوں سے دیکھا یہ خواب عید کے دِن
پڑھیں وُہ زانو پہ میرے کتاب عید کے دِن

خدایا ہجر گَزیدوں کا یہ سہارا بنے
میں لکھ رہا ہوں جدائی کا باب عید کے دِن

نشے میں نام نہ اُن کا کہیں بتا دینا
ستم زَدو ! ذِرا ہلکی شراب عید کے دِن

حسین ہاتھوں نے جادُو حنا کا اَوڑھ لیا
جمالِ یار پہ صدقے گلاب عید کے دِن

لغت میں عشق کی کنجوس اُس کو کہتے ہیں
جو پچھلے بوسوں کا مانگے حساب عید کے دِن

ذِرا سا آپ بھی شرمانا چھوڑئیے صاحب
ذِرا سے ہوتے ہیں سب ہی خراب عید کے دِن

ہِلالِ عید کا منہ چومو اِس کے آنے سے
زَمیں پہ دیکھے کئی ماہتاب عید کے دِن

گداز پاؤں اَبھی پالکی سے نکلا تھا
حسین ہو گئے سب آب آب عید کے دِن

گلابی رَنگ کی ظالم سے کی جو فرمائش
گلابی رَنگ کا پہنا نقاب عید کے دِن

کتاب بھیجی اُنہیں ’’ عید ملنا واجب ہے ‘‘
وُہ سب سے عید ملے بے حجاب عید کے دِن

کتاب بھیج تو دُوں قیسؔ ، ’’ بوسہ واجب ہے ‘‘
نہ جانے کیا بنے اِس کا جواب عید کے دِن
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
ماموں: سب چندا ماموں دیکھ کے ملنے لگے ہیں عید
****************************************
ماموں: سب چندا ماموں دیکھ کے ملنے لگے ہیں عید
ہم کو ہمارے چاند نے ’’ ماموں ‘‘ بنا دیا
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
ہِلالِ عید نکلتا تھا جس کلی کے لیے
****************************************
ہِلالِ عید نکلتا تھا جس کلی کے لیے
کلی وُہ توڑ لی میں نے تیری گلی کے لیے

یہ کہہ رہا ہے زَمانہ کہ عید اَچھی ہے
کہو زَمانے سے لیکن نہ ہر کسی کے لیے

دَھنک ، ہِلال ، گُہر ، تتلی ، عید ، اَبر ، گُلاب
پڑیں گے کم مرے دِلبر کی ’’ سادگی ‘‘ کے لیے

بروزِ عید نگاہیں جھکا کے چلنا دوست
یہ اِحتیاط ضروری ہے زِندگی کے لیے

کہو نہ عید مُبارَک یوں ہنس کے سب کو تم
نمک ہے زَخموں پہ یہ ایک ماتمی کے لیے

وُہ آئے گھر میں اور ایسے کہ میں نے جان لیا
سدا ضروری نہیں چاند ، چاندنی کے لیے

حنا سے ہاتھوں پہ چینی زَباں میں کچھ لکھ کر
ہر اِک سے کہتے ہیں لکھا ہے آپ ہی کے لیے

رَقیب بھی تو ہمیں یاد آتے رہتے ہیں
ذِرا سی دُشمنی لازِم ہے دوستی کے لیے

کمی ہو دید کی تو عید بھی مفید نہیں
کلی سُکون نہیں ہوتی بے کلی کے لیے

غریب لوگوں کا تحفہ کچھ اور کیا ہو گا
یہ عید کارڈ ہی بھیجا ہے ہر کسی کے لیے

بروزِ عید جسے دیکھنا نصیب نہیں
لکھا ہے قیسؔ یہ شعر اَشکوں نے اُسی کے لیے
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
بدھو: عید کی رات تھک کے گھر لوٹا
****************************************
بدھو: عید کی رات تھک کے گھر لوٹا
غم نے پاؤں دَبائے چپ کر کے
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
چھٹی پر تھے طبیب عید کے دِن
****************************************
چھٹی پر تھے طبیب عید کے دِن
مر گئے کچھ غریب عید کے دِن

نازُک اِحساس لوگ چڑھتے ہیں
زِندہ زِندہ صلیب عید کے دِن

بُت بھی صف باندھ لیں عقیدت سے
حُسن ہو گر خطیب عید کے دِن

گُلِ تر تم کو ، زَخم ہم کو ملیں
جس کے جیسے نصیب عید کے دِن

چشمِ پُر نم کی تہہ میں ڈُوب گیا
چاند سا اِک حبیب عید کے دِن

آئینوں سے کہاں تک عید ملیں
ہر گھڑی ہے مہیب عید کے دِن

خود کشی سے ہٹا تو رونے لگا
ایک بے بس غریب عید کے دِن

چل رَہا ہے قلم ، رَواں ہیں اَشک
با اَدَب ، ’’ بے نصیب ‘‘ عید کے دِن

یار تو یار ، ایسی وَحشت تھی
یاد آئے رَقیب عید کے دِن

غمِ فرقت بڑھا جو حد سے تو
مر گئی عندلیب عید کے دِن

اِہلِ دِل باقی مر چکے ہیں قیسؔ
اور ہم عنقریب عید کے دِن
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
فرمائش: کسی نے پوچھا کہ کیا بھیجوں تو خوشی ہو گی ؟
****************************************
فرمائش: کسی نے پوچھا کہ کیا بھیجوں تو خوشی ہو گی ؟
بغیر سوچے کہا ’’ بے حسی ‘‘ بڑی بوتل !
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
جو بوسہ ہاتھ کا بھی عید پر عطا نہ کرے
****************************************
جو بوسہ ہاتھ کا بھی عید پر عطا نہ کرے
کسی کا ایسا صنم ہو کبھی خدا نہ کرے

مرے عزیزو ! یہ سرگوشی چاند رات کی ہے
کہ آج شب کوئی دُشمن کو بھی خفا نہ کرے

بھلے سے کرنا بھلائی کوئی کمال نہیں
بھلا تو وُہ ہے برے سے بھی جو برا نہ کرے

ہِلالِ عید ! بتا کیا کبھی یہ دیکھا ہے ؟
کہ حُسن رَکھتا ہو کوئی مگر جفا نہ کرے

نجانے چاندنی میں کون کون دیکھے اُسے
کوئی تو روکو کہ یوں چاند کو تکا نہ کرے

شریر بھائی بھی ہو سکتا ہے سہیلی کا
سو اَپنا عکس سہیلی کو بھی دِیا نہ کرے

اُسے کہو کہ کئی مور غور کرتے ہیں
نقاب اَوڑھ کے بھی شہر میں چلا نہ کرے

کمر میں موچ نہ آ جائے ناز پرور کی
حنا لگی ہو تو پانی بھی خود پیا نہ کرے

یہ عورتیں نہ کریں ذِکر اَپنے مردوں سے
حجاب اُتار کے عید اُن سے بھی ملا نہ کرے

اُسے کہو اِنہی بچوں کو چومتے ہیں بڑے
سو بوسے عید پہ بچوں کے بھی لیا نہ کرے

کسی کے ہاتھ ہمیں قیسؔ کل پیام آیا
ہم اُس کے کچھ نہیں سو مشورے دِیا نہ کرے !
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
حُسنِ فطرت: لبوں کی قوس ہے چندا سی ، چاند سے اَبرُو
****************************************
حُسنِ فطرت: لبوں کی قوس ہے چندا سی ، چاند سے اَبرُو
سو چار چاند تو اُن کو لگے لگائے ہیں
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
شرابِ وَصل کا مل جائے جام عید کے دِن
****************************************
شرابِ وَصل کا مل جائے جام عید کے دِن
تو رِند کھل کے کریں اِہتمام عید کے دِن

کچھ اِہلِ عشق ہیں روزے سے چاند دیکھ کے بھی
ذِرا سا آئیے بالائے بام عید کے دِن

بہارِ عید ہے مینائے حُسن کی مستی
دُھلے گلاب لگیں خاص و عام عید کے دِن

یہ ننھی پریاں پرستاں سے سج کے آئی ہیں ؟
یہ ننھے غنچے ہیں کس کے غلام عید کے دِن

نئے لباس پہن کر سب اِس لیے آئے
کہ وُہ کرائیں گے دیدارِ عام عید کے دِن

بس اَپنے چاند پہ نظریں جمائے رَکھنا ہے
کہاں ہے عاشقوں کو اور کام عید کے دِن

سجے ، سجائے حسیں رَب کا نام لیں تو لگے
کہ پڑھ رہا ہو کوئی رام رام عید کے دِن

خوشی ہے عید کی یا اَپنے حُسن پر مغرور
وُہ چل رہے ہیں بہت خوش خرام عید کے دِن

وُہ توبہ کر چکے روزوں میں یا اِلٰہی کیا ؟
کیا ہے پردے کا خوب اِنتظام عید کے دِن

مٹھائی دینے سے اُن کی مراد یہ نہ ہو
بغیر بوسہ بنو شیریں کام عید کے دِن

وُہ بھول جانے کی قربانی مانگ لیں نہ قیسؔ !
ذِرا زِیادہ ہی ہیں خوش کلام عید کے دِن
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
خسارہ: نہیں یہ عیدی کی اَدنیٰ رَقم کی بات نہیں
****************************************
خسارہ: نہیں یہ عیدی کی اَدنیٰ رَقم کی بات نہیں
بڑے کیا ہو گئے وُہ پیار بھی نہیں ملتا
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
ہمارا ہی نہیں بدنام نام عید کے دِن
****************************************
ہمارا ہی نہیں بدنام نام عید کے دِن
ہر اِہلِ عشق کا اَنجام جام عید کے دِن

شراب سے ہوں شرابور جیسے چست گلاب
کھڑے ہیں مست بدن گام گام عید کے دِن

ہیں عید ملنے کی فہرست میں کئی گھپلے
کہ بالا بالا ہیں گمنام ، نام عید کے دِن

کمند عقابوں پہ ڈالیں حسین زُلفیں کئی
بنے ہیں پھول سے اَندام دام عید کے دِن

حجاب میں بھی کوئی بھینٹ لے کے چھوڑیں گے
پڑھیں نگاہوں سے جو رام رام عید کے دِن

کہیں وُہ عید پہ جو ہنس کے کون سا وَعدہ ؟
بڑھانے لگتے ہیں بادام دام عید کے دِن

کسی کی یاد دَبانے میں ، میں نہیں تنہا
کیا ہے سب نے یہ ناکام کام عید کے دِن

غریب پلکوں کا منہ موتیوں سے ہے لبریز
ملا یوں دید کا اِنعام ، عام عید کے دِن

وُہ جن کا گر گیا آنچل زَمیں پہ ہنستے ہُوئے
اُنہی کا جپتے ہیں اَصنام نام عید کے دِن

نجانے دیکھا ہے کیا کیا تراشتے زُلفیں
کہ چھوڑتے نہیں حجام جام عید کے دِن

کہا بھی قیسؔ دَروغہ کو وُہ رَہا دِل چور
کہاں پہ کرتے ہیں حکام کام عید کے دِن
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
حدِ اَدَب: چیٹ دو گھنٹے اور بھی کر لو
****************************************
حدِ اَدَب: چیٹ دو گھنٹے اور بھی کر لو
نیٹ پہ تم عید مل نہیں سکتے
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
ہُوا جو دِل مرا نیلامِ عام عید کے دِن
****************************************
ہُوا جو دِل مرا نیلامِ عام عید کے دِن
کسی کا ہو گیا بدنام نام عید کے دِن

طلب سے بڑھ کے رَسد حُسن کی ہُوئی لیکن
دِلوں کے پھر بھی لگے عام دام عید کے دِن

مے ء وِصال سے ہیں مست کون خوش قسمت
ہُوئے نہ ہم سے تو گلفام ، رام عید کے دِن

نمازِ عید میں مسجد میں پڑھ نہیں سکتا
کہ مجھ کو ہوتا ہے اِک کام شام عید کے دِن

شرابِ عید کی نیت یوں باندھیے صاحب
جمالِ یار تیرے نام جام عید کے دِن

لبوں کی خوشبو ملا کر حلال کر ساقی
نہ رِندِ خاص کو دے عام جامِ عید کے دِن

جہاں میں ’’دید مبارَک‘‘ کا شور مچنے لگا
وُہ آئے جونہی لبِ بام عام عید کے دِن

رَقیب قرب کا دَعویٰ کریں نہ گالی پر
کہ وُہ تو دیتے ہیں دُشنام عام عید کے دِن

بدن کے رَقصاں گلابوں میں ہو دِہکتی شراب
چمن میں چلتے ہیں یوں جام فام عید کے دِن

چھری بغل میں یقینی ہے کچھ حسینوں کی
بھلے پڑھیں نہ پڑھیں رام رام عید کے دِن

سب اُن کے گھر کی ہَوا کھا کے لوٹتے ہیں قیسؔ
کہ وُہ تو کرتے نہیں کام شام عید کے دِن
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
عبد: خدا کے بندوں کو جو فائدہ نہیں دیتا
****************************************
عبد: خدا کے بندوں کو جو فائدہ نہیں دیتا
نمازِ عید بھی مسجد میں وُہ اَدا نہ کرے
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
چال اُس شوخ کی جو چلتی ہے
****************************************
چال اُس شوخ کی جو چلتی ہے
عید کی زِندگی بدلتی ہے

بن سنور کے وُہ جب نکلتے ہیں
دیکھ کر عید آنکھیں ملتی ہے

یار تو یار اُس کی جوتی سے
ملکہ ء حُسن خوب جلتی ہے

عید لونڈی تمہارے گھر کی جان !
عید ٹکڑوں پہ تیرے پلتی ہے

چاند یہ دیکھنے کو آتا ہے
وُہ خوشی سے بھلا اُچھلتی ہے

عید پر مضطرب میں غربت میں
کروٹیں گھر میں وُہ بدلتی ہے

خواب سے لوٹتی ہے وُہ یکدم
چائے جب چولہے پر اُبلتی ہے

مجھ کو لگتا ہے اُس کو ہے معلوم
دِل میں جو آرزُو مچلتی ہے

آہ ! وُہ مجھ کو ایسے چھوڑ گیا
جسم سے جیسے جاں نکلتی ہے

نسخہ لکھ کر طبیب کہنے لگا
عاشقی جان لے کے ٹلتی ہے

اِہلِ دل ہوش میں تب آتے ہیں
قیسؔ جب چاند رات ڈھلتی ہے
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
یاد آوری: کہا جو دیجیے سب سے عزیز شے بولے
****************************************
یاد آوری: کہا جو دیجیے سب سے عزیز شے بولے
یہ چاند رات ہے جانو سہاگ رات نہیں
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
عید اِس بار جو پردیس میں آئی ہو گی
****************************************
عید اِس بار جو پردیس میں آئی ہو گی
یار نے ہچکیاں لے لے کے منائی ہو گی

چاند بھی بام پہ ماتم کناں آیا ہو گا
بزمِ غم قطبی ستارے نے سجائی ہو گی

قبر اِحساس کی دِل میں کوئی ٹُوٹی ہو گی
سُرخ ، اُداس آندھی خیالات پہ چھائی ہو گی

آخری روزہ بھی اَشکوں سے ہی کھولا ہو گا
چاند نے غم کی جھڑی دِل میں لگائی ہو گی

پہلے تو اُس نے گنے ہوں گے کئی سو تارے
پھر دَوا نیند کی اُٹھ کر کوئی کھائی ہو گی

عید کے روز پریشاں نے اَذاں سنتے ہی
مشرقی سمت نئی شمع جلائی ہو گی

خود کو بازُو کے سہارے سے سنبھالا ہو گا
ایک ’’ بے بس ‘‘ کی قسم یاد دِلائی ہو گی

گھر مری مرضی کے پردوں سے سجایا ہو گا
میری من چاہی کوئی شے بھی بنائی ہو گی

رَنگ بھی میرا پسندیدہ ہی پہنا ہو گا
اور خوشبو بھی مری بھیجی لگائی ہو گی

پہلے خود اَپنے سراپے کو سراہا ہو گا
آنکھ پھر عکس سے اَپنے ہی چرائی ہو گی

ہاتھ پہ قیس بہت ہلکی حنا سے لکھ کر
اُس پہ حسرت میں گندھی منہدی چڑھائی ہو گی

سابقہ عید کی شوخی پہ ہنسی آتے ہی
لب چباتے ہُوئے آنکھ اُس نے جھکائی ہو گی

جب غزل کھول کے ’’ تعویذ ‘‘ پڑھی ہو گی مری
چیخ مشکل سے کلیجے میں دَبائی ہو گی

چپکے سے پھر مجھے نیٹ پر کہیں ڈُھونڈا ہو گا
رُخ پہ حیرت یہ غزل پڑھتے ہی چھائی ہو گی

بے بسی اُس کی اُداس آنکھوں سے ٹپکی ہو گی
تیسری روٹی بھی جب اُس نے جلائی ہو گی

’’ کس کی یاد عید پہ رَکھتی ہے اُداس اِتنا تمہیں ‘‘ ؟
اَمی کا کہہ کے ذِرا بات بنائی ہو گی

اَپنے پلّو سے مری یاد کو پونچھا ہو گا
جھوٹے غازے کی ہنسی رُخ پہ سجائی ہو گی

سر بھی پھر ناز سے شوہر کا دَبایا ہو گا
آنکھ چبھتی ہُوئی خود پر سے ہٹائی ہو گی

پھر بڑی تیزی سے کچھ کام سمیٹے ہوں گے
ایک چادَر ہی کئی بار بچھائی ہو گی

غالبا غیر شعوری سے کسی جذبے سے
چائے شوہر کو بہت کالی پلائی ہو گی

عقل بولی کہ نہیں عید صنم کی ایسے
دِل بضد ہے کہ نہیں ایسے ہی آئی ہو گی

یا تو اِحساسِ ندامت نے رُلایا ہو گا
یا غزل قیسؔ کی شوہر نے سنائی ہو گی
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
یومِ آزادی: شوّال کی یکم ہے مسلمانوں کے لیے
****************************************
یومِ آزادی: شوّال کی یکم ہے مسلمانوں کے لیے
شیطان کے لیے تو یہ 14 اَگست ہے
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
بہارِ عید بھی اَپنے لیے بہار نہیں
****************************************
بہارِ عید بھی اَپنے لیے بہار نہیں
اِس عید پر تو کسی کا بھی اِنتظار نہیں

ہر عید کارڈ پہ لکھ دو یہ شعر سونے سے
جو عید ملنے نہ آئے وُہ یار ، یار نہیں

حیات ، قلب ، زَباں ، رُوح ، جسم ایک ہیں جب
تو پیار ایک ہی ہوتا ہے بار ، بار نہیں

بھرے تو عشق سے دِل عاشقوں کا کیسے بھرے
کہ دِن ہی چار ہیں کُل ، چار سو ہزار نہیں

پری یا حور سے تشبیہ نہ دو اُن کی تو
کنیزوں میں بھی پری ، حور کا شمار نہیں

نظر میں دیکھنے والوں کی حُسن پنہاں ہے
سو آپ پیارے ہیں یہ شعر شاہکار نہیں

وُہ آج عید مبارَک کو ایک لحظہ رُکے
پھر اُس کے بعد کہا رَسم ہے یہ پیار نہیں

کہا جو حُسن ستاتا ہے آپ کا ہم کو
وُہ بولے پھول کا خوشبو پہ اِختیار نہیں

کہا جو آپ ہیں بیمار کی شِفا صاحب
وُہ بولے دیکھیے ہم لڑکی ہیں اَنار نہیں

ثبوتِ عشق میں رَکھا جو پاؤں میں دیوان
تو ہنس کے کہتے ہیں شاعر کا اِعتبار نہیں

’’ صنم شناسی ‘‘ کسی قیسؔ کو نہیں آئی
کہ جس پہ مرتے ہیں یہ وُہ وَفا شعار نہیں
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
رویتِ ہلال: نگاہیں ہر گھڑی تسبیح میں مصروف رہتی ہیں
****************************************
رویتِ ہلال: نگاہیں ہر گھڑی تسبیح میں مصروف رہتی ہیں
اِسی سندر گلی میں حُسن کا معبود رِہتا ہے

ستارو ! عید کا پیغام تم کو ہم نے دینا ہے
کہ اَصلی چاند اَپنے سامنے موجود رہتا ہے
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
ہِلالِ عید نکلتا تھا جس کلی کے لیے
****************************************
ہِلالِ عید نکلتا تھا جس کلی کے لیے
کلی وُہ توڑ لی میں نے تیری گلی کے لیے

یہ کہہ رہا ہے زَمانہ کہ عید اَچھی ہے
کہو زَمانے سے لیکن نہ ہر کسی کے لیے

دَھنک ، ہِلال ، گُہر ، تتلی ، عید ، اَبر ، گُلاب
پڑیں گے کم مرے دِلبر کی ’’ سادگی ‘‘ کے لیے

بروزِ عید نگاہیں جھکا کے چلنا دوست
یہ اِحتیاط ضروری ہے زِندگی کے لیے

کہو نہ عید مُبارَک یوں ہنس کے سب کو تم
نمک ہے زَخموں پہ یہ ایک ماتمی کے لیے

وُہ آئے گھر میں اور ایسے کہ میں نے جان لیا
سدا ضروری نہیں چاند ، چاندنی کے لیے

حنا سے ہاتھوں پہ چینی زَباں میں کچھ لکھ کر
ہر اِک سے کہتے ہیں لکھا ہے آپ ہی کے لیے

رَقیب بھی تو ہمیں یاد آتے رہتے ہیں
ذِرا سی دُشمنی لازِم ہے دوستی کے لیے

کمی ہو دید کی تو عید بھی مفید نہیں
کلی سُکون نہیں ہوتی بے کلی کے لیے

غریب لوگوں کا تحفہ کچھ اور کیا ہو گا
یہ عید کارڈ ہی بھیجا ہے ہر کسی کے لیے

بروزِ عید جسے دیکھنا نصیب نہیں
لکھا ہے قیسؔ یہ شعر اَشکوں نے اُسی کے لیے
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
شاکر: چھوٹے نوٹوں کی تازہ گڈی سے
****************************************
شاکر: چھوٹے نوٹوں کی تازہ گڈی سے
بانٹ کر عیدی یہ کیا محسوس

شکریہ ہنس کے جتنا مرضی کہیں
بچے اَندر سے خوش نہیں ہوتے
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
لبوں سے اُٹھتی ہُوئی چاندنی سے جلتے ہیں
****************************************
لبوں سے اُٹھتی ہُوئی چاندنی سے جلتے ہیں
ہمارے پنکھ کسی پنکھڑی سے جلتے ہیں

بھڑک وُہ اُٹھتے ہیں جب چاند رات آتی ہے
کچھ ایسے دِل جلے جو چاند ہی سے جلتے ہیں

حنا شریف جچی اِتنی شوخ ہاتھوں پر
کہ شوخ تتلی کے پر ، جل پری سے جلتے ہیں

بہت ہی پیار سے اِہلِ حسد سے یہ کہیے
جو ’’ آگ سے بنے ‘‘ ، وُہ آدمی سے جلتے ہیں

یہ کہہ کے صاف بری ہو گئے سب اِہلِ خرد
پتنگے پیار میں اَپنی خوشی سے جلتے ہیں

کنویں کی اَندھی گھٹن میں خیال کے جگنو
چمکنا چاہیں تو پر روشنی سے جلتے ہیں

فُضول رَسموں پہ اَب گفتگو ضروری ہے
بتانِ وِہم و گماں ، آگہی سے جلتے ہیں

بہت سکون سے شکوے کو سننا حکمت ہے
کہ رِشتے دِل میں دَبی آگ ہی سے جلتے ہیں

لطیف نکتہ ہے شاید بیان ہو پائے
خوشی کو ترسے ہُوئے ہی خوشی سے جلتے ہیں

بروزِ عید فقط میں نماز پڑھتا ہوں
اور اُس پہ لوگ میری بندگی سے جلتے ہیں

لہو سے شعر لکھے قیسؔ لوحِ دِل پہ جبھی
وَفا کے دیپ میری شاعری سے جلتے ہیں
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
حضرات !: جانے کب عید کا بتائیں گے
****************************************
حضرات !: جانے کب عید کا بتائیں گے
ٹی وی کے آگے بیٹھ جاتے ہیں

ماہرِ فلکیات پیچھے ہٹ !
چاند تو مولوی چڑھاتے ہیں
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
عمر بھر یہ رہی اُمید خدا سے ہم کو
****************************************
عمر بھر یہ رہی اُمید خدا سے ہم کو
کاش مل جائے وُہ اِس عید دُعا سے ہم کو

حوصلہ رَکھیے ، دُعا کیجیے ، مایوس نہ ہوں
دیر تک دیتا رہا چاند دِلاسے ہم کو

ذات کے خول میں تنہا سہی محفوظ تو ہیں
اَجنبی ! کر نہ جدا جھوٹی اَنا سے ہم کو

چاند اِنسان سے ناراض نظر آیا ہمیں
پھول تتلی سے لگے قدرے خفا سے ہم کو

’’ ہاتھ سے روکتے ہیں ‘‘ سب کو وَفاداری سے
زَخم اِتنے لگے منحوس وَفا سے ہم کو

دِل بجھا ہو تو تمنا ہی کہاں رِہتی ہے
اَب کسی شے سے غرض ہے نہ خلا سے ہم کو

نہ خطا ہوتی نہ یہ گلشنِ ہستی کھلتا
شیخ کیوں روکتا رہتا ہے خطا سے ہم کو

جسم کی قوس یا سرخی میں کہاں ایسا سُرُور
جھرجھری آتی تھی بس اُن کی حیا سے ہم کو

قیسؔ عدت کو بھی مدت ہُوئی ہے ختم ہُوئے
پھر یہ دُنیا کیوں بلاتی ہے اَدا سے ہم کو
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
رائج الوقت: بطور عیدی سنایا جو شعر کہنے لگے
****************************************
رائج الوقت: بطور عیدی سنایا جو شعر کہنے لگے
بجائے میٹھے کے مجھ سے نہ مار کھا لینا

کڑکتے نوٹوں کی عیدی نکالو قیسؔ میاں !
جو بھیک مانگے اُسے شعر یہ سنا دینا
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
گُلوں کی سیج ، شِگُوفوں کے ہار دِکھلائے
****************************************
گُلوں کی سیج ، شِگُوفوں کے ہار دِکھلائے
صنم خدا تجھے عیدیں ہزار دِکھلائے

ہنسی ، قرار ، تمنا ، سکون ، عشق ، وَفا
قدم قدم پہ خوشی کی بہار دِکھلائے

تمام سال رہے عید جیسا میٹھا منہ
گلاب جامن و برفی سا پیار دِکھلائے

صبا ، مہکتے ہُوئے بوسے رَکھے گالوں پر
تھرکتی تتلی دَھنک خوشگوار دِکھلائے

ہماری عید نہیں دیدِ ماہ پر موقوف
ہمیں تو چہرہ وُہی شاہکار دِکھلائے

ہمیشہ ٹھہرا رہے وَقت شاد لمحوں میں
خوشی کی خاص گھڑی بار بار دِکھلائے

زَمانہ ’’ چاند نظر آ گیا ‘‘ پکارے گا
گلابی چہرہ جو زُہرہ نگار دِکھلائے

عَرُوسِ گُل ، چمن آرا ، پری ، شگوفہ جمال !
ہر عید مولا تجھے خوشگوار دِکھلائے

چمن میں یاد کروں ہائے اُس کو تو قسمت !
کلی سے تتلی کے بوس و کنار دِکھلائے

تمہیں دِکھائے خدا نورِ عید و ماہِ تمام
تمہاری دید مجھے کردِگار دِکھلائے

حسین لڑکیو ! تم تو کباب ہو جاؤ
ذِرا سی شان جو وُہ شاندار دِکھلائے

کوئی نہ قیسؔ جچا اَپنی سانولی کے بعد
جہاں نے چہرے ہمیں بے شمار دِکھلائے
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
مقامِ شکر: پھر سے گر ہو گئی ہیں دو عیدیں
****************************************
مقامِ شکر: پھر سے گر ہو گئی ہیں دو عیدیں
کس لیے آپ محوِ وَحشت ہیں

فرقے جس قوم کے بہتّر (72) ہوں
اُس میں دو عیدیں تو غنیمت ہیں
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
مسرت ، شادمانی ، چاندنی ہے
****************************************
مسرت ، شادمانی ، چاندنی ہے
بروزِ عید بس تیری کمی ہے

تری زُلفیں میری شاداب راتیں
تیرا چہرہ بہارِ زِندگی ہے

جمالِ یار کو دیکھا تو جانا
عطا کرنے میں رَب کتنا سخی ہے

ترے چلنے سے دَھڑکن چل رہی ہے
تمہارا قہقہہ دِل کی خوشی ہے

چمکتے کپڑے لے کر کیا کروں گا
کہ عید اَپنی کمالِ سادگی ہے

خدا کے واسطے آنچل سنبھالو
ہماری اُنگلی دانتوں میں پھنسی ہے

فرشتوں نے میرے بند آنکھیں کر لیں
وُہ میرے سامنے کچھ یوں کھڑی ہے

بہت مغرور و خود سر شیرنی بھی
ذِرا تنہا ہُوئے تو ڈَر گئی ہے

ہر اِک مسلک سے مجھ کو ہے محبت
ہر اِک فرقے میں اِک لڑکی پری ہے

کئی دِن میں لکھی ہے میں نے صاحب
غزل جو سرسری تم نے پڑھی ہے

کوئی ترکیب ڈُھونڈیں وَصل کی قیسؔ
کہ اَب تو عید سر پہ آ گئی ہے
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
نگران رِند: عید کے عید جو شراب پییں
****************************************
نگران رِند: عید کے عید جو شراب پییں
اُن کو مے خوار کہہ نہیں سکتے
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
جسے نہ یار کی ہو پائے دید عید کے دِن
****************************************
جسے نہ یار کی ہو پائے دید عید کے دِن
اُسے تو لگنے ہیں سب ہی یزید عید کے دِن

اَگر وُہ عید ملیں گے تو کان میں اُن کے
کہیں گے چپکے سے ہل من مزید عید کے دِن

ذِرا سی دیر کو مرضی ضرور کرنی ہے
بھلے وُہ بعد میں کر دیں شہید عید کے دِن

خدا پہ اور صنم پر اِکٹھے پیار آیا
صنم کی چومی ہے حبل الورید عید کے دِن

جو رو کے پوچھا وُہ وعدہ؟ تو ہنس کے کہنے لگے
ہر ایک کرتا ہے وعدے وعید عید کے دِن

نماز پڑھتے ہی کچھ ٹُوٹی قبروں پر جانا
یہ بات پائی ہے بے حد مفید عید کے دِن

کسی کے جھمکوں کی تعریف جونہی کی میں نے
تھما دی ہاتھ میں اُس نے رَسید عید کے دِن

لب اُن کے پنکھڑی مافق ، بدن صراحی سا
پیاس لگ گئی ہم کو شدید عید کے دِن

کسی کی سمت اِشارہ نہیں ہے قیسؔ مگر
بڑے بڑے بنیں گے زَن مرید عید کے دِن
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
یہ ہاتھ رُخ سے ہٹاؤ کہ عید آئی ہے
****************************************
یہ ہاتھ رُخ سے ہٹاؤ کہ عید آئی ہے
نظر نظر سے ملاؤ کہ عید آئی ہے

سہیلیوں کے ، خریداری کے ، عزیزوں کے
کسی بہانے سے آؤ کہ عید آئی ہے

کسی کو دیکھ کے بے اِختیار میں نے کہا
چراغ گھی کے جلاؤ کہ عید آئی ہے

میں شرط باندھ چکا ہُوں ہِلالِ عید کے ساتھ
ذِرا نقاب ہٹاؤ کہ عید آئی ہے

دو لب ملیں گے ’’ محبت ‘‘ کا لفظ جو بھی کہے
سنو ! لبوں کو ملاؤ کہ عید آئی ہے

بہت سی باتوں کو ٹالا تھا عید کے دِن پر
حساب اَپنا چکاؤ کہ عید آئی ہے

میں جھوٹ موٹ کا ناراض ہو گیا ہُوں مجھے
گلے لگا کے مناؤ کہ عید آئی ہے

نہ میٹھا پان ، نہ کشمش ، نہ کھیر ، نہ مصری
کچھ اور میٹھا چکھاؤ کہ عید آئی ہے

حنا تو سب کو دِکھاتے ہو ، میں تو عاشق ہُوں
مزید کچھ تو دِکھاؤ کہ عید آئی ہے

وُہ بولی آپ ہیں میرے بزرگ ، میں نے کہا
تو پھر یہ پیر دَباؤ کہ عید آئی ہے

پرانے سارے بہانے ہیں قیسؔ کو اَزبر
نئے بہانے بناؤ کہ عید آئی ہے
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
تو منہ تو میٹھا کراؤ کہ عید آئی ہے
****************************************
تو منہ تو میٹھا کراؤ کہ عید آئی ہے
ذِرا سا پاس تو آؤ کہ عید آئی ہے

سنی سنائی پہ میں اِعتبار کرتا نہیں
مجھے یقین دِلاؤ کہ عید آئی ہے

میں عیدی دُوں گا تو بدلے میں کیا ملے گا مجھے
یہ گھر سے سوچ کے آؤ کہ عید آئی ہے

قریب بیٹھو کوئی بات چھیڑیں موسم کی
چلو حنا ہی دِکھاؤ کہ عید آئی ہے

ذِرا سا کانٹوں کا بھی حق ہے گل پسند حسین
ذِرا سا لگنے دو گھاؤ کہ عید آئی ہے

گلے نہ ملنے کی کوئی دَلیل تو ہو گی
وُہ کان میں ہی بتاؤ کہ عید آئی ہے

تمہیں بہانے بنانے اَبھی نہیں آتے
بہانے سیکھ کے جاؤ کہ عید آئی ہے

دَھنک سی پھیلتے دیکھوں حسین گالوں پر
یہ کان پاس تو لاؤ کہ عید آئی ہے

خدارا کام کی ترتیب نہ خراب کرو
ہٹاؤ ، ہاتھ ہٹاؤ کہ عید آئی ہے

طبیب مے میں ڈُبو کر دِلائے ہوش مجھے
کچھ ایسی چیز پلاؤ کہ عید آئی ہے

تو رَقص کی جگہ شہزاد قیسؔ جی کی غزل
ذِرا اَدا سے سناؤ کہ عید آئی ہے
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
بام پر دیکھ کے اُن کو جو ہنسا عید کا چاند
****************************************
بام پر دیکھ کے اُن کو جو ہنسا عید کا چاند
پھول سے ہاتھوں کی چلمن میں چھپا ’’ عید کا چاند ‘‘

قَد میں یہ بَدر کے آگے کسی گنتی میں نہیں
قَدر میں بَدر سے ہے کتنا بڑا عید کا چاند

ہر ترقی سے بڑھے شان ، ضروری تو نہیں
قَدر گھٹتی ہی گئی جوں جوں بڑھا عید کا چاند

چشم بستہ تھا کہیں محوِ دُعا کوئی حسیں
مفت میں دیکھ گیا رَنگِ حنا عید کا چاند

میرے بس میں ہو تو اِعلان سراسر کر دُوں
آپ نہ دیکھیے حضرات مرا عید کا چاند

وُہ تو پھر سال میں دو بار نظر آتا ہے
آپ کو کیسے کہوں جانِ اَدا عید کا چاند

اَب تو ہنستا بھی نہیں ایسے کسی منظر پر
چپکے سے سنتا ہے پیمانِ وَفا عید کا چاند

دیکھنے ماہ لبِ بام وُہ کچھ یوں آئے
دیکھ کر اُن کو ہُوا محوِ دُعا عید کا چاند

عید کا چاند کہا پہلے تو سو بار اُسے
پھر جونہی موقع ملا ، چوم لیا عید کا چاند

کیا کسی کو یہ اِکٹھے بھی ہُوئے ہوں گے نصیب؟
تخلیہ ، عشق ، سَبُو ، باغ ، حنا ، عید کا چاند

آسماں پر تو گھڑی بھر کو نظر آیا قیسؔ
شوخ آنکھوں میں کئی روز رہا عید کا چاند
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
غم کے ریلے میں دُھلے دِل کی دُعا عید کا چاند
****************************************
غم کے ریلے میں دُھلے دِل کی دُعا عید کا چاند
چشمِ پُر نم کو ہے رِم جھِم کی سزا عید کا چاند

ایک معصوم کے اَرمانوں کا خوں مجھ سے ہُوا
عمر بھر لیتا رہا خون بہا عید کا چاند

اَوّل آویزاں رہا گوہرِ مِژگاں پہ ہِلال
صبر کی ڈور کٹی ، چھن سے گرا عید کا چاند

غش میں دیکھا سَرِ دِہلیز کوئی زَخمی جنوں
رینگ کر اَوٹ میں بادَل کی چھپا عید کا چاند

چند لمحوں میں ہی واپس بھی چلا جاتا ہے
کچھ تو ہے جس پہ ہے ہم سب سے خفا عید کا چاند

عید ہے طفل تسلی ، مرے خوش خوش بچو !
ہم کو بھی طفلی میں بھاتا تھا بڑا عید کا چاند

سسکیاں ہجر گَزیدوں کی سِوا ہوتی گئیں
جانے کس دَرد کی ہوتا ہے دَوا عید کا چاند

چاند کو دیکھ کے اِک چاند بہت یاد آیا
اَب کے آنکھوں میں نہیں دِل میں چبھا عید کا چاند

دَر کے اَندر کی طرف گریاں کناں بند خطوط
ایک ویران حویلی پہ رُکا عید کا چاند

دیکھ کر مجھ کو ہنسا ، میں نے کچھ ایسے دیکھا
سال بھر ساتھ مرے روتا رہا عید کا چاند

نیم بسمل ہیں اِسی شہر میں ایسے بھی قیسؔ
جن کے مر جانے کی کرتا ہے دُعا عید کا چاند
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
مجنوں بہت اُداس ہے اور چاند رات ہے
****************************************
مجنوں بہت اُداس ہے اور چاند رات ہے
لیلیٰ کسی کے پاس ہے اور چاند رات ہے

سکتہ ، سَکَت ، اُداسی ، سراسیمگی ، سُکوت
یہ صرف اِقتباس ہے اور چاند رات ہے

اِس بار عید ملنے کا وَعدہ تلک نہیں
ہر آس محوِ یاس ہے اور چاند رات ہے

لوح و قلم پہ دَرد اُتارے گی چاندنی
دِل فاتر الحواس ہے اور چاند رات ہے

قزاق خیمہ زَن ہُوئے شب خون کے لئے
غم گھر کے آس پاس ہے اور چاند رات ہے

بچے تو دوست بچے ہیں ، تُو خوش ہے کس لیے
ہر غم کی چاند اَساس ہے اور چاند رات ہے

اَب تک تو بند اَشکوں پہ باندھا شراب نے
یہ آخری گلاس ہے اور چاند رات ہے

مایوسیاں دَلیل کا سر پھوڑنے لگیں
مجروح تر قیاس ہے اور چاند رات ہے

سوچوں نے زَخم دَھر دِئیے دوزَخ کی ریت پر
چاہت کی بانجھ پیاس ہے اور چاند رات ہے

نیلے فلک کی آنکھوں کا رُومال سُرخ ہے
پورا اُفق اُداس ہے اور چاند رات ہے

کہتے ہیں چاند مجنوں بناتا ہے اور قیسؔ
پہلے سے بد حواس ہے اور چاند رات ہے
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
دِل ، رُوح تک اُداس ہے اور چاند رات ہے
****************************************
دِل ، رُوح تک اُداس ہے اور چاند رات ہے
اِک بدترین یاس ہے اور چاند رات ہے

وُہ آخری ٹرین میں بیٹھا ہُوا ہو گا
پر یہ تو بس قیاس ہے اور چاند رات ہے

دِل کا سکوں ، جگر کا سکوں ، ذِہن کا سکون
سب کچھ تو اُس کے پاس ہے اور چاند رات ہے

بادَل نے تشنگی کو ’’ کئی چند ‘‘ کر دِیا
اُوپر سے من کی پیاس ہے اور چاند رات ہے

آنکھوں میں خون اُترا ہے ، بے آس ہاتھ میں
ٹوٹا ہُوا گلاس ہے اور چاند رات ہے

شاخوں سے بن کھِلے ہی بچھڑنے کا وَقت ہے
ہر غنچہ بدحواس ہے اور چاند رات ہے

’’ شب دیدہ جنگلات ‘‘ سے لاتے ہو جو حنا
اُس میں لہو کی باس ہے اور چاند رات ہے

ٹھنڈی ہَوا کا پَہرا ہے یادوں کے شہر میں
ہر زَخم بے لباس ہے اور چاند رات ہے

اَشکوں نے صف بنائی ہے ’’ شاید ‘‘ بہت طویل
اِک سال کی بھڑاس ہے اور چاند رات ہے

اِک وعدہ اُس کی دید کا ، اِک پڑیا زہر کی
دونوں کی یکساں آس ہے اور چاند رات ہے

کچھ لیلیٰ کو جنون ہے تقسیمِ زَخم کا
کچھ قیسؔ غم شناس ہے اور چاند رات ہے
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
(ع) عید آئی کہے سارا جہاں ، عید مبارَک
****************************************
(ع) عید آئی کہے سارا جہاں ، عید مبارَک
ہم مانیں گے جب تم کہو جاں ، عید مبارَک

(ی) یاروں کو تو فرصت ہی نہیں جشنِ طرب سے
سنتے وُہ بھلا میری کہاں ، عید مبارَک

(د) دِل لے کے جنہیں بھول گئے آپ کبھی کا
کہتے ہیں وُہی سوختہ جاں ، عید مبارَک

(م) مصروفِ تبسم جو کہیں ہو گا اُسی کو
کہتا ہے یہ دِل گریہ کناں ، عید مبارَک

(ب) برسات نگاہوں کی اُتارے تیرا صدقہ
رِہ رِہ کے کہے گھر کی خزاں ، عید مبارَک

(ا) اُس موسمی مخلص کو جو دیکھو تو پرندو !
کہنا تمہیں کہتا تھا فلاں ، عید مبارَک

(ر) روتے نہیں تو دِل کا نشاں تک بھی نہ رہتا
سینے سے یوں اُٹھتا ہے دُھواں ، عید مبارَک

(ک) کہہ دیتے ہیں یار آج تو دُشمن کو بھی تبریک
کیوں تجھ پہ ہیں دو لفظ گراں ، عید مبارَک

(ہ) ہم تو تری آواز کو ترسے ہُوئے ہیں دوست
کہتا ہو بھلے سارا جہاں ، عید مبارَک

(و) ویرانی ء شب کے کسی کونے میں دَبی قیسؔ
ہچکی کا ہُوا وِردِ زَباں ، عید مبارَک
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
بندگلی: غریب کوئی بہت دیر تک اُداس رہا
****************************************
بندگلی: غریب کوئی بہت دیر تک اُداس رہا
کرے تو کیا کرے اور نہ کرے تو کیا نہ کرے
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
(ع) عنبر کہے خوشبو سے اَذاں ، عید مبارَک
****************************************
(ع) عنبر کہے خوشبو سے اَذاں ، عید مبارَک
عید آ گئی اے جانِ جہاں ، عید مبارَک

(ی) یاقوت لبوں پر ترے قربان شگوفے
چندا ہے ترا خنداں نشاں ، عید مبارَک

(د) دیدار جنہیں تیرا ملے اُن کو بھی تبریک
جو تجھ کو جہاں دیکھے ، وَہاں عید مبارَک

(م) ملنے کو تجھے عید کھڑے ہوں سرِ دَربار
دَرویش و شہنشاہِ زَماں ، عید مبارَک

(ب) بوسے ترے رُخسار کے ہُوں تتلی کی عیدی
ہر سمت ہو خوشیوں کا سماں ، عید مبارَک

(ا) اَللہ مری خوشیاں سبھی بھیج دے تجھ کو
غم بھیجے ترے سارے یہاں ، عید مبارَک

(ر) راتیں تری تاباں رہیں ، دِن نورِ دَرخشاں
خوشبو ہو تری اور جواں ، عید مبارَک

(ک) کاسے میں مرے ڈال دے اِک شہد سا بوسہ
اے شیریں دَہَن ، شیریں زَباں ، عید مبارَک

(ہ) ہر پل ترا عشرت کدے میں چین سے گزرے
غنچوں سا ہنسے ، غنچہ دَہاں ، عید مبارَک

(و) وُہ حرف کہاں جوڑیں گے ہر شعر کا پہلا !
کر دیتے ہیں قیسؔ اِس میں نہاں عید مبارَک
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
شرط: ستم گروں کی نئی شرط سن رہے ہو قیسؔ !
****************************************
شرط: ستم گروں کی نئی شرط سن رہے ہو قیسؔ !
’’یہ چاند دیکھ کے ملنے کی بھی دُعا نہ کرے‘‘
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
بھر آئی آنکھوں میں برسات ، عید قاتل ہے
****************************************
بھر آئی آنکھوں میں برسات ، عید قاتل ہے
نہ سو سکا کوئی کل رات ، عید قاتل ہے

بروزِ عید تو غم بھی اَکیلا آتا نہیں
غموں کی آتی ہے بارات ، عید قاتل ہے

جوان کلیاں تو زُلفوں کی ڈولی بیٹھ گئیں
اُجاڑ پھرتے ہیں باغات ، عید قاتل ہے

سریلے قہقہے دِل پر عجیب چٹکی بھریں
لبوں کی رَس بھری سوغات ، عید قاتل ہے

تَنِ گُلاب پہ آنچل سے بھی ظریف لباس
اُبھارے دِل میں خیالات ، عید قاتل ہے

گَلے ملیں گے جو اُن سے بنے گا اُن کا کیا
ہُوئی ہیں خوشبو سے اَموات ، عید قاتل ہے

کہا بڑوں نے جو تیرے ، تم عیدی کیا لو گے؟
میں مانگ بیٹھا تیرا ہاتھ ، عید قاتل ہے

تُو آج خوش ہے تو شعروں پہ میرے ہنس لے مگر
بدلتے رہتے ہیں حالات ، عید قاتل ہے

زَمیں کے نیچے کسی قبر میں یہ سوچتا ہوں
بزرگ کہتے تھے دِن رات ، عید قاتل ہے

ہے مرد ذات پہ عید اِس لیے گراں بھائی !
کہ عید بھی ہے مسمات ، عید قاتل ہے

اِشارہ کافی ہے قیسؔ آج کل کے لڑکوں کو !
ہزار باتوں کی اِک بات ، عید قاتل ہے
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
عدل: سہیلیوں کی طرح ہم سے عید نہ ملیے
****************************************
عدل: سہیلیوں کی طرح ہم سے عید نہ ملیے
خیال کیجیے مَردوں کا حصہ دُگنا ہے
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
لچکتی کلیوں کی برسات ، عید قاتل ہے
****************************************
لچکتی کلیوں کی برسات ، عید قاتل ہے
پھر اُس پہ شوخ اِشارات ، عید قاتل ہے

عروسی غنچوں کی ملکہ نے جب کہا ’’ آداب ‘‘
تو میں تو مر گیا کل رات عید قاتل ہے

جوان شاعری گلیوں میں دَندنانے لگی
تھرکتی غزلوں کی بہتات عید قاتل ہے

کسر مہینے کی اِک دِن میں ہی کہیں شیطان
کرے نہ پوری ، ہیں خدشات ، عید قاتل ہے

بدن کی سیج ہے غنچوں کا چمچماتا چمن
لباس ، لمس کے باغات عید قاتل ہے

جو بے زَبان ہیں ، قربان اُنہی کو ہونا ہے
سو شہر ہوں کہ مضافات عید قاتل ہے

دَوپٹہ ، چُوڑِیاں ، جھمکے ، حنا ، ہنسی ، خوشبو
ہیں اَپنے قتل کے آلات ، عید قاتل ہے

کہیں کہیں ہو تو اِنسان بچ بھی جائے جناب
گلی گلی میں لگی گھات ، عید قاتل ہے

گزار دیتے ہیں وُہ عید ہوتوں سوتوں میں
ہمیں تو دیتے ہیں لمحات عید قاتل ہے

وُہ صرف عورتوں سے عید مل کے بیٹھ گئے
مسل کے رَکھ دی مساوات ، عید قاتل ہے

اُودھم مچاتے ہیں کیوں چاند دیکھ کر ہم قیسؔ
وُہ کہنے آتا ہے: ’’ حضرات ، عید قاتل ہے ‘‘
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
زَخم اَپنانا کتنا مشکل ہے
****************************************
زَخم اَپنانا کتنا مشکل ہے
چیخ دَفنانا کتنا مشکل ہے

کتنی آساں ہے صبر کی تلقین
صبر آ جانا کتنا مشکل ہے

عید کے دِن مجھے ہُوا معلوم
خوش نظر آنا کتنا مشکل ہے

بھیک دے دیتا ہُوں یہ سوچ کے میں
ہاتھ پھیلانا کتنا مشکل ہے

کتنی آساں تھی فیصلے کی گھڑی
آہ ! پچھتانا کتنا مشکل ہے

آپ نے بھی کبھی کیا محسوس ؟
بات پلٹانا کتنا مشکل ہے

موت تک جاگنا ہے سُولی پر
دِل کو بہلانا کتنا مشکل ہے

کاش سمجھانے والے بھی سمجھیں
خود کو سمجھانا کتنا مشکل ہے

آہ ! ڈولی نما جنازے پر
پھول برسانا کتنا مشکل ہے

مجھ پہ بیتی ہے مجھ سے پوچھو جناب !
لاش گھر لانا کتنا مشکل ہے

قیس بننے کے بعد جانا قیس
قیس بن جانا کتنا مشکل ہے
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
عید اور چاند سے متعلق اشعار
****************************************
عید اور چاند سے متعلق اشعار
میری دیگر کتب سے انتخاب
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
چاند کو دیکھ کے ملنے کی دُعا نہ چھُوٹے
****************************************
چاند کو دیکھ کے ملنے کی دُعا نہ چھُوٹے
ہاتھ گر نیچے کریں ’’ پلکیں‘‘ اُٹھا کر رَکھنا

*
(شہزاد قیس کی کتاب’’ دِسمبر کے بعد بھی‘‘ سے انتخاب)
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
ہر ایک ہاتھ پہ چھَپ جاتا تھا کیو فار قیسؔ
****************************************
ہر ایک ہاتھ پہ چھَپ جاتا تھا کیو فار قیسؔ
میں چاند رات پہ منہدی لگایا کرتا تھا

*
(شہزاد قیس کی کتاب’’ نمکیات‘‘ سے انتخاب )
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
وُہ چاند عید کا اُترے جو دِل کے آنگن میں
****************************************
وُہ چاند عید کا اُترے جو دِل کے آنگن میں
ہم عید روز منائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

*
(شہزاد قیس کی کتاب’’ لیلٰی‘‘ سے انتخاب)
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
تمام رات فقط چاند دیکھتے رہنا
****************************************
تمام رات فقط چاند دیکھتے رہنا
تمہارا کام کسی دِن تمام کر دے گا

*
(شہزاد قیس کی کتاب’’ لیلٰی‘‘ سے انتخاب)
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
سنا ہے کروٹیں گنتا ہے چاند ، راتوں کو
****************************************
سنا ہے کروٹیں گنتا ہے چاند ، راتوں کو
کئی ستارے تو چھت پر اُتر کے دیکھتے ہیں

*
(شہزاد قیس کی کتاب’’ لیلٰی‘‘ سے انتخاب)
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
سنا ہے عید کا چاند اُن کی راہ تکتا ہے
****************************************
سنا ہے عید کا چاند اُن کی راہ تکتا ہے
خوشی کے دیپ ، قدم خوش نظر کے دیکھتے ہیں

*
(شہزاد قیس کی کتاب’’ لیلٰی‘‘ سے انتخاب)
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
چاند کو ڈُھونڈنے ہم سارے نکلتے ہیں مگر
****************************************
چاند کو ڈُھونڈنے ہم سارے نکلتے ہیں مگر
ڈُھونڈنے کس کو نکلتا ہے یہ مہتاب جناب

*
(شہزاد قیس کی کتاب’’ لیلٰی‘‘ سے انتخاب)
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
قیسؔ کل شب ملایا اُنہیں چاند سے
****************************************
قیسؔ کل شب ملایا اُنہیں چاند سے
چاندنی اُن سے شہ مات کھانے لگی

*
(شہزاد قیس کی کتاب’’ لیلٰی‘‘ سے انتخاب)
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
ایک ہی خواہش کا دورِ پُرسُکوں
****************************************
ایک ہی خواہش کا دورِ پُرسُکوں
چاند راتوں کی دُعا ، یادَش بخیر

*
(شہزاد قیس کی کتاب’’ لیلٰی‘‘ سے انتخاب)
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
چودہویں کا چاند ، نصفِ دِن کا آفتاب
****************************************
چودہویں کا چاند ، نصفِ دِن کا آفتاب
چندے آفتاب ، چندے ماہتاب ہے

*
(شہزاد قیس کی کتاب’’ لیلٰی‘‘ سے انتخاب)
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
چاند یاقوت لب کا آئے نظر
****************************************
چاند یاقوت لب کا آئے نظر
عید میں حشر تک مناؤں گا

*
(شہزاد قیس کی کتاب’’ لیلٰی‘‘ سے انتخاب)
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
ذِرا سی قوس رُخ کی رِہ گئی پردے سے شب باہر
****************************************
ذِرا سی قوس رُخ کی رِہ گئی پردے سے شب باہر
ہلالِ عید بولا چاند کا دیدار ہے لیلیٰ

*
(شہزاد قیس کی کتاب’’ لیلٰی‘‘ سے انتخاب)
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
گیسوؤں والا چاند بھی ہو گا
****************************************
گیسوؤں والا چاند بھی ہو گا
چلتا پھرتا گلاب دیکھا ہے

*
(شہزاد قیس کی کتاب’’ لیلٰی‘‘ سے انتخاب)
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
کھلونے عید پہ جگنو کو لے کے دیتے ہیں
****************************************
کھلونے عید پہ جگنو کو لے کے دیتے ہیں
تو تتلیوں کو قبائیں ، وُہ اِتنے نازُک ہیں

*
(شہزاد قیس کی کتاب’’ لیلٰی‘‘ سے انتخاب)
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
عید پر آنے والے کیا جانیں
****************************************
عید پر آنے والے کیا جانیں
کس نے کیسے بسر یہ سال کیا

*
(شہزاد قیس کی کتاب’’ لیلٰی‘‘ سے انتخاب)
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
تم آئے کہ خوشیوں پہ عید آ گئی
****************************************
تم آئے کہ خوشیوں پہ عید آ گئی
تم آئے کہ خنداں ہلال آ گیا

*
(شہزاد قیس کی کتاب’’ لیلٰی‘‘ سے انتخاب)
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
جگ منائے گا عید ، دیکھ کے چاند
****************************************
جگ منائے گا عید ، دیکھ کے چاند
میں تجھے دیکھ کر مناؤں گا

*
(شہزاد قیس کی کتاب’’ لیلٰی‘‘ سے انتخاب)
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
وُہ آئیں بام پہ تو پانچ عیدیں پکی ہیں
****************************************
وُہ آئیں بام پہ تو پانچ عیدیں پکی ہیں
وُہ چار چاند لگائیں ، حسین اِتنے ہیں

*
(شہزاد قیس کی کتاب’’ لیلٰی‘‘ سے انتخاب)
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عید از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisEid.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
۔ اختتام ۔ مجموعہ کلام "عید" ۔
****************************************
۔ اختتام ۔ مجموعہ کلام "عید" ۔
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عید سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس


****************************************
((End Text))
****************************************
****************************************
((Notice))
Updated On: 24-Sep-16 3:41:23 PM
Release Date: 23-Feb-16 7:03:09 PM
****************************************

****************************************
((Begin Text))
****************************************

****************************************
شہزادقیس کی جانب سے خوش آمدید
****************************************
شہزادقیس کی جانب سے خوش آمدید
مجموعہ کلام #غزل میں شامل اشعار
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#غزل" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#غزل از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#غزل از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisGhazal.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#غزل" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
اِنتساب
****************************************
اِنتساب
نثری نظموں پر وقت ضائع کرنے والوں کے نام
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#غزل" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
شاعری کے فلک پہ بام غزل
****************************************
شاعری کے فلک پہ بام غزل
شعر کا آخری مقام غزل

اَوج ہے بندش و تخیل کی
قافیے کا ہے اِحترام غزل

اِک سمندر کو کوزہ بند کرو
نام تو طے ہے رَکھ دو نام غزل

صِنفِ نازُک ہے اَدبی صنفوں کی
نازُک اَندام ، خوش کلام غزل

آپ ، صاحب ، حُضُور ، قبلہ ، جناب
اُردُو تہذیب کو سلام غزل

سات سو بے نظام نظموں سے
اَعلیٰ ہے ایک خوش نظام غزل

نثری نظموں کو گنگنا کے دِکھا !
یا مجھے لکھ کے دے اِک عام غزل

قلتِ وَقت بڑھ رہی ہے اور
مختصر بات کی اِمام غزل

نام ’’ آزاد نظم ‘‘ ، دیکھا کبھی ؟
اَن گنت لڑکیوں کا نام ’’ غزل ‘‘

سب غزل دُشمنوں نے تھک کے کہا
ساقیا چھیڑ آج شام غزل

ہر غزل پر قصیدہ لکھو قیسؔ
اور قصیدے کا اِختتام غزل
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#غزل" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#غزل از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#غزل از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisGhazal.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#غزل" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
چار دِن تو خوشی منانی تھی
****************************************
چار دِن تو خوشی منانی تھی
زِندگی ختم ہو ہی جانی تھی

راجا ، رانی تو کل کے بچے ہیں
داستاں وَقت سے پرانی تھی

موت کا پھول کھلنے سے پہلے
زِندگی ، بے سُری کہانی تھی

رُوح کا ہم طواف کرتے رہے
جسم دَراَصل زِندگانی تھی !

مجھ کو پاگل بنا رہے تھے لوگ
میں نے مجنوں کی بات مانی تھی

خواب کا بچہ کس گھڑی ٹُوٹا
جب مجھے پنکھڑی چبانی تھی

تُو نے مرہم لگا کے ظلم کیا !
میرے پاس اِک یہی نشانی تھی

موت نے جلدبازی کی ورنہ
نیند سُولی پہ آ ہی جانی تھی

جان کی گر اَمان مل جاتی
اِک غزل کان میں سنانی تھی

میں رَواں شعر خوب لکھتا تھا
اُس کی ہر بات میں روانی تھی

قیس گر میر سی بھی کہتے غزل
لیلیٰ نے تھوڑی گنگنانی تھی !
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#غزل" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#غزل از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#غزل از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisGhazal.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#غزل" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
عہدِ مسجود میں قیام غزل
****************************************
عہدِ مسجود میں قیام غزل
تجھ کو پہنچے مرا سلام غزل

لفظ کو مرتبے پہ رَکھنا ہے
بے مثال عدل کا نظام غزل

شاہ اَپنا قصیدہ آپ پڑھے
پڑھ رہے ہیں سبھی عوام غزل

لفظ متضاد مل کے رہتے ہیں
تین تلواروں کی نیام غزل

بادشاہت کو اِس سے خطرہ ہے
تم سمجھتے ہو جس کو عام غزل

واعظِ شہر گر سمجھ سکتا
دوڑ کر کہتا ، اَلحرام غزل

گنجِ مخفی ہے یہ رِہائی کا
عقل مندوں کی ہے اِمام غزل

سنگِ مرمر کا پھول ، تاج مَحَل
عشق کا حُسنِ اِہتمام غزل

دار منصور کو چڑھا دو گے !
حشر تک لے گی اِنتقام غزل

حسن کے آسمان ، حکم چلا
لکھ رہا ہے ترا غلام غزل

قیسؔ ! جو یہ غزل پسند کرے
لکھو اُس خوش نظر کے نام غزل !
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#غزل" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#غزل از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#غزل از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisGhazal.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#غزل" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
فُضول بیٹھ کے صفحات بھرتا رہتا ہُوں
****************************************
فُضول بیٹھ کے صفحات بھرتا رہتا ہُوں
میں اَپنے آپ کو اِلہام کرتا رہتا ہُوں

اَگر ، مگر ، نہیں ، ہرگز کی کند قینچی سے
اَنوکھے خوابوں کے پَر ، شَر کترتا رہتا ہُوں

میں سانس نگری کا بے حد عجیب مالی ہُوں
لگائے پودوں کے بڑھنے سے ڈَرتا رہتا ہُوں

نجانے کس نے اُڑا دی کہ ’’ دِن معین ہے ‘‘۔
یقین مانیے میں روز مرتا رہتا ہُوں

مرے وُجود کو اَشکوں نے گوندھ رَکھا ہے
ذِرا بھی خشک رَہوں تو بکھرتا رہتا ہُوں

دُعا کو ہاتھ اُٹھاتا تو اُس پہ حرف آتا
اَبھی تو سستی پہ اِلزام دَھرتا رہتا ہُوں

کسی کے حُسن کا ہے رُعب اِس قَدَر مجھ پر
میں خواب میں بھی گلی سے گزرتا رہتا ہُوں

بہت سے شعروں کے آگے لکھا ہے ’’ نامعلوم ‘‘۔
بہت سے شعر میں کہہ کر مکرتا رہتا ہُوں

اُدھورے قصے کئی کاندھا مانگتے ہیں مرا
میں کھنڈرات میں اَکثر ٹھہرتا رہتا ہُوں

تمام لوگ مرا آئینہ ہیں ، اُن کے طفیل
میں اَپنی ذات کے اَندر اُترتا رہتا ہُوں

بہت سے کاموں میں خود کار ہو گیا ہُوں قیسؔ
میں خود کو کہہ کے ’’ سدھر جا ‘‘ ، سدھرتا رہتا ہُوں
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#غزل" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#غزل از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#غزل از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisGhazal.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#غزل" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
مُرشِدِ رُشد کا کلام غزل
****************************************
مُرشِدِ رُشد کا کلام غزل
بحرِ عرفانِ جاں کا جام غزل

حُسن کے ’’ دِل ‘‘ میں حُسن مخفی ہے
غیب کا دیتی ہے پیام غزل

خالقِ حُسن کی نزاکت پر
سوچتے رِہنے کا مقام غزل

’’ کُن ‘‘ پہ ہی ’’ واہ واہ ‘‘ اِتنی ہوئی
روزِ محشر ہُوئی تمام غزل

معنویت کی ساقی ء برتر
کہنہ مشقی کا تازہ جام غزل

شعر دَر شعر بحرِ واحد سے
قصرِ توحید کی غلام غزل

آدمی تو شجر سے اَفضل ہے !
فکرِ منصور کو سلام غزل

روشنی ، دِل کے قلب سے پھوٹے
ساقی ء حق کا فیض عام غزل

گریۂ نیم شب کی پالنہار
بے رِیا عبد کا قیام غزل

پیرِ رُومی کی اِقتدا میں پڑھی
نیستانوں میں روز شام غزل

سجدے میں جا کے قیسؔ نے لکھی
جو رُکوع میں تھے اُن کے نام غزل
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#غزل" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#غزل از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#غزل از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisGhazal.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#غزل" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
اَگرچہ شہر میں کُل سو ، پچاس ہوتے ہیں
****************************************
اَگرچہ شہر میں کُل سو ، پچاس ہوتے ہیں
ذَہین لوگ ترقی کی آس ہوتے ہیں

لکیر کے ہیں فقیر اَوّل آنے والے سبھی
ذَہین بچے ذِرا بدحواس ہوتے ہیں

جو اِن کو کچھ کہے ، خود آشکار ہوتا ہے
ذَہین ، پانی کا آدھا گلاس ہوتے ہیں

’’کسی نے کیوں کیا ایسا‘‘ پہ خوب سوچتے ہیں
ذَہین ، پائے کے مردُم شناس ہوتے ہیں

خوشی کو جانتے ہیں غم کا ’’ حاصلِ ضمنی ‘‘
ذَہین لوگوں کو غم خوب راس ہوتے ہیں

ذَہین ، دُنیا کو ظاہر پرست مانتے ہیں
سو جب ضَروری لگے خوش لباس ہوتے ہیں

یہ سادہ لوح نظر آنے کے بھی ماہر ہیں
ذَہین چہرے بڑے بے قیاس ہوتے ہیں

ذَہین تخت نشینی کا سوچتے بھی نہیں
یہ تخت و تختے کے بس آس پاس ہوتے ہیں

جو اِن کو روندنے جاتا ہے ، ڈُوب جاتا ہے
ذَہین ، گہرے سمندر پہ گھاس ہوتے ہیں

یہ چونکہ طفل تسلی میں کم ہی آتے ہیں
ذَہین لوگ زِیادہ اُداس ہوتے ہیں

ذَہین ، مجنوں بھی بن سکتے ہیں یہ سوچ کے قیس
کہ ’’ کر گزرنے ‘‘ کی مجنوں اَساس ہوتے ہیں
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#غزل" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#غزل از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#غزل از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisGhazal.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#غزل" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
سُر بھری فاختہ کا نام غزل
****************************************
سُر بھری فاختہ کا نام غزل
پھول کا سرسری سلام غزل

گُل پہ مصراع اُتارا خوشبو کا
پنکھ پر تتلی کے تمام غزل

بادَلوں نے لکھی ہے رِم جھِم سے
غسل کرتی کلی کے نام غزل

کلمہ پڑھ کر اُترتی کرنوں نے
جھیل پر لکھی نور فام غزل

اَپنی محنت پہ مسکراتا ہے
باغباں کی سنہری شام غزل

مادَرِ عشق ، بنتِ حُسن و جمال
خواہرِ جاں ، دَھڑکتا جام غزل

ایک پنچھی شجر سے پیار کرے
یعنی محسن کا اِحترام غزل

رات ، جگنو ، گلاب ، اَبر ، بہار
دِل ترے ذوق کا غلام غزل

عاشقوں کی دُعائے خمسہ یہی
یار ، تنہائی ، جام ، شام ، غزل

ایک تتلی یوں ہولے ہولے اڑی
جیسے لے جاتی ہے سلام غزل

قیسؔ کو گُل نے مسکرا کے کہا
باغ میں رات دِن قیام غزل
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#غزل" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#غزل از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#غزل از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisGhazal.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#غزل" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
پرانے گھر کو گرایا تو باپ رونے لگا
****************************************
پرانے گھر کو گرایا تو باپ رونے لگا
خوشی نے دِل سا دُکھایا تو باپ رونے لگا

یہ رات کھانستے رہتے ہیں کوفت ہوتی ہے
بہو نے سب میں جتایا تو باپ رونے لگا

کئی عزیزوں کے مرنے پہ باپ رویا نہیں
جو آج نہ رہا تایا تو باپ رونے لگا

اَذان بیٹے کے کانوں میں دے رہا تھا میں
اَذان دیتے جو پایا تو باپ رونے لگا

جو اَمی نہ رہیں تو کیا ہُوا کہ ہم سب ہیں
جواب بن نہیں پایا تو باپ رونے لگا

ہزار بار اُسے روکا میں نے سگریٹ سے
جو آج چھین بجھایا تو باپ رونے لگا

بہن رَوانگی سے پہلے پیار لینے گئی
جو کچھ بھی دے نہیں پایا تو باپ رونے لگا

بٹھا کے رِکشے میں ، کل شب رَوانہ کرتے ہُوئے
دیا جو میں نے کرایہ تو باپ رونے لگا

طبیب کہتا تھا پاگل کو کچھ بھی یاد نہیں
گلے سے میں نے لگایا تو باپ رونے لگا

بہت سی لاشوں میں جذبے دَھڑکتے رِہتے ہیں
سر اُس کا میں نے دُھلایا تو باپ رونے لگا

نہ جانے قیسؔ نے کس جذبے سے یہ کیا لکھا
کہ جونہی پڑھ کے سنایا تو باپ رونے لگا
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#غزل" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#غزل از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#غزل از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisGhazal.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#غزل" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
حسین باتوں کا کب اِنتقال ہوتا ہے
****************************************
حسین باتوں کا کب اِنتقال ہوتا ہے
جو شعر دِل سے لکھو لازَوال ہوتا ہے

حقیقی شاعری حق الیقیں سے ہوتی ہے
تلاشِ فکر سے بس قیل و قال ہوتا ہے

ہمارے جیسوں کو دُنیا سمجھتی ہے شاعر
جب اِہلِ شعر کا قحط الرِجال ہوتا ہے

بنا عطا کے بڑے بھائی کچھ نہیں ملتا
کرم کی شرط پہ کسبِ کمال ہوتا ہے

جہانِ شعر کو صاحب خیالی مت جانو
کہ کُن سے پہلے سبھی کچھ خیال ہوتا ہے

خطیب مخرجِ زیر و زَبر میں اَٹکا ہُوا
بِلال عشق کے بل پر بِلال ہوتا ہے

صنم تراش سے کہہ دو خلوص کم کر دے
خدا پرستوں کا جینا مُحال ہوتا ہے

فرشتے دِل نہیں رَکھتے ، یقین آتا ہے
کسی حسینہ کا جب اِنتقال ہوتا ہے

بدن شراب میں دُھویا ہُوا طلسمِ خیال
کہ جیسے نیند میں کم سن غزال ہوتا ہے

دُعا ہے عشق مرا ، تیری رُوح تک پہنچے
یہی نشاط فقط لازَوال ہوتا ہے

بضد ہیں حضرتِ واعظ تو ، توبہ کر لو قیسؔ
کہ مرتے وَقت سبھی کچھ حلال ہوتا ہے
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#غزل" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#غزل از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#غزل از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisGhazal.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#غزل" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
کام غم سے کمال لیتے ہیں
****************************************
کام غم سے کمال لیتے ہیں
رَنج غزلوں میں ڈھال لیتے ہیں

نام کا بھی نہیں کوئی ہمدرد
اور ہم دَرد پال لیتے ہیں

روز اِک سانحے کی برسی پر
دِل ، لہو میں اُبال لیتے ہیں

کچھ نمک خوار جب دِکھائی دیں
زَخم ، چاقو نکال لیتے ہیں

شاعری یعنی خوش فہم مل کر
خواب میں حصہ ڈال لیتے ہیں

دیکھ کر اُن کو اِنکشاف ہُوا
پھول بھی سر پہ شال لیتے ہیں

وُہ وَہاں سے بدن اُٹھا لائے
ہم جہاں سے خیال لیتے ہیں

اُن سے آنچل بھی کم سنبھلتا ہے
لوگ خود کو سنبھال لیتے ہیں

یاد بازار میں وُہ جب آئیں
سیب ہم خوب لال لیتے ہیں

ایک چومی کلی چرا کے ہم
بوسہ قدرے حلال لیتے ہیں

پڑھنے والے ہیں قیسؔ اِتنے شریر
اَپنا مطلب نکال لیتے ہیں
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#غزل" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#غزل از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#غزل از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisGhazal.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#غزل" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
۔ اختتام ۔ مجموعہ کلام "غزل" ۔
****************************************
۔ اختتام ۔ مجموعہ کلام "غزل" ۔
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#غزل" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس


****************************************
((End Text))
****************************************
****************************************
((Notice))
Updated On: 24-Sep-16 3:41:31 PM
Release Date: 20-Mar-16 1:16:20 AM
****************************************

****************************************
((Begin Text))
****************************************

****************************************
شہزادقیس کی جانب سے خوش آمدید
****************************************
شہزادقیس کی جانب سے خوش آمدید
مجموعہ کلام #عرفان میں شامل اشعار
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عرفان سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عرفان از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عرفان از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisIrfan.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عرفان سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
اِنتساب
****************************************
اِنتساب
سلسبیلِ کُن کے نام
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عرفان سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
سرحد: آگے بڑھے تو پر نہ رہیں گے جناب کے
****************************************
سرحد: آگے بڑھے تو پر نہ رہیں گے جناب کے
سچے فرشتے نے کسی پروانے سے کہا
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عرفان سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عرفان از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عرفان از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisIrfan.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عرفان سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
عشق جب عینِ ذات ہو جائے
****************************************
عشق جب عینِ ذات ہو جائے
خالقِ معجزات ہو جائے

عُمر بھر چُپ رہو تو ممکن ہے
کُن کہو کائنات ہو جائے

سجدۂ عشق میں ’’ فرشتہ ‘‘ بھی
عقل برتے تو مات ہو جائے

عقل کا زَن مرید عشق بنے !
کس قَدَر واہیات ہو جائے

دِل کی پاتال سے اَگر پھُوٹے
اَشک آبِ حیات ہو جائے

عشق جو شرط کے بغیر کرے
ساقی ء شَش جِہات ہو جائے

حادِثوں پر ہُوں راضی رَبِ کریم
وَسوسوں سے نجات ہو جائے

جھیل آنکھوں میں ڈُوبنے نکلوں
نیم رَستے میں رات ہو جائے

حُسن کو مامتا نہ نرم کرے
لات ، عُزّیٰ ، مَنات ہو جائے

ریت پر گر نہ لکھے مجنوں نام
قِلّتِ کاغذات ہو جائے

قیسؔ پر ہنسنے والو رَب نہ کرے !
آپ کے ساتھ ہاتھ ہو جائے
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عرفان سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عرفان از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عرفان از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisIrfan.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عرفان سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
ہر خوشی کو زَوال ہے بابا
****************************************
ہر خوشی کو زَوال ہے بابا
ایک غم کا سوال ہے بابا

جس کسی کو بھی گھِن نہیں آتی
اُس پہ دُنیا حلال ہے بابا

دانے دانے پہ نام کا مطلب
دانے دانے پہ جال ہے بابا

چیونٹیاں بھی ذَخیرہ کرتی ہیں
بانٹنے میں کمال ہے بابا

صرف اَچھے خیال سوچا کرو
یہ جہان اِک خيال ہے بابا

ایک دِن رَکھنے سے ہی ظاہر ہے
عشق اَب بھیڑ چال ہے بابا

آرزُو میں بھی نقل کرتے ہیں
سخت قحط الرِجال ہے بابا

عزمِ اِبلیس کی خبر ہے مجھے
تیرا بچنا محال ہے بابا

ایک جمِ غفیر جسموں کا
آدَمی خال خال ہے بابا

بولنے والے اِس لیے چُپ ہیں
کان والوں کا کال ہے بابا

قیسؔ نے جس کو دُکھ سے کاٹ دِیا
شعر وُہ بے مثال ہے بابا
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عرفان سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عرفان از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عرفان از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisIrfan.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عرفان سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
بات گر کھُل کے کروں ، لوگ خفا ہوتے ہیں
****************************************
بات گر کھُل کے کروں ، لوگ خفا ہوتے ہیں
اِہلِ عرفان کے دِن رات جدا ہوتے ہیں

مستی ء عشق میں بھی راہ دِکھا سکتے ہیں
غش کی حالت میں بھی یہ قبلہ نما ہوتے ہیں

شاہ بھی آئیں تو با اِذنِ قلندر آئیں
دَر پہ ’’ بے دَر ‘‘ کے شہنشاہ ، گدا ہوتے ہیں

اِس لیے دے نہیں پاتے کسی گالی کا جواب
وَقتِ دُشنام بھی یہ محوِ دُعا ہوتے ہیں

اِن سے اِنکار تو ہونا نہیں گر مانگے کوئی
اِس لیے حُلیے میں صد چاک قبا ہوتے ہیں

نَقص تنگ نظری میں ہوتا ہے ، دَریچوں میں نہیں
آنکھ کھولو تو دَریچے سبھی وا ہوتے ہیں

جام ہے جتنا ، سمندر بھی اُٹھا لو اُتنا
دِل بڑا ہو تو کرشمے بھی عطا ہوتے ہیں

اور اِلزام لگے پر یہ کوئی کہہ نہ سکا
کہ گدا خواہشِ دُنیا میں فنا ہوتے ہیں

اِس لیے سنتا ہے اَللہ بھی دَرویشوں کی
سانس دَر سانس یہ خالق کی رِضا ہوتے ہیں

پھول کی لاش سے بھی خوشبو ہی آتی ہے جناب
رَنگ تتلی کے کتابوں میں سدا ہوتے ہیں

شانِ دَرویش کے کیا کہنے ، یہ مر کر بھی قیسؔ
ایک دُنیا کے لیے راہِ بقا ہوتے ہیں
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عرفان سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عرفان از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عرفان از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisIrfan.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عرفان سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
خدا سے عشق کا ہر راستہ مقدس ہے
****************************************
خدا سے عشق کا ہر راستہ مقدس ہے
جہاں جہاں ہے خدا وُہ جگہ مقدس ہے

پجارِیوں سے تو دُگنے فرشتے بیٹھے ہیں
سو دو تہائی سہی ، بُت کدہ مقدس ہے

حرم ، کلیسا ، معابد پہ اِختلاف ہے پر
ہر اِہلِ دِل کے لیے آگرہ مقدس ہے

بہت سے متقی لوگوں کے قرب سے جانا
کہ اَصل میں تو فقط فاصلہ مقدس ہے

بھُلانا حق کو ، نہ مطلوب ہے ، نہ ممکن ہے
جو سست کر دے اَنا ، وُہ نشہ مقدس ہے

جو پانی گدلا ہو اُس کے نسب کو کیا کرنا
جو آج اَعلیٰ ہے وُہ سلسلہ مقدس ہے

مصیبتیں بھی خدا کے کرم کا مظہر ہیں
ہماری زِندگی کی ہر گرہ مقدس ہے

پکے پکائے خیالات ، جھوٹ بانٹتا ہے
جو سوچ کاشت کرے وُہ شبہ مقدس ہے

اُصولی بات پہ ڈَٹ جانا بھی فضیلت ہے
شکست اَپنی جگہ ، فیصلہ مقدس ہے

جہان آئینہ ہے ، آئینہ خبیث نہیں
جو پاک دیکھے تو ہر آئینہ مقدس ہے

بدن میں شکر کا محشر بپا ہو جس سے قیسؔ
زَمانہ کچھ بھی کہے وُہ مزہ مقدس ہے
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عرفان سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عرفان از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عرفان از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisIrfan.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عرفان سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
چراغ لے کے ستارے تلاش کرتے ہیں
****************************************
چراغ لے کے ستارے تلاش کرتے ہیں
خدا کے بعد سہارے تلاش کرتے ہیں !

کسی عزیزِ دِل و جاں کی ہے تلاش ہمیں
ہمیں عزیز ، ہمارے تلاش کرتے ہیں

گھٹا ، پرندے ، ہَوا ، تتلیاں ، دَھنک ، خوشبو
تمہیں یہ سارے کے سارے تلاش کرتے ہیں

ہر ایک چیز کے جوڑے ہیں تو ہمارے صنم
خدا نے ہوں گے اُتارے ، تلاش کرتے ہیں

خلوص ڈُھونڈنے سے پہلے خود بنو مخلص
خلوص اِس طرح پیارے تلاش کرتے ہیں

وَفا کو ترسے ہوئے ، خوش گمان ، سادہ دِل
صراحتوں میں اِشارے تلاش کرتے ہیں

ستارے رہنے دے ، گھر لوٹ آ مرے جگنو
تجھے اَندھیروں کے مارے تلاش کرتے ہیں

سُکونِ قلب کی خواہش ہے وُہ بھی دُنیا میں
بھنور کے ’’ دِل ‘‘ میں کنارے تلاش کرتے ہیں

عُروجِ دُنیا سے دِل بجھ گیا ہے وَرنہ ہمیں
قسم خدا کی ستارے تلاش کرتے ہیں

جو سابقونِ رہِ عشق تھے ، فراق کے دِن
انہوں نے کیسے گزارے ، تلاش کرتے ہیں

زَمیں پہ ہر کوئی بے آسرا ہے ہم سا قیسؔ
زَمیں کے نیچے سہارے تلاش کرتے ہیں
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عرفان سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#عرفان از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#عرفان از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisIrfan.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عرفان سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
۔ اختتام ۔ مجموعہ کلام "عرفان" ۔
****************************************
۔ اختتام ۔ مجموعہ کلام "عرفان" ۔
سدا خوش رہیے ۔ شہزادقیس
۔ #شہزادقیس کی کتاب #عرفان سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس


****************************************
((End Text))
****************************************
****************************************
((Notice))
Updated On: 24-Sep-16 3:41:39 PM
Release Date: 29-Apr-15 8:48:16 AM
****************************************

****************************************
((Begin Text))
****************************************

****************************************
شہزادقیس کی جانب سے خوش آمدید
****************************************
شہزادقیس کی جانب سے خوش آمدید
مجموعہ کلام انقلاب میں شامل اشعار
۔ #شہزادقیس کی کتاب #انقلاب سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#انقلاب از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#انقلاب از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisInqilab.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #انقلاب سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
اِنتساب
****************************************
اِنتساب
قابیل آباد کے مظلوم ظالموں کے نام
۔ #شہزادقیس کی کتاب #انقلاب سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
اساس: قتل سے بھائی کے شروع جو ہو
****************************************
اساس: قتل سے بھائی کے شروع جو ہو
ایسی دُنیا سے کیا توقع کریں
۔ #شہزادقیس کی کتاب #انقلاب سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#انقلاب از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#انقلاب از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisInqilab.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #انقلاب سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
جب بھی منظوم ، اِک نظام کرو
****************************************
جب بھی منظوم ، اِک نظام کرو
بوڑھی سوچوں کا اِنہدام کرو

وَقت ، ساکِن دِکھائی دے گا تمہیں
وَقت کی آنکھ میں قیام کرو

بادشاہت کو آئینی کر کے
اِس ڈَرامے کا اِختتام کرو

تختِ شاہی کی شرط ہوتی کاش!
ایک شب قبر میں قیام کرو

چھین لو ، ٹھیک سوچنے کا فن
پھر بھلے بونوں کو اِمام کرو

نیند میں چل رہے ہیں ویسے بھی
دائروں میں اِنہیں غلام کرو

لوٹ کر پھر یہیں نہ آنا پڑے
زِندگی سوچ کر تمام کرو

مُنّے کو غنڈہ کہہ کے نہ چومو
ظلم کی پوری روک تھام کرو

آدمی پن نے خود کشی کر لی
خون رونے کا اِہتمام کرو

چُوڑیاں رِہ گئیں بہت پیچھے
اَب تو گھنگھرو کا اِنتظام کرو

ذِہن دَر ذِہن دیپ جل اُٹھیں
قیس کی شاعری کو عام کرو
۔ #شہزادقیس کی کتاب #انقلاب سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#انقلاب از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#انقلاب از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisInqilab.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #انقلاب سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
ہم خواب کو شرمندۂ تعبیر کریں گے
****************************************
ہم خواب کو شرمندۂ تعبیر کریں گے
اور اِس کے لیے قلب کی تطہیر کریں گے

تم دیکھنا اِک دِن یہ فلک بوس عمارات
کردار کے بَل بوتے پہ تسخیر کریں گے

حق بات پہ کر دو گے جو پابندِ سَلاسِل
زَنجیر کی جھنکار سے تقریر کریں گے

ہم جیسے نہتے ہُوئے ایوانوں پہ قابض
تو عدل کی زَنجیر کو شمشیر کریں گے

دَستار کو ہاتھوں سے سنبھالیں گے یہ واعظ !
جب اِہلِ جُنوں ، عشق کی تفسیر کریں گے

ہر شخص پھر اِحرام کی جرأت نہ کرے گا
ہم شیش مَحَل ، کعبے میں تعمیر کریں گے

اِک چاند کو ہاتھوں پہ اُترتے ہوئے دیکھا
کیا آپ مرے خواب کی تعبیر کریں گے

حیرت زَدہ ہو جائیں گے دو عکس پرانے
تصویر کے جب سامنے تصویر کریں گے

اَن پڑھ بھی پکار اُٹھے گا ، مکتوب ہے سچا
ہم ایسے سُرخ رَنگ سے تحریر کریں گے

ناکامی کا اِمکان بھی ممکن نہ رہے گا
تقدیر سے مل کر کوئی تدبیر کریں گے

نفرت کی نُمائش ہے شہنشاہی وَطیرہ
ہم قیس کے دیوان کی تشہیر کریں گے
۔ #شہزادقیس کی کتاب #انقلاب سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#انقلاب از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#انقلاب از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisInqilab.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #انقلاب سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
اَبر کے چاروں طرف باڑ لگا دی جائے
****************************************
اَبر کے چاروں طرف باڑ لگا دی جائے
مفت بارِش میں نہانے پہ سزا دی جائے

سانس لینے کا بھی تاوان کیا جائے وُصول
سب سِڈی دُھوپ پہ کچھ اور گھٹا دی جائے

رُوح گر ہے تو اُسے بیچا ، خریدا جائے
وَرنہ گودام سے یہ جنس ہٹا دی جائے

قہقہہ جو بھی لگائے اُسے بِل بھیجیں گے
پیار سے دیکھنے پہ پرچی تھما دی جائے

تجزیہ کر کے بتاؤ کہ منافع کیا ہو
بوندا باندی کی اَگر بولی چڑھا دی جائے

آئینہ دیکھنے پہ دُگنا کرایہ ہو گا
بات یہ پہلے ، مسافر کو بتا دی جائے

تتلیوں کا جو تعاقب کرے ، چالان بھرے
زُلف میں پھول سجانے پہ سزا دی جائے

یہ اَگر پیشہ ہے تو اِس میں رِعایت کیوں ہو
بھیک لینے پہ بھی اَب چنگی لگا دی جائے

کون اِنسان ہے کھاتوں سے یہ معلوم کرو
بے لگانوں کی تو بستی ہی جلا دی جائے

حاکمِ وَقت سے قزاقوں نے سیکھا ہو گا
باج نہ ملتا ہو تو گولی چلا دی جائے

کچی مِٹّی کی مہک مفت طلب کرتا ہے
قیس کو دَشت کی تصویر دِکھا دی جائے
۔ #شہزادقیس کی کتاب #انقلاب سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#انقلاب از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#انقلاب از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisInqilab.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #انقلاب سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
سانسوں میں بغاوَت کا سُخن بول رہا ہے
****************************************
سانسوں میں بغاوَت کا سُخن بول رہا ہے
تقدیر کے فرزَند کا دِل ڈول رہا ہے

اَفلاک کی وُسعت پہ تلاطُم ہی تلاطُم
شاہین اَبھی پرواز کو پر تول رہا ہے

چیتے کی گرج دار صدا ، قومی ترانہ
شیروں کا شروع سے یہی ماحول رہا ہے

پرواز کی قیمت پہ ملے رِزق تو لعنت
غیور پرندوں کا یہی قول رہا ہے

دِہقان کے اِفلاس پہ دِل خون میں تر ہے
مزدُور کی حالت پہ لَہُو کھول رہا ہے

ہر عَہد کی تاریخ میں بد ذات دَرِندوں
کے رُخ پہ تقدس بھرا اِک خول رہا ہے

یہ چاند ہے کشکول نہیں حاکمِ کِشور
پرچم کو ذِرا دیکھ یہ کچھ بول رہا ہے

سو نسلوں کے بچوں کو جنم دیتی ہے وُہ قوم
جس قوم کا منشور بھی کشکول رہا ہے

سر گِن کے بنا لیتا ہے سِکّوں کے لفافے
باطل ترے منصوبے میں یہ جھول رہا ہے

اِنسان ہی ہر چیز سے سستا ہے جہاں میں
اِنسان ہی ہر دور میں اَنمول رہا ہے

چپ چاپ ہے قیس آج بھی تاریخِ ندامت
اِنکارِ جُنوں کانوں میں رَس گھول رہا ہے
۔ #شہزادقیس کی کتاب #انقلاب سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#انقلاب از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#انقلاب از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisInqilab.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #انقلاب سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
دِل دَھڑکنے پہ بھی پابندی لگا دی جائے
****************************************
دِل دَھڑکنے پہ بھی پابندی لگا دی جائے
لاش اِحساس کی سُولی پہ چڑھا دی جائے

ذِہن کی جامہ تلاشی کا بنا کر قانون
سوچنے والوں کو موقعے پہ سزا دی جائے

آرزُو جو کرے دیوانوں میں کر دو شامل
خواب جو دیکھے اُسے جیل دِکھا دی جائے

آج سے قومی پرندہ ہے ہمارا طوطا
نسل شاہین کی چن چن کے مٹا دی جائے

جاں بچانے کا پتنگوں کی بہانہ کر کے
شمع جلنے سے بھی کچھ پہلے بجھا دی جائے

روز خود سوزِیوں سے اُٹھتی ہے ہم پر اُنگلی
خود کشی جو کرے گردَن ہی اُڑا دی جائے

راہ بتلانے ، مدد کرنے کی عادَت نہ پڑے
راستہ پوچھنے پہ قید بڑھا دی جائے

لوگ خوشبو کے تعاقب میں نکل پڑتے ہیں
پھول پر دیکھتے ہی گولی چلا دی جائے

سانس لینے کے بھی اَوقات مقرر کر کے
حَبس دَر حَبس کو دوزَخ کی ہَوا دی جائے

کام تحریر مٹانے کا بہت بڑھنے لگا
نعرے لکھے ہوں تو دیوار گرا دی جائے

جبرِ حالات سے ہر شخص کو مجنوں کر کے
بھیڑ میں قیس کی آواز دَبا دی جائے
۔ #شہزادقیس کی کتاب #انقلاب سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#انقلاب از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#انقلاب از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisInqilab.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #انقلاب سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
کارخانوں کو بچاتے ہُوئے مر جاتے ہیں
****************************************
کارخانوں کو بچاتے ہُوئے مر جاتے ہیں
پیٹ کی آگ بجھاتے ہُوئے مر جاتے ہیں

کاغذی کھیتوں میں ہم جیسے دَرخشاں ہاری
پھول میں خوشبو ملاتے ہُوئے مر جاتے ہیں

ہائے اَفسوس کہ دَلدل میں بقا کے مزدُور
عمر بھر ہاتھ چلاتے ہُوئے مر جاتے ہیں

چند دیوار کی زَد میں ہُوئے اَبدی ساکِت
چند دیوار بناتے ہُوئے مر جاتے ہیں

بال کھولے ہُوئے لیتی ہے قضا اُن کی جان
جو عزیزوں کو بچاتے ہُوئے مر جاتے ہیں

جن کا چھن جائے سہارا وُہ اَگر بچ جائیں
غالبا اَشک بہاتے ہُوئے مر جاتے ہیں

بے بسوں کے لیے بنتا ہے وِداع کا منظر
اَپنے جب ہاتھ ہلاتے ہُوئے مر جاتے ہیں

سانس لیتے ہیں مگر اَصل میں اَکثر اَوقات
لوگ پیاروں کو دَباتے ہُوئے مر جاتے ہیں

رُوح کا کرب زَمانے کو دِکھانے کے لیے
جسم کو آگ لگاتے ہُوئے مر جاتے ہیں

صُور کو تکتا ہے حسرت سے فرشتہ کوئی
لوگ جب روٹی چراتے ہُوئے مر جاتے ہیں

اِہلِ زَر جان کا تاوان بھرا کرتے ہیں
قیس ہم قرض چکاتے ہُوئے مر جاتے ہیں
۔ #شہزادقیس کی کتاب #انقلاب سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#انقلاب از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#انقلاب از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisInqilab.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #انقلاب سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
لاش پر گولی محبت سے چلا دی جائے
****************************************
لاش پر گولی محبت سے چلا دی جائے
آرزُو دار پہ تا مرگ چڑھا دی جائے

ڈھانپ دو غم کے گھنے اَبر سے نُورِ خورشید
اَندھی ملکہ کے لیے شمع جلا دی جائے

سر کے جگنو کی سَرِ شام لگا کر بولی
وَحشتِ شب کو تسلی سے ہَوا دی جائے

کوُکتی فاختہ کا گھونسلہ کر کے مسمار
حُسن دِکھلانے پہ تتلی کو سزا دی جائے

چند ’’ منظور شدہ ‘‘ خوابوں کو کر کے تقسیم
رات بھر جاگنے پہ قید بڑھا دی جائے

دیپ روشن نہ کرے کوئی اِجازَت کے بغیر
ہتھکڑی گھر کے چراغاں پہ لگا دی جائے

تتلیاں دُور نکل جانے پہ اُکساتی ہیں
راتوں رات اِن پہ کوئی بجلی گرا دی جائے

سَر سے بھیڑوں کے گزر جائے جو بھاشن وُہ ہو
اَجنبی شبدوں کی توقیر بڑھا دی جائے

قتل کو روکنا ترجیح نہیں حاکم کی
کم سے کم وَقت پہ دیت تو اَدا کی جائے

چار مظلوم کہیں یکجا نہ ہونے پائیں
تعزیت کرنے پہ تعزیر لگا دی جائے

مجنوں بننے کے سِوا قیس کوئی رَستہ کہاں
جب غزل مرحبا کہتے ہی بھُلا دی جائے
۔ #شہزادقیس کی کتاب #انقلاب سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#انقلاب از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#انقلاب از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisInqilab.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #انقلاب سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
ہر دِن میں ایک رات ہے محسوس تو کرو
****************************************
ہر دِن میں ایک رات ہے محسوس تو کرو
کتنی بڑی یہ بات ہے محسوس تو کرو

اِس میں حسیں بتوں کا تصور مقیم ہے
دِل چھوٹا سومنات ہے محسوس تو کرو

گر شَش جِہِت وُجودِ خدا پر یقین ہے !
ہر چیز میں حیات ہے محسوس تو کرو

خود محوری سے دید کو فرصت ملے اَگر
ہر ذَرّہ کائنات ہے محسوس تو کرو

زُلفِ دَرازِ یارِ اَزَل کی تلاش میں
ہر فکر سے نجات ہے محسوس تو کرو

تنہائی کا خیال بھی باطل کی دین ہے
تنہا بس اُس کی ذات ہے محسوس تو کرو

آتے ہُوئے اَذاں ہُوئی ، جاتے ہُوئے نماز
اَلمختصَر حیات ہے محسوس تو کرو

ملنا بھی داستان ، بچھڑنا بھی داستان
یہ شَہرِ حادِثات ہے محسوس تو کرو

ہر لب پہ خشک پیاس کا صحرا ہے موجزن
ہر اَشک میں فُرات ہے محسوس تو کرو

اِک جسم میں اِک آدمی ہوتا نہیں جناب
ہر شخص ، شخصیات ہے محسوس تو کرو

ہو گی نہ قیس حُسن سے اِظہار میں پَہَل
یہ اُن کی نفسیات ہے محسوس تو کرو
۔ #شہزادقیس کی کتاب #انقلاب سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#انقلاب از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#انقلاب از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisInqilab.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #انقلاب سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
یوں تو مُجرِم کی ہر اِک بات بھُلا دی جائے
****************************************
یوں تو مُجرِم کی ہر اِک بات بھُلا دی جائے
بے وَقوفی پہ مگر سخت سزا دی جائے

چونکہ ملزِم ہے اِسی بستی میں رُوپوش کہیں
عَدل کا حُکم ہے کُل بستی جلا دی جائے

نصف اِنصاف ہے می لارڈ سزا مجرم کو
نیکیوں پر بھی عدالت میں جزا دی جائے

عدلِ شاہی کے ڈَسے ، چھوتے ہُوئے ڈَرتے ہیں
خود ہی آتے ہُوئے زَنجیر ہِلا دی جائے

عَدل ہوتا رہے پر کوئی سزا نہ پائے
شعبدہ بازی کی تاریخ بڑھا دی جائے

قاضی بہرا ہو تو گونگے کو وَکالت دے کر
چار اَندھوں کو سماعت یہ دِکھا دی جائے

لوحِ گُم گشتہ میں ہر فیصلہ کر کے محفوظ
پڑھ کے تحریرِ شہنشاہی سنا دی جائے

عرق اِنصاف کے ماتھے کا نہ کچھ فاش کرے
فیصلہ پڑھتے ہُوئے شمع بجھا دی جائے

حق مکرر سنے جانے کا ہے توہینِ قضا
اِعتراضات پہ تعزیر لگا دی جائے

اَپنے اَعمال پہ گَڑ جائے زَمیں میں فی الفور
عَدل کی آنکھ سے گر پٹّی ہٹا دی جائے

عَدل کے فیصلوں میں پختگی آ جائے قیس
اِک کٹہرے میں اَگر آگ جلا دی جائے
۔ #شہزادقیس کی کتاب #انقلاب سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#انقلاب از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#انقلاب از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisInqilab.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #انقلاب سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
خون میں اَشک ملاتے ہُوئے مر جاتے ہیں
****************************************
خون میں اَشک ملاتے ہُوئے مر جاتے ہیں
کام پر جان لڑاتے ہُوئے مر جاتے ہیں

آسماں تکتے ہیں کچھ دیر کو نم آنکھوں سے
اور پھر رِزق کماتے ہُوئے مر جاتے ہیں

چھت بھی برسات میں رو پڑتی ہے غم پر اُن کے
گھر جو ہم سب کے بناتے ہُوئے مر جاتے ہیں

آہ ! عیاش نگاہوں کے مقابل لاچار
سر بہت غم سے جھکاتے ہُوئے مر جاتے ہیں

جسم پٹری پہ دَفن کرنے کبھی نہ آتے
بیٹیاں بھوکی سلاتے ہُوئے مر جاتے ہیں

پھول سے بچے کئی آج بھی شاہی رَتھ کی
راہ میں پھول بچھاتے ہُوئے مر جاتے ہیں

غم بلکتا ہے کھلونوں کی اُداس آنکھوں میں
اور معصوم کماتے ہُوئے مر جاتے ہیں

لہلہاتی ہُوئی فصلوں کے کئی پالن ہار
رِزق کی قسطیں چکاتے ہُوئے مر جاتے ہیں

آہ ! طوفانِ گرانی کے مقابل مزدُور
کاغذی کشتی بناتے ہُوئے مر جاتے ہیں

قصرِ شاہی کو سب اَچھا کی خبر ملتی ہے
لوگ زَنجیر ہلاتے ہُوئے مر جاتے ہیں

اِنقلاب آئے گا ، مزدُور اِسی سوچ میں قیس
عمر بھر نعرے لگاتے ہُوئے مر جاتے ہیں
۔ #شہزادقیس کی کتاب #انقلاب سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#انقلاب از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#انقلاب از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisInqilab.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #انقلاب سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
ہو کُور رَنگی تو رَنگیں گُلاب جھُوٹا ہے
****************************************
ہو کُور رَنگی تو رَنگیں گُلاب جھُوٹا ہے
وَطن میں اَندھوں کے ہر آفتاب جھُوٹا ہے

ہم اِس کو ہُو بہُو رَٹ کر بھی ہار جائیں گے
ہمارے عہد کا سارا نصاب جھُوٹا ہے

اَگر اُصول ہے چوروں کا بادشاہ ہو چور
تو جھُوٹی قوم کا ہر اِنتخاب جھُوٹا ہے

جہاں پہ ہم سے ہی جھُوٹوں نے ووٹ دینا ہے
وَہاں پہ جو بھی ہُوا کامیاب جھُوٹا ہے

نظامِ فطری میں ہر چیز رَفتہ رَفتہ بڑھے
اَگر یہ سچ ہے تو ہر اِنقلاب جھُوٹا ہے

دَروغ گوئی کے کچھ تو اُصول طے کر لو
اَبھی تو دیکھو جسے بے حساب جھُوٹا ہے

فقط یہ پوچھا کہ سب ہی بری ہُوئے کیسے
یہ میں نے کب کہا کہ اِحتساب جھُوٹا ہے

صحیح سوال سے کھچ جاتی ہے اِک اَبدی لکیر
سوال سچا ہو تو ہر جواب جھُوٹا ہے

عزیزو مان لو ہم اِجتماعی جھُوٹے ہیں
وَگرنہ خود کہو کیا یہ عذاب جھُوٹا ہے

تلاشِ عمر کے بعد آج اِنکشاف ہُوا
’’ زَمیں پہ عدل ‘‘ کا دِلکش سراب جھُوٹا ہے

کہا زَمینی حقائق نے تھپتھپا کے قیس
حُضور جاگ بھی جائیں یہ خواب جھُوٹا ہے
۔ #شہزادقیس کی کتاب #انقلاب سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#انقلاب از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#انقلاب از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisInqilab.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #انقلاب سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
زَخم کی بات نہ کر زَخم تو بھر جاتا ہے
****************************************
زَخم کی بات نہ کر زَخم تو بھر جاتا ہے
تیر لہجے کا کلیجے میں اُتر جاتا ہے

موج کی موت ہے ساحل کا نظر آ جانا
شوق کترا کے کنارے سے گزر جاتا ہے

شعبدہ کیسا دِکھایا ہے مسیحائی نے
سانس چلتی ہے ، بھلے آدمی مر جاتا ہے

آنکھ نہ جھپکوں تو سب ناگ سمجھتے ہیں مجھے
گر جھپک لوں تو یہ جیون یوں گزر جاتا ہے

مندَروں میں بھی دُعائیں تو سنی جاتی ہیں !
اَشک بہہ جائیں جدھر ، مولا اُدھر جاتا ہے

حُسن اَفزا ہوئی اَشکوں کی سنہری برکھا
پھول برسات میں جس طرح نکھر جاتا ہے

بخت اَلفاظ کے پہلو سے جڑا ہوتا ہے
لفظ گر خوب چنو ، بخت سنور جاتا ہے

غالبا تخت پہ جنات کا سایہ ہو گا !
کچھ تو ہے ہر کوئی آتے ہی مکر جاتا ہے

’’ ایسی ‘‘ باتیں جو ’’ اَکیلے ‘‘ میں نہ ’’ دیوانہ ‘‘ کرے
بادشہ وُہ بھرے دَربار میں کر جاتا ہے

گر نہ لکھوں میں قصیدہ تو ہے تلوار اَقرب
سر بچا لوں تو مرا ذوقِ ہنر جاتا ہے

قیس ! گر آج ہیں زِندہ تو جنوں زِندہ باد !
سوچنے والا تو اِس دور میں مر جاتا ہے
۔ #شہزادقیس کی کتاب #انقلاب سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#انقلاب از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#انقلاب از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisInqilab.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #انقلاب سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
شِکنجے ٹُوٹ گئے ، ’’ زَخم ‘‘ بدحواس ہُوئے
****************************************
شِکنجے ٹُوٹ گئے ، ’’ زَخم ‘‘ بدحواس ہُوئے
سِتم کی حد ہے کہ اِہلِ سِتم اُداس ہُوئے

لہو کا ایسا سمندر بہایا دُشمن نے
سفینے زِندہ دِلوں کے بھی ، غرقِ یاس ہُوئے

حساب کیجیے ، کتنا سِتم ہُوا ہو گا
کفن دَریدہ بدن ، زِندگی کی آس ہُوئے

کچھ ایسا مارا ہے شب خون ، اِبنِ صحرا نے
سمندَروں کے سَبُو پیاس ، پیاس ، پیاس ہُوئے

نجانے شیر کے بچے ، اُٹھا لیے کِس نے
یہ مُوئے شَہر جو ، جنگل کے آس پاس ہُوئے

خُدا پناہ ! وُہ کڑوا خِطاب رات سُنا
کریلے نیم چڑھے ، باعثِ مِٹھاس ہُوئے

ہر ایک فیصلہ ، محفوظ کرنے والو سنو !
جھکے ترازُو ، شَبِ ظلم کی اَساس ہُوئے

ہماری نسل بھی محرومِ اِنقلاب رہی
ہمارے شعر بھی کُتبوں کا اِقتباس ہُوئے

گلابی غُنچوں کا موسم اُداس کرتا ہے
کچھ ایسے دِن تھے ، جب اُس گل سے رُوشناس ہُوئے

ہر ایک شخص کا ، سمجھوتہ اَپنے حال سے ہے
خوشی سے سانس اُکھڑنا تھا ، غم جو راس ہُوئے

قبائے زَخمِ بَدن ، اَوڑھ کر ہم اُٹھے قیس
جو شاد کام تھے ، مِحشَر میں بے لباس ہُوئے
۔ #شہزادقیس کی کتاب #انقلاب سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#انقلاب از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#انقلاب از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisInqilab.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #انقلاب سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
ہر لوحِ جبیں پر نہیں تحریر ، مقدر
****************************************
ہر لوحِ جبیں پر نہیں تحریر ، مقدر
جو چاہیں لکھا کرتے ہیں تقدیر ، قلندر

ایمان ، حیا ، ضبط ، خودی ، جوشِ یقیں سے
کر سکتے ہیں پیدا نئی جاگیر ، سکندر

ہاتھوں پہ لکیروں کا تو معنی ہی یہی ہے
بندے تری مٹھی میں ہے تسخیر ، مقدر

گو خواب ہیں اِلہامِ اِلٰہی کے سخی بیج
اِنسان کی محنت سے ہے تعبیر ، تناوَر

کردار ہے اِنسان کی تعمیر کی بنیاد
بنیاد سے ہی بنتی ہے تعمیر ، معمر

مٹھی سے کوئی آ کے نکالے تو نکالے
تا مرگ تو رَکھتے نہیں شمشیر ، دِلاوَر

اِنسان کا اِشراف فرشتے پہ رہے گا
جب تک ہے اِسے عشق سا اِکسیر ، میسر

ہر بات کہاں کہہ سکیں صدمہ تو یہی ہے
خود ، خود کو لگا رَکھتے ہیں زَنجیر ، سخنور

تخلیق گری دِل کے جہنَم کا ہے لاوا
خود سوزی سے ہر دیپ کی تنویر ، منور

شہرت ہے کنیز آج بھی باظرف قلم کی
اَپنی کبھی کرتے نہیں تشہیر ، سمندر

ہر رَنگ فروش آخری فن کار بنے قیس
رَنگوں سے اَگر ہوتی ہو تصویر ، اُجاگر
۔ #شہزادقیس کی کتاب #انقلاب سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#انقلاب از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#انقلاب از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisInqilab.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #انقلاب سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
غُرور بیچیں گے ، نہ اِلتجا خریدیں گے
****************************************
غُرور بیچیں گے ، نہ اِلتجا خریدیں گے
نہ سر جھکائیں گے ، نہ سر جھکا خریدیں گے

قَبول کر لی ہے ، دیوارِ چین آنکھوں نے
اَب اَندھے لوگ ہی ، رَستہ نیا خریدیں گے

جھُکیں تو اُس کو ’’سخاوت‘‘ لگے یہ جھُکنا بھی!
اَب اَپنے قَد کا ’’کوئی‘‘ دیوتا خریدیں گے

یہ ضِدّی لوگ ہیں اِن سے وَفا کی رَکھ اُمید
جفا گُزیدہ ، مُکرّر جفا خریدیں گے

پھر اُس ’’ہُجوم‘‘ کا ، قبلہ دُرست ہو کیسے
جو قبلہ بیچ کے ، قبلہ نُما خریدیں گے

خریدتے رہے ہم ’’سادہ پانی‘‘ گر یونہی
وُہ دِن بھی آئے گا ، ہم سب ہَوا خریدیں گے

قسم اُصول کی کھائی ہے زِندگی کی نہیں
بقا کو جھکنا پڑا تو فنا خریدیں گے

ہمارے بازُو بھی گرتے ہیں ساتھ پرچم کے
تمہارے جیسے بھلا ہم کو کیا خریدیں گے

عُدُو نے گھیرا تو کر کے نیام کے ٹکڑے
بزورِ بازُو نیا راستہ خریدیں گے

جُنون ، جنگ میں کھائے شکست ، ناممکن
قبیلہ ہار گیا تو قضا خریدیں گے

عُدُو کے سُورما ، چومیں گے پاؤں لاش کے قیس
ہم اَپنی جنگ سے وُہ مرتبہ خریدیں گے
۔ #شہزادقیس کی کتاب #انقلاب سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#انقلاب از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#انقلاب از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisInqilab.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #انقلاب سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
سنگلاخ چٹانوں کی گھٹا دیکھ رَہا ہُوں
****************************************
سنگلاخ چٹانوں کی گھٹا دیکھ رَہا ہُوں
دَھرتی پہ غضب ناک خدا دیکھ رَہا ہُوں

یہ زَلزلے کا جھٹکا ہے یا رَبّ نے کہا ہے
اِس شہر میں جو کچھ بھی ہُوا ، دیکھ رَہا ہُوں

اِقرا کے مُبَلّغِ نے سَرِ عرش یہ سوچا
اَب تک میں جہالت کی فَضا دیکھ رَہا ہُوں

اِکراہ نہیں دین میں ، نہ جبر رَوا ہے
تلواروں پہ یہ صاف لکھا دیکھ رَہا ہُوں

اَوروں کی ہدایت کی دُعا مانگ رہے ہیں
کر سکتی ہے کیا کچھ یہ اَنا دیکھ رَہا ہُوں

خود سوزی پہ مجبور ہیں جگنو ، کلی ، غنچے
کہرام ہے محشر کا بپا دیکھ رَہا ہُوں

تعمیرِ محلّات میں کملا گئے سہرے
جھلسی ہُوئی ہاتھوں کی حنا دیکھ رَہا ہُوں

جو لفظ اَبھی آپ کے منہ سے نہیں نکلا
میں آپ کے چہرے پہ لکھا دیکھ رَہا ہُوں

راس آ گئی دُنیا تو بہت کچھ میں کروں گا
اَب تک تو فقط آب و ہَوا دیکھ رَہا ہُوں

کب تک کریں گے فیصلے بوسیدہ پرندے
بیداری کی اِک تند ہَوا دیکھ رَہا ہُوں

قیس آخری وَقتوں کا خطرناک زَمانہ !
جیسا تھا بزرگوں سے سنا ، دیکھ رَہا ہُوں
۔ #شہزادقیس کی کتاب #انقلاب سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#انقلاب از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#انقلاب از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisInqilab.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #انقلاب سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
معصوم بستیوں کو سمندر نگل گیا
****************************************
معصوم بستیوں کو سمندر نگل گیا
سیلاب کا بھی زَور غریبوں پہ چل گیا

پانی نے ہر مکان کو ہموار کر دِیا
اِک رات میں حویلی کا نقشہ بدل گیا

دَریا بہا کے لے گیا گڑیا کا کُل جہیز
اَفسوس ، بے بسی کے سمندر میں ڈَھل گیا

چاول ، اَناج ، دالیں ، مربے ، اَچار ، گُڑ
اِک سال کا تھا رِزق جو پانی میں گَل گیا

کینو ، کھجور ، موسمی ، اَمردو ، آم ، سیب
پھل صبر کا ہی رِہ گیا ، باقی تو پھل گیا

اے کاش جانور سبھی بن جاتے مچھلیاں
بے بس مویشی دیکھ کے پتھر پگھل گیا

رُکنے کا وَقت تھا ہی نہیں کون دیکھتا
اِک بوڑھا جھونپڑی سے نکلتے پھسل گیا

مٹی کے کچھ کھلونے بھی مٹی میں مل گئے
ممتا کی آرزُو کا جنازہ نکل گیا

کچے گھروں کی سمت بہاؤ کو موڑ کر
صد شکر شہر ڈُوبنے کا خطرہ ٹَل گیا

اِن کشتیوں کے نیچے کئی لوگ رہتے تھے
میں نے جو آج سوچا مرا دِل دَہل گیا

پرکھوں کی آج ہم کو بہت یاد آئی قیس
جن کی لَحَد بھی پانی کا ریلا نگل گیا
۔ #شہزادقیس کی کتاب #انقلاب سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#انقلاب از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#انقلاب از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisInqilab.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #انقلاب سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
اِس ملک کو گر باپ کی جاگیر کرو گے
****************************************
اِس ملک کو گر باپ کی جاگیر کرو گے
تو صورَتِ حالات کو گھمبیر کرو گے

اَولاد شہنشاہی میں بنتی ہے شہنشہ
سلطانی ء جمہور کی تفسیر کرو گے ؟

چاند اور ستارے کے وَطن میں ہے اَندھیرا
اِک ایٹمی طاقت کی یہ تشہیر کرو گے ؟

زِندان سے ایوان میں پہنچے ہُوئے لوگو
تم کس طرح اِس ملک کی تطہیر کرو گے

ایوانوں کی تسخیر تمہیں خیر مبارَک
بحرانوں کو کس دِن بھلا تسخیر کرو گے

ایوان میں بھی سوئے ہُوئے دیکھا ہے اَکثر
تم خاک مرے خواب کی تعبیر کرو گے

ڈِگری بھی نہ لے پائے اَرے ’’ ٹھیک سے ‘‘ جعلی !
سنجیدہ مسائل کی کیا تدبیر کرو گے ؟

حل ہو بھی گئے تم سے جو کچھ جزوی مسائل
دِن رات عنایات کی تشہیر کرو گے

دُنیا سے تو اِک اینٹ بھی لے جا نہیں سکتے
جنت میں مَحَل کس طرح تعمیر کرو گے

لاچاروں کے جب ہاتھ گریبان پہ ہوں گے
اُس وقت بھی کیا مانگ کے تقریر کرو گے ؟

تبدیلی کا آغاز بھی بن سکتی ہے وُہ قیس
حق بات اَگر خون سے تحریر کرو گے
۔ #شہزادقیس کی کتاب #انقلاب سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#انقلاب از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#انقلاب از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisInqilab.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #انقلاب سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
آرزُوئے بہشت بھی کرتا
****************************************
آرزُوئے بہشت بھی کرتا
زِندگی سے ہی دِل نہیں بھرتا

غیر صادِق بقول قرآں کے
موت کی آرزُو نہیں کرتا

موت کا خوف جان لیوا ہے
آدمی موت سے نہیں مرتا

جبر کی جان جاتی ہے اُس سے
جان جانے سے جو نہیں ڈَرتا

خون جس کی گواہی دیتا ہے !
وُہ عقیدہ کبھی نہیں مرتا

حُسن کو سجدہ کر لیا جائے
ٹکٹکی سے تو دِل نہیں بھرتا

خوف سے یوں نہ آنکھیں بند کرو
چومنے سے کوئی نہیں مرتا

شمع دِکھلا کے پوچھا لیلیٰ نے
عشق کرنے سے کیوں نہیں ڈَرتا ؟

پیٹ بھر سکتا ہے سمندر کا
لالچی شخص کا نہیں بھرتا

سانپ نے شَہد کا سہارا لیا !
کوئی اَب زَہر سے نہیں مرتا

اَپنے آقا کو اُس نے جا کے کہا
قیس کہتا ہے میں نہیں ڈَرتا
۔ #شہزادقیس کی کتاب #انقلاب سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#انقلاب از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#انقلاب از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisInqilab.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #انقلاب سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
بند کمروں کی سیاست پہ خدا کی لعنت
****************************************
بند کمروں کی سیاست پہ خدا کی لعنت
قوم سے مخفی خیانت پہ خدا کی لعنت

اَجنبی ہاتھ جسے رَقص پہ اُکساتے ہوں
ایسی کٹھ پتلی قیادَت پہ خدا کی لعنت

آنکھ کے اَندھوں کی اُنگلی تو پکڑ سکتے ہیں
عقل کی اَندھی جماعت پہ خدا کی لعنت

عدل کی مسخ شدہ لاش سے آواز آئی
ظلم کے یومِ وِلادَت پہ خدا کی لعنت

ظلم کا بڑھتے چلے جانا ہے اَصلی توہین
اَصل توہینِ عدالت پہ خدا کی لعنت

نسل دَر نسل اُسی آہنی ٹوپی کی گھُٹن
سلسلہ وار جہالت پہ خدا کی لعنت

لُوٹ کر پکڑے نہ جانا ہو مہارَت جس کی
اُس خداداد ذَہانت پہ خدا کی لعنت

اِنقلاب عقل بھی اِک عمر میں لا پاتی ہے
بے وَقوفوں کی بغاوَت پہ خدا کی لعنت

بھونکنے والوں کے ڈَر سے جو نہ نکلے گھر سے
شیر کی اُس سے شباہت پہ خدا کی لعنت

چھوڑ کر ذِہنی قبیلوں کا دِفاع مل کے کہو
ہر ستم گار جماعت پہ خدا کی لعنت

گھر یتیموں کے جو دو روٹیاں پہنچا نہ سکے
قیس اُس لنگڑی رِیاست پہ خدا کی لعنت
۔ #شہزادقیس کی کتاب #انقلاب سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#انقلاب از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#انقلاب از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisInqilab.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #انقلاب سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
سُورَج پہ اَشکِ عشق گرانا پڑا مجھے
****************************************
سُورَج پہ اَشکِ عشق گرانا پڑا مجھے
بجھتا ہُوا چراغ جلانا پڑا مجھے

اِنسان کے ضمیر میں تھا حبس اِس قَدَر
تاریکیوں کو پانی پلانا پڑا مجھے

تم لوگ جھوٹے قصوں کے قلعے میں دَفن ہو
کاندھا ہلا ہلا کے بتانا پڑا مجھے

پہلے پہل کے خواب کی تعبیر کے لیے
پہلو نصیحتوں سے بچانا پڑا مجھے

دِل میں خدا مقیم تھا پر بات چیت کو
خود کو طرح طرح سے ہرانا پڑا مجھے

طوطا نگر میں حافظہ واحد اُصول تھا
تازہ خیال لکھ کے مٹانا پڑا مجھے

ہر چیز یوں نظام کے چنگل میں قید تھی
اَپنا لہو خرید کے لانا پڑا مجھے

اِک بے مثال جھوٹ کی سرکُوبی کے لیے
دو بار عہدِ ماضی میں جانا پڑا مجھے

غصے میں لات ماری جو کبڑے نظام کو
ہر پرزہ پھر صفر سے بنانا پڑا مجھے

دُہرا نہ سکی پھر وُہ کبھی اَپنے آپ کو
تاریخ کو تَنَوُّع پڑھانا پڑا مجھے

ٹُوٹے ہُوئے ستاروں سے ہر جھولی بھر گئی
ہلکا سا آسمان ہلانا پڑا مجھے

تقسیم منصفانہ وَسائل کی چل پڑی
تقدیر کو حساب سکھانا پڑا مجھے

اِک بے خطا وُجود نے جب جانور کہا
غصے سے اُس کو ہنس کے دِکھانا پڑا مجھے

بستی بَدَر کیا جو کسی اَفلاطون نے
اِک شہر شاعروں کا بسانا پڑا مجھے

کرتا نہیں تھا ہجر کے ماروں کا اِحترام
موسم کو تازِیانہ لگانا پڑا مجھے

سائے میں بیٹھے مانگتے تھے سائے کی دُعا
دیوار میں دَرخت اُگانا پڑا مجھے

تعلیم رُوکھی سُوکھی کی سب کو عزیز تھی
قارُون کا خزانہ دَبانا پڑا مجھے

موتی کی بھیک اُچھالی جو مکار سیپ نے
پانی پہ اُس کو چل کے دِکھانا پڑا مجھے

ٹھنڈی ہَوائیں عشق کی سب تک پہنچ گئیں
دو چار سو کا چولہا بجھانا پڑا مجھے

آنکھوں کا پانی مرتے ہی کاجل کی ریت پر
اِک جھیل کا جنازہ پڑھانا پڑا مجھے

مندر ، حرم ، کلیسا میں کچھ دیر تُو رہا
لیکن کِرایہ پورا چکانا پڑا مجھے

باہر تھی مجرموں کو کھلی چھٹی اِس لیے
زِنداں میں رات لوٹ کے آنا پڑا مجھے

روشن ضمیر ہونے کی یہ پہلی شرط تھی
اَپنے لبوں پہ تالہ لگانا پڑا مجھے

سب لوگ پہلے دیکھتے تھے کس کا قول ہے
نہ چاہ کر بھی نام کمانا پڑا مجھے

رَستے تو باقی سارے ہی کھلتے چلے گئے
بس خود میں آرزُو کو جگانا پڑا مجھے

اَفسوس ! راہِ راست پہ لانے کے واسطے
اِنسان کو خدا سے ڈَرانا پڑا مجھے

کھائے گی اَگلی نسل ثمر اِس کا غالباً
اِنسانیت کا پیڑ لگانا پڑا مجھے

پوچھا گیا جو سب سے بڑا باغی کون ہے
دیمک کے سر پہ تاج سجانا پڑا مجھے

جعلی نمائندوں کی تھی بھرمار اِس قَدَر
خود اَپنی اُنگلی تھام کے آنا پڑا مجھے

سنگلاخ نظریات کی اَندھی چٹان پر
حیرت کا پہلا قطرہ گرانا پڑا مجھے

ہر کم نظر سے معنی کا جگنو بچانے کو
اَلفاظ کا دَرخت جلانا پڑا مجھے

کٹھ پتلیوں پہ اُن کی حقیقت نہ کھل سکی
مجبوراً اُنگلیوں پہ نچانا پڑا مجھے

سنجیدہ محفلوں میں مدبر بڑوں کو قیس
پسلی پہ چاقو رَکھ کے ہنسانا پڑا مجھے
۔ #شہزادقیس کی کتاب #انقلاب سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#انقلاب از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#انقلاب از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisInqilab.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #انقلاب سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
صبر کے زَہر میں بجھایا ہُوا
****************************************
صبر کے زَہر میں بجھایا ہُوا
اَپنی میّت پہ ہُوں میں آیا ہُوا

جسم کا پیڑ دَھپ سے ٹُوٹ گرا
دَرد کی گرد میں نہایا ہُوا

آسمانوں کا ہاتھ سُورج پر
اور میں دُھوپ کا ستایا ہُوا

آہ ! میں آگہی کے سرکس میں
آس کی رَسّی پر چلایا ہُوا

عقل کا کیا بھروسہ کس پل ہو
ہے جُنوں میرا آزمایا ہُوا

شرط باندھی ہے مجھ پہ خالق نے
آسمانوں پہ ہُوں میں چھایا ہُوا

اَپنی تخلیق میں شریک ہُوں میں
ایک حد تک ہُوں میں بنایا ہُوا

مجھ کو لگتا ہے میرے اَندر ہی
آخری فرد ہے چھُپایا ہُوا

بیج ، پھل ، پھول ، مالی میں ہی ہُوں
اَپنی کھیتی میں ہُوں اُگایا ہُوا

ہونٹ ہُوں بوسہ دینے والا ہُوں
پھول ہُوں جُوڑے میں سجایا ہُوا

تین سو قیس لڑتے ہیں مجھ میں
اور میں سب پہ جھنجھلایا ہُوا
۔ #شہزادقیس کی کتاب #انقلاب سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#انقلاب از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#انقلاب از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisInqilab.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #انقلاب سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
عقل جس کی خدا بڑھا دے گا
****************************************
عقل جس کی خدا بڑھا دے گا
بات سننے کا حوصلہ دے گا

چند لوگوں کو ، حشر میں غفار !
صبر کے جرم پر سزا دے گا

گر کرم کی اُمید رَکھو گے
حشر میں سائے میں بٹھا دے گا

اُس کا نذرانہ دو گنا ہو گا
پیر گر عربی میں دُعا دے گا

آدمی خود اُدھار سر تا پا !
آدمی ، آدمی کو کیا دے گا

بے حیائی کا یہ کھڑا پانی !
گھر کی بنیاد ہی ہلا دے گا

صاف گوئی نری حماقت ہے
عقل مند کچھ نہ کچھ چھپا دے گا

ساری دُنیا سے جیتنے والے !
تیرا بچہ تجھے ہرا دے گا

آخری زَلزلوں سے کچھ پہلے
ایک دَرویش بد دُعا دے گا

دائرہ آگہی کا چھوٹا رَکھ
علم تجھ کو لہو رُلا دے گا

صُور لے کر فرشتہ اِک دِن قیس
اَمن کی بانسری بجا دے گا
۔ #شہزادقیس کی کتاب #انقلاب سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#انقلاب از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#انقلاب از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisInqilab.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #انقلاب سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
ہر ایک ہاتھ میں حق کا عَلم نہیں ہوتا
****************************************
ہر ایک ہاتھ میں حق کا عَلم نہیں ہوتا
خدا کو ماننے سے کفر کم نہیں ہوتا

کوئی بھی روتا نہیں اَپنی موت پر چونکہ
پرائے لوگوں کے مرنے کا غم نہیں ہوتا

قلم پہ اِس سے بڑا اور ظلم کیا ہو گا
ہے شعر ذِہن میں لیکن رَقم نہیں ہوتا

عُدُو شکست کا خود اِعتراف کرتا ہے
وُہ سر جو نیزے پہ چڑھتا ہے خم نہیں ہوتا

تم عقل والے یہ بن باس پھر سے کاٹو گے
جنونی شخص کا دُوجا جنم نہیں ہوتا

ملازمین کبھی خاندان ہوتے نہیں
حرم میں رِہنے سے اِہلِ حرم نہیں ہوتا

فریب دینا ہے خود کو تو دیتے رہیے حضور
یہ ٹی وی شی وی کبھی جامِ جم نہیں ہوتا

بہت سے لوگ ہیں مجبور پیٹ کے ہاتھوں
نہ جھوٹ بولیں تو کھانا ہضم نہیں ہوتا

یہ کاہلی ہمیں دَلدل کی موت مارے گی
سنا ہے سست پہ رَب کا کرم نہیں ہوتا

جناب مجنوں کو اِحمق سمجھنا عقل نہیں
جو دُھن کا پکا ہو وُہ کم فہم نہیں ہوتا

بھلا دو لیلیٰ کو سنتے ہی رونے لگتا ہے
وَگرنہ قیس پہ کیا کیا ستم نہیں ہوتا
۔ #شہزادقیس کی کتاب #انقلاب سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#انقلاب از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#انقلاب از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisInqilab.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #انقلاب سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
منظر میں بھی منظر کے سِوا دیکھ رَہا ہُوں
****************************************
منظر میں بھی منظر کے سِوا دیکھ رَہا ہُوں
پھٹ پڑنے کو ہے بندِ قبا دیکھ رَہا ہُوں

ششدر ہُوں کہ کوئی بھی پریشان نہیں ہے
سُورَج کو کئی دِن سے بجھا دیکھ رَہا ہُوں

تاریخ سے ظالم نے سبق سیکھ لیا ہے
فرعون کے ہاتھوں میں عصا دیکھ رَہا ہُوں

مظلوم سروں پر ہے رَمق ایسے جنوں کی
جلاد کا سر تن سے جدا دیکھ رَہا ہُوں

شمشیر کمر پکڑے ہُوئے ہانپ رہی ہے
خنجر کا بدن سخت دُکھا دیکھ رَہا ہُوں

رَب جانے کہاں جائیں گے اَب ظلِ اِلٰہی
ہر دار پہ میں ظلِ ہُما دیکھ رَہا ہُوں

سُولی پہ چڑھاوں کی ہیں خاموش اَذانیں
ہر نیزے پہ اِک رَنگ جما دیکھ رَہا ہُوں

ہر تتلی کفن پوش ہے ، ہر جگنو ہراساں
گھر گھر میں بچھا فرشِ عزا دیکھ رَہا ہُوں

ہر شخص پریشان ہے ، ہر شخص برہنہ
یہ دُنیا ہے یا روزِ جزا دیکھ رَہا ہُوں

رِہ رِہ کے قفس بنتا ہے نمناک دُھوئیں سے
شاید میں پرندے کی چِتا دیکھ رَہا ہُوں

آنکھوں کا تو وُہ حال ہے اَب قیس قسم سے
ہر چیز کے اَندر کا خلا دیکھ رَہا ہُوں
۔ #شہزادقیس کی کتاب #انقلاب سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#انقلاب از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#انقلاب از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisInqilab.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #انقلاب سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
چمن اُجاڑ کے قبریں سجانے والے لوگ
****************************************
چمن اُجاڑ کے قبریں سجانے والے لوگ
یہ بھوکے ، ننگوں کی برسی منانے والے لوگ

یہ اَپنی پستی کا دَراَصل کرتے ہیں اِعلان
مَرے بزرگوں کے قصے سنانے والے لوگ

ہے جبری شادی بھی بیٹی کو زِندہ دَفنانا
سمجھتے کیوں نہیں مرضی چلانے والے لوگ

یہ کوّے جتنی سمجھ بوجھ بھی نہیں رَکھتے
خدا کے نام پہ لاشیں جلانے والے لوگ

یہ اَپنے خوابوں کی میّت کا چہرہ بھول گئے ؟
ہمارے پیار پہ اُنگلی اُٹھانے والے لوگ

ہمارے دَرد کا عشرِ عشیر کیا جانیں
یہ پہلی چوٹ پہ آنسو بہانے والے لوگ

ذِرا سی دیر کو خود کو خدا سمجھتے ہیں
کسی فقیر کو روٹی کھلانے والے لوگ

کلی کی خوشبو کو ، جگنو کے نور کو سوچیں
فقط اُداسی کی خبریں سنانے والے لوگ

تمام چوروں کو آزاد کر دِیا جائے
سزا تو پاتے نہیں دِل چرانے والے لوگ

زَمانے والو سہارا سُخن وروں کا بنو
یہی ہیں سوچوں کا قبضہ چھڑانے والے لوگ

وُہ مجنوں ، مر کے بھی تاریخ کا حوالہ ہے
کہاں ہیں قیسؔ پہ پتھر اُٹھانے والے لوگ
۔ #شہزادقیس کی کتاب #انقلاب سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#انقلاب از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#انقلاب از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisInqilab.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #انقلاب سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
زِندہ ضمیروں کا ، سودا نہیں ہوتا
****************************************
زِندہ ضمیروں کا ، سودا نہیں ہوتا
جو بِک رَہا ہو وُہ ، زِندہ نہیں ہوتا

کردار فیصد میں ، ناپا نہیں جاتا
کردار یا ہوتا ہے یا نہیں ہوتا

جرأت نمو کی ہی ، پرواں چڑھاتی ہے
جو بیج بزدِل ہو ، پودا نہیں ہوتا

سلطان اور قائد ، میں فرق یہ بھی ہے
سچی قیادَت کا ، بچہ نہیں ہوتا

اُس شخص کے اَفکار ، مرحوم ہوتے ہیں
جس نے بغاوَت کا ، سوچا نہیں ہوتا

حق چھیننا سیکھو ، تم بھیک مت مانگو
حق پر مرے جو بھی ، مردہ نہیں ہوتا

تقدیر پر کوشش کی شرط لاگو ہے
تقدیر کا لکھا ، لکھا نہیں ہوتا

جن اِنقلابوں میں ، خوں نہ بہے لوگو
اُن اِنقلابوں کا ، چرچا نہیں ہوتا

ہر چیز مہنگی ہو ، جو بِک گیا سستا
وُہ مر بھی جائے تو ، مہنگا نہیں ہوتا

طاغوت طاقت وَر ، ہو گا مگر سُن لو
جتنا سمجھتے ہو ، اُتنا نہیں ہوتا

ہم کو محبت ہے ، کچھ قیسؔ سے وَرنہ
ہر شعر شاعر کا ، اَچھا نہیں ہوتا
۔ #شہزادقیس کی کتاب #انقلاب سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#انقلاب از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#انقلاب از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisInqilab.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #انقلاب سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
بغاوَت بھی سیاست تھی ، یہ دِل کچھ اور سمجھا تھا
****************************************
بغاوَت بھی سیاست تھی ، یہ دِل کچھ اور سمجھا تھا
اُسے جلسوں کی عادَت تھی ، یہ دِل کچھ اور سمجھا تھا

پڑھے لکھے کئی اِہلِ قلم اُس کے ملازِم تھے
وُہ خود خالِص جہالت تھی ، یہ دِل کچھ اور سمجھا تھا

عوام الناس کو جمہورِیت کی راہ پر لانا
شہنشاہی سیاست تھی ، یہ دِل کچھ اور سمجھا تھا

وُہ پاگل خانے سے کچھ روز کی چھٹی پہ آیا تھا
وُہ پگلا پن حقیقت تھی ، یہ دِل کچھ اور سمجھا تھا

غریبوں کی بھلا تقدیر کوئی کب بدلتا ہے
یہ نعرہ ہی حماقت تھی ، یہ دِل کچھ اور سمجھا تھا

وُہ بھیڑوں کے لیے اِک بھیڑیئے کی جان لے لینا
قصائی کی سخاوَت تھی ، یہ دِل کچھ اور سمجھا تھا

ہم ایسے لوگوں کے پیچھے نمازیں جھونک آئے ہیں
جنہیں ویزوں کی حاجت تھی ، یہ دِل کچھ اور سمجھا تھا

ہماری عقل شاید گھاس چرنے ہی گئی ہو گی
وُہ بندر کی عدالت تھی ، یہ دِل کچھ اور سمجھا تھا

اُسے اِک ’’ رویتِ قبلہ کمیٹی ‘‘ فون کرتی تھی
وُہ کٹھ پتلی بغاوت تھی ، یہ دِل کچھ اور سمجھا تھا

بھنور کا کشتیوں کی پہلی صف کو نہ نگلنا بھی
سمندر کی شرارَت تھی ، یہ دِل کچھ اور سمجھا تھا

لڑائی اَصل میں دو ہاتھیوں کے دَرمیاں تھی قیسؔ
جنہیں مہروں کی حاجت تھی ، یہ دِل کچھ اور سمجھا تھا
۔ #شہزادقیس کی کتاب #انقلاب سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#انقلاب از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#انقلاب از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisInqilab.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #انقلاب سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
لال ، پیلی ، سبز ، کالی ٹوپیاں
****************************************
لال ، پیلی ، سبز ، کالی ٹوپیاں
ایک اَصلی ، چار جعلی ٹوپیاں

ٹوپیاں سیتا ہے ہر اَورَنگ زیب
قوم کو پہنانے والی ٹوپیاں

دِن میں اِک دُوجے کی بنتی ہیں رَقیب
ہم نوالی ، ہم پیالی ٹوپیاں

بن گیا ٹوپی ڈَرامہ قومی کھیل
تارا توڑیں گی ہلالی ٹوپیاں

شاعری کی صرف باقی ہے نماز
رَکھ گئے اَلطاف حالی ٹوپیاں

سوچنے والے ہیں سسٹم کے رَقیب
پائیں گی رُتبہ جگالی ٹوپیاں

ہاتھ میں ٹوپی لیے بیٹھے رہو
سربریدہ ، اِنفعالی ٹوپیاں

نالیوں ، سڑکوں کی ٹوپی کچھ کے پاس
اور کچھ ہیں ہسپتالی ٹوپیاں

اُبلے آلو تک ہمیں لے جائیں گی
ایک دِن کچھ لااُبالی ٹوپیاں

صرف ہم پر ہے عیاں اَپنا وَقار
ہم نے پہنی ہیں خیالی ٹوپیاں

سوچنا ہے سب سے مشکل کام قیسؔ
اِس لیے ہیں سب کی خالی ٹوپیاں
۔ #شہزادقیس کی کتاب #انقلاب سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#انقلاب از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#انقلاب از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisInqilab.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #انقلاب سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
جو مرضی کرنے پہ زِندہ جلائیں لڑکی کو
****************************************
جو مرضی کرنے پہ زِندہ جلائیں لڑکی کو
میں دِل ہی دِل میں اُنہیں کچھ بُرا سمجھتا ہُوں
۔ #شہزادقیس کی کتاب #انقلاب سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
نام قاتل کا سن کے ’’ نا معلوم ‘‘۔
****************************************
نام قاتل کا سن کے ’’ نا معلوم ‘‘۔
پیٹ پر ہاتھ رَکھ کے لاش ہنسی
۔ #شہزادقیس کی کتاب #انقلاب سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#انقلاب از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#انقلاب از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisInqilab.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #انقلاب سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
۔ اختتام ۔ مجموعہ کلام "انقلاب" ۔
****************************************
۔ اختتام ۔ مجموعہ کلام "انقلاب" ۔
سدا خوش رہیے ۔ شہزادقیس
۔ #شہزادقیس کی کتاب #انقلاب سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس


****************************************
((End Text))
****************************************
****************************************
((Notice))
Updated On: 24-Sep-16 3:41:47 PM
Release Date: 10-Mar-16 3:26:54 PM
****************************************

****************************************
((Begin Text))
****************************************

****************************************
شہزادقیس کی جانب سے خوش آمدید
****************************************
شہزادقیس کی جانب سے خوش آمدید
مجموعہ کلام "#وہ_اتنا_دلکش_ہے" میں شامل اشعار
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#وہ_اتنا_دلکش_ہے" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#وہ_اتنا_دلکش_ہے از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#وہ_اتنا_دلکش_ہے از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisDilkash.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#وہ_اتنا_دلکش_ہے" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
اِنتساب
****************************************
اِنتساب
پھر بھی لیلیٰ کے نام
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#وہ_اتنا_دلکش_ہے" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
*
****************************************
*
(حُسنِ آغاز)

اَدائیں حشر جگائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے
خیال حرف نہ پائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

بہشتی غنچوں میں گوندھا گیا صراحی بدن
گلاب خوشبو چرائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

بدن بنانے کو کرنوں کا سانچہ خلق ہُوا
خمیر ، خُم سے اُٹھائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

قدم ، اِرم میں دَھرے ، خوش قدم تو حور و غلام
چراغ گھی کے جلائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

حلال ہوتی ہے ’’ پہلی نظر ‘‘ تو حشر تلک
حرام ہو جو ہٹائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

گُل عندلیب کو ٹھکرا دے ، بھنورے پھولوں کو
پتنگے شمع بجھائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

غُبارِ راہ ہُوا غازہ اَپسراؤں کا
نہا نہا کے لگائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

حسین لڑکیاں جب اُس پہ جاں چھڑکتی ہیں
تو لڑکوں کا کیا بتائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

میں اُس پہ ہُو بہُو لکھتا ہُوں لوگ کہتے ہیں
کہانیاں نہ سنائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#وہ_اتنا_دلکش_ہے" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#وہ_اتنا_دلکش_ہے از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#وہ_اتنا_دلکش_ہے از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisDilkash.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#وہ_اتنا_دلکش_ہے" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
*
****************************************
*
(حُسنِ آغاز)

چمن کو جائے تو دَس لاکھ نرگسی غنچے
زَمیں پہ پلکیں بچھائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

وُہ پنکھڑی پہ اَگر چلتے چلتے تھک جائے
تو پریاں پیر دَبائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

جہاں پہ ٹھہرے وُہ خوشبو کی جھیل بن جائے
گلاب ڈُوبتے جائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

ہَوا میں بوسہ اُچھالے تو پھول کھِل اُٹھیں
پرندے نغمے سنائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

وُہ عید ملنے جو غنچوں میں آئے ، پھول کہیں
نمازِ خوشبو پڑھائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

وُہ چومے غنچوں کو شفقت سے پر ’’ چھپے رُستم ‘‘
لبوں سے شہد چرائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

مہکتے پھولوں کی حسرت ہے زُلف مل جائے
تعلقات لڑائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

جو آنکھ کھلتی ہے غنچوں کی شوخ ہاتھوں پر
تو اَمی کہہ کے بُلائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

ذِرا سا بوسے پہ مائل ہُوا تو سارے گلاب
نفی میں سر کو ہلائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

کہا جو مالی سے گُل دو جو اُس کے لائق ہو
تو بولا ہوش میں آئیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

چمن سے ہو کے چلا جائے ، باقی بچتی ہیں
بہت اُداس ہَوائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#وہ_اتنا_دلکش_ہے" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#وہ_اتنا_دلکش_ہے از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#وہ_اتنا_دلکش_ہے از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisDilkash.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#وہ_اتنا_دلکش_ہے" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
*
****************************************
*
(رُکے تو وَقت)

رُکے تو وَقت ٹھہر جائے ، نبض روکے سانس
پرندے پر نہ ہلائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

گنے تو تتلیوں میں خود کو بھول کر نہ گنے
گلاب یاد دِلائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

چنے گلاب تو لگتا ہے پھول مل جل کر
مہکتی فوج بنائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

لگے پیاس تو پاؤں پہ چل کے میٹھے کنوئیں
قریب تخت کے آئیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

کہے تو سننے میں مبہوت لوگ سر بھی جناب
گھر اَپنے جا کے ہلائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

سنے تو بولنے والے خوشی کی شدت سے
وَہیں پہ جان سے جائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

سجے تو سجدے میں خوشبو ، دَھنک کے ساتھ گرے
خیال سر کو کھجائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

ملے تو ملنے ، ملانے کا ہوش تک نہ رہے
پڑوسی چائے بنائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

ڈَرے تو اَپنی شرارت پہ ہنستے بادَل کو
ہَوائیں ڈانٹ پلائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

ہنسے تو زَرد رُتوں میں گلاب کھِل جائیں
بہاریں لوٹ کے آئیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

جھکے تو پھول نگاہوں پہ پنکھڑی رَکھ لیں
گھٹائیں ، دُھوپ گھٹائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#وہ_اتنا_دلکش_ہے" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#وہ_اتنا_دلکش_ہے از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#وہ_اتنا_دلکش_ہے از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisDilkash.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#وہ_اتنا_دلکش_ہے" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
*
****************************************
*
(لیلیٰ دَر مقابلہ ء حُسن)

مقابلے میں جو حُسنِ جہاں کے حصہ لے
مقابلہ نہ کرائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

اَگر مقابلہ ہو بھی تو پہلے تینوں مَقام
اُسی کے حصے میں آئیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

زَمانے بھر کی حسین عورتیں ہَوا میں بلند!
ترازُو ہلنے نہ پائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

جو اُس کے سامنے بن ٹھن کے حُسن دِکھلائیں
تمسخر اَپنا اُڑائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

فخر سے سابقہ ملکائے حُسن کہنے لگی
ہم اُس کے آگے ہیں گائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

کسی کو اُس سے حسد ہو یہ غیر ممکن ہے
کہ خود سا کب اُسے پائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

وُہ اَوّل آ کے بھی بے تاج ملکہ کہلائی
کہ تاج اَدنیٰ ہی پائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

بدن کی قَدر بڑھانے کو کچھ حسین وُہ نام
بدن پہ کندہ کرائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

حسین لڑکیاں پاؤں کی دُھول بننے کو
بہن سے پنجے لڑائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

اَبھی بھی زُعم میں ہیں حُسن کے جو چند حسین
وُہ خود کو شیشہ دِکھائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

حسین وُہ ہے جسے وُہ کنیزی میں رَکھ لے
حضور دھوکہ نہ کھائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#وہ_اتنا_دلکش_ہے" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#وہ_اتنا_دلکش_ہے از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#وہ_اتنا_دلکش_ہے از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisDilkash.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#وہ_اتنا_دلکش_ہے" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
*
****************************************
*
(لیلیٰ دَر صنم کدہ)

صنم کدے میں جو پہنچے تو چند پہنچے صنم
دُعا کو ہاتھ اُٹھائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

صنم تراش فقط اُس کی باتیں سن سن کر
صنم تراشتے جائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

بتوں کو اُس کی کچھ آشیر باد ہو گی ضَرور
جبھی تو سجدے کرائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

جو مڑ کے دیکھے تو ہو جائیں دیوتا پتھر
ــ’’ نہیں ‘‘ بھی کہنے نہ پائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

کُنواری دِیویاں شمعیں جلا کے ہاتھوں پر
حیا کا رَقص دِکھائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

وُہ گیت گاتا ہے کہ سُر کی راجدھانی میں
کِرِشن بنسی بجائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

ذِرا سا دید کا پرشاد دے کے چل نکلے
پجاری جان سے جائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

بَلی چڑھانے کو شہزادِیاں بھی لائیں اَگر
زِیادہ موزوں نہ پائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

سیاہ ناگنیں اُس کے دَراز گیسو کا
حَلَف ، اَدَب سے اُٹھائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#وہ_اتنا_دلکش_ہے" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#وہ_اتنا_دلکش_ہے از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#وہ_اتنا_دلکش_ہے از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisDilkash.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#وہ_اتنا_دلکش_ہے" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
*
****************************************
*
(وُہ جس کے آنے کی)

وُہ جس کے آنے کی خوشبو منادی کرتی ہے
بِگُل گلاب بجائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

وُہ جس کی دید کو ڈُوبے ہُوئے جزیرے کئی
اُبھر کے سطح پہ آئیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

وُہ جس کے پاؤں پہ مادہ پرست اِہلِ زَر
متاعِ جان لُٹائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

وُہ جس کی روشنی میں راہ بھانپ کر جگنو
جہاں کو راہ دِکھائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

وُہ جس کی یاد سے سوچوں میں چاند کھِلتے ہیں
وُہ جس کے گُن سبھی گائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

وُہ جس کے ہونے سے ’’ مادہ پرست ‘‘ ہیں ہم تم
وُہ جس کو پھول لُبھائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

وُہ جس کی جلد کو چھونا ہے عید شبنم کی
وُہ جس کو تارے ستائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

وُہ جس کا ریشمی آنچل بہار کے فوجی
عَلَم بنا کے اُٹھائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

وُہ جس کی خوشبو کو خوشبو سلام کرتی ہے
وُہ جس کو غنچے منائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

وُہ جس کی زُلف کھُلے اور کھلتی ہی جائے
نیولے جان بچائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

وُہ جس کو دیکھ کے ہنس دیں وُجود روتے ہُوئے
دِلوں سے نکلیں دُعائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#وہ_اتنا_دلکش_ہے" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#وہ_اتنا_دلکش_ہے از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#وہ_اتنا_دلکش_ہے از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisDilkash.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#وہ_اتنا_دلکش_ہے" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
*
****************************************
*
(یہ شاعری نہیں حیرت کی اِنتہا میں لفظ)

شَفَق کی سرخی نہیں ، سرخ سیب جیسے گال
اُفق میں آگ لگائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

اُفق کے تارے نہیں ، اُس کو چوم کر جگنو
ترقی پاتے ہی جائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

یہ ماہتاب نہیں ، کرنیں چاند زادی کی
شبابِ شب کو سجائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

یہ گُل پہ لالی نہیں ، لعلِ یمنی خوش لب کے
شِگُوفے چومتے جائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

نہیں یہ تتلی کا پر ، گُل بدن پہ لکھی کتاب
کلی کو پھول پڑھائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

یہ مورنی نہیں ، گیسو شرابِ اَقدس کے
ہَوا کو رَقص سکھائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

کلی کا منہ نہیں ، بوسے کو سُرخ ، کم سن لب
ذِرا سا آگے کو آئیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

سَحَر کا وَقت نہیں ، نصفِ شب سنہرے ہاتھ
حجاب رُخ سے ہٹائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

یہ قوسِ قُزح نہیں ، اَبرُو شوخ قاتل کے
دَھنک پہ دھاک بٹھائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

مٔے قدیم نہیں آب ، لب سے مَس کر کے
سَبُو میں بھر کے پلائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

یہ شاعری نہیں حیرت کی اِنتہا میں لفظ
وَرَق پہ پھیلتے جائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#وہ_اتنا_دلکش_ہے" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#وہ_اتنا_دلکش_ہے از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#وہ_اتنا_دلکش_ہے از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisDilkash.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#وہ_اتنا_دلکش_ہے" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
*
****************************************
*
(لیلیٰ و جواہرات)

عقیق ، لولو و مرجان ، ہیرے ، لعلِ یمن
اُسی میں سب نظر آئیں ، وُہ اتنا دلکش ہے

جواہرات کی قسمت بدل دے شوخ بدن
’’ شریر ‘‘ چومتے جائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

ہم اُس کے سارے حسیں زیور اُتار دیتے ہیں
کہ یہ کیوں موج منائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

گلی سے رات کو مِرّیخ کے وَزیرِ معاش
اُتارے گجرے چرائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

کنیزیں پیر دُھلائیں تو گرتے قطروں سے
گُہر وُجود میں آئیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

جو اُس کی ماسی کے ’’ کنگن ‘‘ پہ لکھ دے نظم کوئی
سب اُس کو سر پہ بٹھائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

حریر ، اَطلس و کمخواب ، پنکھڑی ، ریشم
دَبا کے ہاتھ لگائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

پرانی جوتیاں تک خوش خرام بلبل کی
میوزیم میں سجائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

جواہرات ہوں ستّر ہزار اُونٹوں پر
تو پھر بھی اُس کو نہ بھائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

طلائی جوتے تو اُس کے ’’ سفید ‘‘ فام غلام
پہن کے ڈھول بجائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

دَہَن کی سیپ میں بتیس موتی یکجا ہیں
کہیں مثال نہ پائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#وہ_اتنا_دلکش_ہے" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#وہ_اتنا_دلکش_ہے از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#وہ_اتنا_دلکش_ہے از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisDilkash.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#وہ_اتنا_دلکش_ہے" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
*
****************************************
*
(نہا کے جھیل سے)

نہا کے جھیل سے نکلے تو رِند پانی میں
مہک شراب سی پائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

بلا کے حُسن پہ مبہوت ہو کے لیتی ہیں
بلائیں اُس کی بلائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

حنا سے ہاتھ پہ لکھے جو نام اَگلے دِن
تمام شہر کا پائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

جفا بھی اُس کی عطا ہوتی ہے دُعاؤں سے
ملے تو جشن منائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

وَفا کسی کو بھی اُس کی نہ مل سکے گی کبھی
مساوی کوئی نہ پائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

خدا پہ اُس کے تو ایمان بت بھی لے آئیں
یقین اَدائیں دِلائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

دَوا پلائے جسے ٹھیک کب وُہ ہوتا ہے
کہ بار بار پلائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

قبا پہ اُس کی محبت کی حکمرانی ہے
صدا پہ صدقے صدائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

حنا کی شرح میں لکھی گئیں تمام کتب
اِحاطہ کر نہیں پائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

حیا پہ اُس کی تقدس غُرور کرتا ہے
اُجالے دیپ جلائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

جفا پہ اُس کی فدا کر دُوں سوچے سمجھے بغیر
ہزاروں ، لاکھوں وَفائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#وہ_اتنا_دلکش_ہے" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#وہ_اتنا_دلکش_ہے از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#وہ_اتنا_دلکش_ہے از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisDilkash.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#وہ_اتنا_دلکش_ہے" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
*
****************************************
*
(جمال ایسا جنوں گر)

جمال ایسا جُنوں گر کہ پوج لیں تب بھی
نہ لکھی جائیں خطائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

نِہال ایسا کہ خوش قامتی پہ سَروِ چمن
رُکوع سے سر نہ اُٹھائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

سوال ایسا کہ جس کے جواب میں اَکثر
دِماغ ٹھہر سے جائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

ہلال ایسا کہ جس کی خوشی کو اَبر نشین
سُریلے ساز بجائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

غزال ایسا کہ دِلکش نگاہیں شیروں پر
اَدا کے تیر چلائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

خیال ایسا کہ سوچوں پہ سکتہ طاری ہو
اَرسطو اُنگلی چبائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

مُحال ایسا کہ رُستم بھی کانپنے کے بعد
شکست مان کے جائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

قِتال ایسا کہ مقتول اُس کا بننے کو
رَقیب پنجہ لڑائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

کمال ایسا کہ جس کا زَوال باقی حسین
ذِرا حساب لگائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

جلال ایسا شہنشاہ ، قَدِ آدم عکس
سروں سے بالا سجائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

جمال ایسا کہ شہزادیاں تک اُترن سے
لباسِ عید بنائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#وہ_اتنا_دلکش_ہے" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#وہ_اتنا_دلکش_ہے از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#وہ_اتنا_دلکش_ہے از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisDilkash.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#وہ_اتنا_دلکش_ہے" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
*
****************************************
*
(نظر جھکائے تو)

نظر جھکائے تو پاکیزگی طواف کرے
اُجالے پھول چڑھائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

نظر اُٹھائے تو خوشبو کی بجلیاں کڑکیں
مہک سی جائیں ، فضائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

نظر اُٹھا کے جھکائے تو رُوح قبض کرے
حیا پہ صدقے رِدائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

نظر جھکا کے اُٹھائے تو ناگ ششدر و گُم
فُسوں کو توڑ نہ پائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

نظر ملائے تو ہم جیسے سات پشتوں تک
نظر کا قرض چکائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

نظر ملا کے ہٹائے تو قلب چلنے لگے
پسینے چھوٹتے جائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

نظر ہٹا کے ملائے تو ہوش اُڑ جائیں
جنون اَدائیں سکھائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

نظر ملائے تو رَہزن کو رَہزنی کے بعد
ہلاک کر دیں اَدائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

نظر لڑائے تو پر کیوں کسی کی کیا اَوقات
کہ اُس سے نظریں لڑائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

نظر جمائے تو پتھر کو پاش پاش کرے
بشر جی ! خیر منائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

نظر چرائے تو ہم جیسے خوش فہم عاشق
متاعِ جان لُٹائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#وہ_اتنا_دلکش_ہے" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#وہ_اتنا_دلکش_ہے از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#وہ_اتنا_دلکش_ہے از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisDilkash.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#وہ_اتنا_دلکش_ہے" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
*
****************************************
*
(دلیلِ آرائشِ لیلیٰ)

لگائی سرخی کہ سرخی لبوں کی پھیکی لگے
تو تتلیاں نہ ستائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

لگایا اِس لیے غازہ کہ اِس کی سات تہیں
حقیقی حُسن چھپائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

لگائی خوشبو کہ شاید مہکتی لَپٹیں ، ذِرا
بدن کی خوشبو گھٹائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

لگایا اِس لیے چشمہ کہ آنکھ لڑنے سے
یہ مفت مارے نہ جائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

سیاہ ٹیکا ہیں یہ زیورات کہ ہم تم
اُسے نظر نہ لگائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

کھنکتے گھنگرو ہیں بلی کے پاؤں میں گھنٹی
سنیں تو جان بچائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

یہ ہیرا ناک میں پہنا کہ سادہ لوح مُرید
نظر نہ لب پہ ٹکائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

اَنگوٹھی منگنی کی منگنی بغیر پہنے ہے
کہ لوگ سر نہ کھپائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

جڑاؤ ہیروں کے کنگن پہن لیے ہیں کہ ہم
کلائی دیکھ نہ پائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

حنا ، حجاب ہے دَراَصل نُوری ہاتھوں کا
کہ کم سے کم نظر آئیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

لباس ڈَھنگ کا پہنا کہ دِل ہی دِل میں شریر
مزید آگے نہ جائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#وہ_اتنا_دلکش_ہے" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#وہ_اتنا_دلکش_ہے از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#وہ_اتنا_دلکش_ہے از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisDilkash.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#وہ_اتنا_دلکش_ہے" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
*
****************************************
*
(گُل و لیلیٰ)

چڑھے جو قرب کی خوشبو تو گُل رہیں تازہ
مہینے بیتتے جائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

وُہ چُومے خشک لبوں سے جو شبنمِ گُل کو
تو پھول پیاس بجھائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

وُہ جس کو سوچ کے ہنستے ہیں زَعفران کے کھیت
تصورات ہنسائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

نہیں یہ پھولوں پہ شبنم ، چمن میں سوتا دیکھ
پسینے پھول کو آئیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

گُلاب ، موتیا ، چنبیلی ، یاسمین ، کنول
اُسے اَدا سے لُبھائیں ، وُہ اتنا دلکش ہے

گُلاب ، مشکِ ختن ، زَعفران ، تر ، لوبان
بدن کو سونگھتے جائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

گُلاب کاغذی ہاتھوں میں خوشبو دینے لگیں
کئی تو اُگتے بھی جائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

مثالیں دے کے بھی سمجھاتے حُسن کے دَرجات
مگر مثال نہ پائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

گُلوں کی سیج نہیں ، جسم چومنے کو گُلاب
صفیں طویل بنائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

گُلاب گھر سے ہی ہاتھوں میں لے کے نکلا کہ
گُلاب آتے نہ جائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

پڑھا کے تتلی کو اُس کا ترانہ بولی بہار
پروں پہ لکھ کے یہ لائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#وہ_اتنا_دلکش_ہے" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#وہ_اتنا_دلکش_ہے از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#وہ_اتنا_دلکش_ہے از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisDilkash.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#وہ_اتنا_دلکش_ہے" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
*
****************************************
*
(جناب عشق نہ ہو جائے)

جناب عشق نہ ہو جائے پڑھتے پڑھتے غزل
مزید آگے نہ جائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

گلاب چومتے ہیں صرف ہاتھ بھر زُلفیں
لباس موج منائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

حجاب اُتارے ، ملے ترکِ مے کشی کا ثواب
کہ رِند جام گرائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

چناب اُس کے اِشارے سے ہو گیا دو نیم
گھڑے کو آگ لگائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

نصاب میں ہُوا شامل جو حُسن پر اِک باب
تو سال بھر یہ پڑھائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

نقاب اُٹھائے تو سورج کا دِن نکلتا ہے
چراغ دیکھ نہ پائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

جواب اِس لیے دیتا نہیں سلام کا وُہ
کہ لوگ مر ہی نہ جائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

شراب اور ایسی کہ جو ’’ دیکھے ‘‘ حشر تک مدہوش
نگاہ رِند جھکائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

کباب لب سے لگے تو بہت سے جام بدست
شراب دِل پہ گرائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

شباب ایسا کہ اَنگڑائی لینے کا سوچے
تو لڑکے کانپ سے جائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

کتابِ حُسن کے صفحات گننے کو اُنگلی
پہ سات بحر لگائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#وہ_اتنا_دلکش_ہے" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#وہ_اتنا_دلکش_ہے از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#وہ_اتنا_دلکش_ہے از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisDilkash.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#وہ_اتنا_دلکش_ہے" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
*
****************************************
*
(لیلیٰ دَر مکتبِ عشق)

کھلے جو عشق کا مکتب تو ’’ لب پہ آتی ‘‘ نہیں
دُعا میں دِل سے پڑھائیں ، ’’ وُہ اِتنا دِلکش ہے ‘‘

معلمہ بنے ، دو منشی تین ہفتوں تک
تو حاضری ہی لگائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

کلاس چھوڑنا تو دُور اُس کے سب شاگرد
بروزِ عید بھی آئیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

سنیں تو چھٹی کی دَرخواست کے سِوا فَر فَر
سب اُس کے طلبہ؟ سنائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

توجہ لینے کو اُس کی شریف بچے کریں
عجیب عجیب خطائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

دوپٹہ اَوڑھے تو تختہ سیاہ آئے نظر
وَگرنہ کالی گھٹائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

زَمین والوں کو ، جغرافیہ ستاروں کا
نگاہیں اُس کی پڑھائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

گلوب گر وُہ گھما دے ذِرا سا تیزی سے
زَمیں پہ زَلزلے آئیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

پڑھا دے اُلٹا جو جغرافیہ وُہ شوخ زِبان
تو ملک ٹوٹتے جائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

اَگر وُہ نقشے میں رَکھ دے جزیرے پر اُنگلی
جزیرے ڈُوبتے جائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

جو خطِ اِستوا پر حُسن کے جمائیں نظر
نگاہیں مفت گنوائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#وہ_اتنا_دلکش_ہے" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#وہ_اتنا_دلکش_ہے از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#وہ_اتنا_دلکش_ہے از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisDilkash.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#وہ_اتنا_دلکش_ہے" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
*
****************************************
*
(لیلیٰ دَر مکتبِ عشق)

وُہ ہنس رہا ہو تو کچھ بچے آ کے کہتے ہیں
یہ اِملی کھا کے دِکھائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

بہت پسند ہے لڑکوں کو علم کی خوشبو
رُومال اُس کا چرائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

پٹائی کر کے ہٹے تو پٹے ہُوئے لڑکے
چھڑی کو چومتے جائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

جو لکھ کے بھیجے شکایت تو باپ صاحب بھی
لکھائی لب سے لگائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

بجے جو چھُٹی کی گھنٹی تو بچے ہچکی زَدہ
زَمانے بھر کو رُلائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

شبِ فِراق پہ مضمون بچے لکھ لائے
اَب اور کیسے بتائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

جو اِمتحان لے ، شاگرد اُس کو نمبر دیں
کئی تو دیتے ہی جائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

جو فیل ہو کے رہیں اُس کے پاس دیتے ہیں
تمام عمر دُعائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

وُہ صرف پاس نہیں اَپنے پاس کرتا ہے
سو بچے جان لڑائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

کلاس ہے کہ مریدی کا سلسلہ کوئی
چڑھاوے بچے چڑھائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

جوابی پرچہ کئی بچے خالی دے آئے
کہ مس کو چھوڑ نہ پائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#وہ_اتنا_دلکش_ہے" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#وہ_اتنا_دلکش_ہے از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#وہ_اتنا_دلکش_ہے از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisDilkash.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#وہ_اتنا_دلکش_ہے" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
*
****************************************
*
(ریاضیات)

رِیاضی دان اُسے فرض کر کے دیکھیں تو
رِیاضی بھول ہی جائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

کہے جو فرض کریں ایکس ، وائے سے ہے بڑا
تو ایکس جشن منائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

جذر بھی لے لیں اَگر دِلکشی کا دِلبر کی
جواب گن نہیں پائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

جو اُس کا مجنوں بنے ، اَرشمیدس اُس کو کہے
مجھے رِیاضی پڑھائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

صفر ، صفر ہے فقط اِس لیے کہ کر نہ سکا
شمار اُس کی اَدائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

کمالِ حُسن کو ہم دو سے ضرب دیتے مگر
عدد کہاں سے منگائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

صحیح عدد بھی جمالِ مساوی کے آگے
غلط ، سلط نظر آئیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

جو اَپنے آپ کو ناطق عدد سمجھتے ہیں
وُہ منہ بھی کھول نہ پائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

جواب ، ’’حُسن کے اِثبات‘‘ کے سوال کا ہے!
حُضور علاج کرائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

صفر تا نو کسی ہندسے کی یہ مجال نہیں
کمال اُس کے بتائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

رِیاضی میں جہاں ’’بے اِنتہا‘‘ بتانا ہو
دو آنکھیں اُس کی بنائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#وہ_اتنا_دلکش_ہے" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#وہ_اتنا_دلکش_ہے از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#وہ_اتنا_دلکش_ہے از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisDilkash.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#وہ_اتنا_دلکش_ہے" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
*
****************************************
*
(مثلثات ، علم الاعداد)

کرائے فرض وُہ جو کچھ بھی فرض ہو جائے
فریضے بڑھتے ہی جائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

بدن کی حد پہ کسی ’’حادہ زاوِئیے‘‘ نے کہا
اِس علم کا تو بتائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

مثلثاتِ بدن سب ہیں چار ’’ضلعوں‘‘ کی
اُصول سر کو کھجائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

وُہ دائرے کو مثلث کہے یا خط کو عُمود
سر اَپنا سارے ہلائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

’’محیط‘‘ ذِہن میں بانہوں کا کچھ بناتے ہیں
پھر اُس پہ ’’قوس‘‘ لگائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

چلا کے ذِہن میں کچھ لڑکے حُسن کی ’’پرکار‘‘
’’مُماسِ‘‘ عشق بنائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

کترنے لگتے ہیں دِل میں شریر ’’نصف قُطر‘‘
اَگرچہ مار بھی کھائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

وُہ ’’مستطیل‘‘ بھی کھینچے تو طالب علموں کو
نظر ’’مربعے‘‘ ہی آئیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

سنا ہے جس طرح ’’مخروط‘‘ وُہ پڑھاتا ہے
پرندے پڑھنے کو آئیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

طلسمِ حُسن پہ ’’چوبیس مسئلے‘‘ بولے
کوئی اِشارہ بتائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

کسی کے حُسن کے ’’تکمیلی زاوِئیے‘‘ توبہ
’’وَتَر‘‘ سروں کو ہلائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#وہ_اتنا_دلکش_ہے" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#وہ_اتنا_دلکش_ہے از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#وہ_اتنا_دلکش_ہے از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisDilkash.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#وہ_اتنا_دلکش_ہے" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
*
****************************************
*
(تلمیحاتِ قدیم)

چلے جو مست ہِرن ، شہ جہان ، تاج مَحَل
قدم قدم پہ بنائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

سکندر اَصل میں اُس کی تلاش کرتے تھے
کہ خالی ہاتھ نہ جائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

چرا کے عکس ، حنا رَنگ ہاتھ کا قارُون
خزانے ڈُھونڈنے جائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

پکارا رو کے یہ دیدارِ عام پر حاتم
حضور ایسی عطائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

جھلک دِکھانے کی رَکھیں جو شرط جوئے شیر
ہزاروں کوہ کن آئیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

چمن میں اُس نے جہاں دونوں بازُو کھولے تھے
وَہاں کلیسا بنائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

ذَہین لوگ سرِ کوچہ ’’یافتم‘‘ کہہ کر
دَھمال ڈالتے جائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

یہ چرخہ چاند پہ صدیوں سے کاتنے والے
جہیز اُس کا بنائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

تناسب ایسا کہ نوشیروان اُس سے کہے
حُضور عدل سکھائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

لبوں میں اُنگلی دَبا کر جو سوچنے بیٹھے
تو لوگ سوچ نہ پائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

اَکیلے گیسوؤں کا حُسن اُٹھا نہیں سکتا
گھٹائیں ہاتھ بٹائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#وہ_اتنا_دلکش_ہے" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#وہ_اتنا_دلکش_ہے از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#وہ_اتنا_دلکش_ہے از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisDilkash.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#وہ_اتنا_دلکش_ہے" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
*
****************************************
*
(سخنوری)

ہمیں مبالغے کی کیا پڑی ہے ، لو صاحب!
ہم آنکھوں دیکھا بتائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

غزل میں آئے تو مصرعے سلام کرتے ہیں
حروف ہار بنائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

جنہوں نے دیکھا نہیں اُس کو ، شاعری نہ کریں
یا مجھ سے سیکھ کے جائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

غزل جو پڑھ کے سنائی ، کہا تمہارے رَقیب
یہ منہ زَبانی سنائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

غزل کا پوچھے جو اِنعام ، دَست بستہ کہوں
بس اَپنا نام بتائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

سرہانے میرؔ کے ٹُک فاتحہ کو گر وُہ جھکے
تو میرؔ بول نہ پائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

مجھے شروع میں پڑھا کر ہیں دَم بخود شاعر
اَب آگے کس کو پڑھائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

جو اُس پہ لکھی غزل پڑھ کے مر گیا اُس کا
جنازہ میرؔ پڑھائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

جو اُس کو رُوبرو دیکھیں تو رو پڑیں شاعر
غزل کو بھول ہی جائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

مبالغے اُسے مبہوت ہو کے تکتے ہیں
حقائق آنکھ چرائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

لہو سے دِل کے وُضو کر کے لکھے جوشِ جنوں
تو شعر ذِہن میں آئیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#وہ_اتنا_دلکش_ہے" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#وہ_اتنا_دلکش_ہے از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#وہ_اتنا_دلکش_ہے از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisDilkash.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#وہ_اتنا_دلکش_ہے" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
*
****************************************
*
(کوچۂ لیلیٰ)

ہے اُس کے کوچے میں صدقے کی اِس قَدَر بھرمار
فقیر گاڑی پہ آئیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

گلی میں شوخ کی دائم مشاعرے کا سماں
شجر بھی شعر سنائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

گلی سے اُس کی گزر کر جو نہ بنے شاعر
تو اُس کو اُردُو پڑھائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

گلی میں اُس کی کوئی گجرے پیسے لے کر دے
تو اُس کو پھینٹی لگائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

صنم کا کوچہ ہے کہ خوشبوؤں کا تاج مَحَل
گُلاب خوشبو لگائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

گلی میں اُس کی مساوات اَعلیٰ دَرجے کی
صف ایک جیسی بنائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

بہت سے ہیں سَرِ دِہلیز اِتنی مُدّت سے
کہ اُن کو خط یہیں آئیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

کئی غریب گلی چوم کر ہی لوٹ گئے
کہ بھیڑ سہہ نہیں پائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

جو اُس کے کوچے میں پاؤں پہ چل کے آتے ہیں
وُہ چڑھ کے کاندھوں پہ جائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

گلی میں اُس کی کئی لاعلاج لوگ آ کر
علاج مفت کرائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

بھُنے کبوتروں کی تین سو دُکانیں ہیں
خطوط اِس قَدَر آئیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#وہ_اتنا_دلکش_ہے" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#وہ_اتنا_دلکش_ہے از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#وہ_اتنا_دلکش_ہے از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisDilkash.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#وہ_اتنا_دلکش_ہے" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
*
****************************************
*
(لب ہائے لیلیٰ)

کبھی کبھی ہمیں لگتا ہے بھیگے لب اُس کے
ہَوا میں شہد ملائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

خیال میں بھی کوئی لب پہ اُنگلی پھیرے تو
دَھنستے سے نظر آئیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

اُداس غنچوں نے جاں کی اَمان پا کے کہا
یہ لب سے تتلی اُڑائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

وُہ پھونک مارے تو سب گہرا سانس لیتے ہیں
کئی تو ہونٹ چبائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

لبوں کی دِلکشی یاقوتِ سُرخ پر بھاری
کہ یہ تو آگ لگائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

کلی کے کان میں دے کر اَذان خوشبو کی
لبوں کا کلمہ پڑھائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

جو اُنگلی رَکھ کے لبوں پر اِشارہ چپ کا کرے
تو پھول سکتے میں آئیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

ملائی ، مصری ، کلی ، دودھ ، جام ، شہد کہیں
حُضور ! منہ تو لگائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

جو نچلا ہونٹ چبائے تو پنکھڑی کے بدن
حیا سے کانپتے جائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

زَبان پھیرے لبوں پر تو دِل سے اُٹھنے لگیں
ہزاروں ، لاکھوں دُعائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

لبوں کی نرمی کچلنے کو پھول تو لائے
لبوں سے کیسے لگائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#وہ_اتنا_دلکش_ہے" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#وہ_اتنا_دلکش_ہے از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#وہ_اتنا_دلکش_ہے از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisDilkash.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#وہ_اتنا_دلکش_ہے" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
*
****************************************
*
(حسین اِتنا ہے)

حسین اِتنا ہے کہ معجزے تعجب سے
بس اُس کو تکتے ہی جائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

سریلا اِتنا ہے کہ ساز اَپنی آوازیں
صدا سے اُس کی ملائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

نفیس اِتنا ہے کہ کرنیں غسل کرنے کو
بدن کی جھیل پہ آئیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

نشیلا اِتنا ہے کہ جام سوچ کر آنکھیں
مزے سے کانپ سے جائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

منور اِتنا ہے چہرہ کہ سونے سے پہلے
چراغ اُس کو بجھائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

سجیلا اِتنا ہے کہ گرتی بوندیں جھرنے کی
بدن سے نظریں چرائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

گلابی اِتنا ہے کہ اُس کو شاہ سُرخ گُلاب
’’اَبُو گُلاب‘‘ بلائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

رَسیلا اِتنا ہے کہ کلیاں رَس بھرائی کو
طرح طرح سے منائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

سفید اِتنا ہے کہ رَنگ ــ’’گہرا‘‘ کرنے کو
مہینوں دُودھ پلائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

غصیلا اِتنا ہے کہ بادشاہ وَقتِ کلام
اَمان جان کی پائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

یقین اِتنا ہے اَپنے جمال پر کہ نہ لے
خود اَپنی ماں کی دُعائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#وہ_اتنا_دلکش_ہے" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#وہ_اتنا_دلکش_ہے از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#وہ_اتنا_دلکش_ہے از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisDilkash.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#وہ_اتنا_دلکش_ہے" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
*
****************************************
*
(حُسنِ اِختتام)

جو اُس کو چومنا چاہیں ، اَگر وُہ چومنے دے
تو چوم پھر بھی نہ پائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

جو بالمشافہ ملیں ، سر جھٹک کے قصۂ شب
بطورِ خواب سنائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

سمندر اُس کے قدم چومنے کو آگے بڑھیں
جوار بھاٹے تب آئیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

مبالغے کے سہارے سے حُسن ’’کم‘‘ کر دُوں
ضعیف مر ہی نہ جائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

صنم کے سامنے صاحب ، سخن تو دُور کی بات!
یہ دِل دَھڑکنے نہ پائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

جو حُسن جسم سے چھَلکا ، اُسی سے پھول بنے
ذِرا حساب لگائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

جو جان اَٹکے کسی عاشقی میں بسمل کی
تو اُس کا قصہ سنائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

شبیہ سائے کی اُس کے جو خواب میں دیکھیں
وُہ گھر کبھی نہ بسائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

* وَفائیں اُس کی جفا کا طواف کرتی ہیں
قصیدے رَنگ جمائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

*وُہ ہنس کے کہہ دے جو حوروں پہ پردہ ساقط ہے
دُکان شیخ بڑھائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

غزل سے آپ کو اَندازہ ہو گیا ہو گا
نہیں تو ۔ ۔ ۔ میں جائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

(نوٹ: خالی جگہ میں باغ پڑھا جائے۔
شکریہ)
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#وہ_اتنا_دلکش_ہے" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#وہ_اتنا_دلکش_ہے از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#وہ_اتنا_دلکش_ہے از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisDilkash.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#وہ_اتنا_دلکش_ہے" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
*
****************************************
*
(حُسنِ اِختتام)

جو کام سوچ رہے ہیں جناب دِل میں اَبھی
وُہ کام بھول ہی جائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

مگن تھے مینہ کی دُعا میں سبھی کہ وُہ گزرا
بدل دیں سب کی دُعائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

ستارے توڑ کے لانے کی کیا ضرورت ہے
ستارے دوڑ کے آئیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

ہم اُس کے چہرے سے نظریں ہٹا نہیں سکتے
گلے سے کیسے لگائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

وُہ جتنا جسم تھا ، اُتنا غزل میں ڈھال لیا
طلسم کیسے دِکھائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

غلام بھیجتا ، سر آنکھوں پر بٹھا لیتے
اُسے کہاں پہ بٹھائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

زَبان وَصف سے عاجز ، حُروف مفلس تر
قلم گھسیٹ نہ پائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

طلسمِ حُسن ہے موجود لفظوں سے اَفضل
لغت جدید بنائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

جو اُس کے شہر میں آتے ہیں ، سانس بعد میں لیں
سفینے پہلے جلائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

جو شعر جانِ غزل تھا ، وُہ جان کر چھوڑا
کہ آپ مر ہی نہ جائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے

جب اُس پہ لکھی غزل پڑھ کے یار دَنگ ہیں قیسؔ
ہم عکس کیسے دِکھائیں ، وُہ اِتنا دِلکش ہے
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#وہ_اتنا_دلکش_ہے" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#وہ_اتنا_دلکش_ہے از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#وہ_اتنا_دلکش_ہے از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisDilkash.pdf
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#وہ_اتنا_دلکش_ہے" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
۔ اختتام ۔ مجموعہ کلام "وہ اتنا دلکش ہے" ۔
****************************************
۔ اختتام ۔ مجموعہ کلام "وہ اتنا دلکش ہے" ۔
سدا خوش رہیے ۔ شہزادقیس
۔ #شہزادقیس کی کتاب "#وہ_اتنا_دلکش_ہے" سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس


****************************************
((End Text))
****************************************
****************************************
((Notice))
Updated On: 24-Sep-16 3:41:56 PM
Release Date: 25-Mar-16 11:24:46 AM
****************************************

****************************************
((Begin Text))
****************************************

****************************************
#‏شہزادقیس کی جانب سے خوش آمدید
****************************************
#‏شہزادقیس کی جانب سے خوش آمدید
مجموعہ کلام #‏نمکیات میں شامل اشعار
۔ #شہزادقیس کی کتاب #نمکیات سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#نمکیات از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#نمکیات از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisNamkiyaat.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #نمکیات سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
اِنتساب
****************************************
اِنتساب
موٹی سوئی کے نام
۔ #شہزادقیس کی کتاب #نمکیات سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
مِس! ٹیک: تقدیر نے دِکھایا جو سرتاج یار کا
****************************************
مِس! ٹیک: تقدیر نے دِکھایا جو سرتاج یار کا
میں روکتا ہی رہ گیا تاریخی قہقہہ
۔ #شہزادقیس کی کتاب #نمکیات سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
چائے میں بسکٹ گرا تو دِل کا دورہ پڑ گیا
****************************************
چائے میں بسکٹ گرا تو دِل کا دورہ پڑ گیا
فوری چمچ نہ ملا تو دِل کا دورہ پڑ گیا

خون پتلا تو گوالا مفت میں کرتا میاں
ڈاکٹر کا بِل پڑھا تو دِل کا دورہ پڑ گیا

عمر بھر اِس ڈاکٹر نے گورکن راضی کیے
ہاتھ میں آئی شِفا تو دِل کا دورہ پڑ گیا

ہنستے ہنستے چال ہنس کی رات بھر کوا چلا
صبح جب پھُر سے اُڑا تو دِل کا دورہ پڑ گیا

سُرخ طوطی تعزیت کرنے گئی کوے کے گھر
کپڑوں کا طعنہ ملا تو دِل کا دورہ پڑ گیا

ناپ ، پیدل لے رہا تھا موٹو کا دَرزی غریب
ناپ اَبھی آدھا ہُوا تو دِل کا دورہ پڑ گیا

رُوحِ غالب ایک اَدبی بزم میں موجود تھی
شاعرہ نے کچھ پڑھا تو دِل کا دورہ پڑ گیا

دوستوں کے طعنوں سے تنگ آ کے جب کنجوس نے
دِل کیا تھوڑا بڑا تو دِل کا دورہ پڑ گیا

رات بھر دُولہا میاں گاتا رہا دُلہن کے گیت
صبحِ دَم جب منہ دُھلا تو دِل کا دورہ پڑ گیا

نسخے میں تھا گیم کھیلو ، سست سمجھا وِڈیو گیم
پہلا لیول حل کیا تو دِل کا دورہ پڑ گیا

راز یہ واعظ کے قُل کے بعد کھولا قیسؔ نے
جونہی ’’ جی اَچھا ‘‘ کہا تو دِل کا دورہ پڑ گیا
۔ #شہزادقیس کی کتاب #نمکیات سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#نمکیات از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#نمکیات از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisNamkiyaat.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #نمکیات سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
روٹی پہ آڑُو رَکھ کے پکانا پڑا مجھے
****************************************
روٹی پہ آڑُو رَکھ کے پکانا پڑا مجھے
کچھ یوں پکا کہ پِزّا منگانا پڑا مجھے

دو یار سُن رہے تھے کہ تین اور آ گئے
پانی غزل میں اور بڑھانا پڑا مجھے

مہماں فروٹ لائے تو چاقو تو میرا تھا
اَخبار بھی زَمیں پہ بچھانا پڑا مجھے

ہونی سے خوب بھاگا پر اَفسوس ایک دِن
شوہر سے اُس کے ہاتھ ملانا پڑا مجھے

مُولی اُٹھا کے بھاگتے پکڑا گیا گدھا
منہ کالا کر کے اُس کو گھمانا پڑا مجھے

دِل میں بٹھاتا یار کو پر دِل میں کوئی تھا
کچھ روز اُس کو منہ میں بٹھانا پڑا مجھے

زَنجیرِ عدل چور کی بکری کو مل گئی
بچوں سے لے کے باجا بجانا پڑا مجھے

جج نے کہا ، صفائی میں کچھ ہے تمہارے پاس
سونے کا اُس کو دانت دِکھانا پڑا مجھے

پانی کی آدھی بالٹی اور اِہلِ غسل چار
مجبوری میں چراغ بجھانا پڑا مجھے

کانوں میں چابی پھیرتے دیکھا جو بار بار
اِخلاقاً اُس کو دَھکا لگانا پڑا مجھے

باقاعدہ وُہ دیر سے آنے لگا تھا قیسؔ
دِلبر کو سرخ کارڈ دِکھانا پڑا مجھے
۔ #شہزادقیس کی کتاب #نمکیات سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#نمکیات از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#نمکیات از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisNamkiyaat.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #نمکیات سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
رِیاضیات میں سر ، دَھڑ کھپایا کرتا تھا
****************************************
رِیاضیات میں سر ، دَھڑ کھپایا کرتا تھا
میں کاپی لکھتے ہُوئے کپکپایا کرتا تھا

جو ہنس کے پوچھتا تھا کام چیک ہُوا تھا آج ؟
’’ جواب میں کوئی آنسو بہایا کرتا تھا ‘‘

پرندے بھی میں بناتا تھا ، پر اَکیلے میں
میں کاپیوں پہ بڑا کچھ بنایا کرتا تھا

گلی کے بیچ میں دو کمرے منہ چڑاتے ہیں
’’ یہ راستہ تو کہیں اور جایا کرتا تھا ‘‘

فقیر جلدی سے نوٹ اَپنے گننے لگتے تھے
میں جب خرید کے اَمرُود کھایا کرتا تھا

لڑاکی مالکہ کے موٹے لاڈ پرور کو
میں جیب خرچ سے سگریٹ پلایا کرتا تھا

نجانے سر جی کیوں دُگنی پٹائی کرتے تھے
میں زیرِ لب بھی اَگر بُڑبُڑایا کرتا تھا

ہمارا ماسٹر ذِہنی غریب تھا اِتنا
کلاس پوری کو مرغا بنایا کرتا تھا

قسم اُٹھاتے تھے اُستاد تم نہاتے نہیں
میں چھوٹی عید پہ قدرے نہایا کرتا تھا

بہت ہی رات گئے تک نتیجے والے دِن
میں دادا اَبّو کی ٹانگیں دَبایا کرتا تھا

جو آج دو بجے شب لوٹا تو خیال آیا
میں گھنٹی بجتے ہی گھر دوڑ جایا کرتا تھا

ہر ایک ہاتھ پہ چھَپ جاتا تھا کیو فار قیسؔ
میں چاند رات پہ منہدی لگایا کرتا تھا
۔ #شہزادقیس کی کتاب #نمکیات سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#نمکیات از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#نمکیات از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisNamkiyaat.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #نمکیات سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
زِندہ دِلوں کی ہوتی ہے پہچان قہقہہ
****************************************
زِندہ دِلوں کی ہوتی ہے پہچان قہقہہ
کھل کے لگاؤ آج مری جان قہقہہ

کچھ لوگوں کے تو دانت نکلتے ہیں مکے سے
کچھ لوگوں کے گراتا ہے دَندان قہقہہ

کچھ شاعر اَپنے آپ کو سنجیدہ لیتے ہیں
پر مارتے ہیں بیچ میں اَوزان قہقہہ

سب پیٹھ پیچھے ہنستے ہیں اِنٹل کچول کے
اِک شاعرہ کا پورا ہی دیوان قہقہہ

وُہ لمحہ ہے نوشتۂ دیوار آج بھی
کھا کر لگایا جان نے جب پان قہقہہ

نکلا نہ جب نمک تو قسم سے مجھے لگا
مجھ پر لگا رہا ہے نمکدان قہقہہ

بلی کی مونچھ ، ہاتھی کی پونچھ ، آنکھ بیل کی
اور اُونٹ کی لگاتی ہے کوہان قہقہہ

بکری کے چار فائدے جونہی پتہ چلے
تا دیر مارتا رہا اِنسان قہقہہ

ڈائٹنگ زَدہ حسینہ جو جھونکے سے جا گری
تا دیر مارتا رہا طوفان قہقہہ

سنجیدہ چہرے والے تری نوز کی قسم
سنجیدگی سے ہے کہیں آسان قہقہہ

کھاتے نہیں ہیں آم گدھے جیسے ، ویسے قیسؔ
ہرگز نہیں لگائیں گے حيوان قہقہہ
۔ #شہزادقیس کی کتاب #نمکیات سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#نمکیات از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#نمکیات از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisNamkiyaat.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #نمکیات سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
کیکڑے کا رَقص ہے نہ اُونٹ کی تشہیر ہے
****************************************
کیکڑے کا رَقص ہے نہ اُونٹ کی تشہیر ہے
یہ تو میرے ڈاکٹر کے ہاتھ کی تحریر ہے

کیچی میچی اِن کے ایلفا بیٹس کا آغاز ہے
کچھ پڑھا جائے تو یہ خوبی نہیں تقصیر ہے

ڈاکٹر صاحب حلف میں یہ بھی لکھا تھا کہیں ؟
صاف ستھرا لکھنے والا لائقِ تعزیر ہے

ڈاکٹر خوش خط لکھے تو اُس کی ڈِگری چیک کرو
دال میں کالا نہیں یہ دال میں کف گیر ہے

بچہ یوں لکھے تو ٹیکے سے کریں سیدھا اُسے
ڈاکٹر کا کیا کریں ٹیکوں کا تو یہ پیر ہے

ڈِگریوں کا ہے کوئی سر پیر نہ تحریر کا
گر شِفا مل جائے تو بندے تری تقدیر ہے

روشنی سے تیز تر لکھنے کی عادَت پڑ گئی
لفظ پیچھے رِہ گئے تو اِن کی کیا تقصیر ہے

نسخہ لکھا ہے کہ ملک الموت کو خط لکھ دِیا
آپ سمجھیں تو یہ طبّی پیشے کی تحقیر ہے

ہو نہ ہو اِہرام میں پٹّی شدہ فرعون کی
ڈاکٹر کی شان میں فُل زیرِ لب تحریر ہے

زِندگی بھر خامیوں سے اَپنی نا واقف رَہا
جس کسی کی آنکھ میں بھی علم کا شہتیر ہے

ٹاپ کرنے والوں کی تحریر کا یہ حشر قیسؔ
وائرسوں سے گھلتے ملتے رہنے کی تاثیر ہے
۔ #شہزادقیس کی کتاب #نمکیات سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#نمکیات از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#نمکیات از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisNamkiyaat.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #نمکیات سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
۔ اختتام ۔ مجموعہ کلام "نمکیات" ۔
****************************************
۔ اختتام ۔ مجموعہ کلام "نمکیات" ۔
سدا خوش رہیے ۔ شہزادقیس
۔ #شہزادقیس کی کتاب #نمکیات سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس


****************************************
((End Text))
****************************************
****************************************
((Notice))
Updated On: 24-Sep-16 3:42:04 PM
Release Date: 11-Mar-16 2:54:25 PM
****************************************

****************************************
((Begin Text))
****************************************

****************************************
شہزادقیس کی جانب سے خوش آمدید
****************************************
شہزادقیس کی جانب سے خوش آمدید
مجموعہ کلام "نقشِ ہفتم" میں شامل اشعار
۔ #شہزادقیس کی کتاب #نقش_ہفتم سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#نقش_ہفتم از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#نقش_ہفتم از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisNaqsh.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #نقش_ہفتم سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
اِنتساب
****************************************
اِنتساب
ہر نقش ِ کہن کے نام
۔ #شہزادقیس کی کتاب #نقش_ہفتم سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
دَراَصل: بات اَلفاظ کی نہیں صاحب
****************************************
دَراَصل: بات اَلفاظ کی نہیں صاحب
لوگ لہجے سے رُوٹھ جاتے ہیں
۔ #شہزادقیس کی کتاب #نقش_ہفتم سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#نقش_ہفتم از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#نقش_ہفتم از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisNaqsh.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #نقش_ہفتم سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
جام کے بوسے بھلا کس کام کے
****************************************
جام کے بوسے بھلا کس کام کے
منتظر ہیں ہم کسی پیغام کے

اَپنی مرضی رَوز شب کرتے رہے
اور شکوے چرخِ نیلی فام کے ؟

خط لکھیں گے اور مطلب کیوں نہ ہو
نامے موضوع کے بنا کس کام کے

دائرہ دَر دائرہ دَر دائرہ
ہلکے ہلکے حلقے ہیں اِک دام کے

آپ سے یہ دَست بستہ عرض ہے
مے کو دَھبے نہ کہو اِحرام کے

شیخ صاحب کو ’’ حرم ‘‘ میں دیکھ کر
بت بھی قائل ہو گئے اِسلام کے

آ گئے گل ، سیر گلشن کے لیے
دِن پھرے ہیں گردشِ اِیام کے

دو فرشتے لکھ رہے ہیں اِس لیے
شعر کہتا ہوں میں دو اَقسام کے

کہتے ہیں بڑھتے ہو دِل میں حد سے تم
صدقے جاؤں یار کے اِلزام کے

جن کو پڑھ کے عشق شاعر سے بڑھے
شعر ہوتے ہیں وُہی اِلہام کے

عشق نے تو قیسؔ زِندہ کر دِیا
وَرنہ ہم تو آدمی تھے نام کے
۔ #شہزادقیس کی کتاب #نقش_ہفتم سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#نقش_ہفتم از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#نقش_ہفتم از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisNaqsh.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #نقش_ہفتم سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
سَحَر گُریز تھے شب سے کلام رَکھتے تھے
****************************************
سَحَر گُریز تھے شب سے کلام رَکھتے تھے
سویرا بانٹتے تھے ، گھر میں شام رَکھتے تھے

کھڑے ہیں باندِیوں کی صف میں بھی سفارِش سے
ہمارے جیسے جو سو سو غلام رَکھتے تھے

کسی نے دِل لگی جانا مگر ہمارا دِل
خدا کا گھر تھا مسافر قیام رَکھتے تھے

عجب نہیں کہ اُنہیں دوستی نہ راس آئی
جو رُخ ہَوا سا بدلنے میں نام رَکھتے تھے

وُہ رُت بھی بھول گئے پھر بھی محترم ’’ہیں‘‘ مجھے
کہ میرا دِل میں بہت اِحترام رَکھتے ’’تھے‘‘

دِئیے تو کچھ بھی نہیں قیسؔ اُس کے رَستوں پر
چراغِ قلب و نظر صبح و شام رَکھتے تھے
۔ #شہزادقیس کی کتاب #نقش_ہفتم سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#نقش_ہفتم از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#نقش_ہفتم از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisNaqsh.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #نقش_ہفتم سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
کئی خط لکھ کے بلوایا گیا ہُوں
****************************************
کئی خط لکھ کے بلوایا گیا ہُوں
سلیقے سے میں ٹھکرایا گیا ہُوں

کھلونے توڑ دیتا تھا میں شاید
تسلی دے کے بہلایا گیا ہُوں

کئی اَزلوں کی واحد اِلتجا ہُوں
خدا سے کہہ کے بنوایا گیا ہُوں

فقط اِک چھَن پہ سر دُھننے کی خاطر
ہزاروں بار جڑوایا گیا ہُوں

مجھے دیوار کا شک تک نہیں ہے
بدن میں خوب چنوایا گیا ہُوں

میں اَپنے خول کا عاشق نہیں تھا
میں اَپنے حق میں اُکسایا گیا ہُوں

مجھے جنت کی ہر نعمت پہ شک ہے
جہاں میں اِتنا ترسایا گیا ہُوں

غبارہ ہو کے بھی کچھ مطمئن ہُوں
کسی بچے کو پکڑایا گیا ہُوں

ہے جبر و اِختیار اِتنا سا صاحب
میں اَپنی مرضی سے لایا گیا ہُوں

مرا اور سیپ کا یہ اَلمیہ ہے
میں چند لمحوں کو اَپنایا گیا ہُوں

خِرد رَستہ دِکھائے قیسؔ کیسے
خِرد میں ہی تو اُلجھایا گیا ہُوں
۔ #شہزادقیس کی کتاب #نقش_ہفتم سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#نقش_ہفتم از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#نقش_ہفتم از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisNaqsh.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #نقش_ہفتم سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
۔ اختتام ۔ مجموعہ کلام "نقشِ ہفتم" ۔
****************************************
۔ اختتام ۔ مجموعہ کلام "نقشِ ہفتم" ۔
سدا خوش رہیے ۔ شہزادقیس
۔ #شہزادقیس کی کتاب #نقش_ہفتم سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس


****************************************
((End Text))
****************************************
****************************************
((Notice))
Updated On: 24-Sep-16 3:42:24 PM
Release Date: 04-May-16 8:19:07 PM
****************************************

****************************************
((Begin Text))
****************************************

****************************************
شہزادقیس کی جانب سے خوش آمدید
****************************************
شہزادقیس کی جانب سے خوش آمدید
مجموعہ کلام #الہام میں شامل اشعار
۔ #شہزادقیس کی کتاب #الہام سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#الہام از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#الہام از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
Sqais.com/QaisIlhaam.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #الہام سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
اِنتساب
****************************************
اِنتساب
منبع رَحمت کے نام
۔ #شہزادقیس کی کتاب #الہام سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
عقل سے ذات ، ماوَرا اُس کی
****************************************
عقل سے ذات ، ماوَرا اُس کی
کیا لکھے گا ، قلم ثنا اُس کی

ذَرّے ذَرّے کا دائمی حاکم
آگ ، مِٹّی ، پَوَن ، گھٹا اُس کی

تحفے میں اُس کو کچھ بھی دے نہ سکا
جو بھی سوچا تھا ، تھی عطا اُس کی

ہم فقیروں کا کیا ہے دُنیا میں
حتی کہ طاقتِ دُعا اُس کی !

مامتا جس کی ’’ ایک ‘‘ نعمت ہے
دِل مرے حمد تو سنا اُس کی

’’ اَللہ شافی ‘‘ کا معنی یہ ہے دوست !
ہر مرض میرا ، ہر شفا اُس کی

سرفرازی کو ، عمر بھر ترسا
سر جو چوکھٹ پہ نہ جھکا اُس کی

ایک پتھر نے ، آدمی سے کہا
تُو بھی کچھ حمد گنگنا اُس کی

دَھڑکنوں سے لطیف نغمہ تھا
دِل نے سننے نہ دی صدا اُس کی

حُور و جنت تو ’’ ضمنی ‘‘ بات تھی دوست
کاش تم مانگتے رِضا اُس کی

شرم کر کچھ گناہ کرنے میں
قیسؔ بخشش نہ آزما اُس کی !
۔ #شہزادقیس کی کتاب #الہام سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#الہام از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#الہام از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
Sqais.com/QaisIlhaam.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #الہام سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
اِتنا خوش رَنگ کہ خوابوں کا نگر لگتا ہے
****************************************
اِتنا خوش رَنگ کہ خوابوں کا نگر لگتا ہے
گنبدِ سبز سے یہ شہر گہر لگتا ہے

پاؤں آقا نے اِنہی گلیوں میں رَکھے ہوں گے !
پاؤں رَکھتے ہُوئے ایمان سے ڈَر لگتا ہے

پلکیں جھاڑُو کے تصور سے دَمک اُٹھتی ہیں
راستہ آپؐ کی گر راہ گزر لگتا ہے

ہجر میں آپؐ کے نمناک فقط آنکھ نہیں
خون سے سینے میں اِک ٹکڑا بھی تر لگتا ہے

سنگ دِل شخص پہ قرآن مؤثر کیوں ہے ؟
سنگ ریزوں کی تلاوَت کا اَثر لگتا ہے

چھوڑ کر گردِشی تسبیح ہُوا ہے دو نیم
عارِف قصۂ معراج ، قمر لگتا ہے

جو محمدؐ کا نہیں ، دُنیا کو وُہ جو بھی لگے
اِہلِ کردار کو وُہ صرف صفر لگتا ہے

ہم بھی پردیس میں مر جانے سے ڈَرتے ہیں حضور
پر مدینے میں کسے موت سے ڈَر لگتا ہے

معذرَت اِہلِ مدینہ یہ جسارَت ہے مگر
ایک ہستی کے طفیل اَپنا ہی گھر لگتا ہے

طاعتِ اَحمدِ مُرسلؐ کا شجر دِل میں لگا
اِس پہ جنت کی بشارَت کا ثمر لگتا ہے

ناز ہو جس کو محمدؐ کی غلامی پر قیسؔ
آنکھ والوں کو وُہی اِہلِ نظر لگتا ہے
۔ #شہزادقیس کی کتاب #الہام سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#الہام از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#الہام از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
Sqais.com/QaisIlhaam.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #الہام سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
خوشبو سے رَقم کرتا ہے گُل تیرا قصیدہ
****************************************
خوشبو سے رَقم کرتا ہے گُل تیرا قصیدہ
تابندہ ستارے سَرِ دِہلیز خمیدہ

خامہ بنیں اَشجار یا اَبحار سیاہی
مرقوم نہ ہو پائیں گے اَوصافِ حمیدہ

ہر قلب کہاں فیض تری نعت کا پائے
ہر ذِہن کہاں عشق میں آہُوئے رَمیدہ

ہے علم بھی لازِم وَلے یہ ذِہن میں رَکھنا
پڑھ لکھ کے کوئی ہوتا نہیں عرش رَسیدہ

اُٹھی ہیں مدینہ کو طلب گار نگاہیں
اُمت کے ہُوئے جاتے ہیں حالات کشیدہ

آقا تری رَحمت کے سمندر پہ نظر ہے
اَعمال میں سستی ہے مگر پختہ عقیدہ

یعنی میں مدینہ کی فَضاؤں میں کھڑا ہُوں !
حیران ہیں اَفکار تو نمناک ہے دیدہ

گُل آپؐ کی خاطر چنے با عرقِ ندامت
شبنم سے شرابور ہیں گُل ہائے چُنیدہ

جس کُن کی ہے تخلیق تری ذاتِ معظم
اُس کُن کے فضائل کا لکھے کون جریدہ

صد چاک ہے غفلت سے مگر تیری عِنایت
بھر سکتی ہے ہر عاصی کا دامانِ دَریدہ

آغازِ اَزَل سے اَبَد آباد سَحَر تک
اَحمدؐ سا کوئی دُوسرا دیدہ نہ شنیدہ

دامن مرا پُر کر دے ترے اَبرِ کرم سے
گلشن میں کھلیں پھول سرِ شاخِ بُریدہ

یہ کہہ کے قلم قیسؔ مرا تتلی نے چوما
خوش بخت ہو لکھتے ہو محمدؐ کا قصیدہ
۔ #شہزادقیس کی کتاب #الہام سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#الہام از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#الہام از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
Sqais.com/QaisIlhaam.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #الہام سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
کُن کی اَذانِ ناز کا جوہر نبیؐ مِرا
****************************************
کُن کی اَذانِ ناز کا جوہر نبیؐ مِرا
خِلقت کی ہر بہار کا جھومر نبیؐ مِرا

رَوشن ہے کہکشاؤں میں حُسنِ محمدیؐ
سوچو تو کس قَدَر ہے منور نبیؐ مِرا

رَحمت کرے طواف ، محمدؐ کے نور کا
اَبرِ کرم کا شبنمی محور نبیؐ مِرا

پتھر پہ اِک لکیر ہے شقُ القمر کا باب
کنکر کو جو بنا دے سُخن وَر نبیؐ مِرا

سیدؐ ، کلیمؐ ، اُمیؐ ، محمدؐ ، قویؐ ، خلیلؐ
منصورؐ ، حقؐ ، نذیرؐ ، مطہرؐ نبیؐ مِرا

طہؐ ، بشیرؐ ، عزیزؐ ، رَحیمؐ ، اَبطحیؐ ، منیرؐ
یسؐ ، اَمینؐ ، نورؐ ، مدثرؐ نبیؐ مِرا

نقشِ قدم رَسولؐ کا خوشبوئے دین ہے
نعلین بھی ہے جس کی معطر نبیؐ مِرا

دیکھا طویل سجدے میں دِل کی نگاہ سے
اُمت کی اُلجھنوں پہ ہے مضطر نبیؐ مِرا

اَپنی طرف ترازُو کا جھکنا مُحال تھا
مولا کا شکر ، شافعِ محشر نبیؐ مِرا

تا حشر ، نعت خوانوں نے محنت تو کی مگر
قطرہ ہُوا بیان ، سمندر نبیؐ مِرا

معراج تھی فرشتوں کی حیرانگی کی رات
بے پر بھی اُترا قیسؔ ، فلک پر نبیؐ مِرا
۔ #شہزادقیس کی کتاب #الہام سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#الہام از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#الہام از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
Sqais.com/QaisIlhaam.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #الہام سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
پلاتا ہے حق جس کو جامِ محمدؐ
****************************************
پلاتا ہے حق جس کو جامِ محمدؐ
وُہ پلکوں سے چومے گا نامِ محمدؐ

فَہم ، عشق ، تعلیم ، تقویٰ ہے لازِم
سبھی کیسے سمجھیں مقامِ محمدؐ

عبادَت کی معراج ، سبحانَ رَبّی
خدا نے کیا کم قیامِ محمدؐ

دُرُود اُن پہ جب جب پڑھیں بھیگی آنکھیں
اُترتا ہے دِل پر سلامِ محمدؐ

محمدؐ کے دُشمن ! لہب سے لے عبرت
خدا آپ لے اِنتقامِ محمدؐ

بشر عہدِ طفلی سے باہر تو نکلے
کریں گے سبھی اِحترامِ محمدؐ

کلامِ محمدؐ ، بحکمِ خدا ہے
کلامِ خدا ہے کلامِ محمدؐ

خلاصہ مکمل شریعت کا لکھ لو
حلالِ محمدؐ ، حرامِ محمدؐ

بہت ہو چکی ، اَب فقط ایک نعرہ
نظامِ محمدؐ ، نظامِ محمدؐ

مجھے کاش محشر میں سہواً ہی سمجھیں
غلامِ غلامِ غلامِ محمدؐ

مزہ قیسؔ جنت میں آئے گا تب ہی
سنا پائیں نعتیں بنامِ محمدؐ
۔ #شہزادقیس کی کتاب #الہام سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#الہام از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#الہام از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
Sqais.com/QaisIlhaam.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #الہام سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
شیرازۂ وُجود و بقا ذِکرِ مصطفےٰؐ
****************************************
شیرازۂ وُجود و بقا ذِکرِ مصطفےٰؐ
چھُو پائے گی نہ جس کو قضا ذِکرِ مصطفےٰؐ

اِس پر بھی پیار آتا ہے پروردِگار پر
کرتا ہے ہم سے بڑھ کے خدا ذِکرِ مصطفےٰؐ

مرہم طرح طرح کے بنے تن کے واسطے
من کے ہر ایک غم کی دَوا ذِکرِ مصطفےٰؐ

دیکھا ہے جب سے ذِکرِ خدا میں مگن اُنہیں
کرتی ہے تب سے غارِ حرا ذِکرِ مصطفےٰؐ

فرعون کے لیے تھا عصا اور حشر تک
شیطان کے لیے ہے عصا ذِکرِ مصطفےٰؐ

محروم رِہ گیا جو وُہ روئے نصیب کو
ہوتا ہے نرم دِل کو عطا ذِکرِ مصطفےٰؐ

اِحمدؐ کا ذِکرِ کرنا بھی نعمت ہے ، رِزق ہے
وَرنہ کہاں ہم اور کجا ذِکرِ مصطفےٰؐ

پوچھا گناہ گاروں نے کیسے ملا مقام
ہر جنتی نے ہنس کے کہا ذِکرِ مصطفےٰؐ

جسمانی اِضطرار ہے باقی ہر ایک ذِکر
جس ذِکر پہ ہے رُوح فدا ذِکرِ مصطفےٰؐ

دُنیا کے گِرد نُور کا ہالہ ہے اِسمِ پاک
کوہِ صفا تا کوہِ صفا ذِکرِ مصطفےٰؐ

اِک نُور کی لکیر گئی قیسؔ عرش تک
دِل کے حرم میں جب بھی ہُوا ذِکرِ مصطفےٰؐ
۔ #شہزادقیس کی کتاب #الہام سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#الہام از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#الہام از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
Sqais.com/QaisIlhaam.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #الہام سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
محبت کے دِلکش نگینے سلام
****************************************
محبت کے دِلکش نگینے سلام
مبارَک ، مقدس مہینے سلام

اے قرآن آوَر ، اے وِجدان گر
اے بخشش کے روشن خزینے سلام

اَذانوں کی ٹھنڈک ، نمازوں کی رِم جھم
بہت رُوح پرور قرینے سلام

نگاہوں میں توبہ کے جھلمل گلاب
تلاوَت سے پُر نُور سینے سلام

عجب رُوح کا منّ و سلویٰ ہے تُو
کرم ہی کرم کے سفینے سلام

سبھی یکساں بھوکے ، غنی یا غریب
اُخوت کے دِلکش دَفینے سلام

نظر میں حیا ہے تو دِل موم تر
تقدس بھرے آبگینے سلام

سکھاتا ہے غلبہ ہمیں نفس پر
ترقی کے پُر نُور زینے سلام

عبادَت کو لگ جائیں حق چار چاند
اَگر جا کے بھیجیں مدینے سلام

ہر اِک متقی کو مسلسل کہیں
بہشتی گھروں کے خزینے سلام

منا لے جو رَب قیسؔ رَمضان میں
کہیں اُس کو گیارہ مہینے سلام
۔ #شہزادقیس کی کتاب #الہام سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#الہام از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#الہام از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
Sqais.com/QaisIlhaam.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #الہام سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
۔ اختتام ۔ مجموعہ کلام "الہام" ۔
****************************************
۔ اختتام ۔ مجموعہ کلام "الہام" ۔
سدا خوش رہیے ۔ شہزادقیس
۔ #شہزادقیس کی کتاب #الہام سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس


****************************************
((End Text))
****************************************
****************************************
((Notice))
Updated On: 24-Sep-16 3:30:04 PM
Release Date: 24-Sep-16 10:19:48 AM
****************************************

****************************************
((Begin Text))
****************************************

****************************************
شہزادقیس کی جانب سے خوش آمدید
****************************************
شہزادقیس کی جانب سے خوش آمدید
مجموعہ کلام "شاعر" میں شامل اشعار
۔ #شہزادقیس کی کتاب #شاعر سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#شاعر از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#شاعر از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisShayer.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #شاعر سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
اِنتساب
****************************************
اِنتساب
آخری شاعر کے نام
۔ #شہزادقیس کی کتاب #شاعر سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
ناسٹیلجیا: خوشا وُہ دور کہ سُولی پہ ٹانک دیتے تھے
****************************************
ناسٹیلجیا: خوشا وُہ دور کہ سُولی پہ ٹانک دیتے تھے
اَب اِہلِ فکر کو جوتی پہ بھی نہیں لکھتے
۔ #شہزادقیس کی کتاب #شاعر سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#شاعر از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#شاعر از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisShayer.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #شاعر سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
بات کب آج شعر شار کی ہے
****************************************
بات کب آج شعر شار کی ہے
بات تو صرف دَس ہزار کی ہے

آج کے آج ہی بنیں شاعر
پیشکش اَپنے کاروبار کی ہے

’’ ٹرن کی ‘‘ سسٹموں کا دور ہے یہ
کچھ کمی ہے تو اِشتہار کی ہے

پیشہ وَر ہیں سو مل کے لکھی کتاب
اِک غزل میری ، اِک فگار کی ہے

بوڑھے لوہار کو بتائے کوئی
ضرب مہنگی فقط سنار کی ہے

بات تو صرف دَس ہزار کی ہے
۔ #شہزادقیس کی کتاب #شاعر سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#شاعر از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#شاعر از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisShayer.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #شاعر سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
دَھندہ کب ہے یہ اَدبی دَفتر ہے
****************************************
دَھندہ کب ہے یہ اَدبی دَفتر ہے
بھاؤ اَشعار کا مقرر ہے

صرف آزاد نظم لکھنے کا
بیس لفظوں کا ایک ڈالر ہے

فی غزل پندرہ پر میں لا دُوں گا
ریٹ ویسے تو کافی اُوپر ہے

پیشہ وَر لوگوں کو ہی لکھنے دیں
آپ خود نہ لکھیں تو بہتر ہے

ایک نو کی بھی چل رہی ہے کتاب
اَپنی ریشو تو ایک چار کی ہے

بات تو صرف دَس ہزار کی ہے
*** *** *** *** ***
۔ #شہزادقیس کی کتاب #شاعر سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#شاعر از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#شاعر از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisShayer.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #شاعر سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
آپ باہر کمائی کرتے ہیں
****************************************
آپ باہر کمائی کرتے ہیں
اور اِتنی رَقم سے ڈَرتے ہیں ؟

آپ کے ہاں لکھاری بننے کو
لوگ جی جان سے گزرتے ہیں

روکنے والے سارے حاسد ہیں
اُن کی باتوں پہ کان دَھرتے ہیں ؟

لوگ کیسینو بھی تو جاتے ہیں
ڈُوبنے والے ہی اُبھرتے ہیں

ہم کو معلوم ہے کہ آپ کے ہاں
ایک روٹی بھی دو دُلار کی ہے

بات تو صرف دَس ہزار کی ہے
*** *** *** *** ***
۔ #شہزادقیس کی کتاب #شاعر سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#شاعر از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#شاعر از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisShayer.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #شاعر سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
ڈُھونڈ کر اَچھی غزلیں لا دیں گے
****************************************
ڈُھونڈ کر اَچھی غزلیں لا دیں گے
چھپنے سے پہلے بھی پڑھا دیں گے

سر وَرَق ڈھیر سارے رَکھے ہیں
جو کہیں گے وُہی لگا دیں گے

اِک فلیپ آپ کو میں لکھ دُوں گا
دُوسرا ، وُہ میاں بنا دیں گے

آپ کا قد نمایاں کرنے کو
اِک غزل بانس پر چڑھا دیں گے

جس کا جی چاہے اَب ہو ’’ اِہلِ کتاب ‘‘
بات کب جبر و اِختیار کی ہے

بات تو صرف دَس ہزار کی ہے
*** *** *** *** ***
۔ #شہزادقیس کی کتاب #شاعر سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#شاعر از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#شاعر از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisShayer.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #شاعر سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
موٹا کاغذ نظر جکڑتا ہے
****************************************
موٹا کاغذ نظر جکڑتا ہے
دھاگہ جاپانی کم اُکھڑتا ہے

رَنگ اِس کے کرنسی والے ہیں
یہ ’’ پرنٹر ‘‘ جبھی اَکڑتا ہے

جلد ہو اَعلیٰ ، گرد پوش نفیس
قاری تب ہاتھ میں پکڑتا ہے

ایک سی ڈی بھی ٹھونک دیں گے ساتھ
ٹوٹی بھی ہو تو رُعب پڑتا ہے

قصہ ہے آپ کی یہ شہرت کا
داستاں میرے روزگار کی ہے

بات تو صرف دَس ہزار کی ہے
*** *** *** *** ***
۔ #شہزادقیس کی کتاب #شاعر سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#شاعر از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#شاعر از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisShayer.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #شاعر سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
بُک کی تقریبِ رُونمائی بھی
****************************************
بُک کی تقریبِ رُونمائی بھی
’’ پانچ تارے ‘‘ میں بُک کرا لیں گے

شعر کو سُر کا دَھکا دینے کو
دو گوّئیے نما بلا لیں گے

اِستری کر کے کچھ لفافے بھی
مختلف رَقموں کے بنا لیں گے

اَدبی گوشوں کے سربراہوں کی
گاڑیاں بھیج کر دُعا لیں گے

اَدبی تنظیموں کی تو اَب حالت
ایک بیمار سو اَنار کی ہے

بات تو صرف دَس ہزار کی ہے
*** *** *** *** ***
۔ #شہزادقیس کی کتاب #شاعر سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#شاعر از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#شاعر از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisShayer.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #شاعر سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
شاعروں کی ہے ، شاعرات کی ہے
****************************************
شاعروں کی ہے ، شاعرات کی ہے
دَعوتِ عام لحمیات کی ہے

’’ سلجھے چرغوں ‘‘ سے کم چلے گا نہیں
چونکہ تقریب اَدبیات کی ہے

چھوٹے قیمے کے سُرخ سیخ کباب
ذائقہ بازی نصف رات کی ہے

جھاگ دو طرح کی اُڑائیں گے
مے کشی جان غزلیات کی ہے

اب کہاں تیرِ نیم کش کا دور
آج کل بات آر پار کی ہے

بات تو صرف دَس ہزار کی ہے
*** *** *** *** ***
۔ #شہزادقیس کی کتاب #شاعر سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#شاعر از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#شاعر از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisShayer.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #شاعر سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
میرا اِک بھانجا بھی صحافی ہے
****************************************
میرا اِک بھانجا بھی صحافی ہے
فون ہی میرا اُس کو کافی ہے

آپ کے منہ سے جو نکل جائے
وُہ لکھے گا یہ مو شگافی ہے

کس میں جرأت ہے خود سے کچھ چھاپے
یہ لفافہ ہے وُہ لفافی ہے

نامور لوگ لکھیں گے کالم
اِس کا خرچہ مگر اِضافی ہے

آپ کیا لکھتے ہیں ، نہیں لکھتے
شاعری اَپنی ہے ، اُدھار کی ہے ؟

بات تو صرف دَس ہزار کی ہے
*** *** *** *** ***
۔ #شہزادقیس کی کتاب #شاعر سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#شاعر از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#شاعر از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisShayer.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #شاعر سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
نام شام اَپنا خود اُٹھا لیجے
****************************************
نام شام اَپنا خود اُٹھا لیجے
خود کو خود کاندھے پر بٹھا لیجے

گھر میں ، گیراج میں یا باہر ہی
عالمی اَنجمن بنا لیجے

میر و غالب وَغیرہ سے منسوب
اُردُو ایوارڈ بھی چلا لیجے

سر کے بل آنے کو ہیں راضی اَدیب
بات جو مانے وُہ بلا لیجے

اِک ٹکٹ ، چند نوٹ ہیں لازِم
یا طلب بسترے کی ، کار کی ہے

بات تو صرف دَس ہزار کی ہے
*** *** *** *** ***
۔ #شہزادقیس کی کتاب #شاعر سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#شاعر از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#شاعر از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisShayer.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #شاعر سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
اُردُو اُستادوں کی جو حالت ہے
****************************************
اُردُو اُستادوں کی جو حالت ہے
آپ اُنہیں جو بھی دیں غنیمت ہے

اُردو ایم فل کا اِک مقالہ بھی
آج کل سب سے سستی شہرت ہے

خود پہ لکھا مقالہ چھپوا کر
بانٹنے میں عجیب لذت ہے

آپ اور والدِ گرامی کی
تین تصویروں کی ضرورت ہے

دو مقالے تو چاہیے ہوں گے
داستاں ہی یہ اِعتبار کی ہے

بات تو صرف دَس ہزار کی ہے
*** *** *** *** ***
۔ #شہزادقیس کی کتاب #شاعر سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#شاعر از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#شاعر از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisShayer.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #شاعر سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
ٹیڑھی اُنگلی سے گھی نکلتا ہے
****************************************
ٹیڑھی اُنگلی سے گھی نکلتا ہے
بنجمن ہر جگہ پہ چلتا ہے

ایک شاعر میں گُڑ بھی ڈالنا ہے
وَرنہ وُہ آگ بھی اُگلتا ہے

پانچ سو دیں گے اُن کو جن کا موڈ
نوٹ کو دیکھ کر بدلتا ہے

شاعر اِک دُوسرے سے جلتے ہیں
دیپ سے جیسے دیپ جلتا ہے

سلطنت مفت میں نہیں ملتی
جنگ یہ اَدبی اِقتدار کی ہے

بات تو صرف دَس ہزار کی ہے
*** *** *** *** ***
۔ #شہزادقیس کی کتاب #شاعر سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
#شاعر از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
****************************************
#شاعر از #شہزادقیس ڈاؤن لوڈ کیجیے
http://sqais.com/QaisShayer.txt
۔ #شہزادقیس کی کتاب #شاعر سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس

****************************************
۔ اختتام ۔ مجموعہ کلام "شاعر" ۔
****************************************
۔ اختتام ۔ مجموعہ کلام "شاعر" ۔
سدا خوش رہیے ۔ شہزادقیس
۔ #شہزادقیس کی کتاب #شاعر سے انتخاب ۔ .
گزارش: شئیر کرتے وقت شاعر کا نام دے کر مدد فرمائیے۔ شکریہ
سدا خوش رھیے ۔ شہزادقیس


****************************************
((End Text))
****************************************

*******************************
میری تمام کتب ڈاؤن لوڈ کیجیے
*******************************
تمام کتب ایک ذپ فائل کی صورت میں
http://sqais.com/QaisAll.zip

"لیلیٰ" از "شہزادقیس"
http://sqais.com/QaisLaila.txt

"دِسمبر کے بعد بھی" از "شہزادقیس"
http://sqais.com/QaisDecember.txt

"تتلیاں" از "شہزادقیس"
http://sqais.com/QaisTitliyan.txt

"عید" از "شہزادقیس"
http://sqais.com/QaisEid.txt

"غزل" از "شہزادقیس"
http://sqais.com/QaisGhazal.txt

"عرفان" از "شہزادقیس"
http://sqais.com/QaisIrfan.txt

"انقلاب" از "شہزادقیس"
http://sqais.com/QaisInqilab.txt

"وُہ اِتنا دِلکش ہے" از "شہزادقیس"
http://sqais.com/QaisDilkash.txt

"نمکیات" از "شہزادقیس"
http://sqais.com/QaisNamkiyaat.txt

"نقشِ ہفتم" از "شہزادقیس"
http://sqais.com/QaisNaqsh.txt

"اِلہام" از "شہزادقیس"
http://sqais.com/QaisIlhaam.txt

"شاعر" از "شہزادقیس"
http://sqais.com/QaisShayer.txt

**********************
آپ کو اس متن کی اشاعت کی اجازت ہے
**********************
آپ ان تخلیقات کو اپنے ویب سائٹ، بلاگ، فیس بک، ٹوئٹر، سوشل میڈیا اکاؤنٹس، اخبار، کتاب، ڈائجسٹ وغیرہ میں شائع کر سکتے ہیں بشرطیکہ
اس میں ترمیم نہ کریں، شہزادقیس کا نام بطور مصنف درج کریں اور اس تخلیق کی اشاعت غیر تجارتی مقاصد کے لیے ہو
یہ تخلیقات کریٹو کامنز لائسنس کے تحت شائع کی گئی ہیں جس میں اس تخلیق سے ماخوذ کام کی نشر و اشاعت کی اجازت نہیں ہے۔۔ مزید تفصیلات اس لنک پر ملاحظہ فرمائیے
https://creativecommons.org/licenses/by-nc-nd/4.0/legalcode

کسی اور طرح کی اشاعت کے لیے
[email protected]
پر رابطہ فرمائیے۔